Skip to main content

Full text of "Dars e Nizami Darja Sabeaa Maoqoof Alai 7th year"

See other formats


٠ 
ê 7 ه‎ 


| ل سےا 7 


۶ 
4 ب. 2 7 ۰ ۸ 
یر رٹ | مر ضرتں | 


ریب هر بر واغا فخوانات 


مو حم 1 
ی مس ر 6 و 32 | ۴ 


و کے کچ و دی 
فاضل و متخصص: جأمعة العلوم الاسلامیه بدوری ٹاؤن‌کراچی 


شیخ | ریث حضرت‌مولانا محمد اسحاقدامت ب رکاقم 


تلمیذ شید 
یں ن العصر حضرتمرلانا یروسفبنوہی تخالل کال 
مفت‌شهبازخان‌مردانی 


فاضلومتخصص _۔ 
جأمعة العلوم الاسلامیه‌بنوی‌ثأون کراې 


سوم ہدس ٭ے 


جمله حقوق بق زاشر محفوظ هین 


کناب کانام ۱ درس‌مشکوقراول) 
ھ0 ۰ زیر 2017 
ناشر ا 
اذارات ۱ شیخا| لد یت حضرت مولاناً اسحاق‌صاحب ` 
ترتیب وجدید اضافات‌عنوانات ‏ : مفق‌شهبازخان‌مردای 
٠‏ فاضل و متخصص جامعةالعلوم الاسلاميه 
بنوہی‌ٹاؤن 
مطابع : ٠‏ عبد ال رخ ن‌پریس,پشاوں 
تعدار :+ 1100 


کے 
وحیدی کتب خأنه پشاوی حافظ کتب خانه‌پشاوی 
مکتبه‌علمیه | کوژه‌عنک فا وق کتب‌خانه| کوژه عنک 


مکتبه‌ی‌ماأنیه‌لاهوی قدمی کتب خانه کر اپی 
دام‌الاشاعت کرای مکتبة | طرمین‌لاهوی 
مکتبه,شیدیه کوئنه نوی‌حمد کراپی 


ہے 


ادا اخسن 


| حر یٹر 

میک نیت 

عم عدمف کی تر یف داتسا 2 
ریف خروم اور سنت یل فر 


دیشک وج تمر 

مان دی ٹک اقام 

رین صرف 

نت انار مرٹ تد رے 

کین عر کد بل 

کیت صیث 

من حدریت کے رل لکاجو اب 

صرت بک یک ہابت کے جوا بات 

رت تور یکی را کے گرا 

م یکریم پل کے رمارگ می حدی شک مت 


صرت دادن مالعا حیز 
صحیفہ ابو شا کی 

جنرت مک ینہ 

ردان 7 کین 


عام سیا ہکا مک یکابت عمش 
تل وین هریس تک ابا 

دون هرس تکار و سراد ود 
تون صر تک تر ادور 

تر وین هر تک جو تھارور 
صاحب ماد را نک یکنا تک تارف 
گس اقب کوج 

عملم 

تصوصت عق 

صاحب ماو اورا نک یا بک تارف 


وچرتالیف وطرزتلیف 
شار نار مم بل کت 
شار نر میس مین اساے الس کی یسک وج 
اقلا ی نیت 

ب زگره صر تک منرت 

یت وارادو شس فر 
ناکت قکیاے ؟ 
مت سے ساق رل 

شان ورود حریث 

چر کی تر بف داقسام 
خلا مرہٹ 


اھا نکی ترف 


| کفری حقیقت اورا اقمام 


ایما نکی یقت میں شور ع زاب 
ایمان کی وز یاد کی بحٹ 

ا ان ٹیس اتا ءکا : 

ایمان واسلام یل سیت 

حدیث تال 

اسلا یناد یں ہر ے 

ارکاان تسم س رتب 

یمان ی شا 

موس وس مک مفهوم 

یکر یمام سے عبت کے در جات 
اقام یت 
اباب کیت 

مہ تک افرادے مو ے؟ 

بت کے در جات 
لزت یما نک صول 


سور بدال لھ 


چا تکاد ارو د اا علا پا سے 


دور 2 إےواے 


دوہ اج پانے وا ے ای لکنا بکون ہیں ؟ 


غلب اسلا حم کفار سے جگ کا 21 
سلا نکون ے؟ 
جنت میں نے ہے وا ے اکال 
امان یر ا قغامت 
و اش اسلام 
شر ناف کا عم 
وذر پراش 


: اکادات اعلام 


عدو دکفار ات ہیں یاز اج ات ؟ 
رتو سکیل ےآپ نیل کا فان 
انا نک ری زیب س ریق 
زیا کو برام ہو 

یڑک ایت 

تن اللعہد کی اش کی کش 

دوزخ ےرپ یکا بب لوحیدے 
ات بالا یمان جن تک اتب 


ٹوا تکادار وید ارس پاستھہ ے؟ 


تولا لا م سے سا مت جات ہیں 


ارکان دن 

ایما نکا لیا ؟ 

یہ می کون ے ؟ 

یات اور اغا سے کہ کی ابیت 
جن تک شارت 


کم توحیر چا تکاذر یم ے 


لور ید ای الام کے غل کی بو 


ایمان داسلا مک تارف 
گنما مسر داور نفا کی عل تو نکابیان 


صفحه 


49 
50 
50 
51 
52 
53 
53 
54 
55 
56 

57 
58 
59 


60 


61 
61 


62 


62 


63 


مضامین 
سب سے اه 
چاد باس گناہ 
لا ککرد ال پا پچ 
کرک تر یف واقسام 


کر ر کر اص تکافرتی 
دوب تری گناو جن کے اد کاب ناه ال چا 
ماق کی ل یں 


وا ہیام ے سحا یو رکا سوال 


ا بکفرہے یلا یمان 

ہے باب دو سے کے بیان یل سے 
ہرانسان کے مات ن اور فرش قر ر ے 
وسو کو رامنا یما نکی علا ست سے 
خیطان انا نکی رگوں دوژت بتاے 
خیطان یہو ںک پیر ال کے دقت بے کے لگاتا سے 
۶ہ کرب سے رطان مال ر یکا شکار 
نی یھ ا یمان لا کیان 

مل تیر میس کلف راہب 

ایک اشکال اور ا ںکاجواب 

کتک تلق سے پل رک یکی 
نففری میں <عر تآوم» موی کنو 
تی نال بآلّے 

یقن م۴ یس ناچا سے 

آوم کے آلو ب اش کے قبض بیس ہیں 
برچ فطرت لام هتسه 

مش رک نکی ال دکہاں ہوگی ؟ 

سا نکی یئ کاقصہ 

ار کون 

یر یش بت هگرب 

تر ےہ جرب کون ہیں؟ 

تیر کے ملک ری نکی سز 


صقحه 
121 
72 
72 
73 
73 
74 
74 

5 


76 


7 
77 
77 
78 
78 
18 
79 
79 
80 
81 
81 
82 
83 
83 
84 
85 
85 
86 
87 
87 
87 


اس امت کے و تمد ے ہیں 
ال با لت مل چول رو 
فوت خر هو و لک تلم 
وگو رگم وا زا 
مزاب تر کے و تکامیان 
عذاب قم ۰ 


مرد ےج او ں کل آہٹ تون 


ت رکاعزاب اب 

عزاب ت رکامشاہرہ 

تر س (۹۹ )ار رے 

خر ت ع کی وفات رک کرک ہونا 
E ELE‏ 

یر ع تک تر یف اورا کی پان 

حضو ر شیا کی اطاعت رخول جن تکازر ید ے 
ل مم یلآ دبعو 

مت انیا مک مستلر 

تضور نکی اطاعت شی کامیالی سب 
یرل علض رت ایک عم ۱ 
ضور یم کی ایک مال 

یات مات وتا بات 

کاب الک یس اختلا فک نا ماک تکاہاعٹ ہے 
بلاض رورت ما کی میں گس کناچا سے 
00000 ردیر 

ترآ نکر مکی ط رح احادیث بھی واجب اتل ہیں 


بھرے پیٹ دانے نال لوگ حدییثکا نا کر تے ہیں 


۳ 2 
| جریدمعت لراک ې 


دن اطا ع تکانامے 
سنت نل ہکز ےکوواب 


ہے امت تفر قو می ہف جات ےگا 


رآ دریگ موجودگی یش فورات وا ای لک وھا نے 


100 
100 
101 
102 
102 
103 


میا یکی ٹین بان 

دوراول یک از یاد و ضر ورت گی 
کاب ہکرام یشان 

باو ضور کا صل 

م اورا کی فضیلتکابیان 
اقام 

متا مک واو جو کو ہیلا 
عم ڑی دولت ہے 

ال کات کاک 

دو قامل شک زب 

ین یز صد تہ جار ہے 
ناور سا مکاطر ۳ 

فقرا کیلع ند ےکی اتیل 

علام للہا کے فی کی 


۱ لک ںہ دے 


نامب 

ترآ نکی تی ہی راس تال کرد 
ترآ ن کاسا ت لفات ی از 

م کے یر فی امرس 

ین فاص علوم سنا 

ای کامیان 

کاب الا یمان سک بح رکا ب الوا ت لان ےکی وج 
پا رگی نمف ایبان ے 

ص ری اقام 

مین چز وں س کنات جات ہیں 
وضو ناهد گل جات ہیں 

مت نمی وضو کے اعخضاء ہیکت ہو گے 
نت وضوکایان 

وضو کے لخر نماز 0 نہیں 


سیل اقا ورن 
زیکاگم 

سز الوضوء مات التار 

| مت گرا ری 

سر یر الوضو کل صلوج 
نید ماف وضو ے نش 
و یت اغلام باذک ض ام ہے 
سل الوشوم مین سال کر 
سیل الوضوم لبیل ال رآ 
سیل الوضوء می نکیل وم انل 
ستل خاررج من خی مر لین 
بیت لام جا کامیان 


ستلہ اتال القیلدواستر بار ها 

مس الا نی ء الا ار 

بیت ا فلاء جا ےکی دعا 

تروں ی ی لگانےکابیان 

اند ابو ںکاعزاب ترے تلق 

کن چیزوں سامت زاو رگن سے نا چان ے؟ 
فاد ایشا بک نے 

بیت !لاء ہے نک نکی دعاء 

جو رگ کی ہنا یہ بر تن یمتا بکرنا 
قاری وم 

بول تا کم 

شر کدی یں دی کامطلب 

ا اء کےآداب 

انا محا طات مک کے مختاج یں 
سوا ککابیان 

وضو رک سنو ںکابیان 

مسر خخمز وااىتناتی 

مد ا راس 


مر یٹ ا 
9 .سل سلو کین 
120 ستل الاه 
2 | مل ات عنرالوضوم 


۰ 124 | وضو بع رتل و غير کاستمل 


5 | لجا تکایان 

6 | م مارد 

١ 7‏ ل»سنرن ریت 

8 | وضو اور سل می پا یی مقار 
0 | لش ر ے ہاو ںکاست 
0 |[ کیےاختل کیان 

1 | هرهب کیلع وضو بک م 
2 | مر فل تور راد 

4 | کک اور ماس کاترآنڑعن 

6 | مس عو زاس انوا بب 
6 | رون رت و ن سے 
7 | پل مال 

7 | سض را 

8 ا ستل اکرو 

8 | سند رک چافوروںکاگم 

9 | مت نیزر 

9 امسلہسؤراطرة 

9 | جانودروں کے تجو کابیان 
0 | ناستوں کے پا کک کیان 


0 امسر مھ ررش 


1 ادف 

1 | سر کل بول اغلام 

2 | زع نواس تھے شس 
2 | مر بول ۷ وکل ر 

4 | مد دکفادنکدباغت م 


زول ET‏ 
منلہ کل سح اتف مد اج می الجوز بین 
سج ی ین 

کیان 

نون شس ل کابیان ' 

کابان 

عالت نیٹ یل تمارک کفاره 

ئن ین ایک نل کی مت کے پر لین 


۳ 


اس gg‏ و لج ہداں إو 
عرص )اشر 


5 3 سیف اصادمش با دک پر مشعل دیب ریز یک و هلاسب ے جس اما 
سال سے ورس شای سل ن اسل ہے اور صد فک نی ا اسب ما ی ال ے اور 
کال سد ے مصد م2 یلص ال ال سه. ۱ 
آن کے اس کاب کی سشموصاست, وای وت ام اورور 17 تیر مسب ار ظہ 
عام یر تچ ہیں, جن میں از سل رور !عض قر ہیں, ای صسلملہ سے دالت ور سس 

کو بھی ۓ, جو رر د لسر محضسررستہ وا نا وسو بف رگ کے س اکرو حن اص ولانا 
ےد اسان مر فد کے درک الشاداست پر ہی ہے جھ الا ستیاسب ضام اصائی شک 
سضسر ستل یں بل اام اص ادیش کے باص ف ای م کور ہیں 
م اکور ہکا صر مہ داز سے پات نیسحت چپ ری کی پم پگ ضما نے 
پٹ ای نگ سخا کے تمه دض یسک الط اور اص او ف مسببا رک وان در 
ماصخ ال رجہ تس ھک ہھ 
طب ی 
سح ا رون مق ورپخ کو مس زیر #بسستر ابراز سل سئوازارت_ و 
سل سب سر م ایاصاے۔ ۱ 
اش تیل ۷زاۓ شیم عف نتر ےی )شب نان وشل نحص حاریة ۱ 
لوم اسلاس کلاس رون ورگ )دک ا ول نے سک م ےہ تسیل 
نت کپ اید 
انیت الاب زب ل ا سل ,اور وزارت کے اضف اغ کے 
سا ہر پا تھوں میں ے_ ۱ 

ال ر سج وتیل اص ضس درس لول صض رمراۓے 
لے سجن 


07 طائفةلتحمل اعباء من العی یور ور عل ترما سنانف 
لاوضح الشبل واقوم الشنن.ونشهد آن اله الا اللہ شهارةننتظم بها ى سلکھم ونفوز بها سوابق انعم وسوابغ 
امنن,ونشهد ان مزا عبر ورسوله خير من وق الحكمة وافضل من تح ممعالى ا حلق الحسن_ صل الله ليه وسم 
. وعلى | له وصحبه لین بذلوا انفسھم ف نقل اقواله وفعاله واحواله لین من من غوائل الفتن۔ صلواةوعلاماً 
دائمين متلاز مين مادام احکانھم عل الاقةق الشرو العلن 
هرک یکول کول تیا زی ان وفیت م وار ہے ج بک ا لکو ہیا ن ہکیاجاے ا دق تک انی طرف 
شون ور غیت یدنله اد دون نای ر غبت کے اکا حول تقر یام ان ے۔ ن مرب فک بر سی یں 
ہیں ج نکامتیاب پہاں کن نہیں, عضو نی تاہم مالاید با للا یتر ك کلذ کے انتا سے شور شو چیا نکیا 
تا اک طا ت نکوشوق پیر امواور لت وکو 1 کب 


علم 7" 
۱ اروف سو سد سید عہ جت 
1- رت این عور بش روک سے : 
ال کیو :رل الاس ی تز لاعفا قرشم عَليصَلاۃ'(روادالٹرمنی) 

علامہ ای مان تال حر ٹکو غ لکر نے کے بعد فرماۓ ہی کہ امت میں حضور لزم ے قر یب تر اور 
شفاعت کت دولوگ ہو کے ج رٹ عت اور ها 2 ہیں کی وک لگ رات ود نآپ شی سب سے زیادہ 
ژرور یرس یں۔اوران )کو ماش رذ ف ابیت ما مد چا یم کشا خوب کہا: 

أصحاب ا حدیثٹ‌ھم هل ای ران "ل یصحبو انفسه نف سه‌صحیو| 
2۔ دو رک حدری ث کی این مسحود اپ سے موی سے : 
قال مول اللہ صلی الله لیو و : ' قر اللہ مرا یت مق کہا “مع کر ملعا من تایح زرواہ 
ألترزمذیوابن‌ماجه) 
نالرت لاف بات ہی نکر اس ر کا مصراتی 2 کرام ڈی کہ جو صرب فکیہا تہ مار ست رھت 
ہیں خواوظدر ال کے اضتیار سے مو ا ی کے افتبار سے :اللہ تیا یکی طرف سے ان کے چ ےپ ایک خاک رو اور نور 
ہوجاہے۔ چیک خضرت شاد وی اش صا حب تناکا فا یکره مال کلف میس عرش سے نو رکا ایک زیر کی 
ہوئی نظ رآ ج صرف رشن کرام تک یی ے۔(سبحان له یلاس خر ٹیڈ اڈ کان نے اس مد مش کےا کت 
زل اشعا رکے: 

۰ اھل الحدیتعصابةالحق ‏ فازوابدعوسیںا لق 


چا دس سنا رر »3 جلداوں 2 
فوجوههم زهر‌منضرک لالرها کتأئق‌البرق 
فیالیتیمعهم‌فیدیکون ماادی‌کومن‌السبق 
3- تی رک تد ی رت این عا لپت مر دی سے : ۱ 
تال بر لاشو صل الله عَليوِوملَم لدعم خلقانی اتا تن خلقاۇڭ یا :شول انيتال : یحاری 
یلو اس ( رواد الطبر ایی الأوسط) . ۱ 
شرع بغار ی علا تس طرف 01414 مق مہ یش فرماتے ہی ںکہ ہے وول وگ ہیں جو عادو کک احادری توب ہیں 
اور ہے رات بو ت اکم ا کا دےر سے ہیں۔ 
4 ہج مھت 
شرل انلو لی الله عو وم بل ها الوم ین كل حل غزوله . يفون عنه ريف القالين . واْیحال 
۱۹ ول ال" (رواالبيهقین الدخل) 
یر حدریث سنا ارچ هکزو ےکک ا کے بہت سے متا عکی نامه تال حجت ول ار سم یسل ه 
کاک ئ یک یذ اس حدریت میس تین شش یں فر ا(۱ )عر پمیشہ فو هل (۳)صریث کے الین 
او ہو گے (۳ )انی امت میس لپن لوک رز مانے یس دیع ٹکیا تج اشتتخال رکیل کے _ 
کی کک ت یڈ فر ادال شام کے باب یں معاوی نس روات ¢ ê‏ 
مول اللو صَل الیو وسل: [وقسن هل ملاع یکی لآ تال خابقة SD‏ 
نے E‏ یه ۱ 
لام ہار کی ڈنیا سے ت علی بین الد ہنی اکال ے ل فرباتے ہی ںکہ اس حدیت سے مج نک ر۱ مردہیں۔ 
الام ر ان رما ے ہیں نہ ال سے اگرائل صرت م راون ہو ں وکون ہو سس 


علم الحدیث کی تعریف واقسام: اسطلاعات عر فک روت میں : 

(1 عم حدیشد دای : ۰ کی مک ری فی ےک 

. هو علم یجث فیه عن اقوال النبی صلی الله عليه وسلم و افعاله احو اله وصفائه ا لخلقية_وموضوعه اتر اله وافعاله واحواله 
وصفاته الخلقية_وقیل ذات النبی صلی اللہ علیه وسلم من عیث انه النتی_وغرضه الشیانه عن اخطاء ف نقل ما ضيف 
اليه صل الله عليه ومَلم ومعرفة كيفيةالاتتلاءبه- 

( دوم م حدیث درا دیدراب 1۳ رف رد کہ 

هو یلم زوقو آزین يعرف به احوال الشند والمتن وقیل ہُو علم باحث عن المعنی امفهرم من الفاظ اس ما ادمنها 
مبنیعل ترا الشريعة وضوابط العربية ومطابقًا لاحوال الى صلی أُعلیه وسلم- ۱ 
وموضوعه: الشندو امتن. ۱ ِ 


چا سے ری چا رون ال 
وغرضه: معرفةالمقبولوالمررودوالتشييز بين الصحیح والسقیم۔ _ 

جح حرا ت یہاں یس ری ایک اوز م وکا لے ہیں سکواصول حدریت کے ام سے موسوم 7 ۳ ترش یں 

٠‏ کرت ہیں :كولم بیحث‌فیه‌عن کیفیةاتصال الاحادیٹ برسول الد صل اللہ علية وسلم من حیث احوال,وایه ضبّا 
وعد ال ومن کیفیةاتصال السنں و انقطاعه 
حدیث, خبروآثراور سنت میں فوق: کرش نک ز بان پر چند الفا رکز ت ے تم ہوتے ہیں یہا 
ا نکی تر کر دیا مناسب معلوم ہوجاے اک طل کو اصطلاح کت ل بولت +و(١)ایصددیث:‏ ا سک تحرف 
وت رگ ذرگئی۔ (۲)الظجز:حافط این تال شر نو میں ر تطراز ہی ںکہ مہ شن کے نزدیک فر مرا ف سے ٠‏ 
هریس کاازر ل رات نے مرت وخ ر کے در میان تا قرارد یا کہ صرت فا حضو رل کےا قوال وافوال 
کیرات اور خر دوسرول کے اقوال واقمال ا کے ساتھ خاک ہے۔ مہ ال راا کا نم ہب اور فقہاءماوراء انہر 3 
ردي حریث ال سے حضو رمم کے ساتھ اور عام ے حضو رط مرمع اقوال وال اور دورول 2 ال 
واثعا لیکو لیا ووتول یں موم وخصوص ملق کی نبت ہوگی۔ (۳) الا :اک رات ے ادیک ہے مرارف ے 
رٹ اور رکااور اک اطلا کے ین ناريا ماو ماب الخاد شر معان ار مشکل الاخا هکم بو انام رال اور 
بش رات رتیت کہ ریت و رکااطلاقی حضو ر د ِا کے اقوال وافعال ہوا ے اور جو سی ب ہکرام یر موق وق مو 
سے ا کا کہا جاتاہے۔ علامہ نو وک لقن ا سکوفقہاء تراسا نکی طرف مضو بکیا ...ورف حرا کم 
ہی یک ار سی پہ وتات ون بعد ب مکی مرویا تک کیا جاتاے۔ سب تے ان ول بسک حدیث مر فو کی ساتھ خاش 
سے اور خر حضور میم اور دوسروں کے اقوال وافعا لکو عام ہے او رکش رکا طلا ای ادن کی مر دیات پر ہوتاسے اور 
ایت کے اتپا سے ے درن ما 271 ےپ اطلان :وناب( ۳)العسفضة : عام اصطلاح کے اختبار سے افظ مس مطل 

٠‏ نے ے حضو رر ی حدیث مرادہوٹی سے۔خواہ ا اگ کسی میا کے ساتحھ مقید ہوک رآ ے قوس وقت ای 
صحال یکی شنت مراد ہو ہے تب تة عمر وه تین بک پٹ گر عام استعال یہ ےکہ کد بی کا اکر استمال قول يړ 
موتا سے اور سز کا اک استمال حل »رت -(۵)النصفت: الظریق الموصلةالی اتن ای جال الذدیث ومواتض 
()المقن:ماينعق اليەالعددم افاظ ا مريت ادژقال اظ اديت الق تقر علبھا امعان 


51 


حدیث کی وجه تسمیہ: علا سیو شی تفر 2 ہیں کہ حضو رتو سو کے اقوال وف لآ آہتآ ہت فْيَانْهبًا 
نھد زیر دسرب بنا یآ نکو میٹ کے نام سے موسو کی اور اف ابع تج رپ اتکی تب تر ریب کی وج 
بان فرماتے بی ںک ق رآآن تہ میم ہے۔۔اس کے مقاب س تضور لق کے اقوال وافحال سب عادت یں بنا بر ںا نک حریث 
اجب للم ِ تھے "مہ" بات رات یں بت یرگن 


9 22 ات 


وید ود اه 


چا رس سڈ ےر یں چا بدال 2 
کر ےآ پ ین اکر یک ال پرلیت و و روالد تال کے رو کا تفیل ما حمة رك رٹ اور 
ظاہر بات کر حضو رر تی کو ریز نر کے ال ال تک یل ہے ال انوا لہ عریث 
کماجاتاے۔ 


خاملین حدیث کی اقسام : ان صر تک پاپ یل ہیں(ا) مسف :اور ہے وہ لے جو صرف حدریث 
گار وی تکرتاے عم از اس وعلم حدریث یل دسر س ولیاقت ہو ینہ ہو۔اسکادرج سب ے ادلی ے۔(۲)محدث :گی 
7 کہ جور یت عد کی تھے سا تم مان حدری کی مان واو رای میں وگ کرجا ہو اوراحوا لوا بھی عام 
و اور شش فقہاءنے ا کی تع یف لول کاس کم مھا حدریث کے سا سند حریث کک یا ہواور ع رات وا ے وف ہو 
اور بش متاخ ن ےکہاکہ حر ث برای 2 اک کہا جاتاے جو رولت ودد امت کے اختبار ے اکادہٹ یسا تج اشتفال رکتا 
×۔(۳)ھافظ الحدیت: کی تحرف ے کہ # سکوایک لاکاحاریث سر تن ید م(۳) حجة الحدیث: ده 
نے تو الاب جنار یا ی :-(۵) حاکم الحدیث :وو ےک کی مر یں 
اکل پہو یں دوسب الکو شرو پار مور ٠‏ 


منکرین الحدیث: اتد اء اعلام دے آ تک دین اعلام یر دا شی اور مار تی حل اس قدر ملس اود وت ۱ 
رت ہی ںکہ اکر ہن تخل وراک اف ہوحاذ ا کابتاء ایک وو صر یکک بھی مکل تی یمن ن را تدای اس رین ابد یکی 
قفا تکاوعد دا پ کلام پاک شیل سر الجر 9 کم چکا بے ادد ہے اغلان فر ماد الہ : 

اک خن تَولمَا اي کرو 177 ن نےآپ رک ج ہے مت اور مآ پل ل کے تیان ہیں 
اس نے جار سی خان اس با کارا نا ہیں کہ قیام ت کک اسلا مک رال رے گی اہ زو تن رآئ ر ھیو ںکا 
ون تھی کی رک کا دور نار کے دا فی فتوں میس سے ایک فد ار ری اک ڑا لای ماک میس 
ایک اماب پی دام دیا جو ص راح ا نيد صرف حدری کیت یل اس کے وجود یکاک کر اسب اور اپنے جام ت 
ر سال اود طقف لش رپچ رکے ری ساد دور عوا مکو کبس ۱ 
فقنہ انکار حدیث قدیم ہے: کن ےنت بھی جدید نہیں یک زاد قد سے ي چلاآر باےء اگ چ نو یت 
رارق کرو وز ق ھا ی ا ےی مر تن مرک نے سرانایاود دش کے خلاف یی چو ٹیکازور لگا یاد ہن 
کے تلف پر ہیں کے ت احادیت کے وتو نارکا اورک نے اس دور جدید کے عالات اور ظروف بی پش 
اعادی وناقال ل قراردیااود ید وک کاک ر سول الد یلم نے اپنے ذ مات کے لو EE EEG‏ 
کے تھے دک رز سروس اور یف یش سل 
سب سے پلے ار !اد هرن کیاکی :نل ےک انہوں نے یم( لو نافیل تقو لکنا )ک کفرقراردیاا ور :زآجھ تام 
سی کرام را تلور ظاہ زس ےک فارگ رولیت بول نیس اس لے رٹ ے اکا رکیا۔ 
دسر فپ شیع نے اکا مرم کا ۳ و نکی میعت قجو لکرنے پر تلام سا رج لہ حر 


هن دی .و ہے 
لو یکافر وف قراردیا۔ ان کے بحر ڑل نے کار یور علاءاعلام تصوّا ٹل بین ان فرش بط کات 
کر مقابل کیاد مان جرب وکا یل بھی اور میران تق یر و جر ھی ءان میس رنہ رست رت ایام ا ثم ابو یر 
لئاق نام نی ۵ا کا ام نائی ہے چنا نہ لن کے خالات تکوس کہ خوارخ سے مناظرہ سک ےکوفہ سے بر 
یں + مرج تشریف لے گے تھے اور ہرد فا نک گلست فا دک اوران فقو لکی وج سے بر ددم الاہوا کہا جانا 
.امام اک تن کے پارے شی وی تقصیل کی لو رید مور مان فتوں ے پاک تااور وہ ی سل 
رپا کے سے الب تردید کر ولو یس رور کے الم نحل ے مقابل کیا اعام ر تون کیان 
پت نہیں چا خلق قرآن کے مت ہکی وجہ سے خلیفہمامون, مت وکل اور مم باش کے دور مس ا کو بہت لیف د یکی 
چا سن ر ال کور ےک نات ۴۸ ہین ا نک تاياور ہر رو زکوڑے کے چا ے۔ کی 
کہ ایک دا ات زور سے مار اگ کہ بد نک گوشت ره یز کی اس بارے میس ام شا 095095 کا ایک جیب خواب 
بھی سے ج ایق ج یں آآے گا۔ دام شاق انت نے ان فرت باطر سے مقاللہ کار اس لے مل علا 
سید ی 9لا لان ای ےکنا ب ی کا نا مفتاح ابد ف الاحتجاج لت وا کاب کے صفہ تن سم کے 
ای لکہ سب سے پیب اکا دیس کر کے دانے خوار ہیں او ران سے متا بل کر نے وا لها ارہ تیا 
علا کرام ےا الاد مت راب الس رس بت کی الیل یں چنا ناما ر E‏ کاب الست رای 
ان کے ٹج عبراش نے کی ای کناب کی اور اام شر فی اکن نے ای دکراب الاجا اور الرسالہ ھا امام 
بنا کی تاا ےن الا تام اک رالد بر نخان هکتا باس کم ٹاو نے خر معان 
ات و مکل !رای مقر کی این تی نے ای لاب ی حافت ابا نے بات الجة عل تا رک المحججہ اک 
فلس هکیت ممیت یس تناک کل .او رخا دور تن ط رانا زاگ ھھا۔ اب جمارے دورش 
اس الا ری و عیت بے جدآگانہ سے اور نکیا گوکی نے کہ اش وچتراحادی ٹک بمو ا نکهاوتزل تب مقولو کا ے مج نکی 
تال و خر ا قرو او کے علاء نے اپنے اپنے ہب کے اشبا کیل کر کے رسا لطاب طف مکی طرف وب 00 
ور یقت موجودوحد شی ج وکا ہوں میں ہیں وہ ضور لگ مکی مر میں ہیں ہیں امز اہ قال نت و کل ول 


منکرین حدیث کی دلیل: لوگ انا لاه اظ رکیل ِ یہد یل شی یکرت ہی لک پر رسالت اور ہد ۱ 
سحابہ یش عدیمث تات نیس مو 17 اک الا تو وہ ظا سک 7 نا یں جا تے۔ معدودے چٹ رج جات تے وہ 
رآ نکی مک یکمابت میس مصروف تتے۔ مزید رآ بکرم ولک رن ےکابت صدریث لن فرمادیاتھا چنا نی مسل م شریف ٹل 
عفر مع غر کیک یث ے :کال مخول الو صل الہ ينعي وتن کنب کی که ان 


نیزاسی "حون کل ایک حدیث حضرت اور یر وپ سے مرول سے جم سکو خطیب بغراو نے تقیید لعل بیان 
کیا ے۔ اک ما نع تک بنا پر صحا کرام بعد ملک لت تھ بللہ صرف یا دک سے سے ادراک پر حر رارقا ای 


جو وو سم سج ون و 
0 :8ل و 
مر یں لو کسے یاو کے سک ہیں او رکسے فوت ر وک ہیں اور ایک جز سوال کک سید در سین ر ہکر ہو بہو فو کے رہ 
کے ہق مکل کل مال ے۔ 

حجیت حدیث: آب‌م مین کے جوا بات د سے اد متسه سے پل کہ حضو ر سم و سیا کرام سک زان ی 
ہن سی عد نشی نک یں اود ان یکات کے جواب دس پیل رآ کم سے یت میت ذرار ون ؤا کے 
ہیں۔ اریہ لوگ قرآن کک ہے ای لو حدریث اضرا چاره نہیں ہہوگااورا 722 ران سے ا راکو کلام 
د رآ نکر می بے شا رآ بات یں تن سے کیت مرت خابت ہوثی ہے ہم یہاں بطو ر مون چنآ یات شی لکرتے ہیں 

و اتک الول ل لو وما تک عَنه قان وا( رر ةا ەر 7) 

جو )کہ ر حول ال چم دسا کو ر تیان لواور ات کر اک سے با بد چاے دہ 
اموال ر نیا گی کے اعتارے »و یادن کے معاملہ ٹیل 7و یا يا دہرزیت کے اظتبارمے ہوجھ 3 مم دی ایر تن ارچ 
آیت ناخ مت کے پارے من ازل بو کر مرک نے لہ موم الغا کا انار موتا موررجا کا 
اتر کوچ مايا ۹ 

2- قلان کن تبون الل اتون مبب ك تال عمراں 31) 

ا ںآیت ٹیل یہ فا گی اک اٹہ توا ے نبت تاخمکرنا اہو تو حضو ر مک سے بت تا مک ناچا چاو ےآ پ مگ 
ات گی اور تیا حدریث ول سک علاوہ کن نیں۔ ۱ 
3- آطیکوا اله و آطتکوا ال سول وأو ی لامر منک (تناه6) 

یہ آیت بتاری ےکہ الد تدا یکی اطاعت تک ضروریی ے رسول ار ب5 ×× 

پ عاذ اہین تج تن ا سآیت کے ذیل لاس کر یہاں آطی خو اک وکر ر لایا اک سے یہ بتانامقحمد ےکہ 
ال تیف اور ر سول یك کی ایت تل "لها رک اطاعت ق ران سے بل اور ر سول اطاعت عدیث 
02 اور تسس می طخو رل لا اسل ےک اولوال مرک اطاعت تفل ہیں بک یدنله ر ئ ے۔ 
4 ال لک الل کر تین للا مائْژل لیم ور ۳ عم تلو ب (سومةالنحل44) 

یہاں نکر برض نپا نک اکاک ق رآ نکر دول کے سا عت دار ورپ۰ ی کر توق رآ نک ین 
سے اور مورک بیان یناور دونوں می مفای مت ہو ہے۔ ال سے پت چلاکہ قآ ادا ے اور حدبیث اور -اب 
یں دما ےک حضور لپ کے بان فرمایا؟ زر قرآن نے وا لصَ و3 نوا الو فربایاہنر ا سکی 
صورت تالک ناک تا کر ہے ؟اور وت ل کت دبنی ہے۔ تو حضور ام نے آپنے قول ول سے 
یندید حدیث ے ور قات تک کک یکو پت نہ چاناکہ اس ار غد اون د کی کس طرںح کلک نا 

الشارقوالتارقَة قافطعة ايتا 8الص38) ۱ 


چا رر ڈرو ےہ چا جددل اګ 
رورت مال سروق هک مق رار اور ات کا دک مق ار بیان تہ فرماتے وا لآبیت پم لک نا حال تما هو یا حدریث کے 
لاور کر ان تس توب ر(العیاذ ہاش ) ترآ نک ول ىی بیکار ہو جات 
5- رکا اف فيه واه لاهن هم یل ليم ايك( بد2 ` 

6- کار جاور مس ھت ۱[ 
7- لقن می الله ی الو میا دبع فيه روان آتفیهم ینلوا عَلَْهۂ أ ت4( سر رة آلعمران164) 
8- هو ال بعش 5 کف امین زشولا لا من تم یلوا عم اییہ(..,:ی:<) 
ان چا ول سس الثر تیال نے ضور لف چار زمہ داریاں علک رل اور بی چار وی تکافرش شمه( اوت ن 
انار نکر کي ارو یاک یدامج هم معا کر ارام مرت وی 
یذ لے ق رآ ن کے اکام بیا نکر 
چنانچ امام شا تال فا 2 ہی کر کت سے مرا سنت وب سکلت این اخ ران نے 
کک یکہا۔اور ہے کور یقت اللہ تاک ط را فتع_زرآن اکر 2 میں ار شمادے : ۱ 


مایق عن الهو ىفن هو وى يۇ ى0( دی د-+) 
ابا عدیث کت ن ہو پ کدی ڈمہدا رک دیا بر 


ل فَقۂ 


| 9 من یطع السو ل فَقَل اطا ع اه (سردانا:50» 
ہلا ی تک قرعم ید 
بوک ۱ 
0- فلا ورك ینوی عق بۇك وم جر ھم رل دوا ق تلهم ڪر انا یت 
یلوا تسا (سردلناء65) ۲ 
مت ار ےک عضو رن مکی میت اور مقام صرف یہ لک ہت اف اور مطارع ی 
حیثیت ے اور مو کال کی حیشیت ہے۔ادر تضود ا کے ام 1 تل سے اضر مومن بی نہیں ہو سار 
1 5-1 ما الوم ولا مدا قى ورس و لد امه آن کون هم یمن آمر هم (سرتلنحراب36) 
٠‏ اس میں بی ماکیر کر حور ج بکوئی فیمل و کم صاددفمادیی فا میں کی فرد وش کوچوں وچرا لک زیر 
یراز آپ دز حم وادکا م نامک رٹ ے۔ ۱ 
2۔ ھا ال منوا وا استَجیبُو الو وَلِلشلِ(س:٥س٥)‏ . 
ہا پر اللہ تال 1 رر سول الا مت کی سامت سار کی انت پر ضر ور کی آرارری اد اش یس روما زتر یز هب 
. وگ ءاوراسخابت عرس کی تل مکی صورت میں موی ر 
3- کا معا ذُعَآء الو سول بتکم کلعاء بعکم تس سدع 


کل درس متکر: لے لر_ 16 جح جلداول 2 
و رے کے امرے هقف چپ تیم دوس و ںک تلع ےگ دی درک 
رل نہیں 
4- عازن باون عَن أَثر أن سیم ونته آو ویب عَلَا له (مه‌هسد») 
یہاں حضو ر ٹپ کی خالفت ے ِِ حافظ امن تبیہ ای لاب الشارم امسلول فی شاتم الرسول میں امام ام 
الا کا تول ق کر نے ہیں دوفریاۓ ہیں کہم نے ترآ نک ریم می غو کیا تق کے یش 7۴۳ لت لی ہیں جن میس 
سول الد پا یل مکی اطع تکا یلید اوران ے معلوم ہوتاڑے کہ حضو ر مکی اتا پور کی امت پر ض رو رک ېا ۶ 
کے بح ایام ا ت20 ہآیت حت کے تراغ بجر را )کے کے لین جک اک راوگ ضر ر مز[ اتبا 

تر کک دی او رآ پ لے اکا م کی الف کر وان کے اثر فک پیر اموک اور رس دک وو لن ی سے اورپ 
باستنا ہا هگا ی ئ کک کف رک یت پو کانریشز ے اور مکی عذاب الیم ہے توانر عر ثکا اتال تہ زیخ کی 
ے او رانا مکرہے۔ 

15 - اتل فر س سول الله شوه کسته(ستورب21) 

ہپ ذات 1 یکو نمو کا ی قرارد اگیا۔ اور ون صرف چ و رکفت ول کال مون حرہث کے ذد لے موگا۔ 
6- ومَا ازسَلکأمن وس الا لیا ع بان ال (سررتالنآیهه) 
e‏ جاے اور اطاعحت ال کے تول دخ لی جع ے 
موی اور قول وت یکو عری ثکہاجاتاے۔ 

7۔ پچ را کی رواپ ےکا ب کا نزول ضر ور ی نیل اس کے بہت سے انم کب دک بک وی ی کے 
زر یج ام تس سکاو ریا کے اتپا ر سے ریت بر لا ریک بات مت نہ ہو نوا لیے نی یھنا ے معن ہوا 
اورت رآ نکر تن غیت ےک حور يتنس علاه بہت کی و تید 

ا وما جلا بل ال گنت رده 

.اس یش یہ قوش ق کک دق ج سک طر فآ پ لا از تے دادس ےم سے ہے الاک ترآ نک مکی 
مت ای خی عم قد 
٣‏ ما قط من لته او تر موقا یل صُوْلِقَا بان الو( مۃالٹر5) 

طا نے رسک درخ تکا ۓ کے بعد من نقین نے اغترا کیا ذاش تال نے فرمایاکہ ج پگ وام رک اجازت دم 
کر آ نکی مکی کی چ میس اس کا زر ہیں توض رور وی تق سے ہوک 

8- ییا آرنن! نوا ا مُا ُن يي اور شوله مرت 
7 7ل ات قرع اسب 

آ پک وخ مکردیناجایۓے۔ 


8] و کڈ ہے ماھت جلدادں‎ E 
۱ 6٥ إا س لا ال کر واه لقن( ,1لم‎ -9 

یہاں اللہ تال نے ٦7‏ آن گرم کی ناشت کی ذم دار یکا وکر قرا تو ظاہر بات ے کہ ار صرف الفاظ یفالت اور ال 
کے معانی کفوط نہ ہو بلہ جو جیا چاے مع بیا نکرے قافن ی تفاظت یں موی کی وک فان ما کے اع ہیں »اور خر 
معان الفاط کار ہیں فو برق رآ نک نم ول بی بیکار ہوگا(ال یا اش ) تو معلوم واک قرآن الفاظ ومعالی کنو بل اور حریرث 
ہی معان رآ ے۔ و اکر حریث بت تہ ہو ا لک حفاظت کااعلان بار ہے۔ ران تنم آیات قآ سے دا لاک 
میٹ کے موا رآ کر مک لاه مل کنا حالس می وج کم مارک امت نے مین حیت الاش کے بھی بھی 
ری ے اا لکياور ترآ نک ی ط رر حدری کو یت ی مکی اور ورن ٹیل شا کی چنا نام ابو یز تالک 
ول فرماتے ہی یک ”ولا لتق فھم احں متا الق رآن“۔.(مہزاںشعرانص25) : 

ام شا فی سا فر کے ہیں : 

وسٹةہسول اللەصلىی مهن سلم مبينةعن ار عل خاضه وقائہ 

رام رال تانق مستصفٰ می فرمات ہی ںکہ : ۱ 

- وقول سول ايله صلى اللهعليه وسلیر حجة لدلالتة امعجزة على صدقه والڈمامر نا باتباعه لاه لاینطق عن اطویٰ ان و إلا 
و ټوسی_ لکن بعضۂیعلی فیس کاب رعضهلایعیوهرالستق ۱ 
منکرین حدیث کے دلائل کا جواب : کک بات ی کر یبال میا کا من جاح ےار ی 
واقعات کے اختباد سے صراصر بے بنیاد اک طرں ی ہکہناکہ کا ہکرام ریت ہیں کے سے اور غہر رسال تابن 

اف ان ال غالی تھا یقلت ہے لان وی کیل اکر لیم پچ یک لی نکر ہر الت میس ضرف حنظاپر 
مار تاب بھی ہم ین کے سا کل ورپ کہ کے ہی یک مس پاک بل وکاست وی سر یں جو سور 
2 1 اس کی شض کی لت کا مو اورا پر یہ وتم وکا نکراک ۳۱ ن رتکد اتا ہر شی ںکے 
وروک ہیں۔ انال ی مور ی7 رت ے اورا ےی اکن وڑ؟ ہن وا فظہ پر جو خوش تفا و قل راک ےک یک گے 
ال تو مکی ذ بات اور اف رکو تیا لک ناہے جن کالہ تال جیا کت کے لے چنا ہے جن کے بارے یں ابڑھم 
قرب راعمقهم ےل اکہاکیا۔ پچ را تال ےجب ایو کی تفا کا وعد دفر یاود خا الا ٹیا کے اک وعد ہ کے تقو 
نمی ری ات تکوزمہ دار بیقر ور پر الد تخل ےا کو ور کنات زیادہ قوت عافظ دگی اور ا کو 
ال ذ مہ دارکیکاا ساس کی تھا۔ ای لئ انجول نے نہ صرف دی نکی بل اه کیااک ایک لو رک تک ایی حا کی 
کل ترا رهبا هضور کا بال مہ رک وض کا پا خولن» پم کہ شا بک کو ضا ہونے نہ وی 9 
جب امک زی تفاظت سے رک کے ہیں جن پ ری نکا داد کیل فور دواحادیث جنر دبک راد ہے اور اپ دن ودنا 
1 یہو وک سے کیسے یادن هرس ؟ یا در کے فرام وش کرو اور فوت رکھت ہے َل 7 اد ی7 تی ساب 
کرام وتان عظام کے عافظہ کے واقعا تکتب صریث وطبقات ٹیل بہت ہیں اور جب حخرت علامہ انور شا کشیيری 


درس دیسرن" > ہلا لے 
تل اکا کے اف کے بارے یس ہو ر ےکہ ایک پار را دهد ههد رسال تک ار چا اور ال راد رگ 
سن سے لیلد 11 اد تقد ( بیان اش ماب متا کیا حال م وکا داي ان راز ھکر لوب پر لان 00 
یقت وا نج موک کہ اکال ده سال کرابت عدف سے فا وتاب کی جم 7,-- 0 0 
ہکارے سا موجود ہے اور سکاب کرام نے اق پاد تم تک کنیا یا ے۔ یہ دی انف ای قد سی ہیں اور اعمال واخلاق مقر سر 


ا 


یں جک کا سے بیان خر مایا اک لک کے دکھاۓ ہیں اس می کی شس مکی فا بیان تخ رو رل ہوا کو ضور 
لم کے زمانہ یس م ایک صالی عر کا زنر و تھا۔ 


حدیث نہی کتابت کے جوابات .اب تال کک رابت کال مرش 
ھی کی تض سی سے یط یکاہ تک صر ثکاجو اب دینامناسب خیال کیا اتا سے سوا کے بہت سے جوابات د گے 

پہلا جواب : ن مر شین نے ا کو مو قوف باس جن بی امام ہنا یکره نکنام کته 

زاس مقابلہ یش دوس کی حدریث اجاز کوج مر فوع ے ت بب دگی۔ چناغجہ اام ندوی تون کےا تقریب ص287 

بس اور حافظط این ت یئل متوئی ۸۵ہ فتح الباری ص118 1ء یں اور علامہ سید شی تلالع نے ریب 

الراوئیء 7 28ں اس جوا بک طرف اشارهفراید 

دوسرا جواب ی 2 یو اؤزغار نی طورے 7 ل کر وہ ابت اء نز ول ق رآ نکازمانہ تھا اور اتچازت رآ ن١‏ بھی 

ران ون نس ہواتھااو رم ار وکام سول میں فرت داز کی ایر ت پی را س ہو ۳-۳ 

ی بھی جا توی اخال تراک قرآن د صرت بی ایا ی ہو جا اور ق رآ نکاوی ح ہو ج وکتب سا ہکا ہوا۔ پھر 

جب ق رآ نکر اکن حط نازل م کی اور لول بیس ق رآ یکر ےکا از بیان راغ ہوگیااوردونوں یں فر کر ےکی نیرت 

یداج ون ین تک عم مضویغ وکیا او کاب تک اماز ت لکن چالک ۸۵ عا وتررمباراوی.ص 

کل e‏ ای 

تیسرا جواب یه ہے: ۱ 

ا مر ارالنڈیعن کتابة اھ اوسر اح (فتحلباری 185ج1 تدریب‌الراری 4287 

تی ری کین ہے ماع کا مقصمد ایک یز میں قرآن وصدیمث ایک ات سنا ے اک دونوں غلا کول - 

چوتها جواب : ی یا شی اشنا کے لے 9 ج کا اظ تال اعختاد قاس ےکہ ا کو اک رک ےکی اجازت وکا 
اتی قوب اعد ہو حاتاحف کی طرف وج تیاور از تکنامت ان رات کے ےی ج نکاما کور تی ول 

چا کااندیشہ تما اور ال عرب کا عافظ موتا وی تھا اس لٹ کی حدریت کے انا یل عموم اخقیا ر کیاکی _(فتح الفیٹ . 

ص398 :رع الفیەص117ج2) 

پانچواں جواب یہ هک مت حدریث عام ی لین اس سے ان حع رار تک وم حش یکرو گی قاجا ی طرعککھنا 
راجا کے او رکتابت میں نی مک سورع ہوتی شی ای ینان گی نا پر ا کوک کی اماز ت دید یگئی۔ تس 


حطر ت پر اللہ ن کروی رتاریل ختلف اللدیٹ.ص365) 


چا رر سر سره جدال ڑا 
جهتا جواب : جوناق کے خیال تلا هک رول ا وا سنوی ارب سورت میں ہر یش عم مت 
رای تفای خی طوریر صرف ی دک نے کے کته کی ات دک ے پاکسی شی مرت نے حم کاس ےکی 
اہازت ری ی ج یتفیل ساتے بیا نکی جا ۓگی۔ 

رت ہر یتک را سے گرای: 

ال مقام ی ما رن امه سد ہوری تا ۂڈلڈانے ایک جیب بات فرمائی سے هب هک اکر ر سول اللہ سے زمانہ 
س آپے اتآ پک اجات سے اماو فک بت ال کل پر ہو ال یت ترآ نکر مک یکمابت بو ی نے ہر یک 
حدری ث ترآ نگزی مکی طرر ی ہو بال رال صورت می ایکا هن مل امت پر پیٹ مشکل ہو پا ۔اور 9 
روس یہ سو سیت سر طس تہ 


امت پر بہت انا سک 


نبی کریم نکم عید مبارک میں حدیث کی کتابت: میہاںکک ‏ ن ب یکات مث کے تلف 
را سے جوا بات د ہے گے یں اب دور وا یات ٹک ہا ہیں جن سے ابت »وتاب PO NTE‏ 
ا چا ین شش نس مول کی جیسے قرآ نکرم مک یکنابت نت وین مو اتک کول رو رای یں ٠‏ 
گذزاجس می ںکمابت مرت ہیں مول تی ی بکہ صاب نے سے پت چا ےک موجود »کول و بل وتیل 
انز یادهصد یلا غاد طورپ 77 و و ما مک ستقصاء یبال من نہیں تی بطو ر ونپ ہیں اکیاجاتاے۔ 

1 - عافط ورالد نشی تاللا مع الزوائں یس تیلست وای تکرتے ہیں : 

قال کان عندہول یرالیه وسلم ناس من صحابه وان مھ وان امغر هم فقال ای صلی الأمعليهوسلم من کلب عل 
متعم افلیتیوا مقعدہ من ام فلا خرج القوم قلت کیف تعد ٹون عن سول اه صلی عليه سم وقد“ وعم ما قال وانتم 
رن قان بشول اللدصلی له عليه وسر فضحکواوقالراااین اخیناان کل ما مناه مته عندذای کاب رواہ 
الطبران) ۱ ۱ 

ال رولیت سے ہے با ٹل شات موک ری وس ی 2 TT‏ 7 
عبرال رک یکن کے زب ایک دور ایا یگذراے چم خضرت ا مکی حد یو ںکو صحاب کرام بای لر_ت 
سے نز کہا نگ اون می کوئی شمیت ی ترجه ےکک کے ۔کل ما مانهب 
ممدلںے۔ ا 

2۔ حضرت عمبد ارد بن روہ الما لیف :مداخ ءابوداودش ریف شی حعررت کب راش مر ا 7 

کال دب شمه ین سول لول اللہ علیو وس رین جفکه کته کریش وتالا اب بل شیم 
کشحغه و شرل لول لیوو رین کب وال قمع کت ڪن الاب کرت 5 لو شول ال 
صل یلبم دوک بت اي نمی وروند ن 


کلاس ےم و ہو ےہ چا بدا ھا 

٠‏ ال صر نات بعد ے حضو ر لے ہ رہ و کی ہا یں نہوں نار ور یال تک دک ان کے پاک عدیث 
کا ایک ڑا وع تیارب وکیا تھا جس کا نام ا ہوں نے ارگ یش رکم تفای صادقی سک کلام کے وکا نام صادقہ تی ہوتا 
)ای شاک مد یں ال جوا ول بلاواسطہ براوراست حضو رکه سی میں نان دوخودفرات ہیں 7 


نو السَارقَة ٤‏ . زا ماع ین ت مول الو ضل الله تیه ول یس بيني وتنن نا حل (الحدث الفاصل. ص 2: جال 
4 طبقات ابن‌سعد. ص 49,جلد 7) 


تایب بت ی هک کش سس 
لئ اہ یکی تفش تک غر سے ال ماع عز کو صنروق بیس رک و اکر ے کے چنانیہ من دات میں ہے :ہما کان یعفظهای 
صندوقلهٰخشیةعلیھامن الضیاء۔ 
ال صاوقہ شک ود یں سکاب میں ص راحو کل ہے۔علامہ بد دال درن کی کال مرن فرب ال 
فی ا ات الب دوسرے قرائی سے معلوم بوتکم کی و گر رین 
حع رت اادہر یر دی ے ردایت ہے وف مات ہی ںکہ جما عت بل تیاده ریت سی ہو ل ھر یں 
TEST‏ یں سے یگ دادن مره دوف ےکی رک وو هر یں سک رک کر ے تے اور میں کلمت نم( بای 
ص ۰۲۲ ۱) ا سے معلوم وال حضرت الک ب کور بالا صحینہ یش حط رت الوم ےکی عد رل سے یاوه 
مر یں یں اور الوم رمک عد تس جو صرف منر بی بین تخل کے واسٹے سے کی ہیں ا نکی تعداد ٣ے‏ ٣۵ے۔‏ چاچ 
تی ص۱۴۷ مرج اتر ریب ال راوگ ا٭ یل ہے :کان حریث ای ھر ی رق خم ة الات وثلاث مائة وا بعة رسبعون- 
امزااب لازی نو بلک کاک یذ کب رال مرو لئ سکم ےکم چ سات زار د یں ہ گی اب اگردو سر یکول ر ملد 
کی ہو تس بھی حور۰ کے زمانے می کات عرف کے وت کے لے بی ایک صادقہ ی بہت کان ے۔ 
: ان منز رورت و تالوم بے رولیت ہے۔ 


ق ماع کنر جلا من تيب ناد کح هقی وم لاخر بلك :شر اللہ - صل اله ايه وم - 
ےت 


بت طول تقریر فرا جس میں ہل وغی رہ کے اام بیان فراع ایک کن ما جن کا ناوشا عرش کیا 
الي ياشو لا .تقال : اکلبوالاي‌شاو ۱ 

کہ بار سول !ىہ خطبہ جج ےکک کر وین ضور یرم نے ماس فرمایا :ابو شا هت خطبہ کے ہے مان ارو 
4- 2 اا ۵1_۳1 ۔ ٣١‏ اء ایی جحیفةے رواٹ ے: 

فش لعلن: :لوئ نگم كات قال: 3 | كاب الو وهم غود جل ممم وان كَزوالكجيقَة. قال:كلف. 
تما مَذہ ال چیه قال: الَفل ونکاش اير .ليقت ل مسلط افر" 

اس صحیفہکاذکر با ی شر بف میں قرو بل لآیاے۔ 

5 مرن موف : ریت مر بالات نے En‏ 


ew E‏ مم رر وت ےہ چا بل ال 
تما اور ایک رر را کی یئ نجس میں صد قات ر اتر اش ویر کے اکا ےنسا ج2ص2650) 

6- عم کرام لوک تلبت حدریث: من ای آنه . قال :تال ; تغل اللہ صل اللہ عایو و مل :"تیذا للم 
9 (جامع‌پیانالعلم وفضله.ص 29ج1) 

7- کن عبد اون کخرر غي اللہ عنة. قال: تم لخن حول +غرل او صل اه ليو ملح تكب [ذمول شرل 
0 00۷0م 

8- ماروادا ماک ف الست مک عن اقف فاعم رن اميه مر ناریو . قال : عرف ڪن آي 
مززرةپو ریب گر .قلت :یقن ینف يئك . کال : ن کشت رنه ٽي :الکو ب ينري یل 
MN‏ وہ ا 
ححضرت این عم رپپ کی رولیت سے معلوم موتا کے سب ما کرام هی کار تے۔ادرحضرت الد ری وا 
رولیت سے معلوم ہوا ےک وواگرجہ حضو ر لم کے زان میں تب کاس سے لین حضور رن کے بعد خو وس بو تام 
لیا صورت مس مرن مر کا ےکہیاک حضو رد کے زارحا دراد میں ریت ی 


ال لب لاد بات ے۔ 
و تر و کک یت غ ال مل ترا سم رب 
72 رولیت ے: 
عَنْ و الع عریج انه‌قال 27 .ملک منك یا کنیا کال " کب واوللقولاعوج. " 
ران بن درا 


إن ری کر دعر شول روص اه علیو وس وفوعکترث جر تان اریم راز سدامں.ص140 جیا 

0- عن‌آی‌هربرق: 'أن مجلا من ال نصا کان یشهد حدیث ,سول اللہ صل اللہ عليه وسلم فلا بفظه. فیس ال آیا 
هریرة فیحزثه. ثم شك قل حفظه إلى ,سول الله صلی اللہ عليه رسلم .فقال له النبي: " استین على حفظات بیمنك" 
اومابیده ای الط (ترضیح انار ص253ج2) 

1 - کب ,سول اه صلی اللہ عليه وآله وسلم کتابالوائل بن حجرلقومه ني حضر مرت یفرط الکیری ال 
وبعض |نصبةالزكاقوحرالزناوتحرية |لحمروکل مسکرحر ام الاصابة. ص212 جلد1) 2 

2- مااسنده الدیل‌یمنکدیت عله رفو گا ازا کتبتم الحدیث فا کتبوهبسنن ۱ 

3- یکریم بسن ایل مر کو ای موب تیر فمایا وا جس میس فا اور اون کی را ون ببس اکام 
سل سرنسالی.ص250ج2) ۱ ۱ 

4۔ حفر ت این عم نے د ایت ےک ر سول ال نے سر ہت کے مک فان رفن rs‏ 
کاپ عمالل کے پاک کے نہ پیا کے آپ مك کا اتقال مکیاد ہے وشت آ پک لوار کے سات ی رکھا مداتا چناپ 


2 ر ہو >> ھا جلداں‎ fw 
)1 طم سے بعر حر تاب ههام لکیام من هرادا ص 219 جا 2کرمزی: ص99 جلد‎ 

5- طبقات اہن سر 1303ء یش بہت سےکتق با کا کر سے ج نکوآپ نے تب پل ےآ کے وانے وفو دک ھکل ےکر 
دیاتھد ۱ ۱ 
16- ا شا حطرات کی وج ملع تکنابت حدیت کے راو حط رت ابو صعیر کے بیان طرف نعط کر 
ہیں۔ دوفرماتے ہیں : کنالانکتب الاالقر ان و لتشهنهیداملر ص23 

ہے واک الو سید ے ن سے م روکس ےک سا ق رآ کے مھ سے پت نہک اکر گرا نک کیا ہے یا نہوں نے ایا 
روا کر دہ عرییٹ کے مع ہیں کے با ےک کل خی سکیار سول الک خاطب و حری کا مطلب نہ کے اور رده 
و کا کے چ ن کہ علادہ عت یاب کرم م کانا م دپ ذک کی اک نجل نے جر یں 
تح کیان حرا کو ن یکنا تکی مرت ہیں کی کی یکر مل تج ں کی و کر ل کر یں وکو یک ےآ سان کے 
فرشت؟ ب یکرم یم کے جا شار صحاہ تال حرہٹ کے ند بے او رآرج کے تین ج نکی تین باس تریب درن 
ہے تق ردین اور ج نک انان سا زک کے لے نیس کہ انان سوک کے لے ہے اس حدریث کے معن مج کے 

ہر حال کورہ الا حوالہ جات سے مس باب کرد )کہ حریت بر ابش رخو ب یکریم کم اور سحابہ دنہ 
کے زامن یکل یگئی نیب ایک عدکک اراک طورپ رج وی ن بھی بو یالب چند ار کے یش نظ رعکومت 
کی رف سے اور ای ور باضاط تد وی نکاکام متو یکر دی ایک ام یت مک رآ نکر کے حفط وت دی کا 
کم ات ہواتھااسی صورت میں انربیشہ ق کر ل وگ قاط بح کر یں اور نا مناسب جک هیال بید و جاگئیں۔ اس لے غخلفاء 
راش د بین نے اراد هگر نے کے بجر بھی ا سکام کور ن کیا خر خلیفہ راش ر مره بن راز من اس فر کو 
انام یا سک تفیل نقری بآے وای ے اذا خر وا ال کنات حدری کاافکا رکم ناس راس ر فاط اور تاد ت یرٹ 
02.007 کی ٹین و مل ے اور اک بہانے سے موجودوعد یو ںکو قاب ل جت نہ کمن جات بالا سے ججباات ہے۔ 


تدوین الحدیث کی ابتدای:: مگ رین حدریث کے شلات اوران کے جوابات سے تع نظ کرت ہز اب 
اس میات کي مکی تد وی نکی اصل عقیقت وتا جک جا ہے۔ اب راے اسلام میں چت ر تو کب نکر 
نےکمابت حدریث سے مخ ایا ج کی تفیل گزر بھی ۔ ارب مت پو ی ون تپ نے اس مکو فورخ 
کرد اد رکنابت حدری کی اجازت دی رک اور بہت سے حاب 2.7 یادداشت کے 2 راو طوریر بہت کی 
مرش گکھیں ج سک تفصیل بھ یگز رگ را سکن ے 0 یی و ل حدری کا کل رار حفظ یر تھا 
پر س کاسین حدری کا شل ایک می تقد ات ہی ص دک ےآ کک رن پچھ رج ب بیلص ری ت ہو ےک وآ یتو 
اسلا مکاد امه رب سے تک لک کم میس ڈور ورا زک تیاور لوگ یله ی ےکن نے کے ارک تے علادداز یی ۱ 
ال عم ب جیبیسانحد اداد حافظہ د ہکہاں سے لا کے جے_ پیر مکل بات ہے 1 کہ رابت مایم کرام جو ریہ کے زره مخ 
تھے روز بروزالد تیا ےر صت ہے جار سے تھ اور اک تن جو ماب کرام طز سے فور حریث ما کلک کے ے 


ودره ا اج 
وہ کی ہت ہآہت دن اکو تیر با داش ور کرد یاو ہہ کات نیال ر ے وہ بھی تلف منقامات دم رکز اسلامیہ یل 
اشاعت وی نکی غاط رز تشر ےا پر زز لت بیغ کر پر کیکفت ہو بی شی اور فرق اول شییعہہ خوارع 
مزلہ۔ تدا یہ اود جر ویر هخسن فرتے اسلام یس سر اٹھار سے تے جو اپنے تال کی تو می یس پو کی قوت کے ات 
کو شاں تے اس و قت ج کار نان تھے ان کے داول میں ہے بات اتر یک اگہ ای و قت اعادی کو کے ہکا ہا ے وان تفاظ 
70ئ1 رتیل علوم وت ے وتا پل ال نوا اون دیس تک جواماشت ان کے سسینوں میں کفوور 
ےوہ بھی اکے ات قبروں بس مد فون نہ ہو جا اور دنر کرای یل لا ہوجاۓ چناج 99 ریش جب صرت رہن 
عراز کل رآ راضلا فرت ہو ےا ول مکی خنطرہ سو سکیا با ا ہوں نے فو نمزم مالک اسلا می کے 
علا کے نام فرمان شا لد سال ربا حدریت بوک مر لا کر کی کل میں یکر لی ہا ے۔ چناج فتحالباہی 
تفیش ان مان کات ا 
کب غو بن عبل اریز ال نازرا حر یت شو ل الاو - صلی اه علیو و گر -َاكکوۂ. 
کت1 526 رر و سر یں ہے سس چان ق 


بخاری جلد 1 ل20 میں رولیت ے: 
کب ڪر نامز لا ین عریب مشو الاو صلی اله ی وس تا گنه زی 
:زوس الیلم راب الفلتاء 


اور مو طا مجر 1 39ں الفاظ تن انس ان یی مول الو صَل اه علیو ول وعری یتر اورعائظ _ 
ان عبدالہرکے بیان کے ما امام این شاب زہر یکو سب سے ی اما اور ول نے سب بیط رن کر 
کزوار ات میں بھییاچن نچ ان شہاب زہ رک فرماتے ہیں : ۱ 
''أمرنعمر بن یں العزیز بجمع السنن. فکتبناهارفتوارفتوا مسر مس : 
مائ البیان ٠‏ م دا لبم ہرک کے ان دفات س ۶۱ تی دیش سک ان یکپ میٹ ورین کے تی 
کے بعد م رکا گی خزانہ سے سوارلوں پر لا دک لا کیاد اس بیان سے ہے بھی معلوم ہو کہ ہرک کے ابو رن حرم لک 
سے چپ تد وین عد ک یکی کہ ا نک کرد هبو نکیل حضرت تن رهز تن اپنے ہہ شلات 
یں تام مالک کرو میں ری کی اور قاضی الو رن حزم کت گیب لاب مل کر نے نہ پا ےک خضرت 
عمربین عراز کک اتال وکیا بنا مر باک ر ,7 لاق سے کک ہج وین صرف یش اولی تکار فاامزہری 
کو ما ل ہے چا امام اقا فرباتے ہیںء اول من دون اکم ان شہاب۔ججامع بین لعل چ1 ض79 کر ان 
۰ رات کے جلف بلاداسلا میہ یت وین صر ف کاکام زور شور سے شر و مواد چنا چ امام مالک وا ال زب نے مین 
ٹس وائن جر ین کہ میں ایام ازا کی لال نے شام یس اور سغیان ڈو کی یلال ن ےکو نہ بیس حمارین مسلمہ نے 
بویت معمرین زاشرنے من لدم هامید رل ین مہا ره اسان میں خر . 


جچووووسسسیہے i‏ وو f‏ 
الیک بی زمانہ خیش عام اسلام کے سب م رکزوں میس علم مرت پ ہتصنیف دتالیف ش رو گنک اور ان حرا ت کا ایک ہی 
زنل کم حدری کیل ےکم اہو جاناصاف وکل ہے اس بات ی ہک اد تھالٰی نے ان کے راون میں ایک لطیفہ تی ڈال دیا 
تم نے اگمراس وقت ا سکی حفاظت لک فو یہ مرا م ضا ہوجائ کي م ورن حدری کادور اول سے ال میں 
صرف تشر ا ارم یکو کر قصوو تا اس می کسی ت مکی تیب وی زک فا یل کید اک دقت کے لے دی زیادہ 

مناسب تھا سیت ا رکاکا شر و ہو جانا تام هل جم رہ طقس _ 


تدوین حدیث کا دوسرادور: اب جب دوس رک صر یکاض فآ رآ یا علاءکاایک ا جن کا صر تھا 
کر عد ی لوالداب فقس هک تب شارت کیاجاۓ چا رال + لکام ر وروا کر رست نام ے ابام ابو عنیف 
یڈ ادلا تک ننہوں کناب الاخار ی کر موطاماتک 7 جا سفیان نو رک تخا کال _ 


تدوین حدیث کا تیسرادور: ای سے یرو نکا بتاکم ہو اوہ ترتی بکاکام تاکر اس یٹس احادیث مر رفوصہ 
کے سا ھآتار ما وین بھی تلوط تھے _ اب دوس ری ص رک تہ وکر تی رک ص دک شور وگن لج وین صرت کے 
پاب اس رت تی و ایک طت علا نے عأریت | نی روخ ساب و یتنا کر کے اعارسث مر ور 
کے اق اک اود ان رک تین سل شرو ہرک نا سب سے پل میات سر یذ سن راو 
یرون مس رعرے اور انام اج تاداع نے ا سا ناڈ کان بین راہوبء این موی وترم نے ایک ایک صن 
کی _ خر یہ اب تک تیب پت ف کاردا قد اب سای ر7 ب۶ 7 


تدوین حدیث کاجوتھادور: ‏ ان تام صانیف کے بعر ارس کاوور شر وخ ہوتاسے الک یلک 
سے پیلے کت یکنا ہی ںتصی فک یککیں ان س بک ق یہ تاک یکر یل متیر ہٹس ہیں جہاںکک ہو کے ع 
کردیاجاے اتا داتقا بکی طرف یا آوچ دبچائے۔ با نرق مرکا هب دوسری 
ص ری تہ وکر تس رک ص دی ےکی سا لک کے تو علا کا ایک طبقہ یکی مسر یل عم وس انی 
پچھان ان کر کے ا جک کر لیا جا ے سب سے پیل امام ال نها کا مکوش رو عکیا۔ 
ایام سم تاذ ادر ہر ایک نے اتی بقی خا ی شا کے مات کراب بای و سکم تالیف فرمائی پچ رجہ حرصہ 
بعدا نکی طر او رک شآ يس چا لام 2 که ناراوس اپاپ تنج کار دون عدرم کا 
رین دور تھا چات عاذت این تمسق تانق مہ فتح الباری یش فرب : فان زلا العصر خلاصة 
العصوں نی تحصیل‌هذ| العلم- : 
اب جن وین دی کا مکاکام پد اہ ود اب بعد والول کے کے زا هکم باق اش ہبہ اس کے بعد علاونے نی 


کش دقن کی سے تد را کیا نے مرکا 
وماعليعا لا الاين 


چا وھ روہ سبط ہوا 
صاحب الصابیح اوران کی کتاب کا تعارف: 
نام : الامام حى السةقامع البدعة أبو حن حسین بن مسعو د الفراء البغوى 
فراء روت جس کے ی چڑاکے ہیں و فراء کے معن مو سے پا ی دالا یاد باخت د وا اور ور قیقت بان 
. کے والر مسجودکا پیشہ تھا بنا بر ہے صفت موی حو دکی۔ ازا کو جر ور یڑ ہنا پڑ ےگا اور ہے فرام جک کے یر ہیں ء 
وی کے متعلق شک راۓ ہے ےک فک طرف مفسوب سے وا وکو زار مایا بت کے وقت بن د ہوجاۓ تس 
کے مزال کے ہیں۔ اور کت ہی ںکہ سوب سے افو طرف مخ وف الا کا زک مانند۔ یو سل میس موه وا کو 
عذ فکردیاگیا۔ پا بت کے وقت لو آ با یراک سب تک قاعدوے اور عم فیا ہی کہ ہے شوب ے بضٹو رل 
رف یہ رب سے با کو رکاادر یہ ایک قر یہ ہے ہرات ومر کے در مان لی عرو ر خر اسالن» رکب امت رای س اکر جرف 
7۰ 080 وم" ف مو بکیا الا اد ای تی سے از 
خلاف با واواور ی ولا ار شب کروی 1 ۱ 


محی سنہ لقب کی وجہ: بھی الشنہ اقب سے ملق ہون ےکی وج با نکی جا سے جب انہول نے شرح 
الست تاب تصفی فک فو نب یکر یم مکی زیارت خواب مس ہو یکہ آپ ال خطا بک کے فر مار ہے ہی کہ 
آخیا ک اللہ کت شئی۔ای دقت ے گی الہ لقب کے ساتھ ھور ہو کے بی شی انکر کک ہرگ نب 


تحصیل علم : ان کے قر حورل جو کل فکتاہوں میں لے یں مہ ہی کہ دواپنے زنل رشن کے متت اہ یواسم 

چا 2 کے اورا زا نع چون کے فی بن دم ان وم باب فک ٹل سے تے۔ چنان ا نک ناب تفر مالم اتیل 
اور لاور ہب شا تی نل یس فد بخ وی ای شاب ہیں صرت تف رارف سکس ترفن جو یر کے اتر 

ازس وبا ت زیاده یواست ال رها رفا کات ین نک تر جج 

۱ ابقرائی حاات یں خفکر وٹیپراکتنا اک ے تھے ای بین ے فت یھی جو شا علماء شافع ٹیل سے ہیں اورا ی ددر کے 
مشامیر مد تن کرام سے عدری کی ند ھا س لک اور لب ر وردی ود NSS‏ نےاا نکیل ردایات سے ہیں۔ 
ا نکی پراش ۳۵ھ میس مول اور وفات لااھے مس ہوگی۔ ا نکی ترا کے اتاو قاضی می نکی کے پا شرخزد ش 

۱ ہے٣‏ جمةالامتعلی۔ 
خصوصبات مصا بیج : 00٤۶‏ 0 000" 
مر کوبت تیب فت مایت ن اسلوب ے کیا ہکتب صریمث مت داو یں مکور ہیں اور اپ کاب مل دو کے 
خان قا کے ا کاب ٣٢‏ ۔ جاب گرم تم کی ۔ الہ یز کے لے پیل با ری وکلم مکی سر یں لک اوا کو 
ارت آجی رکیابعد یس سفن اد نونک عد یں لا ے اور ا نکو ن ہے تج رک یاک جیب بات ہک کہ ات 
7 ا را ی رک ہہ ی کل دیا اور ا کا بک ایک اور 
خصوعلیت ىہ ےک ال یل صرف اعات مر فوع کو لاۓ آثر ابر وتان سے کر کیاد بجر حال اتن جائ اور صن 


۱ سوه ودره مج جلدادل لت 
رتیپ ہو نے کے پاوجود ستر اور خوال زکر ن ہک ےکی باه نار نے1 لیے اگترا اشو ضس گی یا کک تام صاحب موق کر 
ال نقصا نکی لانیک خر تا لک بل ضرورت پڑی۔ یلوج کوج تالف ے۔ ما نوع اعاریوث 
قول کے مان 4434 ہیں۔ 


صاحب مشخوۃ اور انکی کتاب کا تعارف: آ0 رن کی دالٹ ہاو رکنیت الو کب الہ یوق ول ری ۱ 
تی خطیب تی کی کے نام سے دهع هآ یل ص دک کے متاہیر علماءاعلام یش سے سے اور لپخ وت کے محرست اور 
فصاحت وبلا غت کے امام ے۔ کرای صری می ت الو ںکابہت بدا انا بر سی ا کے لور عالات گی کراب میل طبط 
تن کے کال لئ نہ ا نک من پیات معلوم ہے اور نہ سن وفات-البنہتخمیناً کہا جاناے ,0 ے ٣ےد‏ کے بعد 
ول کر 3 موی لیف ےے ٣ےھ‏ یں فار ہو ۓ-_ا کے علاذہان کے پارے یں زیاد ہرگ کنا مل ے_ 


وجه تالیف وطرز تالیف: جب لوگوںنے مات بک اشالات کے او صاحب مک کے اتا ملاس می 
نے کو پاک ای یابص وس میں مصا کے نتصا نکی لا باس چنان ا نہوں نے اپے جن کے عم 
سے کنا بککھناش روغ کاود ہر عدری کو کے راو یک طرف مسو بکیااور ری یک رکردیااور ہر باب میس تین لیس 
مکی مل میں یی نکی مر یں لس سدق لی سے تی رکیاور دوس ری ل می دوس ر یبوک 
حعد نشی لا تی ری فصل میس ایی حد نشی لائیں جو باب کے تم مانت رکھتی ہی گر صاہب مصاع نے نہیں ذک نہیں 
یاقا یز کہ ای لانے یل کسی فا لکنا بک قی لک بک جم کناب سے بل بک مناسبت سے عدریت گی لے 
7 اک ط رح احعادیت مر فو کی قید فیس رای وج آثار اب تم بھی شا لکرتے گے باق اور یه تصرفات 
کے نکاذکر خود مق مہ می مرکو راص لکتاب ”مان نیہ“ می پا ہز پار سو چون س(4434) لک 
یں بعد میں علا خیب تہ رہ کی کد اکال نے مصما کی عر رل پر زیر 1 1 15 عر یو ںکااضاف کیا موی اعارمثء 
موش 5945 ہیں۔انہوں نے اکتا بکنام ”وة اما جع“ رکھا۔ وج ہ تیم ہے بیا نکی جا ےک مو کے سی 
لاق کے ہیں۔ مصا کا ب کا نام ہے۔ و کے پاش بخ رطا کے رشن یکم مو ہے اور طاق دل رکف سے روشک زیادہ 
مو سے اور فائرہزیادہہواہے۔اىی طرح مصاع کے لے و لالم ی یکناب نز طاق کے »کر وم خر ند و خرن کے 
تھی رش کم تی :فار ت کم موی جب صاحب موسر خر کے سا تم ماک رازگ رو شیا وافادیت زیادہبڑھ 
گئی۔ بنابرمیں مود لصا نام رکھا۔ دو سرک دج یہ با نلک کہ مصاع سے م راو حضو مد مکی رل ہیں اور وہ زار 
پا کے ہیں ں ط رپ ارت گت دور م وکر اجالا »وتاب ای طرر عدیوں a‏ قل وور موکرو ` 
یمان کے پور سے موز ہو جانا ہے. لین ان هل کے قراو بلس خرن ہو هک وجہ سے ا کرو کی کم از 
ایک ہوا سے روما کرب کان نہ تھا۔ صاحب وة ن ایوس هیا تھ باحوا کہا غکیا یز ره توافت 
ملاضاف مو دی دياب مرل کے لے نل طاق ہوگئی_ لزا موم اع نام ہو زا مزاسب موا 

بشم امن ارم کی بھث: - ملف علام تاذ ای یکا بکا ہشیر اذو سے آنا زکیااس مل ی 


E‏ رر مشکۃ[لي_-_۔سملر تج جلداول لت 
کرک مکی حدریث قول اور عمش آل یہ کل کیا یق رآ نکر بھی اتی کید تد یٹ توھ ہے س کہ ضرت الو 
برد دلمت_ج ۱ ۱ 
ال قال مول او صل الله علیه وس : فلا رذ ال ان یه یدشر انو الزن اليو اظ" 

ات" ب نت روایات میں جو جم الل اک ک آنا ہے اس سے تدر ض قان ہکیاہجاۓ تب کف غیر والوں نے تارش 
داکیااود ال کے جوا بات د ہے کوش شک اود ابتراء اقام لس تقق,اسانی» عر یکی اک مق ل 
کواضانی یا رق یھ ال ہے سب قاط ےکی دمن عدریت کے اہ ری نکوخوب معلاو م ےک یالکو تار لاس 
مکی دک توا رش وہاں ہوا سے جہاں حد یں دول عال اک یال عدیعث ایک ہے الفاظہ گآ ف ہیں سی طر یت فک 
طریقہمیش لفت ے س بکا مق ایک کر کہ الہ سے شش رو عکیاجائے۔ بی وج ےک اف ط یق دنر نکر 
اللہ کا لفظآ ہے چیہ اک بر القادہ ہاو ی نے ایق ا رشان لولس تکی ہے حافظ اہن جج مر سقلا 3041/25 ی بات 
ریش فراق اک بشو الو ء جر ال الصاو کا قر ر مشت رک زک ابر ے» ٹس کے 7 مورب رک یل 
ہو ججاے 1۶ ۔ لہزاتی رش کاسوا لک پیا و 

عیث ایک یتک کر م مو لا کل ۳ 0721 الو سے 
رو کے تھے اورجب 7 وخطیہ غر و فرماتے و ادن والضلوٰ ے ابتقدام فرماتے_ تو مصنف 006/1255 کاب 
زا وی سا کے ہیں اس لے پش لو شرو کاو قرآ نکری مکی سب سک متفر پام نال 
ہو گی زا سک اقترا ہی صو رت ی ہوک یک یشور لشو سے تیاس 

پش الہ میں تین اسمائے الپیه کی تقصیص کی وجہ: ‏ پئرا بت کیل ا کے ا تی یں مرف 
ان تتول! سمو کوخ کر ےکا وج یس کہ کچ :کے یاک نے کے لے ین چ رو لک ضرورت مون ے۔اول:اں 
کے اساب مہ اکر ناو سر :ساب ات رکک باق رہن تی رک :الہ چم رتب ہو نف لفن اللہ کاخاصہ ے اسباب ہیاک نا 
اور لفنار مت نکاخاصہ ے اسباب باق راو تھ مکاخاصہ سے ای پر ضا م2 ت بک نا ونان رکام ل ان الفاظ سے رورا 
کرک مر موش و موا وکا ضار ہو چائے اور اللہ تھا یک ”ار ورس تل ال سے ہو جا :اور بی خلت 
انا نک مقصمدے۔والہ اعلمربالشواب۔ 
اخلاص نیست: ۱ ۱ 

عو مرن اب کال: کال مول اللوضل اللہ ماج ول : دما تال بالات لما کل افری‌عاتوی» 
عحریث را حدییث انب راب اس ےکک حط رت مرس الکو نم صحابہ کے ساس مره میا نکیا دای 
اد اور مہلب ن کہ اکے نت روایات می ںآا ےک حور نے رت بعد سب سے یط ری بی حدیمش 
با نکی تی اس ے مرت الت کہاجاتاے۔ ان فد بات هل لاور ال عدریث مل نیت 
۱ کا زک ے ینابر ہرس حدیث النية * ہاچ 


سکره ن ل بجداں چ 
مذکورہ حدیث کی عظمت : مرت زاکی کشت وجلالت شان ے باس تام جرش کرام ن ہیں۔ 
چان سفیان بین عیام شافق» غبرالر تین بن مبدگیار مج ال فرماتے ہیں کہ ہے صدریث دن کے سر بائو ں کیا ہے او 
کی ےار عبرا تن مع خر یلاکن فرب و کر جو وی اکنا بک کاارادہکرے لو سب سے یط ال مرس 
ا راکمرنے۔اورمام شا نی لے مر وکا کم یم عدیث لضفا تعاس ہے کہ نیت ضس قلبے 
اور ایال عبات بدك ے اور ام وشا ف مان سے ایک اور قول س ےکہ لت الا لام یا مث درن ےکی وک نهک مسب 
پاپزریعہ فلب ہوگا اوروہ نیت ے یا بذدلعہ بان گا یا ہزرل جار ہوگا۔ بنا بر یل لش الاسلام کہااور نام شق 
لے ہے قول بھی تقول سکم نک دار دیداد چا احادیث یہ ہے ان شس سے ایک پم حدیث ہے۔ :نا بی ی 

> حدیث :نا دی ہو گی ان چا اعادری ٹکو یکن لی عام نے ایک شعر میں نک ۱ 

غمدة الڈین عندنا كلما تاربع قا هن خير البريّة 
اتق الشبهات از هرود مالیشیعنیکواعمان‌بالئیة 
سی وجر گر تام ملف وغلف اہی مصنفا تال حدیث سے انت کے ے ال زار تک 

ک یں اور لام ای 13004 صرف تصنیف کے تیش نی سکرتے بک وہ کے ہی کہ من اپنے ہکا مکی 
ابتذاءاکاعصریث ےکر ے ے الہ هکیت ہو جائے۔ یتام ری قد دۃ الد شی ن الام ہار ی2 لسن بھی ای کناب 3 
بقار یکی تاک حدریث تک - اسلے صاحب موجن کی سلف صا شی نکی اقترا کے ہو ے اہ یکا بکو حدریث اه 
سے شرو کیااک طالب کم اب نی تک اصلا کر ے۔ نی زم ےکتاب الا یمان اب الطمار تآ ی ہے اورا نک مر ارشیت 
ال لے کال شرو عکیا۔ ۱ 


تشریح: کھا: لاحم کے لے بر قاجا ازاق رآن سکع ی ںک جب من مکو 
بق بات لراش ہو دک میرک بات سول صد 0+02 کا کے ٹک دش کی کیش یں اس ج پرانمااستعول 
کیاجاناہے۔ کے (نماھوالەؤاح . 

ال یئ سے عم لکی اور کل ھل اخقیار ییالاب اس لے نات کے ات 0 و ور 
فلا لکیاجاتا ہے دوس رک بات ہے س هک شیہاں اف ال لا سے افعال کل لا ۓ ای هک دوٹوں میس فرق ےک 
تل کہا جانا ےک جس میں ووام وا ترا ہو اور س یش دوام وا سار ا کت رکز ےت جا جانے۔ ال 
سے نت کیفارت شش اقائڑین أمنواوعملواالشألحأتآ یا ے وفعلو ری کہ معلوم ہدجاس ےہایگ دفو 
یلائال کے جات نیس وک یک دوام وا مراد ضمروریكرے۔ 

:نیک ماس لفوی ی تصد واراددے اورم ماس کے مت توج الب وا شل اتف اوج ال تال 
اور فقا کرام میت سے مراد لئے یں التمییز بین العملین یا لتمیز ہین لعباق دالعادق عدریث بز ال نیت لقو ی مراد_چ» 
رتی مرا لک مابعد کے سات نیقی ہو جا کید سان نی تکی شم مکی ار سب خر وش رک طرف۔ اور نیت 


ری مد 2 


گس ر ینب شگ#دسه ۱ ۱ ۱ 
نیت وارادہ میں فرق: پر نیت وارادہ جس فرت ہے کر نیت میں غرض پیل نظ ر ہو ہے۔ یه 


ہا اتاہے نوت لکنا بخلاف ارادہ کے اس میس رض پیش نظ نیس ہو ہے۔ بنا ری الد تال یکی شان یس وا 
کہاجا گا من نوی اللہ ہنا ا نیس وکا کوک افیا رامع پا را تہ ہونا سم ستل ہے۔ تاب عذیمش کے 
اہ ری مع یہ ہو ےک کول کل انیت وجو ول تج لآ هگا حا اک ذات عم کی ی مرا یں سے کبک بہت ے 
گل افص وارادہ پا انا سیک یہاں مراد فی اام ے مت لک کم شر کی !خی ریت نیس ہوگا۔ اور عم لک تروش 
ہو ناوراک کا سن و »نیت ہے۔ لاب وعقاب مرتب+ونلیت ای سے ے۔ 

لزا ت5ا مفعلق کیا ہے؟ اب بالات ہار مجر ورک متحلقی موف مان ےکی ضرورت نکی جم ایک ۱ 
فی ستل میس شاف ہو ٹن ےکی رن یہ انتلاف ہوگیا۔ ا سل میں بیہاں ایک اجتہاری ستل ملف ہا چا آرہاے۔ جب ہے 
دیف سا سن هآ 9 ہر ایک نے ہی د یل ہنا ےک یکو شش سک اوران ک ایک ملق ءوست تزا وض نکی کر تکس نبیت ش رط 
ے یں ؟ فو پیل لا کہ ایک عبات مخ ہے جیسے از روزه ور ال یں س بکااتقاتی ے کر ای کت اور 
ال پر اب مرتب ہو ےکی نیت شروک ہے۔ دوس کی م عبات آل ہک دو مرک عبات مه کهآ ہے۔ کے 
طہارت بدن و مکان وبا ی میس گس بکااناقی ے 2۳ حم تک نیت رط لاور واب یلت شرا ے۔ 

تی ری م جس میس طہارت وعباد تکی شان موجودے ال می بھی لواب کے لے نیت رط ہونے میس سب کاانھاقی سے 
الہ ا لکی کت کے لے غیت ش رط سے انی ؟ اس مس شوا نع اور احناف کے در مان اختلاف ے۔ شوافع عباد تک شا نک 
را تراد یکر دوسرکی هالک رع نیت ضرو رک قراد دتے ار حتاف جبت طهار تکو را و ےکر دوس ری 
ادن درس کی را فی کو ضرور یل کت ودب وضو تو وضع کے مزدیک بلاضیت ءوضو درست نگل ہوگا۔ 
اراتا کبک پلاست ت وضو اور از سک لئ 1 لہ بن جا گا > طہارت ٹوب وید نکی مانند »ال ۳۳ 
دو رک بات هک اپ واب نیس گا اس یں احا فکا رے زیادہ کدرا معلوم ہوتاہے اس لے مک آیبت وضو 

۱ س ہے با نکاما رین الله جع عَلیگۂ ین عرج و لکن بر یھ رگ - ۱ ۱ 
ید شی فتاح الصلوۃ الطھوں سے معلرم ہوجا ےک وضو شان فار توقلا نالب ہے ۔ اٹ رن دش میں وضو 
اور 9 کوایک باب طهادت یں غ یا یا اہ اروتوں یش رن نہ ہو ناچاسے کر ایک شی غیت ر طا ہواوردو رس 
نیت شر ط ہو پھر پک شان مینکن و توح من اش ما وک ہپ نیت ری مطټر 
بتاک ضر یت 

اس اتا فک من المع کیل" از شوا نع رقاب یکی وک ظروف سے متعلق 
افعال عامہ ایوس لاور کت افعال عامہ یس سے سے او مطلب پم اک تماما کی صحتنیت پرے اور وضو کی ایک ۔ 
گل دای کی کت گنت مو ا خر یکو تلق مقر راک وگنہ سا قح کاٹ رگد :9 


چا ge CGD‏ بدا لے 
اک کر کان حضرت شاه صاضب کت تلاق فر نے ہی ںکہ دونوں قرب ورست یں کوک شان سے تا رو 
تخصیصیں لام ۔ کی تل سک حدریت فا مد ہا سج اکا م دیا کے ساتھ کی وکنہ نت ام نیا سے 
ج اوروو مرک لیے دک عدیث فا ہو جا ے یے اال کے سے جن ہیں کت وضارو ولو ںکااخال ہواور 
اس ے اعمال جع رام وفاسد ہیں القاعطال دج ی٠‏ خار جع ہو جات ول ۔ عالاکگہ حدریث عام ہے دنا آخرت کے ے اور 
لال و را م کے مب 
ای طرں احا فک نمی ہکی صورت میں کی ر وتخصیصیں لاذ آل ہیں۔ ایک یں و 9ھ "یی 
اغ وک کے سات ھک وگل قذاب وعقاب اکا مغ وی شی سے ہے۔اور دو سرک ۱ PIRSE RY‏ 
فاد جا ہے اور محاصیات نار ہو جائ ہیں عالاککمہ یٹ عام ہے۔ ابی ولول دس 7 یں ا کل میس اغہوں نے 
عدیث ے 9 و مرگ زا تب ور 
ول نے تیت سے تیت ہی که من وجودمیت وعدم فیت۔ عالاکنہ حدری کاس ےکوی علق لآ خی مت 
معلوم ہوا ےکہ دجودضیت کے بهرنیت صالد وت فاسدہکاءیان کر ناتصر وال کیان دونو ںکی کی شالت 
صا مک اور و ور یکل لاس نز ای ککافار دو نتصان بیا کر ”ھور ے بر عا لیے حرف ستل ساز ہا کے 
تت نی قوست اق جک پر لیک ہے اس کے د لاجد بھی انگ ہیں۔ اماب نت مام نا بش 
عبرة الاعمال بالنیات إن كانت التیة صا حةفالعمل خیروان کان ش زاأفشڑ 
غلا ص کلام ہے واک حدری کا متصودضیت صال ر وضیت فاسد ایا نکر ہے وجودضیت وعدم نی تکابیان مرا اانیں۔والمتعالی 
اعطمروعمهاتم اکمل ' 


نیت سے متعلق اعمال: ام رال فرب ںکہ جوا ال عبت سے متا ہوتے ہیں وہ ٹین 
کے ہیں۔طاعات محاصیات مباعات۔ 

معاصیات: DE‏ اقا اد مات ۱ 
بھی ہو حا امہ محصبیت کے انر ہے لب میک نیس یکنا وو سر ےکور ا یکر نے کے لے یال حرام یں سے ٹذاب 
ایت سے صد 0209 ردو سرام و 1 بک او قات یمان کے جل جاک طسب 
طاعات: کی بت کے ےت یکر ناض رور کے اک رس زیادت اب ے کدی تکرناض رو رک ہے اور ریت 
سود ری تخیر تکرے وزاب نی سکاو پات ہد جا ےگی۔ 

مباحات: اعمال ہیں جو فی ضف نہ موجب لاب ہیں اورنہ موج بگناوہیں۔ضیت کے ذد ی واب وگناک ےگا ی نیت ہو 
وڈ اب لگا ریت م ونوکاو وگ ماعط استعا لک نہ اکر ای میں اتپا سن تک نیت ہو پال وگوں کے ول خوش شک ناور 
تی ہد بو سے لوگو ںکوانکلیف سے ان ےکی غیت بآ اب ہوگا۔ اکر فھرومباحات یا عو رتڑں کے ولو ںکواپتی طرف اکل 
کر هکیت ہولوگزادہوگا۔ ۱ ۱ 


۴ ساق ری چ جلدادل لگ 
واناکل‌افری‌مانمی: . ابش و لک آ يپ مک اکر ے یت دلب تو ملا قر ی 
تلا یراع ے کہ تی تکامعا مل ہایت ام ہے اس لئے دو سر سے مت بطو رت کی رای ”سمو نک امد يگیا اما 
ملہچ کی کید ےکک راک علا مگ راۓ یہ ےک ات لو من اتکی کے بی نظ جاسیس انتا زیادہ بت که ال 
سے ایک یافائوبیا نکر نامقصود ہے۔ پھر فا ہک تین میس ملف اقوال کر کے گے (ا) لن کی ہی ںک یلم ره 
۶ر فی کیہ ہے اور دو ریما قاع ہ يا ده ث عیہ ہے (۲) یف کچ وی ںکہ پل م میس گل کے نیت کے ماع وکر 
عم رتب ہو ےکاییان ہے اوردوسرے چم میس عا لی اورضیت کے حا کا زک ہے(۳)علامہ این و ٹک الع دک راے یہ ے 
کہ پیل یس کل اور بیت ٹس ربکا بیان سے اوردوسرے میں عم کو ا لک شا کے ات رنه کے بد جونیت موی ۔ 
وی ما کل ہوگا۔ (۳)علامہ ووی تچ للا فرراتے ہی ںکہ دوسرے جملے میں منو یکی یں کا شرط ہو بیا نکیگیا ٠‏ 
(۵) کک ہی نک جواعمال خار از عبات ہیں ا نکوداخ لکرنے کے مل دوس اج یی( کے ہیں دعر 
لے میں نیت اندر عم تام تکامیان سب -(ع) یرام می ےک دو مم سم مل ىہ بیان گر و عبت ور و 
اج »وجرت ولج ر وتيت اوج سے وتاے(۸)پہلا بل علت فاعلی ے اوردوس رابھملہ علت اسب وم دے۔ 
من 6انث هجرنة: اس ممل سے پل قاع ہک قال بیان فرمار ہے ہیں۔ یی جملہ جن تن زیر ل» 
نیت رہ حن کاٹ و جر ئ ے لک رف اشار ہے اورک الوا نی تک طرف اشار ہے ۔ اور کھ جر ا 
سے رہہ نت ہکی طرف اشاده ۔ اک رح بعد کے مکل می بھی بی تین یز ہیں۔ یہاں ظاہرگشرط دجام اتماد 
+ دی الک دولوں یں تام ضر وری ہے کان ہی تفا ے کے اتتہارے مارت او موی : e‏ 

: فمنکانت‌هجرته‌نية و اراردًفهجرته اجڑاواثو اب 
اما اتاد ہو جاناہے اور بہت سے انال میس سے صرف ؟ رتکد مثال ل کر ےکی وج ی ےکہ ابت راء الام 
یس جر تک بہت ابھیت یبا کک جر عم بایان وف رکے در میا فرق ترا رو کیاد رق رن د مرف ٹل 
مر تک فضیلت داہیت یا نکی 

۱ شان ورودحدیث: ...نز یبال ایک داتع یی نگ یا وا ای کی طرف اشار مکنا کی اقا وہ واتقعہ طبر ای س 

صرت این سود ول کی رولیت می ندچ دوفرہاے ہی ںکہ تم میں ایک نف تی ج سکو م مہا برام تی لک کر 

تے۔انہوں نے اس ورت سے نیا کا پیغام #جاال کر ف ے جو اب باکر 7۸ ر یکر لو ول راشی ہوں ا 

دنہ ہیں ای انیت ے۹ تک لا ءال وق تآ پ نے یہ صدریث بیان ذز اکتا ی داق ےک طرف اشار ہک نے 

کے لے بھی رس کو شل میس ,کی اور خضرت ابو طلیہ نے جو اع کے ے اسلام تو لک لیادہاس یس نمی ںآ سکیا 
کیوکمہ ان کے پاک پیل ھی سے دای لام موجود تھا ناج رف ظا ریک و سل یی ساوسو لکاوکرکھرر 
لایاگیااورروم: کیلش دیاور عحورت کے زک رکااعارہ الیل کی وگ اللہ اوزر سول کے نام میں اط والزازے۔ بنا 
ری یر لا کیاد لاف دنیادام رآ کے ےک اس میس قباحت وعدم مبالا تک طرف ار هه کے سک کر رل لا کیا 
چرام )کو وک طورپ ر دک کر ےکی دجہ یہ کہ یہ سب سے فد ہے۔ نیز شیطا نک جال ہے۔ یل عرف م٠‏ 


جچ وہہ ھپ سس کا ار لے 
ے:' مات ر کف بعري وهار کل الز جال من سای" »الما مجبالة مان - 
اه اس میں خطرہ زیاده سے اس سے پر ہی زک نکیل خصو می طور یر اکا زک ہک یاگیا۔ نی زان وات کی طرف بھی اشار ہک نا 


ےےے 
0 


پجرت کی تعریف واقسام : رت کے ویس ناور 6ا ک انی الل کوک جر تباجا اور 
روصت شک مر تکااطلا 7 ترک اشن الد پر ای دارالا سلا م پر ہوتاہے۔ بجر تک کہ ت کیا اقسام ہیں 
(1) هجر تمن اما وت لیر لام ن کمافپجر الغ ۱ 

( 2 ) ہجرت ون مکہ ای مد ین یہ دووں ر یں مضو ہر 40+ 

(3) هجرت‌منرای‌الکفرال‌دارالایمان. 

(4) هجرن‌من,رام‌البدعةال‌دا‌الستت 

(5) اطجرةلطلب امعم یره یش با ہی ںگی۔ 


خلاصه حدیث 1 صریث‌هزاکا خلاصہ ہے لاک مل اوی قاعد هکیت اور و ورال رس امه اود سرا 
ما ا کی شال درا صليحدیث فرع ےا "لآ کر یھ ہے : 

ری یلاس حب المهَوتِ من النساء والبنن وَالْمكَاطِئر امقنعرة من اللّحَب وَالفَِة ايل المَمَوَمَةِ 
العام ونر ذيك متا ع اتب وان وان عند فشن العأپه 

من ال مآ ا سے رت الط رف اشارہ ہے۔ 

وَالْفَتَاطِئرِ منطو رت الالد نیال طرفاشاردے۔ 

وله ده مش الاب مم ھجت ال انوہ شو ل ےکی رف اشار ہے -واللمتعایٰاعلم وعلمه اتم واکمل 


کتاب الإیمان 
چوک تام ال خواه مین تن بامعاملات وما ت واخلاقی جہوں سب مقبولیت امان مو توف ے۔بناء 
کی سب یط امن بح ٹکو مقر مکیا۔ 


ایمان کی تعریف: او تایان لخت کے اختبارے باب افوا کا مصمدر ہے اورماخوہ ےش ے بس کے ممی 
امون ہو اہے جیے اکا نوا کر ااام نآل الْمٌُی۔ 
جب باب افعال یس چ ایا تاب هریم وکیا تو می ہوں کے ”بمو نکر وین“ ان میں وا غل م وناور شرت سک تریف 
خلفالفاط ےکی کی ار سب کا خلاص اور م 1 رم ایک ده ۳/۳ 
الڑیمان‌ھو اصدیق ماجاءبەالڈی صل اه عليەوسلم فو A‏ 
و لقوی وش کی میں مناسبت یج کہ جو شف حضور بایان ےآ تاس نے مریمب امون 


دس سے سو و چا ہراں 2 
کمردیااور الپ کو چم سے مامو نکر د یاامصن میں وا غل ہوگیا۔ کن ىہ اتاضروری ے کہ یہاں تم ران ے ران ق جو 
ازعاان جازم ے دەم او یں کی کلم ووا راط رار کی اور غير اقتا ر ی ہے اور ا یمان ,مود ہے سے ودام اختیا ری نو اکتا ے۲ اہ 
کر نے پہ توب اور نہ هس عقاب وه ۳2 اگ رایمان سو ا ران رمو ہت سرارے لو دون کو مو من ناش 1 
کر ,آ ند ع رث سک بای ود بارے لآتات : یر وتە گیا ۳ ون أبکاء هم (سر,ةابتر6146 
کہ ضور ِا مکی رسمالت ی اتان تھا بت یل کے موه ای کے باوجودا نک وکا رکہاگیا۔ اک ط رآ پ 
لک کے ابو طا بک وآ پ ما مکی تپ ورن تھا یے ان کے اشعا ر سے معلوم ہوتاے۔ 
ا‫ ودعوتنی‌وزعمت الک صاقو صلقت فی وکت ثم امیتا 
وعرفت دینک لاحألة أنه من خیر اد يأن البریّةدینا 

۱ ولولااملامة اوحنای مسبة لوجدتنی "ما بل اک‌مبیها 
اس کے پاوجودا یکو مو مین راز ہیں دیاکیا۔ تو معلوم ہواکہ یبال قران ملق مراو یس بل تین وتان ے بعر تیم 
کر اض ودرکی ہے ج ام را فقیال کی ہے ا یکو قرآن نے قلا ورك لا شون حثی بات فا جر بیکھځ لا تو واج 
اسهم عر جا یت و یلوا تنا( ,٤اا‏ 65ے تج ریز 
اور برگورول وگو کورچ ین تھا 71 لیم نہ تھا ہنا بر کار قار وبا گیا ریما نکااطلاقی اعارسث ٹس چا ال ہوتاے 
جن کے جان لیے سے متیر س اماریٹ نع نی وت اود علماء کے اقوال لز کو عکرنے میں ہولت ہوگی۔ 
1- اقا ظا ر یکہ صرف ذبن س کپ یاقا میں نشین ہو ینہ وا کواس حدیث می کیان کال لا[ لا 


الله عَصم می عونت 
2- نتیارظاہ ری و یک ز ان سے اقرا کر نااور ول سے می نکر اور جو ارح سے عم لک نار اک پچ ام دنر وار وی 
وعدے متب وگ 


3- صرف‌انقیار ور له جات عن | خلوومن النار مب ے۔ 
4 انان وبغاشت وعلاوت جو مقر کو ما سل ول ہے ا یکو ا سںآیت مس بیا کیال الَِيْتَة ف لوب 
الو زد دامع ِنتا یپا ای اطمیدانا یوم ون قال بل ولکن [یطمون فلن ۔ 


کفر کی حقیقت اور اس کی اقعسامم: ١یا‏ نکی مناسبت ےکفرکی قیق تک بھی کمناضروری ےک وک 
تتبین الڈشیاء بصن ارها کف رس لغوی می چان ان زا اور ت رکوک یکا رکہاجاتنا ےکی کہ مہ چاو غر دک چیا 
گے ہیں۔ اود ش رکف کی تیف ہےکہ دزن سک یی کا کر دہف کف رل جن اکا مک کی بک ضر روت 
یں کہ ایک کمک گیب یکا ہے قلاف ایمان کےکہ اس میس یع احا مکی یم ضروری ےکا سب ب رکفرکی چار 
میں ہیں: ۱ ...و 
1- کف را کار کہ دل وز بان ے کال دک کے عام کارکا 1 ۱ 


س .مج زگ 
2 کفر توو :کے نودلت ییالاب رز پان سے اقرا فی کرجا ی ےکفرا یس ویپور 

3- کفرموان :کے نلودلست ین تام اور ز باك سے اتر ار کی ون تول کر ے کے رل الطاب 

4 کف نف :کہ ز پان سے افر گر رول ے اکا رکررے۔ 


ایمان کی حقیقت میں مشہور مذاہب: ‏ (ین‌شرگ 0 وی )تاج هک ایما نکیا دو 
ہتس ہیں۔ الیک ہت اکا د ہو ہے کے اعتار سے وو سرک ججہت مقبول عند الد کے اعتار ے۔ لواحا م ندب کے افقبار سے 
س ب کا اتاق کر صرف افرار الا نکرے توا کو ابا من قرار دیاجائیگا۔ نماز جٹازہ وف فی تیور ا سین میں 
مان جیا عم جا ری ٢‏ کار جو یمان الد تال کے نز ویک مجر ہے ا سکی عقیقت میس اختلاف ہے نواس می کل سامت 
راہب ہیں۔دوائل تن کے اور پا ولو ۳ 7 تن کے دوب ہی ںکہ : 

1 ۔ و فقها ور مد شی ن امام شافقی کیک :ات فان رک می کی اور ام بای مھم الله کے دیک یبن کب 
ہے اشیاء لش تد لی با »اف بالسالن»اور پا ات و 

2- مور ملین اور ام یتمه الہ کے ریک این ساب صرف ضر ان ب یکا نام ے۔ اقرار و گل یقرت 
یانش وا فل یں ال اقا اراحکام د نا سک ا سک ش رط ے اور و3 کال ا یمان کے لے شر طے۔ 


حقیقت امان اوہ من اھب اھل اھواء: 

1- پلا ب مر کا ےہ ہے ہیں کک اماك م رکب سے ایام اش ص ران بالجنان ۷اقرار الا اور تم بالا دکان ہہ 
نون شن مان کاردا ںان نے یک کک کے فا راان وھا رکف ین اخ 
یس موک منزلة ہین الئزلمین گام 

2- دوسرام ہب خوار عکاو ی دی ہی راتفر سک کی ایک جر کو ترک کرو سے سے ار از یمان وک رکفم 
مس داخل ہو جا ےگا لین نیہ کے اعقبار سے دونوں فربقی تق ہی ںک ایا تخس دوزغ میں دا فلگ 

3 تسا فا مر ج کاو کت ہی ںک ا یمان سط کر صرف تص ران نم یکا :ام سے عمل واقرارنہ یقت ایمان میس داشل 
اور کال ایما نکیل ضر وکاب الک کک انا ٹول ہورے:لاتضر معالِیمان‌معصیة. كمالاتنفع مع الکفر طاعة 
4- چ تمالم ہب ی ہکا ے دہ گے ہیں پک ایمان صرف کم وم فی6 نام سب اور کی شی اض ور ی 

5- با یال بکرامیہکااود ددم سے ہی کر ایمان صرف اترا رکانام ہے۔ رانو لول ضرورت نہیں تی الہ 
7 کت ہیں کہ یه الس تکار ار یکن ےش مر فلا فار 7ت ظبوریز یرنہ ہو۔ ۱ 
6- ٹاہ ہب خحوار رخ کا ے٤‏ وہ کے ہیں ایمان اشیاء خلا ضرق ای اقرارلما اور ی رب ے اذا م ۳3 کیره 
اسلامت ار ہوگا. 

7- ساوال ن رہب EDE‏ اس2 ریک 
مگب یبر واسلام سے ادن سے رکف رس داغل ول ۱ 


شود مس 23 
از :9 ینف باہب۔خاصہ ىہ ہواکہ ہو ر فقاو مد شن ع زل وغو ار کے ر 
الوا نشم می اور امام الو عنیز کل و ر جیے کے نر دیک ا یمان سیب صرف ت ران مھ یکا ناما یمان ے راک 
بات یاد کناچا کہ اصل اختلاف اا لآہواء کے اتر ے اور ال جن کے ین میس اختااف شتی نس بر ی داعتاری 
ہے کی ےآ ند و ییا نکیا باس کاس 


ایمان میں کمی وزیادتی کی بحث: ایا نکی بات د رکب یرد سراایک ستل تفر ہوتا کہ امان 
زیاوت «فتصا نکو و لک رتا ے ال ن حرا ت کے دک امان سیا ے ان کے نز یک لا یزین ولاینقص ہوگا۔ 
کوک یل ز ادت ونقصا نک سوال بی ہیں وت اور جن حط رات کے نزدیک م رکب ہے اکے ادیک یزیں وینقص 
موک کی دگل رکب مل زیادت ولقتصان ہونالاز م ے۔ تو مور مر تین وفقہاء کے ری یزیں وینقص» اور مین 
واحناف ‏ نزد یک لایزین ولاینقص ہے۔ بت امام ماک اڈ ے ایک قول »لیم آن زین ولاینقص_ 

این بال و3 والنقصان اتد لال چ یکر تے یں رآ نکمم مکی ا نآ یات سے مجن میں یاد تکا زک رآ ہے کے 

ادا یت علیہ اه ا 5نم .یداد این منوا ناتا قَرَادَمُۂ اناا "رغیربامنالایات- 

اور یں زرل و تی سے تتصان مونلاز ھی ے۔ امام ابو عنیز کیا داور مین اتال چ کرت ہیں : 

ا ترآ نکر کم س جہاں بھی این کے تھے لکا زک ہآ یاسے وه عطف کے سا تج رآ یبور خطف مغایر تک تقاضا 
کرت تب ان لین اموا ونوا لیدبت معلوم م واک گل ایبا نکی یقت سے فار ہے ام ذاا یمان ساب 
و البسیطلایزید ولاینقص- 

ترآ نکی کات یم قلب این ار یراید ا بل اجان یگ کب 
اور تلب یسیا ے ام زا ال شل ج چر طول کے وه بھی اسیا ہو گی: 

۳ں با نک و گل صا کی ض رن محصیت کے ساتھ مقار ہ ت کل کمان قولغتعال وان طاقن من ویب 
افعلوْا - 

(۳) رآ نکر م میں قول: رال کب ایب نکو شرط ترار ديا وشرط الشنق غیر الشی وا یمان سے اعمال نار نع »وس - 
فیکون‌بسیطا. والبسیط لایز یں ولاینقص اور »بت دلا ل ہیں ۔ 

تا من لیر واانقصان نے ہن نآیتول سے انت لال می کیا نک جاب ہے ےکہ دہال زیأدت نی الکیف مر ادے 7 نہیں 
]نی اما نکانور بڑہتاے شس ایمان یراس ہا تک ات وراد یں جن سین برارے۔الی فضا ال و الات 
کے اختار سے زیادہہہواسے اور ای افیا سے در جات دم اتب می زیادت وتقصان »وتاب کے تما هیام 2 توت میں 
برا ہی کر فض ال وکمالات کے اعتپار سے فرق م رتب ہو ے اک وت لول فَضَلْما بعصم سل بای نان 
رتا عفر تن برا ہیں الب خاب یکممالات کے اختبار سے :ہہت ناوت #وتاست یال آ یا ات ینف 


چا رر هگن ر( هن »5 ہداں 5 

ایا نک زیادت رال کال اما نکی یات مرادے لیکن ج بھی ہو جلا چکاہو یکی ای سنت دارا عت کے در میان 
جو اختلاف ے وو تیف ےکی وک مد شین فتتہاء کے نز ویک اعمال اس طور پر داخل ایمان نیس ہیں کے مزر 
وخوار کے ہی ںک ایک ل کرد خار ازایمان ہو جاس ےگا اک رح امام ابو یز تلو سین تال 
کو یقت ایمان سے ال طرب غاد لکرتے تمه مر جی 2 ہی کہ یمان کے ے اعما لک پل ضرورت نیس بل 
ل بہت ضرورت بے و جر کرام وک ج قرار یں دس ی ضرور ی قرار دی ہیں اور امام ابو ینہ 
اکنل بھی سب ی کے ہیں وچ راتا فکہاں بک تی رک نے بیس ایک ف ران نے شرت اغتیا رک اوردوسرے نے ہولت 
اتا رک ابو علیہ 34 کے ادیک این سے مراد اسک تیسرااطلاقی سے شس میں یات مون سے اور مد شین کے 
ادیک دو راوچ تھا اطلاقی مراد ے *ل میں زیادت مون سے در تقیقت اس انتا کا نشاہے ت اک تور کے تالم س 
م جے کے جواعما لکا ییا نے اکل ار قرار دی یں تان کے جاب د سے کے لے اپنے ط ہب بین کمرنے میں شرت 
ار کہ اما لکا یمان ل ہت غل وی جر سب اور او نیز کک اکاک متقابلہ مت زل خوار نج کے ساتھ امن 
کے جو اب د سے کے سول نے اپفلطھ ہب بیا نک نے می »بت ہو لت افیا ر یک گیا عم لکی ضر ورت بی کس ابا 
صاحب کل کے قول سے کل ایما نککامتلہاچالا دیور محد شن کے قول ےر وا یمان د وشن ہوگئی_ 


ایمان میں استشناہ کا هکم: .یبال ول کی ایک بات یس ظا ناف بیا نکیا جانا ےک کون مو کی 
اپنے با سے بل آنامزمن متا اکب سکتا ہے یبای کے ساتھإنشاء اڈ ہک قید لگا اض رو رکب امن سکیا قول ہیں : 

1- حضرت این مسعو دیپ اوران کے تلا ہاور غین فو ریہ سغیان بن یی اور کشر علا ءکوقے اور امام ات مھم لے 
قول ے کہ أنامق من إنشاء له ناه 

2۔ کر صقن اف کے نز دی ای نارکا سے ادر مکی تار ایام الو نیف لے رولیت کی ے۔ 
3- موز یره اف علانے دونوں قول میس اور یله روولاف عالات کے اغتبار سے کر 
جنہوں نے قید نی کال دوزمانہ ال کے اعتبار سے ہے اور جنہوں نے انخاء ارگ تیر اا نہوں نے ما یکا قاری کہ 
کال سوا دا ےکس یک رم رانا کی اج هب رآ وا ےکم کے لئے 7 گال 
ضرو ری ے تیه ولا تون ل این قاع ذلك ع انإ آن ماه (ستلکید 24 - 

4۔ اور ی کہا جا کے هک با مور ات کے اعتثال اور یع ییات سے یتنا بکانام یمان سے تو اکر مت نموت کہا 
اقا متحلق رک نف ےج قلا و اکس کو کے فلاف ےت حش حضرات نے هقی کاک تی شس رازم 
نر اور نف رات یمان کے لاڈ ے بل قید کیأنامؤ منکن سل تالیش 

ایمان واسلام میں نسبت: اعلام کے لفوی ”ن گردن یادن بطاعت ن اپے آپ کو پراوراک کے 
اس ےکردینا ی یافیا نماث تیار ظا ریک الا کہا اتا تچ سا حدیرث ج کنل می با نیا 
اب یبن داسلا م کے در میان مت کے بارے می قرآان د مث ے تین طر نکی ستیں تی ول : 


ہے چو RE‏ جنداں إل 


1- ہت آیت یش تراوف وتسادیکاذکر ہے کے قاجا من کات فیبا من امین ۵ فا وجا فیها غَر یی 
من ملین 5(سربالذاریات) 

۶ بلنقاق یہاں ایک تم تن سا مو مین »اک یوم ان کنام ام کم باشو فَعَلَيْهِ 
تا لان از لبن 9س بعوضش) 


یہاں بھی ایی ا نین وا معلوم ہوا اک دوثول مل تارف وتاویے۔ 

2- لیخ سآ یات ے تپا معلوم وتا ے جاک رمان غد اون کے : قال ال غراب گالب نوا ولکن کول 
اَسلَمْتَا(س مۃامجرات14) 

تیال ایا نک ی مر کے اسلا مکوخاب کیاکی اما وتول شی نسبت تپا ی شابت ہو گی ۱ 

3- اور ش اعادیث شی دونوں کے در میان تراغ وگوم وخصوص معلوم ہوتاے جیسے عدیث غل ہے :سٹل عليه 
الصلوةوالسلام أي الأعمال أفضل؟ فقال صلی الله عليه وسلم : الإسلام. فقال: آي الإسلام آنضل. فقال صلى اللہ 
علیه‌وسلم : الایمان" 

یبال ایب نکواسلام یں دا کر ال اعلام عم و او یمان توا کر اران سے انقیاد ظاہ رکو باضفی مرا لا اور 
الا ے یی ماد ہو تو سیت تباویمو ۷1 ریت هرن تھی اوراسلام سے صرف النقیاد ظاہ ری مراد 
ہو تو سبت تیاہن ہوگی اور گرا یمان سے تھ ربن ی اور اسلام سے افیا اہ ری و انی مراد ہو آوروفول یں نیت موم 
وخصوص مطلق ہی وم و خصو من وج ہکی یت نہیں ہو کتی گرچ نف نے غاب کر نک یکو شش : 


حدیث جبرائیل 
از : کن غر بن ا قاب غي اللہ عنهکال: یخن ئن ت مول انو صل اللہ ومام دات يرم اڅ 


تشریح: عام لور پر حدریث پڑاکو عدریث بج ال لکہا جاتاہے کی کہ ال میں حضرت بت انل اور نچ یکر کم علیہ 
الصاو ۃوالسلا م کے ور میان سوال وجوا بکاداقعہ لآ ی اور ہے داق حافظ فل ر ر نے بیان کے مطا لی *ھ میں بج 
الوداع سے یه یط اقا گی اور ا نر ا شر کے قر می زا نے میں یلآ متقصد یہ اک ہآپ موی پو ری زن ری م 
تی غرم بان لیے کے بعد اما خاک معلوم ہو جاۓ کہ ضم اکرنے میں ہولت 020 »مر قاق)اور 
مھ شی کا ان چیہ عدیمث ام ان وامالیریث کے لقب سے معلقب ہے ۔کی وک قام احعادیت می چو احکام ور تی لور 
پر کور ہیں حدریث جر کل یس دوسب اما طور پر زکور ہیں جس ط ری علوم وا ہکام ال رآ ن اہمالی طوریر سور فا تمہ ش 
کور ہون ےکی وجہ سے ا ںکوام ال ران »ارام ات بکہا جانا علامہ شی 040/55 فرب 2 ہی کہ می وج ےکہ صاحب 
مات نے ق رآ نکر مکی اتا کے »و 2 سوب فا تک رحاس حر کو انا ,کاب میش لا سے اور حدریث ال کو زار 
بشو الوٹراردیا۔ ۱ 
لع اتا لین چوکہ فرش وس پیا کے گے اس لے حضرت جج رال کے تور وال نکو لع سے آجی رکیاگیا 
کی کک ایام کے ہو رکو طلوع سے تی کیا انس ہی طلحت اس اور لع ال ر پھر تب اشک ل نما نکی کل می ںآ ہے 


و وہس وس بج جلد اول ا 
کہ افاددواستتفادویٹش ہبولت ہوک وک خر اس ے افادوواستفاد مشک ہوتاے_ 
قریلتیاض الڑیاب: یبال اضافت کے ساتم بھی یڑ نا جا ے اور وین کے ساتھ با کو ا س کا فائل باکر 
هناگ انز ہے دوسرے بل میس بھی بجی صور فی تاو رل تال تخس کی صفائی بن ونطافت نیا بک طرف 
اماروے اورد ورب تل کال قوت وشیا بکی رف اشار ہے اور دولوں سے اشا ہا با کی طرف ےک طلب 
لمع زمانے یس مفالبرن و ناف تکپڑ ےکا خیال رکھنا چا گن بدن ی کول سے هی زکرے اہ ع کنر 
و کے نیزاس با کی طرف بھی اشار و ےک بز رگو ںکی میلس میں جات وقت مر مکی صفائی بدن دکپٹڑے اور د کی 
صفال نےکر جاک انس کات و یفاص + اودال باتک طرف بھی اشھارد کہ گان شاب کے وق 
طلب مکرناچا تاک کاب چھاٹھانے اور نت و مشق تک لیف برداش کر سے 
۳8 نرِفِنَاأَكَد: رت مرو نے اپنے لن ے عدم حرف تکوس تک طرف مضو برد یی صرح ایک دوصرے 
سر لاور سب نے ا زا رکا ج اک ہنشںروایات دے معلوم بوا 
وضع کَلَيْهِعَلفَخْدَیْہِ: قز ےک خی ریش دواشال ہیں پل کے طرف رٹ سب ابیت م کے اعتبارسے بی 
مزاسب معلوم ہوجا ہے وو سرا اال ىہ ےکم تضور مکی رف را ے اور نال شر یف میں صراحد کرک : 
وضع‌یدیه على کبي النبي صلی اللہ علیه وسلم- 
اور ایک اختپار سے یی مناسب ‏ ےک سا لاه تاب ےک ایق طرف مجی بکو متو ہکرے اور ونول اا کو جع ی 
کیا جاسکت ا کہ پیل اتی ران ی بات رما متو هک کیلع وی ران پر بات رما 
تال: یامد سال :ان ورس کو ام نےکر یرال آیمت ترآ ا تنعل ا ذعاء الو سول بتک 
ك‌عاءِ کر بعصا ے معلوم ہوا ےک ای انخطاب نے ے؟ 
جواب :2 عم صرف تدم کے ے فرشتے اس میں داخل نی ہیں اس سے حن و فی م ریو ہیں می ی مرا نیل یا 
زیادہ تبرت واشتبا ہک مرش پیل نام سے خطا بکیا پچ رر سول الد لاش علیہ و عم سے خطاب یا اور ال رولیت مل 
اگ رجہ لامکا زک یں ے رق رن یکی رولیت میں سلا مک زک ہے۔ 
ادن عن الانلام: ال رولیت عل سوال عن ال اب مقدم سے ای کم اسلام ظا رک انقیا کا نام ے۔والظام م عنوان 
پا گر بقار ی میس رت ای ر ولیت سے جس میس سوال سن ال جتان مقدم ہے ۔ا یکا دج یہ ےک 
اخمال تام کیو تیر قمام طاعا ت کی #ولیت ایمان پر مو توف ے بنا بر بس ا کو مقر مکر نا مناسب ہے ۔بچھر اسلا مکی رف 
یس چا مکی عباد تکو بیا نکیاگیا۔ صلو, کوت سو اک حکمت ہے نلک تال یی وو مکی میں لح 
ہیں جال جا لی۔ ا یکانتقاضااس و محبت ہے۔اور جلا یکانتقاضاخضضب وانقام ہے اوران صفا تک ہور تلف اشیاء کے سط 
سے ہواے ان میں عبادات بھی ہیں فو لو و زکو 3 مظہر ہیں صفات جلا یاک و کہ نماز یش ایک مجر مکی طر وتاب 
کک طرف رد ہو ہاتھ ند ہکر خر کت نین ےکی طرف نظ کرک ےکم راہ اے ,کوک ایک بر مآ دج یکی ماک کے 


جا رس ر( و 85 مرول و 
اجلاس یں کم ڑاے۔ اک رب زک کر ایک بجر گی مر اپناما لک جممانہ عم لاد پا اور صوم وا مان 
کے مرت ںکہ روز ودار خداکی محب تکاد وید سالک محبت سے بر م کی تفا توا شک وتو زو اور ر س تؤسارے 
افعال عاشقول ے ۸3 کہ دیار کاب دی دار کے ےپ اند ہ إل ہو ور کوچ کوب لپ یشان حال مو دکوتا رباج اور 
حبو بکی ولوار و لک لوس وکنا رکراہے۔ رآ بی محبت کے مارے اور وب کے تریب اب جا کو قر با گر کے 
آجاتاہے۔ یہ لاور صفات جما یکامظب رہیں۔ 
تعجنتاله: یہاں ریت جب رل یٹلا سے بہت سے احوال توارض نمور زیر ہو سے یبن کا ہکرام ٹن 
کو ہت تب ہوا ایک نواس پر س کاکول اٹ تست اور دن تہایت صاف ستھرے ہیں نجس سے معلوم موتا کر 
تر بآ پا کاک یآ ری دک نیز ہلا تلف حضور وبا کے پاک زاو ملاک بی کیا اک سے بھی مکی موم وت گر ار 
مم می کل کی پوات.... نی زآداب تب تک بھی خیال تی ںکیا لت معلوم ہوتا سے کہ ہے بہت دو رکاکو لی ۶ ایآدی 
ہوگاء یھر جب سوا کیا علوم تسیک ایک نان اور دو رکآ دی ہے پھر حضو رور کے بیا نکی تس ا نک جس ے 
ظاہر ہو رپا کہ ا کے پیل ضور ٹم سے ای نے ہے ہا س سی ہی نک وک حضو ر سڑم کے تسوا کے علا ومان پان ںکاجانتا 
کن نین بجی دجو جات ہیں یا ہکرام کے تجب۔ 
آن ین یہاں تارا اغال»وتلب دک ا مق ٹ اورمعڑ تفر ہو گے کول ان مسر 1 باه مار 
مص رر ہو گی لواب عپارت لول وق الا بان الا یمان پاش عالاگلہ مرف اور حرف میں تايه ض رو ر کے ۔ 
جواب: ال کا اب کہ مرف بی الا یمان سے امان شر گی م رادے۔ اور مرف می ا یمان سے ا یمان لغو ی مراد 
سے اور هدغ متعالقات سے م کر یمان رگ کی تر یف م »فلا اشکال۔ 
پھر جم ایل لان سوا یکیاایمان کے بارے مم اور حورتام نے جواب دیا مو من ہہ سے تو سوال جواب کے مطا لی نہ 
ہوا۔ لو بات ہے س کر ق رن سے تلو واک حضرت جرال ناه مقر مو کی تین تھابنابرسں حور سے 
کیا سکی یں فرمادی۔ انان باش کیش بسن ال تعال سل وجوداور ات ولوحیر زات وصفا ت کالی یہ ا یجان لا سے ` 
درم تیب و نت منزہ ول ۱ 
وَمَلائِگيه: بی تع ہے مل کک اور ملک ال میس منک تا اور ہے مقلوب ے مالک سے ماخوذ سے ال وک سے تن 
ر الت اور فرش الد اور سولول کے در میان تا صد ہو کے ہیں ال لے مل فکہاجاناسے اور ضاف قیال لا مکو جنر پر مقدم 
کر لیا زد مک تکوماٹیل یل د کر فا فکر دی کل یط پا ان( ےکا مطلب یہ ےک 
ان > وج دی ایمان لا باجا کے اور ا نکی جو صفات ت رآ نکمم س کور ان پر یاس 

بل باه شکرمو ن 0 مغو ن الیل الا لایفترون 0لا يغْصۇن اه ما آمرهم ویفعلون ما یزمژزوه 
این لاور وصف کرت واقرشت سے پاک ہیں ٠ا‏ نکاوجو د کی ے عر م بھی ءالبعہ وجود ہہ بت عر م طوبیل ہے۔ 
وَكئه: ان کے وجور ین یاج کر انم ہم الام یر اللہ گی طرفے بہت کا کنیل نازل ہیں اور ہے سب O‏ 
ہیں ان مم کسی تاک وش یں اور ش ن کا ذک رق رن ور مات ںآیاےءا نک نت نکر ے نا سے قرآلن» 


گا سڈ سره مرول و 
رات ا لاورز وراو نارق ان یس ج کور ان تیان کے اور بھی مین رج کہ وائے ق رآ نکر 
کے تا متا منسوخ ہ رارق رآ مک رم بتک ریف قیام تک اع یلبق 
واشله: پش ےر ولک "شام مفحول م رس کے ہیں ان ید یمان لان کامطلب ہے کر الثم تعالیٰنےانمائوں 
کی اصلاج کے لج بہت سے قب شر ہآ و یو لیکو مقر رکیاہ دوف رشن نی بل انسان ہیں د« سب کے سب 7 ہیں اب نکی 
تفیل معلوم ےا نکی سیل پراییان لاس2 اور ی شش نکر کہ انہوں نے ادائۓ سارت می ں کسی ش ھک کنیل 
کی اور وو مسوم ہیں رسول کی کی کت پیر ےک الد کل شاک ذات ہر م تیوب دک کی ے پا کے اور اسان ہر 
تم پلی دگی و تیوب سے موث ے اس لے بل واسطہ ہر انان س ےکلا مک ناشمان خد اون دی کے لے مزاسب یں ۔ بنا میں الک 
ہستو کوش بکیاجھ تابر انا صفات کے ساتھ متصف ہیں کان ابر سم لک رل ول رک مر ود پاک یں لمذاان 
€ ہورنی حالس بھی ہے اورانسمان سے بھی کہ اش تی سے ا ام لے اویش او کرس ادرا ی سے 
انا نک تل ہے خلقے یداو جاور فقت یآ و ما مقر ما کل ہوجاۓے۔ 
وا مالآخر: : کےا دارکے بعددو س١ا‏ ایک دا رآ نے دالا ے اک اور اس یل جو مھ ہو نیوالا سے بث جرا صاب 
اور جت ووز وف ردان سب من مر ےکی کہ دنل بہت لوگ ای ےکام کرت ہیں ال نک کول جا ہیں ںاور بہت 
سے لوگ بر ےکا مکرتے ہیں مم اک وگو مزا ہیں مق زاس عام کے بعد اور الیک عام ہو ناج جہاں پو رک طرں جا 
مزا ورن اوہ تام ونا نصا فی کاالزام بد گا(العیازباللہ) 
لقن اس سے یہ تام مو ہکولفڈاانر پر عط کر وکیا کر یہاں عطف نہک کے ایا نگ صرح رر 
لایاءال کوج ےے e‏ نز یکا ملہ مز لالا قرام ستل ے »بت سے علاء اس می اف راط وزیا ہے 1 اوہ گے ہیں وبطور 
کید وش کے ساتم قم رک کی نف ےار تررے هش تل با بآ ہاہے باه مب هک 
ضر ورت کی 
الاخسان: چوکگہاصا نک ذ ق رآ نکرمشل ب۸ ب رآیاے شی ےن کرس معلوم بو بی ہے بنا بر بس جج را کیل این 
ےا کی یقت کے پارے میں سوا لکیااحران کے لغوی ی اکر ناور ر عااحان وہ سے تلو حدبیث پزاشیل ضور 
شلام نے بیان فا اورا کے دوور ےج بیان کے گے ایک درجہ مشاہددے کہ السا تصصو رک رکے عبارت کر ےکہ الد رود کچھ رپا 
ہے دو رادا جہ مراقیہ س ےک اراد چ ما کل نہ ہو کے توم ےکم شین ہ کہ ان تا یک ده اس اور تفس کہا 
کال متقصددرجہ مشاہددے اور ا کے حصول کورچ مرا اہ کو رکھاگیا 2 پگ بھی مو در جات س کت عبادت کے 
لئ ش رط ںیک حن قجولی کیلع شرس فی رت کے لۓ فت س جوشرائیا یں ا نک ر علیت کان ے۔ 
انی : قن لم کن ترافتإ یراك ہے فاج :اکا نیس بل فاعللت کے لے ہے اور ال فا نکی جا زوف ے وہ 
او الخانە‌یراک کر ا داے۔ 
ون عن المَاعَو: یل ینوں سوالوں میں مناسبت تی لین تام ت کی مناسبت پیل تینوں کے ساتھ اڑا 


لا رر شر سر »3 ہلداں 23 
ارچ معلوم نہیں ہورہی ہے لین ذراخو کر نے کے بعد اس میں جیب ویب مناسبت معلوم مون ے ود ےک دیوش 
مقص ر کے ہے بنایاگیادہایماان داسلا واخ ی ہیں جب یو ما کل ہو جات ہیں تو متیر پوراہگیااورج بک چز کے 
بنا ےکا مقر لور اہو جات ہے وا کو ود یا جاجاے لم ایی ول کے بجر قیام تک زکر مناسب ے۔ 
ما لمسذرل لها امین الایل: .حور نما اتاعلم بهاییک جیا وی طور یر اکل وصول کے 
لے عدم ع مکوخاب تکیبال تمت کی ہر اکل و سول اس عر م علم می شا ہو ہاے ورن یکواس شی مرکا تال تاک 
حضو ر مو اور جر اکل ادا ملاو ووسر ے کو معلوم ہو کا ے۔ 
أَْکَْد‌الاڈکھا: کر ردایات یل رب نکر ی کے سا ھآ یاسے اور ال سے رولیت یش میت کے سات ھآ یا نے 
کے اتتہار سے اک ب کر وموزث دوو ںکو شال مو جا شاب چ کل انش الا وتاب اک اش راک سے بے کے لے 
موث لابایا اک سے بنت مراد سے اور زک عم بط بح اوی محلو م ہو جا هکل کات جمہ ہے بائ دک اپ هآ کال 
کیامراد؟ ہے اس میس تلف وال :کر کے ے: 

1- سب سے ادلی وا وم ول سک اکا تظامجڑ جا ےگااصول بمنزلہ فرع وا گے اور فر وم بمنزلہ اصول کے لی 
ماما یرال کے سپ ردہو ہا ےکا تھے رو مرک حدریث مس ہے کہ [5 ونر ال عفر انظ راعش 

2- توق والدی نکی طرف اشار و ےکہ اولدلچ دال درن سے ای غر مت لیا ورس ال ے لھا ے 
اور سب و کشت یآ ع 

3- بائ دی زارے لومت کے رانک ہو جائیں کے تالک والمد یا نک ر عبت میں موی اور وو مول ہوگا_ 

4- قرب قیامت می بیو ںکیمکٹڑت سے ادلاد موک لک ال لپ هک نل یک رخ درگ کی درگ بلپ کے مرنے 
کے بحد ووو ر ای الک ہوگا_ 

5- اس سے فمادعا لکی طرف اشمارد کم الماتاولادکی وف روخت شر و ہو جا هک لک باجح در بات جاتے جاتے 
لپیا کو ہد ےگااور وہ مل کے کے طط رب اوک ا 

وزیا شرا ما عان یک شی سے کی گے بی رہ جج پن کی بھی نوف نہ تھی مرا عار یکی تی سے 
بصن نید نک کپ بھی میس نہیں ہوتے سے ۔ عالدہ اک لک جع سے مم فقیرر جا راگ یکی جع سے کت رکھوال الغا 
شی ات می ری مطلب ہہ ے مک اتتاخریب نلآ کہ اپنا نہ اونٹ ے اور نہ کید اور و وسرول کے اون کی 
لمحت کرو نگ رکو یکر 

اون :ای پیات بلس اوران کے تن وزینت سے ایک دو ےی خر وبا یکر یگ خلاصہ ہے 
ے ز یل اوران نما تال ان لو وگو ںکیلئے ہر اتتا ےر نیاوی ترق ہو کف دہادشاہت ان کو ,3 جاے گی ادرشر ف 

` لوگ ان کے زیردست ہو جاگیں گے _ الخ مش معاعلہ ال پلٹ جا گا۔ 
بل اک درف اتال ال رولیت ش١۱‏ 2 نین موجودے رہ تین دن کے بد ضور 


و سس ےو تہ چا مد ا 

لم نے ریت مرول فا بادر رولیت مخالف ہے ححخرت الوجر یر ہیی رولیت س تک ہآپ نے ای کل میس فرب 
ما لور وثول روایتوں مل تق بی ےک رت جرک اغا کے سوال وجواب کے بعد حضرت مرو کی ضرد ری 
ام مکیلع کس سے لے گے تے اور ضور نے دوسرے حاض رین ماس کے سا من بتلادیا۔ ‏ ر7 نان کے بهرجب 
مرت مرا تق لیف لا ۓ وان ست پگ ر تل طوریر فری فلا اخعلات ولاتعارض۔ 


اسلام کی بنیاد پانچ چیزون پر ہے 


زیت ال : اي مخت کال ال یفوص هلول يلم ناخ 
تشریح: میں یں عرد ی زک یز زوف ے خواودعائم ہو چنائیے ت ر وایتواں یس صراحتي لفظ ے پانتصال یا 


تواعد انا جاۓ سب یں اور کم شرف میس اتات ے توا یوقت ایا رکان یاصو ل مات بہت ے ی شتی نل 
رائۓے کہ معدود رب کدی صورت میں عر گت کی تبث ٹیس اخخقیار ہے پھر یال یکر کم نے لام ویک 
یہ کے سا تبیہ و یک جس طط رح خی ایک در میان مم لکھٹراہونے الا ستولن اور چارول‌طرف چا تلد لپ قائم ہوتاے 
کہ جب یل وودر میا سقون در ہو و کے تا ی یں ہو سکاو بقیہ نالا کے مواولن ہوتے ہیں اگمروونہ ہو ں تو خی تو 
وگ گر قص ر اور یوقت بھی خر گر جال ےکااندیشہ ہواے اور ال سے لور رح حطاظت ٹین موی ای ظر 1 
اسلا ماران پا چز ول کال وگل ہواے۔ان می لک توحید منز رکز کے س»اگروون ہوتواسلا مکاوجو رتیل 
ہو کے اور بقیہ ارکان بل طنابے کے ہیں جک اگران یں سے ایک یہہ وتواسلام میں مقصان ہوگا۔ دو Td‏ ایا 
صورت میس نقصان شس اضاف ہوگااود اگ پار وت موتونتصا نکی عد نم ےگ بالا اسلا »وبا کاائریشرے۔ 
اسلا مکو خی کس تح ال تخد یک ٹس ط رس انان شم کے اد ردا لجو جانے ےم رش دا ی‌وفا زی نون کے 
ل سے کفوظط ہو ناس نی زگ ری وروی سے کی فوط ہو اناہے۔ ای طرر اسان ج بکال اسلا کے انہر اقل 
مو جاتاے اورا ید ن( نا | تن( خیطان )کے عل ے فوا ہو جاتاے_ نی زوز کے نہ تیم اور 
طق ریریہ سے کفوظ ہو جا گا دو ری بالت ی ےکک پچ کے اد وم کے ہے ہیں ایک جو ووا مزا تقو مکی 
یت ر کے ہیں کر رن مووچ نون ا ره سے وا جاج گیل کی حیقیت رک کی نک اکر وو ہو تو 
و و اا کی ریا ن موک فو یہاں کہ وحی اسلام کا 2ء مقوم سے اور بقیہ ارکان کلمت - 


ارکان خمسہ میں ترتیب: ‏ تسری بات ی ےکہ اسلا مکدان پا رکا پر خم رک ےک وج بیا نک ہا 
ےک امور اسلا مت ی قو لکیساتھ سے یاعدم قول کے سات ۔ کر قول کے سات موتو کیہ توحید می کی اور اگرعدم 
تول ہو ق اس میں اف ہوگا اترک فٹنل ہوگا ترک نحل میں صو یکی وک صوم میں بج ھکر انیس بت بللہ صرف 
ترک خواہشات لش ے۔ ار توت تین صور تیں ہو ںگی یا ہی موی فو صلوۃ ے پا صرف بای تو زکوۃ ے یادووں سے 
ع رکب وید چہادکواس لے ذک مکی کاک دمم ردقت فرط نیس ہے ووایک وت ف رض ے۔ 


دس گنر کج جلا وچ 
ایمان کی شاخس 
انیت : ع نآ فرترگقال:قال سول او صل اله لولم الاجمان يبرن شعیفک لها 

تشریح: بش بکسرالباءوتحها: ( کے اصل منک چ کا کزان پھر ا کو یروش تین سے لن ےکر وب کل 
استعا لکیا اتا ے اور نت دک بھی استما لکرتے ہیں اور نل ایک سے چا کل یا پار سے نونک بھی استعا لک ے 
ہیں۔ :۱ سل مع درخ تک اناد برچ زک فر اور یہاں م راوخ انل میم ایمان متجددخسال تیه 
والاے۔ اق لھا: س جو فا ا کو تو نافصی کہا جا ےکا یا فاے اگوی عپارت لوں ے: اذا کان الاعمان ذاشعب 
فاتضلها. . . ۱ 

ا اون د ی ر کے ہیں ایک م کے فا ےکمترہے۔ دوصرے زا تصول کے اعتبار ے نات 
آسان فلا سے تو الد کی طر ف‌اشاره ۔ ای ے ال باتک طرا ف بی کر نا تور گر لدان ہونے 
کیلع جس طط رع جقوق اش کی ر مایت رو ری ہے ای ط رح تقوقالعبادکی مایت ضردرکی بقلم ہیس سے سب 
ےا کولیااور مت العاد ٹیش ے سب ے اد ی ولیا۔اب! اور اد کے در میا حتن توق ایی اور و یلار سب 
آ گے نو خلاصہ ہے کلک کال مسلمان ہوتے کے لے ترم موق ارو وق العپا وک پر ی‌ضر و رک ے۔ 

سوال :یبال ي اغال»وتلب هک ال رولیت میں برع وتو کا زک ے۔ اور باکر یف گر وت مین ستو نک زگر 
اور نر وایوں میس ارح وستو ن کا زک ے اور یٹ یں که حون ے اور لف ر وایات ڈی یو را تارج وگیا؟ 
جوایب: ترج اتل کہا جانا کہ حدری کال مق د دی ر نہیں بل شرس اور سب الاو کش رکیل سل ہوتے ہیں۔ 
۳ حضو ر یلیر پیے عرو لیلد یل رآہت ہآہتہ اضانہ »وترپ یاصاف بات بیس کہ عددٹش ا نزریک بھی 
"جوم الف ن کہ ایک عدو کے کر سے دومرے عددکی ی ہوجائۓے۔ فلااشکال‌فز.- 

الگا شون لجتای: ٠‏ جاک تقض انض ن ار اب س لک وو ش رما اح دعاوق اور حا کور و شحب 
یں وال ہو نے کے باوجو یچ راس لے ذک کیک بی دوسرے شع بک طرف دای اسب چوک الیک ام نیت یک باه 
۱ کے شعبہ ایمان ہونے میس کال ہو سک تھا بنا بر سی "سل طورپ بیا کید پھر فش حط رات نے ییہاں ىہ غ من کاک 
حیاایک ام ہی نج افیا کی ہے ا کواییان جو ما مور ہہ اورام راتا کے الک ج کے ترا ر وکیا توا ںکامی جاب دیا 
الحا اراس 71 فلت و م کے اعتہار سے ءارو بالیاوو2 نپ ۳ مر ددے اور ووا اغا ر کیال لیخ یں 
استعا لک نے کے اعقپار سے ج رار وکیا نف نے ہے بھی اکال ین یکیاکہ جیا تق نت شکفار مج بھی پا ہا ے۔ ہے 
ایما نشب عظی کے ,گید فا سک لیے ےکہ جھکافر مالک شی ے چا ںکرتاہے اس کے اتر ج یا یو خی 
جا لور کحیاے- دور بات ہے هک ایا نک جزء ہو نے سے مو من +ونالاڈم یں ہوجد کے 7 ۹ خصلری 
ہونے سےکافر+ونالازم یں ہو تاے۔ ایمان وک رکا تل توول کے تھے پھر رک کے اندر اام غداوتر لگنا ور کت 
ماع ہد ہا سے وور تقیقت جیا نیس یک وہ ٹزو مهافت ہے۔ پر مور نے ایا نکو شا وانے در خت کے سام بے 


جا رس مشکوۃ جلدادل ق 
د یکہ جس طردرخت گی روآ شماخوں اورچتوں سے مون ے اور ون مولو درخت تال ر ےگا 9ئ 
مر ا کا خطرہ ہوتا ہے۔ اک رح اما نکی روآ و سن وزینت اال کے زر ید مو ے اور رال نہ ہو ایمان پڈمردہ 
و جا کاادراں گیازیت وروی خت ہوجائۓ 02701 اٹل ایمان توا کا بھی خر مج (اعازنا أنهمنه) 

مؤمن ومسلم کامنہوم 
لت یت : عن کب لو ځرو <ائهلۂ تن سیم اسلخرنینلسانوویرو»اغ 
تشریح: یہاں مبلا فت کے تتاعدہ کے تیار سے اسم جن سکااطلاقی فر وکا ل ی کر اه یلص 
ملاع رم یاک ا دک سمل دوصرے افراوگو "اک اف رال سے نی ہیں ی ےکی بڑے ام 
کے با می يکہا انا ےکہ عالم تو و ہے اسک مطلب ‏ رگزیہ کی لک دوس رال یلم مطلب مہ ہوا ےک ناف 
عا مکائل کے منقابلہ مھ سگویاعالم کی نیس تو حری کا مطلب ہے م وکاک مسلران تو وہ ے نت کال مسلران وہ سے کے انر ہے 
مف م رگ لیکن تر جم کرتے وقت ہہ لفیانہکہاجاۓ ورد عرب کا مقر تہ دید و ید بو باکر حر ف کا مل 
قد ےک توق رپ سا تقو العا کی لور نکی رور کے ہے مطلب لک هافر 
یش ہوں و وکا ل مسلران ہے خواودوسرے اوصاف ن می ہو (ما شک مرت بل بافذاشتقاق کم ییاسک 
کے ان راغ زاشتقان »وتا اس پر مشت نک طلال موتا اور اندر باز نہ ہوا پر مشش کا اطلاق نہ ہوگا جیے عام اسو 
کہاجا ےکک کے انہر کم موجودہو ابی طر 2 کم وی وک جس کے اندرا ںکاماغذ کم یی دوس و ںکی اس سے سا ہو 
یبال سلو نکی مت کیت دای تک ہن کیک یکی وک ملا نکا کشر معاشر وو مواملہ دو سے میا نی سے 
ہواکراسے ورن نات وکا رکو ی تکلیف بناجا کر یں ہے کسی دجرے کہ ئ۶ کی یک رولیت میں ا لو نکی چ الا لک 
لفظآ اس انان ان ہے نان جانورو ںکونکلیف دی دل و عی دآکی ہے تیه با رک ش نی فک عدیت ے وت امزآ 
فهرو باق ا تامت مد وداد تارب اطفال ال حدریث کے لاف لک رگ اس سے مقص د ایزاء لب اصلاع سب - 
منلسانه‌وییه: ‏ لان سے مراد قول اور ید سے مراد ل سے چھکمہ فافع ہاتھ ہی سے ہو اکرتے ہیں الم 7 
کید یزاس می بید نوی بھی شائل ہو اس ےک اپتی علومت کے تج ا ی کوای انی اور قول نہک کر اسلا ےکہا 
مہ دوضصورر کی دا غل ہو ہے یش شک بان ال انیا اس اور ریہ لہا نکاس ے مقر ميا ال 
کف ز یادہ و ے ادر دے پات | 1 ےش ۶ وب کہا: 
جَراحات‌الستان‌هاالتيام ولایلتام‌ماجرح‌للسان 
جزز بان موچورو یم موچوو»ما ضر ونا »دور وق یب زمد ددم دوہ را ایک لیف دی جا کب 

والناجز: ‏ یہاں یوی قاع ہے جو پپیلے جملہ بی سکہاکیا۔ چ کہ اکٹ رہ ج رکا لاق رت اہ رک یکر نے والوںپے 
وتا ے او رق رآن و حدریث میں مہا جج ری نکی جو ہج ری بی کے لے معلوم مول ہیں وپ بیان فرماتے ہیں کک 
ہاج ودد ےک هن هجر ما ھی لعف کی هک ال بجر تکااصل مقر وی رو مرک ہجثرت ‏ ےک گناہ سے ا ےکودور 


موسرم مور و 
کے وگ یاآپ یہاں ایک فرب نک فرب سب کب نکوهجرت من امک لی امین دولت آهییب نہ وق آواب 
بھی قیام تکک بجر کاڈ اب ما کر کاو تح میسر کہ با نیال کوتر ککرتے رہواود دوس راف ری ج نویر دولت 
تعیب بو تی ان کے دلوں می تفا ۓآ هکل ہے تان کے کیہ کے لے فرار ہے ہی ںکہ تم رت نارکا 
اناو رور کر وک ماس ہیں می ی کان ے اور ھککرن ےکی عاجت نیس بل بیش رک ما کی ال کر نا چان کہ جر تکا 
ل مقر یا کل بو 
ملاسان الدعلیووسليانسلویی كب اغ: 
سوال: یبال تارا ہے اشکال ہوا ےک حضور ر سیم نے ایک ی م کے سوال میس مخلف جوابات د یے کے ہا الآ 
الْْعلِمِیع 2 کنو جواب ٹیل امن را سے داور اش مش رولیت مں ای لاملا ۶ کی ؟ کے جواب سمطو 
العام ے4 رای اور کشا 0 -.ۃ بھی الصلوۃ ةلیقآھا فرمایا۔ نو یہ جوابات دی سطرر و ست ہوا؟ 
جوابات :تاس کے لف جرابت ر یۓ گئ: 

1- سا ین کے الات تاف ہو ےکی با تلف جواب دیا مشلا کی کے اند مخ لکامادہطالب تبیہ اوصاف موجوو جے_ 
ا کے اعم ام نض لک کیا ری کے ان ایا دهاش پوس م ور ان اک کے اندد نما زکی غفل گس 
کے لے الصاو ری تج باف مایا ی تیاس 

2 کی لاف زمان ومکان کے انتا ے جواب مل اختلاف ہوا۔ 

3- یافضلیت کے جات کلف لول ایک جبت ے انل ے اور دوسری جبت سے انل سے ال انتلاف جہات٠‏ 
کے اختبار سے جواب یس اختلاف ہہواورنہ حقیقی سکوگیاختتاف نیمز شکال بھی ی 


نبی کریم ب سے محبت کے درجات 
0 09 
تشریح: ‏ میت بزاش بھ یکمال ایما نکی تی مرا سے شی نب یکر کی بت جب تک تام وش 
واقارپ 1 محبت ے زد و وکا ی مسلران یں ہو سکیا رتم کے وقت ہی تی دنہ کنر ے کہ و عید با رے۔ 
اقسام محبت: اب اس شل کٹ ہل )کہ اکس ےکو می مت مر اد ےآ یا عبت ھی رادرم بامحبت تل نو عام رشن 
کرام مات بی کہ اس سے عبت شف م راد ہے جوا خی کیا ےک ہکی ناتا رکیطرف اکر ولاک ہو لیکن خلا بج ہک 
کہ تفور مل مکی اتا میس دنیدی دا خروی فایزه کی سے امز ااتہاںع سنت کے اور جب حب کل موی توزوا لکااند یڈ 
نی ر ےگا لان عحبت تی دو ےک کی طرف فلا ہوتاہے اور مہ ایک کیفیت تضاف ہے اود فایلا 
ووا ییا کا مس ہو لا نیز وو اب اد کی ہی ںبھی زک بھی ول ےک پا پک بت فرزندے ”ہی ہو کر 
ترذ کل زا ہوجائی ے۔ لین عبت نیک زد پز یر نیس موق ای مراد ہوک تئیہ حطرت شاہ 
تیل ت9 کے ا یکو دای وشواہد سے اب تکیا۔اور علامہ تظالی 3040095 کی ھی کچی رائۓ ہے ۔دوصری طرف 


و سکن ر ہو ےہ چا جداں و 
صون ا ےکر امو شقن می رشن سے قول ےک یہاں محبت سے بت ی راد ےکآ پ کے تور سے بیع خوش ہو 
او رآ پکاذکررو ںک اہو زبا نآپ کے کر سے لذت ما س لکرے او رپ کے نام مارک سے ول ی موی بت 
ی کاتقاضاے او رکال ای میں ےک وکر عبت کل ایک فرضی ونی جچیزے ال ا سک کول تيتشت یں غر ہے 
اف فی مزاع اور صو مزا رات در میان چلتاے شقزاعلامہ سید بنوری لن فرباتے ہی کہ عدیوث 
میں ز راحب قل م ادے اور فتطاحب تی ا O‏ یم ادے لکا ار وطیادحب کی وراه 
بت فی سے ہواور یے تر کر دک سے تن جاے اور طرات اپ عالات مطال ہر نے سے بجی ظاہ ہو تا ےک 
وت کہ اپن وال ر خوش وا قار بک محبت سے ز یادہ ی تآ پ نا سے ی امک ماک ی 
عبت کا شتی و لی وت تلکیس ده تک امد س حضرت ابو رنه حضو ردا مم کے سان اچ ہآ پک لر ۱ 
دیور اپتاسارا جم ز یہو ید ھآپ مك ایک تر کی کے ند دیالیک عورت نے لپ شور اد باس یکو 

حور ا کے عر م لپ ار دید این زب کاچ نے خو ن فی لیا اکا شاب فی لا نا عبت می سے اس شک مکاا ینار 
نیس ہو اتا بی ے »و سنا _ گنل کے اعتبارے تال نفرت ے لین جب شوت فال بآ ہا تووونااب 
م وکر ےکی تو یھو قل پر الب + وکیا جب طبا ترت ہو جاۓ رگ گناد نی نکر سک لہ زا یہاں محبت تراد 
و 1 ا کت تک عر مکل بھی نہیں ہوگا اور ندز وال کنر بش ہوگاے 
اسباب محبت: اب بناچا هکم ورس زیر بت کیو ہو چا تسب کت پا ہچ ی ہ ارک ہیں۔ 
مال مال وال ترات گیا کے اندد یتال وال حبت 0009 ضس حوان بھی ان ہو جاتے ہیں 
یے لچ پرندے چان کے کن پ اشن ہیں هي وانے را کی رد شا خاش کہ جان ی یں او ری پر یکا 
اتمان ہو تال سے بت ہو جا ہے۔انسان ونان سے موی چانور بھی اصا نکی وج ے محبت کر نے کے ہیں اور ۷ 
تفع ہو جات ہیں کے شرب بی ءوغیرہکودیکھاگیا۔ اگ کسی کے انر سن بھی نیس اسان کی گر صاح بکمالی سب » ہڑا 
عا ارگ ہے اس سے محبت ہو جا سے چا گنای بدصورت و ل کیوں نہ ہو اور قراب تک وجہ سے محبت ہو ناتذ ری 
بات ان میں کول ایک جب موجودہونے سے محبت ہو ہا سے اور تضور یم سے انر ے زی کل وج الام 
اکل موچ و هپت یاد ہت ن ہو کس ے ہو۔ ب یکلا تی لی نے ایل الفل آں پاک ٠‏ 
ا رک وکر نہ بوچ اپناسب سے زیادہ محبوب بنا یتسب سے زیادو "تین ض رور ارچ رت لوف اا کے بارے 
ٹیش حدبی فآ ےکآ پکود یکا نف تال پاک کر شم کرت فا ہوجاے ارا حضو رال ے میں 

کی وکر جس یک وایئہ تعاس ہ رشحم کے مکار م سے مزر یکی صورت کے اعقبار سے کی ای ہو نا پانے۔ اس کے ے 
میت حران پاٹ کے دوشع رج یکا ہیں :فرمایا : 

واحسنمنکلم ترقط نی واجم لمنکلم تلدالنساء 
خلقت مبرآی یل عیب کانک قد شاقت کماتشاء 
اور صرت ماش صد رت للہا ایی نک : 


چیا wr‏ سر لک جران لے 


ااشمس وللاذاتیشمیس وشمسی خیرم نشمس السماء 

۱ نشمش الناس تطلع تم فجر وشمسی‌تطلح بع ناوشا 
ا کے علادوش ا لکتتاہوں مم ںآ پ موا کے ال کے بارے میں بہت کی حد شی ںآ یں او رکا کات ری نیس 
وا ھی ہو یا مکی اخلاتی ہو اتل ابش کے اعتہار ے ہو یا تلق مخ الناس کے اعتبار سے مو شود ال ات کلام پک میں 
ارشادفرماتۓ ہیں: انك لع خی مم (س رقف 4) 
اء تیم الام شس جو الات میم کرد سے کے ووسب تب هضور رت 2 
فلاصہ ےے: بعں از خر ابز مگ تو یتمه ختصر 
او رپ کا ان ور مت و رافت الد رجہ م سب کہ رآ نکمم رانا : 
ما منت رخ لین (سررةالانیاء 6107 
تام ی آو مکودوز اب دک ےی نے کیک وش فرال‌اور بو کو اور کی ار شلات : 
وك عل قا محف وشن القار اق گنال عمراں103) 
مرها ول اساب 7 ظاہ ہیں الہ قرابت جس ھپ شی رگی ہے لین کر راگ بی نظ رسے دیکھاجائے ذآپ کی 
قرایت دو سرو لگ قرایت سے اوک ےکی وک دو سروک قرات جسمانی سے او رآپ لتق رابت وحافی ہے ا کو 
رآ نکر مم س یا نگیاگیا: لین او ل بل ین من لهم (سررتلاحرب»» 
کہ کاس تلق ایمانرارو لکایقزات ے ھی زیاددے اور بزل باپ کے ے۔ چا نم حضرت اپ من کب ود قرات 
هواب لھ ہے۔اورابوداود س حضرت الوم ڈیڈ ے روک ے: قال: قال شول ال صل الله یووم 
إا نالك رة لالب 
تو جب ہے اباب تن کم ےيل کے اندر لی وج الات ولا کل ہو سے 7 آپ ملس محبت بھی سب سے ز یار ہونا 
ل کاتقاضاے۔ 
محبت کن افراد سے ہوتی ہے: پھر یاد رکھنا ض رو رک س کہ محبت تین م کے ل وگول سے مو اکر ہے 
یلته نظ مکی نا یہ اہ کی ط ر فی اشا ءکیادالد ے اور ول سے شفق تک با ا یکی طرف اشا کیال سے اور عام 
لوگوں سے محبت ہوئی ے جنسیت اور مغر یک بناپہ ءا یکی طرف اشار ٥کیا‏ الاس کے افنڑے۔ قد ہے ےک ہ رم 
کے وگول بڑے ‏ چھو کے اور برا ہکی محبت ےآ پک جبت زیادہ ہو نا ا یما نک یک تقاضاہے۔اب عدریتث بل وال کوولہ 
پر قد مکی کی دک وال دج وکا مق د م ہے۔ نج کشر تک باه دک ب رای ککادالد ےکر ول او رس لم شش لی کی رولیت 
س ول رکو مقد مکیاوالدپہ۔ اس هکم ال سے زیادہ بت ونی ے اور والد سے من لہ الولں م وال بھی داخل 
ہوگئی۔ کان ایک اشکال باق جاناے کہ عدیث میس اپن س کاک خی ںکیا۔ جس سے لیے معلوم ہوتا ےک ہہ پکی 
تاه ہے رور کنا ٠ک‏ ات 7 سوقت انسان اپنے فر زم ووالدے ابق جن ے زیادہ 
کج تکراہے۔ فان سے زیادو ری محبت ہو کو زک رک یکیال ا سے سے ز یه بت اط از لق اول مو تاچ اځ علاده 


چا سکره سره کج ہجداں له 
ازہں بای شرب فک د ولیت ٹیس ےک ایک دفعہ ریت ریا ے ری 

ئت ا ٳ من ڪل مي ر تفسي. قال:+غرل الو صل الد علیورعلَ:'ل. والَي سي پیروعق رن أعت ليك 
من یات تال : غر :أت ان وال أحث لين تفي . قال : مول او صل اله علیو وس :"ان ياغمر ". 
وال معلوم هواک حضو رر سے rs‏ گی زیادہ عبت ہو ناضمر دریاے۔ 

محبت کے درجات: ‏ بر مایا هکر عبت کے دودر ے ہیں۔ ایک درج ہکال۔ ووم د رچ نا تی کان 
ایکا کال تجاح سے۔ اس یکو و کی عربت شی فرما اگیا۔ 

اون از حقی کون هوا تب جلف و اگ کال ان بو حت م و کی ے لیا ناف ہ وی لزا محصیت 
کے ساتھ بت مدق ہے یاک عدریث می آنا کہ ایک آوی شراب یکر ور مکی اس میں آ يا صحابہ 
کرام کان نے لحنت دیاش وکیا آپ رای اف شا ۔ اس سے معلوم اک رو کے 
باس میں یہ نی کہا جات کاک ان کے دل میں ارو سو لکی بت نیس بل بت گر نا فص ففسرانی خوان شک ياه 
موب ے۔ 


اہ لذت ایمان کا حصول 

لت ان : عن أنی‌ال: کال مو ن ایو صل اللہ لیو ومام ' لاتم ن کی نیوج بهن علاوة اجان 
تشریح: یہاں مر بل اور تررس تکی عال ت کی ط رک اشار ہکیاگیا کے ایک فراوئی ابر الا شی رک وکڑوا 
و کر ےگا مرش جتنا یدہم وکاڈ وا کی اتنازیادہہوگااور رف ہوگاکڑواا تنا یکم ہوگا۔ پات کہ جب لور 
کت ہو جا ۓگی ورک لذت سو لک ےگل ای طرح سے اندر حصا ل ایب نک ورپ ہوں گے طاوت ایبان پورگ 
ط رج ها + وگ اور جس قر رکم ہو کے ای قدر علاوت کی کم + گا اب یبال پٹ »وک علاوت امان س ےکیام راد 
7 کی الد بین این ع ری اور صوفیائ ےکر ام کچ ہی کہ ال سے مراد طا طاعات میس لزت حاص لکرنااور ٠‏ 
اد تال کی رضامت کی میس مشقت برداش تکرنااور ای میں لت و سکرنااور مھا کی ے طبعا نف تکرناے اور لی 
مین اور ہاو فربات ہی ںکہ یہاں لت سے تی لزت مرا بال تی لذت مراد کہ جس طر ایک 
ھی سکڑوی هط روہ متا ےکر جب تل سے غور وک کرت ےک اس یس می ری تندررستی ے تو طویع یکو غلوب ۱ 
کر کے خو شی کے ساتقھ دوااسقعا کر بای طررح سکا قل گناد کے مر نی متلا سے ووطاع تک مشتقت برداش تکرنے 
کوط ابر ا کے کار جب کل ور کر کر اواو نوی یل روک صلا دا روک فلاں ےو ل طبع کو 
مغلو بکر سے اتال ولج روت کرش ر یع تک اتا غکرتاہوایک تھی لز تکی عالت حا لک ےکا ونی عالت علاوت 
ایھاانع ےھر 22 یں علاوت سے مو کی علاوت هرا ادلی ے اور نخس نے علاوت معنوی مراول کی صورت میں ۱ 
عدریث ابق ظا رک عالت پر ےگیااوز حا ہکرام ڑا کے عالات کے تھے بق بو 

تاو اشا: سوال :اس یں اخال ےک ایک می یرت اللہ تی اور ر سول ال مک رآ پ ما نے مجح 


وس هک سس سس لا سا پچ از 
یا کہ ایک خیب نے حش ےکی یرل اللہ تھا اور ر سو لک نکر کے ومن غص ۂ کہا تھا الپ آپ مل 

کل رف رما ہوئۓ رماب بلس الخطیب آنت: فتعارضا_جهایافت: و کلف ط رت جو ابد لیات 

1- آپ کے لے اقا هک فپ کے یکر نے میس اش تج بی 7 0ج 
اش راک کا وتم ہوڑاہے تاب سک دو رول کے ے جائ لب 

2- خطبات میں ایب وتفصبیل مقصودہونی ہے اس لئ ابال تیر اسب مو ےکی بنا رد فرمایااو رآ پ ا 
تھے اورا می ابعال رید دہ ےتال اخقارآی دکڑے۔ 

3- کی ر قلاف اولوت یړ نے او رآ پک اکر نان جو از کے لے ہے۔ 

4۔ اطاعت می الشرور سول کی جھو گی اطاعت منرت تا ایک کی اطا عت مت ر یں بنا ری اطاعت یں دونو نک کیا 
جا ےکا تخلاف ممحبیت کےکہ ال می ہ رای ککی محصیت الک الک ب یگ رات یکا ہب سے امزاوپل ش کر نامناسب نیل 
سوت ک تو جیہات لیں جو شروحات مرت میں بو ۱ 


ایمان کا لطف 

دی الت :عن الاس بن بی اسب ال کال مول الو صل الله عَليِِوَمَلَم داق َعم الان تنم غيا - 
تشریح: : ای اک بات ہی ںکہ جک چيه راش ہو جانا ہے دہ یزاس کے کے اسان و ہا ہے اک 
ط رح جو و مین ایا ره دای ہو جاتاہے اس کے لے ان کے اکا بل تآسان و کل ہو ہے یں کہ ان سے لزت 
و لک هگن اور بدا کن مر ت وب و ی تاا ف مات ہیں کہ عدریث ن کور س اس پا کی طرف اشا سے 
کہ جس طط رح طبیعت عم لزی شرف ال »و ے »اک ط رب جو قوپ ی اش دس پاک پوت ہیں دہ 
ایام خراونرکی یرف لو 2 ہیں اوران یس لزت و کر ےہ نکر کیفیت حا بو کور واش ہل رے_ 
ر ضا کے "ال طررح قا عت واکت اک :اک ال کے بعد دوب رک چزول الات 001 کی طلب ہو ے 
ال رک ر ابیت اکت ے سوا کی لب دای طررد ین وط ہب کے باس میں اسلام کے 0 ی 
طرف معفلق لفات د ہواور حور ی رسمالت کے موایر مگ اک ر الت کک ر ےکی طرف موجہ نہ بو باعل 
قار #5 فرماتۓے ہی کہ رضاسے مرا اد انقیاد ظاہ رک وہای ہے اور اس بل کالب هکم لاه صابر ھت هلر 
تاو ترا اوراوام رکا قال اور نوی سے اجقتا بکر کے مام شاک کی پا کار حور مود ابتاحاکرے۔ 


نجات کا دارومدار اسلام پر ہے 
دنت یت : نای خر یر ککاں: کال مغرل الو صل الہ علیووس: والَِي تفس کو یرو ابسععيآعنا لب 
تشریح: یں کن لے چاه کا 9-0 صفات ہیں اور ر زوف ے نفر یر 
عبارت ول ہے لیس احدالح کش من اصحاب شی لا کانمن اصحاب الا جن 7م کے لوگ ہوں گے ایک ده سب 
جنہوں نے ستاو یمان یں لا الک موی ہے جوز کور ہو اور رو راو شس نے ستاو رایمان لا یاک الک 7 22 


کل رس رفا سره هس ہجداں و 
وگ قیسراودے مہ ےکی کش اوراییا ن کی نیس لا یاو کوت عن کے م لاو رال و عیرے غارجیں۔ 

مهنو لد بر جاتٹاچا کہ ام تکی وو یں ہیں ایک امت د گوست دوس رک امت اجابت امت دعوت ا کو 
کہا جانا ےک د کوت ایمان کی اود یمان لا ۓ اور امت اجابت دہ ورگ ہی ںکہ جن کے پاس حضو روک وگوت امان 
کی اورایمان کی لے ییہاں امت سے امت د کوت هرا ادے یں 2 کے کی لو کول تہ ہوں با مود اور را ٰ 7 
ن کر کے اس لے بیا نکیا کہ ان کے پا لآ سا یکناب ہو نے کے پاوجور جب وہ حضو ر یلپ ا یمان نہ لان ےکی وج ے 
دوزگی ہو ےلو 2 اسان ناب کی ہے وداگر تضور مل م پرایمان نہ لاس بطر ر ال اول دوز ی ہوں ے-۔ 


دوہرا اجر پانے وائے 

لذت لت : رن اي موت اشر يال :کال مول ای صل الله عليه ومام : كر أ جُرَانالج 
تشریح: یہاںاال ا ات ارت کر نے کیہ ام سے ال الق رآن والتور اة وال یل والزیورمر او مو گے 
ہیں اران و اما طلا ے کہ جہاں کیال تا بکائف آنا ے اس سے ود وا ام لالیاجاتاے۔- 
دوہر اجرپانیم والے ابل کتاب کون ہیں؟ ‏ اب رث مزا کٹ ہو لک یہاں دونوں فرب مرا 
یں با صرف نصا رک مراد لآ خر حرا یکی رائۓ کر اس سے صرف تصا رک راد ہیں ال ےک با رکش ری کیا 
رولیت ے: 7ل مِنأَمْلِ الْکتاب آ میور آمن‌وشعگ صل اللهعلیووملًی_ 
دو رک بات یج کہ زت سیون کے زا ے لوگ يو هرت تیوه جب ومان یمان نیس لئے 
دوا پاے کے ےجو 3 002 تیه (لچة نی پرایمان لانااوه لگ لمزاال وو شای ین ون کے کن 
مرف نصاری ہوں گے لیکن عام در کے نزدریک عام اصطلاع کے موا ین ها کی وونوں فان راد موں گے۔ نیز 
دوسرے لصو سے بھی بی مرا ہیں کے طبرا یکی روات کہ : اوليك یو َو اَجْرَهْمْ ون آیت حضرت 
سلممان فا ر ی اور یدام بن سلام کے بے میس نازل مول مد شس ضر کی اور وو سرا یپوی تھا۔ اک طم ناک 
گارولیتدے بویت زب ادنیل ويام ىي هل ال ليوام ` 
اور ست اھ یں جل من آَل الکتابی کا لفت سے امزادونوں ف ران داخل ہو گے پاق فی اول نے جود مل ی کی ا سکا 
جواب بے کہ پوو نے جب ورن یمان لا ات اس کے تن می کی ای اانا وگیا۔ لمذا من 
ایا اور رک شر یفک وای تکاجو اب ہے سے کہ کی کے ذک ررنے سے دوس ےکی مراد ِ ۱ 
وم جل تايۇ ا اخسن E‏ وعلمها کیراب آعتها کر وجها که جر 
0 کی ناپ راہ لا ایا ری کے مامت ل وگول کے تما یکر ےکی باه بطو ر کی رک را کیا کت یر 
اش کے ہر ای کک طرف راع حش تاکی رک غر ے اما هیا 
پر یلد وآو ی شل دو لے با رو مب ین بتک کے پارے مس لوتر مور ہیں لوروا ج کر 
اس میس شر سن سے تلف اقوال منقول ہیں ت کہ اک کم دارب پر نیک اجاور دو سر لاخر اا پر اور ت نے 


اا یں چ ہا و 

کہااخماقی پر ایک اور تز وع پر دو !اج ورف سکب اک ایک اج تیم وتاریب اور دو راطق تورپ اود اک فار مکی 
زی نے ہے علف کیاگیا۔ رال حدیث ٹیل شبہ ہے ہوا هک ان تح نآر یو لیکو وا جر دوگ کر ےکی ها 
ںان تین ںک یکوئی خصی ص ہیں جو کی ووک لک اواج میں گے_ ۱ 
وال حریٹ مس ان تنو ںکی شی سک یکیاوج ہے اوردوا ج کیال ہے۔ ایک گل می وی سے یکر ات سو 

کی اجر ماتاے اوا ی کے کلف جوابات دک ۱ 

جوابات:1- ردام فش تل ی جوا جا اس سے زا ہیں دوسرے اعمال ش یه تاے۔ 

2- ا کو مرف کور داعمال پر دواج نان کے ب رل پ دوا ج یرمق اج مو عود سک علادد مزا رک گل 

لا نکو ایک سے نےکر دس پچ رای سے سات سوک نے ےگابی ا کے لاوطو ر اعام اور زر و وج لگ 

7 3- ا نکودواجردو پل ی ایک نی کل ہیں کن برط مقارنت عم لآخر۔اب اال را بک صرف حضو ر لیر 

ایا لان هک وج دواج میس گے_ ہثم ال فلت اه ا یمان لا یاتھا۔اپنے بی ی امان لان ےکااج وال وقت 

لپ تباب صرف مور یمان لانے کے وبکر ل رہ ہیں ۔ اک ط ریہ دوو لکاعال او 

4- ان تن ںکی می مرا نی بک اس سے ایک عا مک یکی طرف نشار کرام تصو دہ ےکر جو له وتیل 

دوج سے م رکب ہوکہ ایک کے ساتھ مشغول ہونے سے دوسر ےکی طرف خحیال ,۷ مکل ہوتاے۔ اس میس دواجر لے 

یں سکب ادل ایک اه تن کر ایک ریت پ دی بعد ا تک دو سرے ناهن لازاادر ا یکی ش لیعت پر 

ایند ہو ناو ہی شر لو یع یکو پل ترک رسد بہت شاقی ہوم ہے۔ ااا چغ ۱۷ و رسک اور میم 

لی الکار ہک کے ضور وك این ےآ یا کو د واج نا هآ یہاں ا تینو ںکی خصوعیبت لب ان کے زر 
سے یی امو لک رف اشک ای ریہ دلو ںوھ ایال 

۱ غلبه اسلام تک کفار سے جنگ کا حکم 

یت :کپ ائی حر هي اللہ عزعاقال: کال مرن افو صل اه عبو وس :مرك أن یل قاس 

تشریح: 11 کر ورین روش گن گے ور ےار کووو در تساو د زر رآودور 

کر کیل ی ی آپ یش نکی روت لہ ناک ہکفردش رک سے دنا کاس ہوئے اعنام کے ز ريد دسالم 

۱ اعضاء ی زاب ہو ماع جیباک PINS‏ انمان کے و2 و تیا یاعضاءال 0 

راپ تہ ہو چا لو در تقیقت زک احا ہوتاے کر بھی ظکم خی ںکہتا۔اسی طر کفروشرکک وچ سے عام اضما کاچ 

عضو قراب ہو چاتاہے اک ےکا سے ےکی دج سے چہادکا عم ہواتاکہ بقیہ نان خر اب نہ ہو ما چہاددر عقیقت مام نی 

بت انس مکنا کم ہے یف نزن الا مک ہیں۔ 

اشکال: ۳ رٹ ٹل مقاللہ 1 غایت شہادتءا ات لوق اور ایام زکو کو قراردیاگیا لے معلوم ہوتاے و دوم 9 

اام کار موجب تال 

جھای: ہے ےکہ شہادت بالر سال کے ین میں تام احا مکی ترا نآ کی لذ ااا ری یال تس الا سک الا لام کے 


ری مرول ی 


کک میں سب داخل ہو کے را تست الصاوت وا روتکو ی بعد العام کے طور پر اں لے یا نک کیک بے دولول 


عپادت بد ع وہالیے کے اصمول ہیں- 
اشکال: بر میٹ عذ امس تا لک فلت کور د اغیاء لش تراد گیا الک اور يس کی چان وال حفوظا ہو جانے 
1 و 


جوایب: اب یک الناس سے صرف ال عرب مراد ہیں عام لوگ مراد لاور ال رب کے من یس یلام یا 
گل 4 کت ان قول گل کیاجاتل دوس راج اب ہے کر صرت ال صرف اما کا زگ رکیادوسرے لص وص ے 
کر کی صور یکو سی کیاکی تیر اباب ہے ن ہک حدری کا کل مققد ے کم ہمارےتاٹع ہو جاۓ ماس 
سا کم مقابلہ نہ هس خواواسلام ول 228 کک 2ے 1 مورت افقا رگ رسک - 

پھر حدریث پزاسے اف حعضردیں نے رک لوچ ے تال پ ات ایکا فیس ہے کیدکمہ یہاں ا لک کر ل 
کل اوردونوں میں باقر ے۔ لیے کے ہیں اور قال جگ ولا نکنام ےا ے لم یں رون 


مسلمان کون ہے؟ 

زیت یت : ع اتس ال کال سول او صل الله ليوام :من صل صاااخ 
تریح :نی لانو نک زک مامند نزب واور ہے اییا 2 کر سک ہے جو وحیداوررسالت سک مضرف م وکا بی 
وجہ ‏ کر کواسلا مکی علامت ترا و ییاراک سک اند ہا شس ن تاراما با می مرول ترا یل 
ری شاد یکو سل طور زک کر ین ےکی ضروررت یاقا شتبال تی ا کے اتر روا غل ہونے کے وجو و تل 
طورپرا دنارذگ فرمایانہ قل عرتًامشھو کا محسوس سے ۾ ایک کو علوم ارچ نمازنہ بھی جاتتامو۔ نیز بل سل‌ون 
11 مان کے سا تھ خا لت دو سرا دکاند هو سر سے اب ی ازس کی موجودہیں بنا ر 321 ول مہ یبا نکیا 
واک ڈپیحکتا: ۰ پھر یہاں لدا کو خی ر لان سے متا زک نے کے لئ خصو می عپاو کا کر ف مایا لوا ی کے سا تح 
اک پچ یا نکی جو ماو کی غاس عادت ہے دہ اکل ذبیحةالمسلمین کوک غی کین جماراذ ہہ کی کیا ے ہیں اہ 
عبات اور عادت میں مسلمانوں کے ات ال ہو جائۓے- ۱ 
رال حدیث سے فقماءاور مد شی گرم نے ہے سل مس رک اک جوائل قبل ارام اسلا مکااخنقاد کت ہوں اوراگی نس زار 
تاو یلا تک وچ سے هعلق رآن وسنت کے خلاف ہوں لے معت لہ وا رو نها نکی کی نی سک جا ےک یک وک ان 
کی تو یلات ارگ دج سے نمی ہیں کے جج کی منک بنا ہیں اکچ ت فقہاءا نکی گی رکرتے ہی کر ہے درست 
ون ۱ 
تاقوا اه زمیه: سن جو 232 شا اسلام کک یاو ری ارتا ہے اوت بن دیع اسلا ظاہ رکرے و وہ 2 
انش تال کے عبد وال وال م وکیا خواودل شس ی بھی ہو اب تما کی چان وال سے تع رح لک کے ال کے الب کو 


ثم لوژ وت 


چا رر رسس و وو ےہ چا ہلال 23 
جنت میں لے جانے والے اعمال 
لت این :خَنأَيهرَْرققال:أَوآمر الیل اك ومام ال حل اعيا 

تشریح: ‏ اع ای تبیہ تی سک ایک شش تی ج کانمن ان اضق ایور نے لقیط بن صبرة تاد 
یہا ںآپ نے شہاد تک دک نی فر مایا کی وک یہ مشہور تھا اس ل کر وه کش ملان تیاور کے ہی ںک تب 
اڈ ے اد حدو الد ےکی کک ہآ ره یتک زک رآ اور تید بی رورت کے مع نہیں الزاوواس کے من 
تلآ یبا ذک کی عاجت کل یا اناو سے عبادت مرادے اور لوق و زکو کی ابیت کب ی بعد العام کے طور 
پر ذک رک یاگیااورر جکا کر اس س سک یاگیا هک وک دو کے دی سے لا تھاال لے ک کی ضر ورت ہیں ی یاوآ پ 
رب دک رایماک این عیاس وی ر ولیت یش ے هلر وی سے نسانا وکا ۱ 
ال کش زیادت مر کے کی کھائی اور آپ مم نے سے بر تراد کار دوس ری رولیت شاک هیر 
را ہے ال جواب ےکہ عالات اشنا تلف ہو هک ہنا یر اکا تلف ہو جات تس اشکال :شا 
کی ماتا ےک سے کی ہو ےکی بشار ت دیناتو ماسب سے ین لاازیدپ ىہ بغار تکس میق ہوئی يت 
إلا ے۔جھاہایت :نواس کے ہت جاب د ہے گے : 

1- آسان جاب ہہ ےکہ یال انشکال +وتادی کی دک ہے رات کی ادا کے یاه ول ست فز هر تصرف 

٭ یمان تی لااو رھ عبات :ہکرجاتب بھی وہ کی وچاد اکر چ او مرح نو او رپ مکی بقارت میس ملق وخول 

جن تکاذکر ے اول ول مرج یکو کی قید یل پچ راشکا لکیا۔ 

2- زین الشوالولاانقصن العمل ماگلت.....( ن بش مزید سوال :کر وڈگااو رآ پ نے جو اعمال جلا ےان می کول 
کی دک« ۱ 

3- جو یھ رای توم یں چا پر ہو ونی تائ ںگا یش کرو کات 

4 بی نے لاحم اور صفات ام مشک تسش ی ںکرو نک 

5۔ سل مقصودآ تم ہے اورا یکی کید کے سے از هید مک پیز دام کے با سے میس باس ےکچ ہیں 
ک کیام وٹ ننس ہوگا۔ عالاکمہ پل (زیادتی ) قصور خی پل ہکم مقصورے۔ 

6- رت شاه صاجب 6ڈ فر ماتے ہی ںکہ نب یکر مم طم نے ا کو وال وسن کے تر ککی خصو ی اجازت 
دیدی اقات بھی کی کے نا لاور حضور رل کالم تیال نے #ف یا کا تا یاقا کر 
فی الاحاریث۔ ششقی ود وزی ہونےکاانقبا اکر چ غات پر ےکر حضور و کے زرل سے معلوم بوک الہ ا ںکا 
غات ا یمان ی ٢‏ وگا۔ ینار ی بغار ت وکیا تن الاب رد یط مخذوف ہے مان 5او م لی ۔ 


ایمان براستقامت 
زیت وت : عن فيان تن عب نونکا کلت تا مشو ل الل لن الإعلام الم 


E‏ درس‌مهکو ری E‏ جلدادل الہ 
تغسریح: ال کے سوا لک طشاء ہے خی اکہ اک جار بات فراع جو مل اسلام ہواور سے اسلام کے لے وق 0 
ر عابت ہو گے یال مج بن کا لفت سے اس کے دو مہو گے ہیں۔ ایک فو ے ہک ہآ پ کے واک دو سح سوال 
کر 1 ضر دات ند ورب ات یں 27 ادفات بعد را نے اض ورت مین ہآئے چیہ 
دا یں کی وک دوسری رولیت میں سراح یلک لفظ موجود ے۔ پم لفظ آوشث کے اندر یع امورات و میات 
اور اتقو ِڑے اسر رام تک کی ری گی ا آفنٹشل مرف ایا نک نین ے اور اشتقۂ تاداع ونوا یکی 
27 یکلہ اتنقامت کے ”ن ہیں الامتنال/جمیح الر مو 700 ٭"" 
کرام قول_ ےک الاستقامة خیر من الف کر امت اک لے این عا پل سے مر دسج کہ قشم کا آیزت باه 
رل کوک یآبیت نازل نیس موی پک راستنقا مت کے بارے میں صاب مر مینست یه اقوال ول ی نر رت و 
سے روگ ےکہ اتقاس ت کہا ان کہ ام و یاس طررج مطبوی ربتک لوم ڑ یک ط راد رارم باک میلان نہ ہوء 
رت صر ان کرو فرمات ی ںکہ الاشیقامۂ ان لاتش رک باه شیگا۔ حضرت عنان ول رولیت ‏ ےک انقاصت ٠‏ 
هر اخلاص العمل لہ تعای» خضرت این عباس اور رت صلی تنا سے منقول ‏ کہ ارم الف رخ سکا نام سامت 
ہے۔ علامہ اہن تہ طلست منقول ےک الد تعا کی عبات وعحبت میں اس ط رح مشفول ہوک رات پا پل 
الات نہ ہو۔ برجا ل ہے کلف عبارات ہیں ا ل ہوم ای کبیا ےکہ دن پر موی راولش نہ لفق 


فرائض اسلام 

زیت لت :عن‌طلحهن ہیں اللوگال: جاء2+ لامش رل انلو ضل اه لولم هل تراد ال ا ال 
تا ال ای کو نصوب نا چا جک حال ےہ جل ے یار فورپژهاجا ناس جک صفت ے ہج لگ اور اضاقت 
ینار ری فکافاتره نہیں دید 

تشریح: یبال جر 7 یا تغادہ قول اہن بطال و ت تی ع ت بو سی رکا نما مم من تحت اور ہے شس ج وکر سان 
ات الام سے س اسلا مک سول مرا نیس لفات اسلام مراد ہیں۔ چا بغار یکی رولیت مس این اڑا 
رض اھ لی کے الغاظا ال کے موی ہیں اس لے تضسور یلگ نے بھی جواب میں اکا مکاذکر فر ایا 

اب عدیٹث بذاک درا لے نیس فر اہ اس شف پر فر نہ تید پا ےک اس وقت و نیس موا اسب 
0ت پت چیہ ہے کم رت این ال رولیت مس رکا تھی دک یہاں راو کے نا لو کی وگ 
ال حدریث سے وان و خی ونے وت کے عدم وجوب پر اتد لا لک رلیاحضور دم نے وج مس کے علادہ تی نمازوں کے 
وج بک ی رال احاف کے نزدیک صلو وتر واجب ےا سل متل کی فصب ل زاب الصلوۃ کے باب الو تر سآ ےکی 
بل صرف ان کے اتد لال حدریث پزاکا جاب د یا جانا ہے۔(١)‏ اس وقت و واجب نیس ہوا تھا(۴)یہاں فر ال اعقادیے 
1 ھی ے ادروت ماس نزدیک بھی فا ا اعقنقادی رت یں ہے۔(س )عر م کے عدم وجب لازم تسم اکی وہ 
ایک حدریث میں نام اما زر ضرو رک تن توو رکا کر اس یس اگرچ رل کر ووس ری حدریث ٹس کور سے جک 


چے رر سر: ےس لیے چا جددالل 2 
فص لآ ر ہآ کر 

انوع شر نوف ل کا عم اس اتنام میں وا تال ہیں ۔ تح لک بھی اور تفص ل بھی تو ضورع خفصل قرار 
د یں اود چم لو لکرتے ہی ںکہ او قات سے کے علاوواو رو فرش ہیں ے پا لالب او کر ےپ 
اب کر ےک ںیک 20 و کرنے سے اتمام واجب نیس وتا اور آوڑ و سے ا کی قضا کی لازم نیس موی اور احناف 
ا یکتم صل قرار و ے ہیں اود تر جم ہو ںکرتے لی ںکہ او قات کے عاو دو اواجب لک ےک اکر تقل شرو 
کرو ے او واجب ہو جائگا۔ احا ف کے ہی ںکہ اس مل کل ے اور لادج کیو ریا کل سے اتحراف گر ناورست یں 
ہے چنانہ خود ماف ان جج تق للا ]ای فرہا سے ہیں دن قال كت تك بال اور اسنا من ای 
مفیداشبات ہے الذاش رو کرنے سے ففل واجب ہو جائیں کے اد ژد نے سے قاو اجب تاودا لک بت کی دا لت 
چنا نچ رآ نکر یش ہے وَ لوا لوهم ۔اس شش س بکاانفاقی ‏ ےکہ اگ قوذ رک ے فوذایفالازم ہے ما اک ایک 
شروعی نی نکیا لخب اند ست شر درد ورن اول لازم نا - نول" لوا اک ے معلوم 
ہوتا ےکہ انا لکو باعل نہ رواد شر و کر کے مود ینا بطال کل ہے اوراس سے کی کیا تو اتتام داجب ہ وگ( )ام ا 
کاانفاقی کہ رش رو حر کے زد غالک قضاداجب ے عالاکمہ اس میں رقت زیاددے و نماز روز شور کے 
قبط را او تضالازم وگ لکد ال سے ا کل ہے اس متام یر وا نع نے اپنے اتقدلال مل با 1 
که عد یں ییا ن کل ہیں جس کج اب ابق می دیاجا گال 

الح ال ول إن صدی: قرط فیره مخ شا ین نهک کشت مدیم اور خضرت رل حدری تک داع ایک 
آدئ یک نیس ایآ کے بارے میس !خی ر کیک جن تک بغخارت دید یکی وک کے پارے می تین طوریر معلوم یاقا 
اوردوسرےآدبی کے ارس میں شی طور پر معلوم نہ ہوا تا کوک کے ساتھ بغار ت دی فلاتعارض۔ ‏ 1 

ان حش حعضرات فرباتے ہی ںکہ دونوں عر ںکاداقعہ ایک نی کاہے توا یوقت دنع تا لوں س ےک ابتدا ءآ پ 
کون طو رپ اطلارع نیس و یک امن شر طیہ کے سا تم فر ای ابعر یش فور وی ی ۔ تخیر کک فریاد الو ناک ای 
دی کے ممامنے کک کے ساتھ ارت دک اک دل شک ر پان ہو :اور جب کس سے چلاکی ان کک کے جا ور پر 
ریاد بافلاتعاہرض۔ 

اشکال: رال مرثے بض طرق می ایک حضو ر تی نے فرمایاکہ الح ہی ن دہ ا گی 
اںے پاپ 8 ( کما البخاری ومسلم یبال یر اش گا م موچورے مالا اکلہ حشرت اہ سے روا 
ےک يار من فر یاک من عَلَف يِف الٰوتقَرْأَمْرَ ول تاس کے تلف جوا بات د ہے گے : 

جواب: 1- لام لتق رات ںکہ ال عر بک عام عاذت ٹیک سی با کی کی رکیل اا و 
ای ںاوراک سے حقیقہ علف مراد کیل لیے ےآ پ ےا کی مارت دزي 7 

2- یہاں مطاف مز وف ےا تسین یی وبا ہیوے۔ 


و وو بے جو سو 
3 ناش کے ساتھ عل فکی کے ی کات ے۔ 

4- ال بیس داش اورا یں تیف ویو ہوگیا اک وکر فاد وکا یمالس کی دگل نت و فر بل توت 
مد 

5- مور خائ س کوک لت پر ھکی مانعت نیم غی راک خو فک وچ سے سے اور خضو ر کم 
سےا کاو ہم یں ہو الم زا پل با 

6 حضرت شاہ اب لف ا ہی ںکہ یہاں اصل میں خحویوں ے خی بوک وا کو صرف م کے لے خاش 
کر یاھا لالہ ا ںکوواوشہاد تکہنا چان ای صورت مل 9 شاوی یں مود 


وفد عبد القیس 

لد این : ڪن ال عباس ء خضي اللہ نع قال: دعب لیکو الیل هلو وس 
تریح : وم ے وا رک سک ہن ا تدرو ہیں ہہ کت آ ری .تور وایات م آنا ے چود ہآ وی سے اور 
روات بل ہک چا تے ادوج ول کہ یدوم رحب ہآے تھے ایک مرج هثل اوقت چودہ ے اور ایک 
مرج ۸ھ می لآ- تھے اس وقت چا لس ۳۰ 2 یلو ںکہاجان کہ جود هآ وی سر دار ت اور قارع کے _ 
مَکَرَایاوَلاتدَاق: خی مرو بھی ہو سنا ےک ماف کی صفت ہے اور حال ما نکر منصوب بھی ہو سک ہے بی 
راج ے اور نس روا یت ےا 1ر2 کی تائی موی ے غای ماب خیان بک وه شض ج )کور سوا ونر 5 سے نان 
کی ج می یس ناد م کے سے یاخلاف تیا نادم یکی جن ےک دق سنا من ناه یاک خزایاکی مال تک بنا تدای 
گیل اور مطلب يسک !خر فی وتالا زخوواظتیارے مانب ENR‏ م کشر من دی اور رسوا بین ین ہآگی۔ 
السرا راو: الف لام لک سے اوراس سے مراد چا ار مم ہیں۔ چنایہ نف روایات میس اش جع کے 
سار اور بش ر وا یات س تولا ر ر ام ے١‏ یک تاضید مون ے اور کے ہیں Ff‏ الف لام ہہ خاک لے ہے اور 
مراد رف باه جب سے اور یکی رولیت اس یامویدے کوک تبیہ مرا یکی زیادہ و 2 نا ریس اٹ کی 
طرف مو بکیا جات جک رجب مع کہا اتا 
بأشرتضل: ےد مت ہیں ایک ن الفاصل بین القدالباطل دوسرے مت شی دا کے ہیں پچھریہاں ج اش رہہ 
سے سوا ل کیال ہے سر بہ راد لک کہ ا نکی تم تک من پیل کت اب اس سے شراب کے بر تو لاو 
دوس ےکاموں میس استا لکرنے کے پارے میس سوال تاا لئ ےآپ نے کی ب رتو کے بارے میس عم ین راید 
رش باقع یہاں ابعال تل تفصیل بیا نکیا ماک تفص ل کا شواق پیداہو اود ی رک نے میں وت ہو مر یہاں 
OTT‏ 
پہلا اشکال :ی کہ بیہاں در یقت مورب ایک زس ودا یمان باش ے جل تفسیل بقیارکان ے 5 پھر اسوارح 
که جرک ۱ 


متسد ہز اد 
جواب: : نیہ ہ کہ اگ چ ایک بی بیز ےگھرا زا متححصیل یہ کے اعتبار سے ارب سے تی کی۔ 
دوسرااشکال : جک رتیت تی کر کے یل لپ کیا وا اور تیلب مناسبت نی وک یتو 
اف جات ینز 
جواب: 1- پ وک لوگ لدان ے اس لئ ایمان پاش شار یش داخل نیل ہے صر ف اکر کے لے بیان ور 
2- کک می لو تکفا ع ر کے جوا ں رج تھے ان ے لو تالک نوی تکہسکتی سے اور نیت کی مل سکتی ہے بنا ہرس 
لها زو ںکو بیا نک نے کے بدا نکی ضر ور تک با زان ایک اور ام بین فاد 
3- ون تلو این الع زک کی بش یس ہون کی بنا برای یس شا لک رید 
4- تقاضی یینا وی نے فرمایاکہآپ نے چا چزو لک بیا نکیا۔ ر اوک نے ییہاں ا نکو بین نی لکیا یبال ہن چرو ںکاہیان 
ہے هسب | یما نکی فصیلے۔ 
5- شض حط رات فرماتے ہی ںک و نعطو این الکو هلف چ اور مطلب کچ چز و لک تفریج نک 
زک ہے ے اوراعطاء شک بھی کم فا فلا اشکال فی 
رت کیا کیا دج یہ چک یہ ای ےا سکاو اجب ای اور اجب لا ئی چ 
کا معاممہ ان کے پا مشہور تھا کار مرح انگل ہو هگا رنہ قاد نہ سے یا کہا جا هکم ا ددعت یش اکر چک 
زر 7 ان سن اتر کا کی زکرے۔ 
اهنت نکی یکاہ ز رکب جانا ے۔ الا ےکر وک مغ رئا لک جو نبری ان جا ے۔ ابر ؛ورضت 
کو کی یراک کے اندرکا دا لک ج بر تن نينچ نہ مٹی سے تیب رال چاروں طر نت رول لپ 
داجاتاچ ٠‏ 
ان پار م کے ب توں می شراب نا اسل کہ ان میس ببت جلد سک رآ جات تھلہ زجب شراب مرا کرد یی تا 
ان بر تنوں میس یز وردناس هک بھی مان کرد کی کی وکل ان کے دول یل ا بکک شرا بکی ترت یال 
ول داش عدم مم کي بھی نیز بج کر شراب يا ےکا وی ان یشہ تقد تزا کو دس کر نس شراب میں لا 
ہون کا کیا حال تھا یی رتست ا کو قر یب انے سے کی کرد یاگیا۔ تاک بور ی طررج نفرت پی رامو جائے۔ 
رچنددنوں کے بح جب شرا بک لو رک نفرت پیر امو و شراب کان دیش نر پا لای مات کا 1 
دہ تی شک عن ان يت واربوان مقي ة لها َلَاتَمْررامُکڑا۔ 
احکامات اسلام 

رت لیت : عن باون اش ایب‌کال:کال7شول او صل الله عتیو مل وله وص ابذِن اضعاپواخ 
تشریح: یت اب را شع سے یل طرئ۔ یہ مانوزے قصب سے جس کے مع ہیں۔ بر نااور ند نے سے مض وی 
پر اہی ہے ولیک بقاعت سے مفبو می پیر امون ہے اس ماع تکو ان کہا انس اور ا لکااطلاقی دس سے پل 


جا رس ٹر ر و کج ہداں اچ 
کک پر ہوتاہے۔ اور طاععت کے متقابلہ یس اج ولواب کے وعد وکو عق سے تبیہ دک اور الکو مبالیعت کمن گے ديا 
تی ےق الله اشتزی من الْهُو مین اَنَفُمهُۂ وَأَمْوَالَهۂ هم امن 

بای ببتان: تنب ہن سے الک تہ تک کہا جلتاہے جوک لکو بت وتران ده یا نکر دیق 
ے۔ ایی یا جل سے ذات مراد ےک کہ اکٹرافتال ہا تھ پیرسے صادد ہو کے یں بر یذ تک تی بات پیر ےکرتے 
ہیں (۴)اس سے مراددلی ےکی کمہ دہہاتھ ویر کے در میان ہوجا ہے (۳)آ یذ ے زان عال مراد ہے اور ایل سے 
زرا یل م راو ے اور مطلب ہے س ےک نہ زمانہ حال بل کک پر تست زور نہ زات تفیل میس (۴ )یہ الفاط درا سل 
بیعت نام سے اور مطلب ہے تھاکہ تم اس پاتھ دب کے در مین (فر نع )سے ز اکر کے جو اولاد جنائی ہو ا یکو موش 
موٹ اچ شوہ رکی طرق موب نہ و اب مردو ںکی بیت میس من تست م رار ےکرک وو مورت یبال نیل 
کی کر رکا وی الفاظ ال دهد ہے گئے۔ پا ال صرف منبیا یکو زک کی لب فصت سے نع مرت اون ہو نے 
گیا بای 

رال حدودکفارات ہیں یا زاجرات؟ یہاں اختاف مراک عدود و تما سوات ہیں یازواج ند یا 
یش سزاد ین ےآ با لک مواغیز ہآخرت شی بھی معاف ہو جات ےک الکو عف اب کیل دیاس ےگ يم مرف ز جر 
کے ے ہیں اود مک۱ تظام ال رکه کے لے ہیں او رآخرت کے الط کے ساتھ ایکا تنل ہے بل ہآخرت ٹس 
موایزہ ہوا و را امام کک دشا فی دارم مهم اللہ فریات ہی کہ عدود وقصا ل گناہ کے ےکفارہ ہیں۔ سب لاه 
موف ہو چا تخت یل مواخزہ کیل ہو گا واه هکرس پان ہک سے ۔احناف کے نزو یل عدددو قاع زواج ہیں سواتر 
رکذارہ یلاخ اوہ مرف عدر ود و تما لس ناڈ بو دگیآخرت میس موانوزوہوگا۔ وان ویر ام حدریث پزلت 
انت لا لکرتے ہی ںک ہآپ _ذمطلفار«فرای ہک قیال ہے۔احنا ف ٤ات‏ لا ق رآ نکر می مکی بہت یآ نی ہیں : 

1- تا جوا نی نون الکو مہو عون نی الکرض تساه آن تسب لع ایی ارخذ 
ین لاف آوینقوامن ار ض ذلك هم زى غ اناو لم ن الاجروعداب اٹل لن تابا 
الا سزا او ںکووشیوگیر سواگ یتر ارویااور مخغفر کو کی طرف ضو بکیل 

2- وال یرون المخصلی تم یا باربعة هآ ءا جر وهم تین جلیهو لا کفبلوا هم مهادة 
ولىك هم الفیفوین ال ابوا 

یہاں سزاد ہے کے بع کی فا کیاکی اکر حر ود ےگا معاف ہو جاوفا نتم بح ر مغخفر تکاوعد ہگیاگیا 
3- لار ی وا لار ق قافطغۇا ایی یما جرآجما کسبا تکام اڈ ن تاب ای 

یہاں بھی مس زاکوونیدکی عبرت جیا کیاکی اور سوا یک وتوہ کے ساتھ محل یکیاگی۔ . 

4- عماویی شر یف ل س کہ ایک چور ور ا مکی خی رمت یی لا اگیا۔ بات کان کے بح ھآپ مایا نے ا وربا 
اشتقفر لوب له 


2 رس رت 99تره: ےه چا باون لے 
اکر حدددکفار و ہوۓ تواستغفار وتو کی تلق نکاکیامطلب »رگا ہت ے دلا کی ہیں۔ شوا نع نے جو حدریث پا سے اتد لال 
کیا لکاجواب ہے س ےک فصو کور ہے ٹل نظ ریہاں فھو کا لہ ان ات کی قی ردا ے ورن نصوص میں توارض 
جا ےگا يايم ہکہاجائئے ےک ہمارے ولا تل نو قطعیہ سے بیان کے مقابل یش عربت مھبا 2ا تر وار فیے. مر جوں 
بو اہ ی کہاہ اکتا ےک ضور هس جو کر مایا ہے الد تھا یک ر مت پر امی رک ے ہو ے تی طورپ ہیں 
فرہایاجییہ اک دو رک دولت مل ے :تاغدل ينان پا بل عل عبرو افو ةن لا جرو- 
پرے چ حظرت علامہ سیر او سف منور کک اال تال فرماۓ # لک رور نہ مطاقًا وا تر ہیں اورت مطاقا زواج _ یلگ عروورو ۰ 
طر ‌ قا 21 یجان ہیں۔ایک لو مر م اس اور اقا از نہیں رات کل کرو ای تل کا جر اہ تکیاجانا امک عد 
سوا یں هگ اوردو سرا ےک اگ رم شود تا فک سے اور اپ هآ و دس لئ ٹپ یکردرے, بے حطر ت اعزا ی 
نے مکی تالک عسات موی کی کہ اس کے نت لآ موجوو ے اه اعلم باالصعو اب 
اس متام پرعا نکر یپ ھی مر و جواپے متام ہآ گا۔انشاءالندتعای- 
عورتوں کیلئے آپ تن کا فرمان 

یت الات :نای موب ا کی کال عرج مرن الاوصل ائه عليه ومام فآ أوظر لاخ 
قشریح: اریشگن: اس رولیت مس چند االات ہیں 1 ۔حال کش ف میں دیکھاگمیا2- وی کے ذد یر لیا ل راخ 
یس جب جت ودوز کسی کرای 3- سب سے ران ىہ کر صو وکسوف میں جب مس رک قبلہ جانب دور ٹل جنت 
وروز تک کل ال وقت وکیا کمان حدیث اہن عباس وف عریث پا دسر مواص کون زگ کر کے 
صرف لمع او رکفران نی رکو خصوصی طور پر اس زک رکیاگیاکہ ہے تقوق الحپاو ال ے ہیں اور ز بان سے وگ زاره وذرغ س 
جاتے ہیں۔ یاک رٹ لآ :ول یکت الاس عل وج روو أَقال: متاخ رز ني ات إلا عَصَاىِداَلتیھز؟ 
اور eS‏ کی ری او خصو سی طور اس زک کی اک ریت یں آنا ے :لے کن آرَالَحَداان 
جک ,مرن لزان تَنجُدَلَوْجھا۔ 
سرت سس امت 
کر توق اود ملک لکوت یکر ےکا 
عایْینتاتضاب عفل: العقل هوقوة غزیرۃ یں ہک بھا امعان ویمنعه عن القبائح وھونو, اللہ نی قلب مؤمن۔ 
واللب: العقل الەالص عن شوب او - ۱ 
رن یکر یپا نے عق کو مقر کیال کون کال کی تل ی سے وه یزنقمان ل ای جبلیت ٹش ہے 
جو وجوڈامقدم ے اور نصا دن ام رعادث او لداعت کے بی نظ راو لپ مقر کید یہاں 
آپ نے عو رتو ںکو ٹس کے اعتپار سے ناقصرات تمل رای مزا افراد ک کال جہونے کول اشکال وارد تہ ہو 
گا کے حضرت م رکآ سے خد یقت ور نت فا لہ للا کے بارے می سنا کم کال وال 


تسده سس مرول لے 
اشکال: یبال ایک اغکا موتا کہ تم بت کی عو رتو ںکو رب ںکہ مرول ت بہت زیدہ طبر وت 
چلا ی تکیت مرو ےکم مق لکہاگیا؟ 

جواب: 7 اب یت کن ایآ فی انان کے ایک مرداو ایک ورت راما ے جاک ی ادل ٹیش رت ہیں اور ایک 
شب مک نمذاکھات ہیں ء ایک بی رسک ول رہہ شب کہ وہ عورت اس مر دیآ ھی مو سے بر نها ے ل میں٠‏ 
رگن س نے لے دوڈڑنے می و یر واورا کرت نے کرت لاه خاندات :شر یش رت وال جوا بھی ا یی ناکما 
ہے۔اور مر رل خاندا نک جد یہات بل ر تاے نذا بھی مقو ی یس سے لوان دونوں می تو ضرور فر م وگ پر یہاں نیا 
کر یم لم نے ی شک تال دی کا سب تفراردیاعالالکہ دو رک عدریث میں آنا ےک مر یق کو وال عم رس میں مات 
تندرر سک یکی عباد تکا واب یرسک وس مار ہتاے اور یف بھی ایک مر ہے للا ا کو بھی بیو را ناب نار 
نقصان دی کا سبب کب ہواا لک جواب ےکہ عالت مرخ اور عالت تق یں فرقی ہے۔ووبیم ےک عالت مرش میل 
عباد تک تابلیت وصلا مرت موجود ہوٹی ے صرف تررت وطاقت نہ ہو ےکی بنا یہ عبادت لک سکاب ال میں یت 
عادت مو ے اور دوام وا ترا دی تکیاضیت ہو ہے۔ بخلاف عالت یف ےک اس میس طاقت وق رت ہو تی ےکر 
قاہلیت وصلاحیت »وال لے پا تک نیت بھی کر اور قواب نیت ی اک :ای ہے۔تودہاں نیت سے ال 
لے اب بل ےگا اور پا یت یش بنا میں ٹذ اب ہیں اس لے نقتصان دی نک سیب قرا و ایا 

تی ری بات ال می مہ ےکہ بیہاں عو رتو لک ج وگن زک ہک یاگیا ن وکف ران ىہ وتو تق ایا »نی کہا یش سے ہیں 
و بی نوہ سے مواف وت نآ پ نے جوان ۲70+ کر کا عم ف مایا ظا ژایہ معلوم ہوتاے کہ با گناو لکا 
کفار م وکا حال اللہ یما تک قلاف ےلو جاب ب ‏ کر صرق ہکا مکفاردگ خیثیت سے نکی دیاگیابللہ صرق کے زرل ۱ 
تو ہکی یق م وک یا صد ق کے ذ دل ہے یعادت زا ل ہو جا ےک یا ی ے صت دی کف یاک اتتا ص دت کر کہ ای 
ک وا بآ نگناہول ے وزن و بڑھ جاے۔ 

انسان کو سرکشی زیب نہیں دیتی 
ينعي شور قال: کال ,شون ایل اللہ عیو وس کال :كي ان آم ول یکن هی 

تشریج: جہاں ن یکر کم طابش تیل کول حریت قل فریاتے تا کوحدیٹ قرس کہا جانا ے۔ ا کی تفصیل بین 
وک ول تین طر نکی »و ایک نیہ کر الفاظ معان اللہ گی طرف سے دی کی کے ساتھ ہو ت ہی اورا یں 
نب تال کی طرف مون ے ای ا کلام الد من ترآ ہا جاتا ے اور اکر موان الہ گی رف ے ہواو رنب تگگی ا ںکی 
ر ف و ین از حضو ر میا کے ہوں زيم صر تم کی جاور اکر معال و شون اشر کی رف ے ہواورالفاظ خضور 
سک ہوں اور شیر بھی عضو رل طرف و حدہث بو یلاہ ے۔ کی ان آوم اس طورپربواک قرآن 
کر یم یس ان تھا نے رو نشرک کر فر اور ای نآدم ال سکا لگا رکا فو اکس سے می رک مرب مو مج 

وی ون طلی: اںدے شقن موا وامکاناعادہکی طرف می وجات شار ہے۔ کی وک کچ کو اب او یا هرن 


گل رس نے و وہ ا جلداں ا 
شکل ہواے دور کر تہ اعاد ہک نے ست وجب ہار ے اتپا ے جب مشک لو 07 72 ان اول ہوگا۔ 
ورت الہ کے کے ابت اء واعادہدوآوں یسال ہیں دو رک بات ہے س کہ الیک چچیزکا وجو دااس کے کن ہونے پردال ےجب 
ایک دف من ہو کیا نمو جو دکر نا بھی کن ہوگاورنہ رل بو مج لاس تر ہونالازم موگاء وهن امحال۔ 
وه تم :کی ترو ھن رلک طف ضو برچ اب خرف لی تی تک رگ ول 
ور اي اور ولد دوالد یش ما نت ہو اک رکی ے۔ لالز اضر اکا کن ہو زالا زم ہوگاجو شان خداوندگی کے 
فلاف ہے۔ نیز خد اک تع قرا دیا لا ز متا ہے۔ جیا اکہ اگ کہا جا هکم فلاف کور ت ےیک ند یا ہانپ ہیرام وکیا 
ال کے جن مل کت عیب ہے۔ عالاکنہ حیوامیت کے اختبار سے ایک بی کے تدای طرف بل خی لاو موب 
کن کے 2 نیس ہوگا۔ 


زمانی کو برا مت کہو 
بت تین :نای طرنرکال: قال »شون لول الله علیووسرقال تال لیا دبا 

تشریح: یزا ءکہاجاتاے کار 203 مر کی طرف پ یناہ قوف وا کرس جار شمسباد رے۔اور تق 
ال کی شان می مہ کین یں کوک وہ متا لیر وہ موش سے اس لے وہاں ایت و تہ کے اعتار سے سمل ب اور 
ایا مکی خایت ے تارا کر تالم ایک بات و لے ٹس سے ال نار ائش »وتاب یال کے ی نی مراد یک اش 
کوآزیت یناب هآ الکو ںیو ن ے۔ 

وأ :اس کلف معان بیان کے گے۔امام راخب خقڈاذل ا سک بی ںکہ وف رک طرف جس ش رک نب تک رتا ہے 
یقت میس ا کافائعل تو می بی ہوں وخ رکااس می سکول و غل ہیں تو وھ رک وکال ینایک گال دنا ے۔ کے ہی ںکہ پا 
مضاف من وف ےأی انامقلب الرهریأمتصرت الدہر کہ وفر مرس تصرف وا ختیار سے پل ہاہے۔ا لکرکو نار 
.لاور فش کابناس ےکہ ور الہ کے اعا 0202 


توحید کی اہمیت 
یت لت می عة کال شش روت رہ ہس کال لہ مق 

قشریج: یبال حضرت موازپاپیانے حضو ری کے رد یف ہونے اوران کے اور حضو ر ملس ور میا ن کم فاصلہ ہو نے 
کا زک رر کے ال با کی طرف اشا هس ےک میں توس ال تر یب تھااور شس حر کو بیا نک ول ال 
میں ۳7 مم 11 نفلت وتال یل ہوااور ہے عدریوث نہایت اک ے 2 مسا 2 ور وشوق ے سنواور ال استلزازعا کل 
کرو پر یکر نے رت وال ها با داد جیی اکآ ره حدریث می لآنے دالا کہ رک ایت ظاہر 
ہوجاے۔ نیز ضرت ما لو رل رشق ہو اس اور کی حضور یعادت تی اور علام کل ڈنل کے بات 
کے مطابں یمالس کر تضور لم معا ا یه اس را زک ظاہ رک کے یس توق کر نا اٹ تھے بنا ہر ری ددم رحب ندا 
دی یں ری تس ری وف فرمای۔ 


»8 جداں 2 
خی الوبارعل لاوز ہق العبد علی الله کی بحث: اس ج لہ سے ابرا فلاف کت مورک س ہکہ ان کے 
زز ویک اطاعت گار و کو اپ دینااورگگارو یکو عاب وین خان پر واجب ہے .گر ائل سنت واجماععت کے زک 
ال تما کول چز واجب ہیں ہے هنت کلب تال ما پوس تمل کے ملف وجیبات کے گے : 

1 - تن »بت معا ہیں ۔ثابت: داجب ولازم» رن شایاان شان» ملک ,تیب _ تو مقا مکا فاظ کک کے ایک الک مراد 
لے یں کے تو نالعا یس ہن ھی لازم داجب کے لے یل کے اور حن الد لی الد س تن بھی وق 
مین شان لے مالک شان PE Of PI SAT‏ 

2- دوس ری لوج :کم کر مد را تا کے رصم ان داع تھا رپ سمل 
کیا 

3 تسری لوج : برے 9 یگ رف سے بر داجب نیں ے و 
کر ل مکو وجو ب احمانی سے تی رکیا ات او اس سے مجبو ری لازم لول 

4- چو تی تچ سب کہ یہاں اف ہن مشاظہ ذک کیاکی اک پیل میس جیا لاتم ل کیاکی توو سے میس کی دی لفظ 
استعا ل کی اکر هه لاو رکلام رب ٹیل ای استعال بہت ہیں- 


دوزخ سے رہائی کا سبب توهید ہے 

بش لت : عن اش بن مالك ا ال لاله يمام وشساژهریشه تی رس رت 
تشریح: چگ دنپ  ,‏ رث رش 
نے سے خجات عن الت ہو چا ےکی خوا وع کر ےپ ہکرسے۔ 
اشکال :الاک دوسرے صوقرآن و حرف ے خابت ہوا ےکن عصا موس نک و بھی مزاب دی جنت یل دیا 
جا ےگا نیز طلست م رحب کی تائید مورک سے جک کچ ہیں لاتضر العصیقمع الجمان۔اورائل سنت واججراعت کے 
لاف توریب 
جواب: حتف ی ےج 1 بش سے چن دام جوابات کر کے جات ہیں (ا)شہادت مم دام م موق 
مرااے۔جیباکہ ری نے شاوی کے وقت یکیو الوا ی ے اس کے می حقو کی ادا 4 امو _-(۲)وونا تام 
ےھ رکغفار کے ے تار ے اور طابر > هک عصا ةم مین نک کغار جیماشریر ع اب نے ےگا( )غو ری الا رک 7 رم 
مرا ملق نا رکی تمرم مرا ہیں( ) حر سعیر بن سیب تاور دی لا گرا مکی اه کہ یہ 
رمث ال زار س کی جب فقط یمان پاش والر سول فرش تھادوسرے احکام ازل تس کے کے (۵)اام بخاری 
تفاس ہی یک اس دی تک اجه کف سے تب ہک کے یمان لا اود فان ا وکر ےکی فرصت 
لے سے پیل میا لکانقال ہو وکیا( سب ے ای فوجیہ حطر ت تابث 04/15 فرمائ یہ اس حرست کر 
شاد تک خاصیست یا نکر نا قصو و کر نیس تکااش ظاہر ہوک ش رط بی کہ دوصرے اشیاء سے ہے موب نہہواگر 


دس س :اپ ر( فو جا جدرال ال 
گناس مغلوب ہو جاۓ لیے ی کیا جا ےگا سک ناگم شاد تک شا صیمت ہیں ہے اس سے ناد ام ہو ال ہے جیما 
` گ ہز رک ایت فی ے اگردوسرے موانع انا زہر اتا کر ے کے پاوجودنہ رس نو کین کهاجای کم مر جانا زبر 
کیخاصیت ہی ںرے۔ 
دوسر ااشکال: ہے ےک کی حدیث مس بیا نک یاک یاک آپ مك نے حضرت موازیپ کو لوگو ںکو رو ےے سے مع 
ایا ال حدریث لس کر انہوں نے ای موت کے وت ل وگو ںکو تر وی ری تو ان وں نے مت لماعت 
کل 
جواب: ڑا کے بھی تف تو جیہات بیان کے کے ۔(۱) مانت عام او رونت تی اور بیا نکیا خا ص خا ص ل رون کلم 
(۴) عمانعت ابتداء س تی جب لوگ تۓ لان ہو سے سے اور ای طرں ال عدیس شک تر ع یل کل کے اور 
بغار ت نکر گل تر کفکرریں گے ب رآہست ہآہستہلوگوں کے ولوں میس ایمان کی حقیقشت ر ارخ موی اور ایا لک وکا ل ا یمان 
کے لے ضروری کت گے اور خطرہ سے مامون ہو گے لو موت کے وقت خر ویر ی() حلرت معاز وال + کے ساس وہ 
نصوص سے جن میں مات عدی کی تاکیداو رکتمان سم پ دید چا نک نام کر انع تک عرف 
مضو ہوگئی۔ جی اک لغ بَا مھا ونوا کالہ اس طرف شرب فلااشکال فیص 
خاتمه بالایمان جنت کی ضمانت ہے 
ا :يياه تکیت ینعی وس عیقب آیسوفوتیو ناخ 
یج: لودو ت آیضن: وره ورات ج رداۃیان اکر ہیں ی اکل کار نیس یلد ایی تج رٹ انان زرا ہیں 

ی قم کے ا تحضار اقا کی ط رف اشا ےک سا می نکو ا نلیا نکی ھا صل ہو جا نیز یوب کے مات کر 
کے سے لزت عا لول 

دنک نصرق: حضرتاہوذر ال کے پیٹ نظ دو ود تس جن میس ز ناو چو رکو غر کک زرح ن الا یمان تراد 
دیا نکناہوں کے باوج دفتطا ان پردخول جن تک بشار ت د ہے پر رت از چپ ویس اھا کے 
لے بر پر ار فرمایااور یکر مم نے ان کے اس تچب کے و فع ہکس پا راد فرمایااب اشکال می ےک ماود 
بہت ہیں حضرت ابوڈ نے صرف ز تاوس رت ہکو نا سک رکیوں ذکر فرہایا اوا کی وجہ ہے س ےک کار باو حقو اا ے 
ساق ہوں سے یا توق لر ے لق بول کے توزیرے وق اللد کی طرف اشارہ فرمایااور مرق تون ال ری 
طرفاشار ماد ` 
پچ ر عریث طزاے ڑل وخاز 800+( کہا رگن الا یمان ہیں البتہ ظاہر مت ری 
ایر ہو ری ے تولاتضر: العصية مع الابمان ے تا ال ہیں ا کے وی جوابات ہیں جو معا زاف کی نف ا انت rE‏ 
زی رآ لاور ایک جو اب ہے ےکہ ال وخول سے وخحول ول مراد یل ہے بل عام ہے نخواواوٹی و ای ححضرت شماوصاحب 
09 -_ ناس یس ایک جیب بات فربا کہ ال سے عالت ایمان کے تاو چو کی مراد یل یلم اس سے مرا قل 


یلا رس کون رن »3 بان لے 
الا سلام جو ناو چو ر یکی ے وما ن وول جن بل مرکا ۱ 
ىو اپ آپتئ: اس کے ی ناک نا آلو ہو نایں گرا سک اکر استتمال ز یل وناگوار ہو ےی ہوتاسے چ وگل ہے فظ 
حضو ر یز بان مہا کک ے کلاس ے ابو ز رولیت وقت تش ناوا غاا سکوبیا نکر ہے ے۔ 


۰۰ 


نجات کا دارومدار کس بات پر ہے؟ 

یت : عن ار ایب 7ض اللہ گنر لین صل هلو وس تال من مه آن و0 
تشریح: نی تام انیاء م لام یمان لانا فرش ہونے کے پاوجود صرف حضرت تم ی 
یس اوج ےے هک ال کے بارے میں بیبودونصار کے بہت افراط و نظ بیاکی۔نصار ی ے توان کو دایافداکابڑٹانالیاھھ 
ان کے مر تہ یش اف رط سے اور ود ا کو( ياه ولد از اقا د یکر ر الت سے ائ کر دیا عا گرا کا رحبہ ان 
روول فر قول کے عقیرے کے در میان ے توا رونول ای تر ویر کے لئ تصوصی طورپرا نکو نکر فرمایااور دای کہ کر 
نصا رک یر تخر مت س جک ہے الق تھالی کے بندے ہیں دای کال اور ر سول سے یہودپ تر ب کر اڈ کے ر سول 
ہیں ولدالزار سول نیس ہو سکتاوابن امتہ صا که تع ٹیل ےک ہے لباک کے بے ہی ںکیسے خد ایا ںکابیٹاہو سک سے 
اور یہووی بھی تر لین ےک ارول د اتام تالو ے شر بف لقب جوارتی طرف مضو بکیانہہوتد 
کیم الا لی مزییو: ا کے کی ووی تر بل ےک ان تدای کے خصو م یک ےکن سے رده سک پیا کیا۔ 
ولال اکنا ست ے پر مرت ناشکهک تلف وجوویان کے کے :(۱ )ایک وج س ےکہ ا کو !خر 
پاپ کل ہکن سے پیر ایا( )دو رکو جہ ہے س کہ ا نہوں نے وق تکلام سے یه ہین می ںکودہاور لکلا مکی (۳) تس ری 
دج یہ س ہک ان کے کلام سے ل وگو ں کو بہت فانرہ نیا اور ں سے فاترہ چت ہے ا لاور طرف مضو بکردیاجاتاے 
کے جو ر یدهاز هناب ا کو سیف الد کہا ہاتاے۔ 
ولو ا تن ہیں روب والاجدورے رو دالے اجام کی اتر یں ہیں کی وک سب موه کے سا تجھھ روج وا لے 
ہیں اور رت تا راد روج وانے ہیں -اک لے حرس می ےڈ اکور و کہا جانا سے یقاس کے ان کے ڈر لد 
مردوں میں روآ جا تھی پان کے ذر ليم رده تلوب ہدبی تک روح سے ثد مو کے تے پا اس کہ ا نکی ی ان 
حضرت جج رکیل ایلوا کے رک و سے ہو ادرا نکب روح ہے۔ 
امن الا فلافہوززادق ہکی تر دید ے جو جت دوز کے وج دک دگل 


تبول اسلام سے سابقه گناہ مت جاتے ہیں 
یت لت دوعن مرو بن لعاص أنه قال : آئیٹ لس صل اللہ علیو وس كلف : انعط تميتك اغ 
قشریج: عل تور ن لف رات ہی لک اسلام سے ماف کے تا مکنا معاف ہو جات ہیں خواو قوق ارش کے یل 
سول افو السا کے تون ان یاصفا الب کے ہیں اکلہ قوف السادجو من تل الاموا مول وہ 
موف نیل ہوتے اور ںی ورت سے حقو التباد طاتا مواف تال ہوتے اور فآ الثم لسکا واف ہونے پر مین 


2 ل( لا جلداں‎ Fh 
میں ے بل صرف صقار موف ہوم ہیں اور نع حرا کے ہی ںکہ بحرت ے گام اور جو توق العباد من‎ 
فی الا موال ہیں وہ معاف ہو جاتے ہیں اور ج سے مظا م واف ہو جاتے ہیں - لان علامہ شی للا فریاتے ہی کہ‎ 
ریت کے سان وبا مھ اسک کید وبلا ت کے الفاظ ہیں مجن سے معلوم ہوسا ےکہ اسلا مکی بش مت و میس ی هم‎ 
کال ہیں ]شی ہ ر م مھا ی عاف ہو جات ہی ںکہ رت و اسلا عط کی گیا یزان کے سامت لف بدم یی مر‎ 
ریت کو بطو ر کید فرب اہ اسلام کے ہاوم ہو ن ےکی ش رط لگاتے ہو حال اکلہ تست اور پم ہوتے میں اس‎ 
تم کاس نو لکا یک سا عم معلوم در پا الم بالصؤاب۔‎ 


ارکان دين ` 
لديف الات : عن‌معازقال:قلث :یا بشرل او صل الله لیو وسلد وان رمع يديل ئة انا 
تشریج: عریث طزائی ارحال ابد ہک نسبت بو لکی طر فک کی ی اسناد چا زک ےکی وکر گل دخول جن تکی علت 
نیس ے بک جب سے ال عبت ر مت غد اون رک ے ا مم ے مراد بات سوال جم سے یازا لکاجواب نا مشئل سے 
کی هگ وخول جت تک معاملہ میات می سے ےکس یکو علوم نلک کون سے مک پوت جت نصیب ہوک لین جس 
کے الف دآسا نکر و ےا یکو بے مشکل کی و جو رز رش مکل ال کےآسان کر دنین ےآسان ہو جائی ے لمزا ۱ 
ار یم وان یر کون توا رش لس 
وت عل یه واب ال ؟ .یال صوم صرق اور صف رات میں فا هن نز اکاک کرد 
ددر داز ہک وکھولزامشکل ہوا سے ب رکھو لے کے بح ان رداغ ہآسمان ہو پا سب اک رم کور وتیل چیزمی له بت 
مکل ری یں )کی وک روزه میس تو ترا فا خواہشات سکول کنا پاتا جو مت انسالی کے خلاف ہے اک مر پا زا 
الال تید ہت اق چ ای فطرت یل جاور سیا یل کے باس شی توق رآ شس ہے :ان کا یت اه 
لظا انوم قيا 
بہت ت ی نیرا E‏ کس اشا ہوگاخودانراز وک راوج ے کوان تینوں شکل چزو لا 
عا دک ہو مایق ا دام ال کے آسان ہو ہیں کے ہنا ہرس ان کوالواب !فی رک ائچھران سے ال مر دیس گے ےک 
ز رتش کر یل دق دیاب 
سوه روزه دوز کج ه کی ڈھال ہے یا شیطان کے وسوسہ سے نے کے لے ڈحال ج ای که 
` یطال رگ وریش کے اندر دال ہو جاتاے جیباکہ بایان ري من ان و م ری اللّم . فقوا اريه 
باو ج یاخواہشات شالت ال ہے۔ 
وال که ثطفی طیه:.. کویتش گناہ سخ رہ راد ہیں ای 7 777 تثب و یکیو یرک ی ااب الا رہے۔ای 
مناسبت سے با معا کے لفت اطفاءلا سے ادر مر اماف کر نکاس ۱ 
7 مس تشر : هدن مراد کب انا نکی شان وامردین کی ہو نا جا اور م ی رم ار 


E‏ ےےل 8> ا بادوں و 
اکل نہ موتو چ کا وجودی نی ہو کات وم شہادت | کل درن ے اور کھووے ستون مراد پر عمار کی 
ولا تلو زل ستون کر گر ون مورب نک ےکم ڑا ہیں ہو ناور زی وتا سے بت ری مرا ےک گر 
چہارن ولور ن کی بان رک ن ہو اور چہادعام ے وا سیف ہو پاب تم لان ہوجب جس کامو تق لے 27 

تواتك املف ای کے ن تیریماں ‏ ےگ مکردے مارا عرب ا ںکو اپ اصلی مت سمل یل 
کرت تیک ال کو چب وق رت اور فعضب کے وقت بوکرس یت ہم کی ی ںکہ اکآ سان بات یل کے 
ہووزن گی سے موت برس 


ایمان کا مل کیا ہے ؟ 
یت ری : :5 وا مَدّقال: تال شو الم صل الله علیه سل من کته ابق دی راغلي ال 
تشرد یچ :جب تا بی تمام الات الد تال کے لے ہو چاے لی وکیا بای رو چاتاے۔ مزال ایمان مل کیاشیدے اود يم 
عبات سے بت اوی رکا دا ج ہے رت موک نله اللہ تال نے بو جا اک ر 0ت یکرت ولو موی یفن 
جواب دک آپ کے لے نماز یڑ عتا موں روز رکتا ہوں و یرہ ویر هلت قاس قربا کے ہے سب پلک اچ در چ بلند 
ہونے کے کے ہو امیر ے لے بے رک نے توب اٹہ و نی الہ رکرو 
حقیقی مؤمن کون ہے؟ 
ریت ات :کن ای هرب ر ککال: کال سول ول هووا اما نام ماخر نون سا زیویروا غ 
تشویج:ال حزیث کے اک حصہ کے پا مم نی زر کی ۔ ۱ 
ایِد من جا تسه فطاع اللوز عام در لوگ ہہ یگنت ہی نکر صر فکفار کے ات لس کر چا کہا جانا ے تو 
یہاں اس وت مکودو رک گی اک فق اذا هکیت لڑناچہاد تن له ف کور پاک ارگ اطاعت پر بو کر نا بھی ها جک 
رر ضا ری در اھر ےکی ا ی مش 
إن اعد یعّد وک مان جنبیک۔ 
ہے ال کر دق 
سامت دوس راکفارے تھی ما وت اور RAE‏ وقت ہوتاسے تی راکغار ظاہرہیں اور یں ہے 
چو تھاکفار سے نامر آل کے رل مقاب کیا اکتا س گر تس کے سا ار یآ کے ذر بیج مظابلہ من نیس بنا رسکی 
طلست ها رک کو چہاداک الیل 
امانت اور ایفافے کپ کی امیت 

یت و عنذکال :ما كاجام شرل الول الد ول ۷9 0 َا 
قشریج: قلما: کے "ماو عظتا کے ہیں۔علامہ زیڈ فرباتے ہی ںکہ ال مک اعادیث بیس وعید تید یر 
ہرااے ق کل مرو کل عاب ا أَمَائ سے کیا زاد ہے اس میں لف ا قوال ہیں من کے ہیں کہ الس‌طاعت 


دس ر( سکع جلراول و 
مرارے حخظرت لفات ہی لک ا سے وا فراش مراد ہیں زین اکم فر ے ہی ںکہ ای ے صلوج وضوم اور 
> تاکن مت مراد اور نف ن کبک اس سے رال دیا کلف بنانا کر یمان ویتکا یک تم رقلوب 
تیآدمش 3 د گیا یکیگہداش تکرنے سے ایما نکالپدداآگے اور بڑھے پوس یه اور رآو یکاک کے ر شرب 
کی لت لطف اندوز ہو ےکا ولج نے ا یکو ضرت مز یڈہ بل کیا صرف س بیا نک گی اور ڑکا عَزخْکا امائ عل 
وی از ض و ابا من کی ابات سے ہہ راد اور نف کی اک امات سے ہہ الست مراد سکو وا 
تل رك من بیع ادم مم بیا نکیاگیاان دونوں صو ر تڑوں میس لاایمان س ۱ سل ییا نکی کم زمر اور اران کے 
مات مخ ناس مر ہو وکال ایما نکی یوین 
رین امن لا عَهد: ED‏ ئی ےکا دی نک ی ۱ 
مراد تووود وش ہیں یک ذددے ج تام تیا تآدم سے روزازل ن اي اومان ہک رامیت کم ان تولہتعال و3 
لرك 
رو سراوه دس جو حطر آرم 9 ماع فو E‏ اق تھا جاک فا ا موا فا . 
گیا :می ے تو یی تم کے اعقبار سے یل دی نکی ہ وی اور ووسر ی تم کے اخقبار سے ا یکمالی دی نکی وگ 


۱ ھت کی يشار ت 
ریت تین : ناي هُرَي رضي اللہ عندقال: گناکفروا کولم E‏ معا ۲ را 
تشریح: َل م أجن: ال ی موتا ےک حخرتالد ہب دیا کو جب در وازه یں ملا پچ رب کر مك کے راغ برغ 
توا ںکاجھ اب دیاجاتاے هک رز تھا ضور سے دا »ون کے الک بان جک ری فا نکی باون 
ہوجاۓے حط رت ار ک کخزت جرت دی با یکی ہنا یہ نظ رک ںآ یااعد اما بہت ہوا هک پر ای کے وقت سا من 
7 کچ رگ نظ رم ںآکی۔ 
ن يرايج لفاعایجفش ین اع راب + هک ال ہے (ا مرا »ال وقت ہے عفت وگ ب ری 
)۳( 3 فر صرف ماف لیب ادر خر چالک مرکا نام ہے ( ۳ )خا ج با رار وزاور فت ے مو صوف زوف 
کی اک رن مو شع غارچ 
ال هیر ستخہام یا تق کیلع سے ات تجب سے لئے ےکہ دروازویند ہو نے کے باوجو وت وکے یہا ںآگیا۔ یا میت 
پر گول س که یکر ٹل شر یت سے معدوم وک الث تال کے رہم وکرم میں متخ رق تاه لس میس 
دی ہو گیا ینار می در یافت فرای۔ 

وَأَطَایِ ليو: حر الوم پر پاپ کو وی 7ت ون ےک انہوں نے 

ور سے دا قا تک ار یال دور ہو اہی ۔ نیج بخارت دی وه تضور ِا کی طرف سے ہے صرت الد ہریرہ 

لابق رف سے کل فرمار ہے ہیں یال با تک طرف شاه ےک کی امتوں بر جو مشکل اام ے عضو لم ے 


سرد Gg CDT‏ مدا . 
درن شل وو سب امد کیال با تک طرف اشمار دے دک اقرار شین کے بعد اشامت E‏ :کوک جب 
کو ماف رادقا تک نی تک لبتاے تج تال رک ان کے ساتھ ٹیہ جانا سے لا مکی مقار کت اکال نے م رات می ٠‏ 
رای حضور مکو تام نوری میں تی طو ری حاصل رک نار رت مو کی یکی ط رح جو تیال اتا ن ےکا عم 
مدای تضور یم نے جو تیاں ہت کر و ے دبای وجہ سے و صر ف کر شہاوت کے اقراریے جن کی بشارت دیدید 
قمر ب حر پیں وین ذئق: اس شش د وال وارد ہوتے ہیں هبل شکالی(۱) هرت رن الد جریر ویک سے را 
کاخ من سم الخو نے بی یام خاش رام صر فک روت ک ادلی مسلمان سے کی ہے 
کام صادر نہیں ہو سکن وا 13 ا ا ۱ 
اب :نوا یکا جواب ے کہ قرائی ے حطر ت مرو نے ج لاک حضو ر لور مکی طرف سے بارت د ےک م وجول 
نیس ے بللہ صرف مسلافوں کے قلو کی نیب کے تھا صر ہے خی لکی اک اکر ہے بارت د ہے اک کور 
ملا ن ل بچھوڑک رگ راہ ہو یال گے۔ اس لئ حضرت رنه مساو ںکا یمان ان ےک خاط راب میا کر دای 
نے یت ہیر سو تی تدم حور یل کے تقایل یس میرے فقط نے سے دایم یس حائیں کے تا ہوں نے مراک 2 
س ےکم فریادکر نے کے لے فو میں کے تو می رامنا ما لوا میت دی اور عام ضر رود کر نے کے لئے ایک فرد 
لیف دیور شر اجا کل ن جام ذا حطر ت رون کو اتال لس 
ووسرااقگال: ےہ ےک حضو ر موم نے بغار ت د ےک کم ایور رت رخ صاف فرماتے ہیں ل تل و تابر آپ 
کے ساتھ مقابمہ ے او رآ پک کم مرول بو اور ہے ملما نکی خان نیس چ جا کر «ظرت عفد 
جواب :تا سکاجواب پر ےک حضو ر مل کی شان ملف مو ے ی اللہ تیا یک مشت ال کے مر ہوتے ہیں توش 
وقت مو گناو پر دوز کی تد ید فرماتے ہیں جیراکہ فربایا: من کان ن کرو مفقال وین کنر . ولاینشل الام 
اور وم وا کن مر ہو نے ہی وال وقت ممول مگ جت گی بشارت ویر بقل وجب حضور نہ لون 
سے الک ہوک راڈ کی صقت ر م وکرم کے سر رل متفر ہو ے ہیں اس وقت لوق یک زور یکی طرف رگ لیزل 
فق طا یمان پر جن کی بغار ت دید سے ہیں۔ بیہاں بھی بجی عالت کی ۔ بنا ب ری بغار ت دہ ےکا کم یاو حضرت ما 
اس پان کے نہیں تا نکی نظ رو زور یک طرف کال دیلک اک ربشارت دید باس اکٹ لوگ نہ بج 
کر کل تر کک مگ راو ہو اس نو وروی بعش تک مقصد ہی فوت ہو جا ےکا او حضور لیمک خدمت میں 
۶ر شکیاو رک پک نظ حخلوق کے ضعت پر پڑی تو ححضرت ع رجا کی وافقت فرماتے ہو سے فرما کہ اپچھابشارت تہ دہ الا 
حفرت مرا هکول اشکال نیس ے۔ وا تا ای 
7 کلمه توحید نجات کا ذریعه ہے 
زیت : عن عفان کال : رجام ن صان الین له یووم جن تون کزث ایغ 
تشریح: یکر مك کے اتال کے بعد سا کرام جنیر لف عالات وکیفیات طا رک ہو گے تھے فک رل بل , 


چا رس سر :پت e‏ کج جلا لا 
ی وسوس ہیرام کیال جب حضو ر هنال وکیا تو ہے ورین ت ہو جا لور نے و ور 73 کات ت 
ار یکرو ا چا ححضرت روا قوی ٦وی‏ بھی گی لوا نےکر را هس کے جو کک کاک ور طول کی وفات 
۱ ہوگئی ا کا سراڑادو یگ اور جو اس پان ہو وکر ناموش یش بون تھے جیما خضرت عثان مش و یرو حضرت ص ران 
کرد کین وقت بیں عاضر یں سے بلک پہرتے خ رس نکر ت ریف لا اور انر جر چ رواو یھ بوس دیاصحابہ سل 
عالات دک ھکر سید اود یس تش ریف نے کے ورس بکومسو میس نج ہونےکااعلا نکیا چات سب تع وس جر سک 
بعد ایک تقر یر مرا الام ن کان یعبں الڈعغان اه یلاعموت ومن کان یعبدمحمدافان محمد اقدمات وما ترش ول 
کل کل من یہ لول 3 ما کرام کو ہو گیا تی کہ حر ع ان جو بھی تم م وکیا یا ہکرام وا 
بات ںکہ آیت ہم یش پڑت ج ےگ پر یا کی باه ذہول وک کی حضرت صر ا کہ چپ کی تلاوت ے معلوم 
۱ رہ اتاک ییاز ہو ری سبط ول واقعہ ہے بیہاں ا کی ضر ورت لس 
ان الکن ؟ علامہ تال را 2ب لک امم سے دیع الام مراد سے مطلب ہے س ےکمہ الام مم دوز 
بت کیت خجات عیرست مراد وسوسہ حیطانی ‏ ےک ۲ جکل اک لوگ جو یلان کے وسوسہ سے مواصی میں 
تلاو ر ے ہیں ااس سے ٹیا تکس ط موی ۔ ۱ ۱ 
الِعةائی: ب یک کے فروواستاس SS CR‏ سا لکفر 
له ورن پا نے والا میک وڑھایک رف ہکم ےکااقرا رک کے سے تجات پا کناب ویک موحد یں اک رینم ر 
ہو یکس طر جات نیس پا کال سے ا لک کی کش تکی طرف اشاردے۔ 


پوری دنیا میں اسلام کے فلہے کی پیش گونی 
دی الات : عن اعدا ر أنه مح شول الو صل اللہ لیم سل نی کل طهر الا رض جيف نا 
تشریح: :دد تی سے ر ہک ا کے میٹ کے ہیں اس سے مراد شر ےکی دک شر کے !کش رھ نٹ سے ہوتے ہیں 
. ادرو کے معن ہکم ںاود ای سے مرادد یات دبا هکلم رب کے ادها یآ د ی چم س ےکر بنا سے جے فو عمش 
کا مطلب ہے ہواخواو شر ہو یاد پات تا مگھر ول یں اسلا مکا اکر رال ہو ور رس ےگا نخواواز خودا ار سے باعمزت مسلمان 
#ول بازلت کے ساتھ اسلام کے جائع ہو ںگو پا عریث مسب ےآیت ترآلی و ای ال وله بای ودب 
نم یشوه لی لین کلذ سے اب کش کہ ال س کون سازمانہ مراد ے وف حط رات فرماتے می کہ ال سے 
1 از fd‏ خی زمانہ مرادسے اوه ال ڑیں سے صرف جر یر ۃ الم باورا لک ای پالم ااے کیو نگ اعلام اس 
7 وقت التبا لکلا تقاط حری ت16 و رد و ماس رکم 
در الام کے ماع ہوں کے مالا اککہ جزی ۃالعرب میں يم قبول نیس ہہوگا۔وہاں توو وی صور یں لاسام تی اس لے 
عیرست پر رز مین مرادہے اور خضرت مہ ی علیہ السلام کے ات موک گر یہ بھی ی نہیں 
ےکی وکا یوقت بھی زيم ول لوگ ام اسب سے بت وجيم ہے س کہ اس سے لور عال مکا مل مان ہو نام را یں 


e o RE‏ بر 
سے بللہ اس سے مراد اسلا الا ےک اسلا ولا کی و میت کے نبا سے لورت امیر الب م وگااور ذل ز لب رکافر 
ماو ے جو و ل ے مغلوب وگ 


ایمان واسلام کا تعارف 
وی : عن عغروبن عجسةقال ل :ای :شول ال له علیو وس کل :یا مول ول 
تشریج: خا ے حغضرت ال وکر وراد ہیں اور عبن سے خضرت ہلال ٹیا زین مارت مراد ے اور رت 
خد بے الکو سور ات یس ہو نهک بنا اور نحضرت لی پک سن یکی با دک کل فرمایااگرچہ ده بھی اس وقت 
مان با خووعات یم اا ے۲ لہ پر ماو درگ مر ے سا تجھ ہیں اود ہیر بی موافقت موی 
طیب الام .معا العام : یہاں اسلا مکی صفات حن اور مکار م الاق بیان کر موو ے اون سے صرفان 
دونو ںکوبیا نک ےکی وجہ یر ےکا نکااش لو ظاہر موتا ے اور یت اللا ے در جتان بیا نکیاادر اعا ے درج ۔ 
تل گنل پیا نکیا ی عل کو قد میم بان یی کل ہے ای سے انان فضا لکی طرف تر کرت اور رز 
سے پا ک »وتا 
اسَْدوالمَماعة :لا ترک منیا تک رف اشادہ ے اور تاش نعل ماسورا یک طرف شاه تا : 
اس میں تام دی کو سمودیااور شی کاک یہاں صبر سے صب مکی ام اقام مراد تس مق الصیر علی الطاعات و الصبرعن 
امصيبة و الصبر نی العصیات اور ماح ے جو روبخششیں مراد سے وی سے قمام تقو الثم 1 رف ےا 
0/7 "مم ے افظ سے ترام تقو العا رک طرف اشا دے اور ن کہا 
الصبرعن المفقوروالسخاوة با موجودمارے۔ 
ول القئوت: ‏ افت مس شود سک بہت معال یآ تے ہیں قران سے نی نکی جا ےگی طاعت ٠‏ تیم سلوج سکوت رما 
22 ترات یبال وت تام مر ارے 7 رو رک روات میس کے قوت کے یا مآ یاب اوه یم عرمثد سل ہو 1 
اضنا فک اس ملس کہ طول قیام وای نمازا یی کو ت ها نما ناب الصاو میس لور یل کے ات 1 ےگ 
برای کک د مل کے مات سو اللہ عم یلص و اب۔ 
گناہ کبیره اور نفاق کی علامتوں کا بیان 
صخیرہ اور کبیره کی تقسیم: .ال قل کرام کے در میا اتلاف +واکنگناہوں ہی تشم ےک تس 
ت قاضی عیاش کھت اکال ے قول کے موافن لح شتی نک راے ‏ ےک گناو سکوئی تیم بل یل سب ہی کر ہیں 
اور ی را ے الوا حا اسف را یک یکہ کل ماقی اللہ عنه فهرکبپر 3 وم ول کرتے ہیں رت این عا اہ 
تول سے نیقی کا تفاضا بھی بچی ےک ان تھا کی جات کے تج نظ را کی ب نارای بی ہے نوک وال 
پیر انی ہو کاک اشک نافررالی ہواو وٹ م وکر مہو ر سلف و قاف کے نز دی گناو کی ره وصفیرومو_ ےکی شیم جار یی 
ہے ادراس پر صو ق رآ آن داحادریثف ہو یہي اور تاره تاس دال ہیں جی سل ق رآ نکر گ70۴ تجتزبو! کار ما 


۱ ِ سے چو ا جلدابل 8 
7 : الاک گناد اییے ہیں جو ای نوہ کے معاف تذل ہوتاے اور ایا ي کہ خر وب تی امال 
سے ماف ہوجات ہیں تیک کار سے ی رک ایا اور رو سر ےکو سے مات سے جو فا ہیں دو مر آیتالَنيْنَ 
ہن کلو الام الوا ج لل ار دبک اعادیث بش یکرائروصفائرکی طرف " یم زاب زاغ 
امت ی تیم تار راے چات اام رال تفت کاب ابرا سس و بات ہی ںکہ اکر لفرق‌بین الکباثروالصفاثر _ 
لایلیق بالفقہ۔ یز ای چابتا ےکہ ش رک او رکب یل فرق ہے دونوں بان تزور پوس ارس کل رن 
اد رگا دنا بل ضر ور ایک بسچ اور ایک کیو ای ناگی تی کا فیا کر نابات مع کے فلاف ہے باتی فران اول 
نے این عباس لپ کے قول سے جو ات لا لکیاے ا کاجواب ہے نے کہ ان عا ںیا سے سی کا قول بھی ہوجو ر سے اور 
اہو نے چو تیا کیک ال کی تافر ای کے اعتہا ر سے س بکیرہہونے الا لا جاب ہی ےک گنا ہکیاددحیشیت ہیں ایک 
زات خد اوت ر کی طرف نج ترس ہو ال حیثیت سے جک س ب کنا کیرد مو نے پل دوس ری حیشی تکناہو ںکی 
۱ ید ومرس ےک نبت تاب اتد ےکہ مکنا ری یک بن سے بام ہاں ] نے 72 تی ہیں 

دودوم کی حیشیت سے یں کل حیشیت سے یں اب جمہور کےآ بل می کیرد صخی روکی تر بف می تاف اقوال وس 

1 - ریت امن با ورن کل کے نز د یک جم نویھ اٹہ توائ نے نار خضب پالعنت کے سا تم وعید عیر 
گیادہکیر ہے ورن مر 

2- ج وکنا فضا ی ایال ے معحاف ا ویش اور جو معاف ہو جات ہیں وہ سر ہیں _۔ 

3- مادک فرمات ہی ں کہ لگنا شریعت کو خائ م مقر رک ہے ویر مج 

4- امام رای تادان بے ہی ںکہ تسناد کر نے دالا بے هد کے سا تیم رک رتا سے ویر« اور لا دوکر 
وقت ذل بی خوف وڈر ہوتاے اور صرف وسوس شان ے مقلوب ہو ورم کب ہو ماتا ے دہ E‏ 

5- تح حرا ت فرماتے ہی ںکہ نس پر لفظفاحشہکااطلا ق ک گیا ے و ہیر ہے 

6- ان صلا فر ےا لک بس پا یرد انی مکاطلایق کیاگیادہکبی ردرے۔ 

7- ان السلام کت ہیں کہ کف گنا ہکا مش روو خر ای منصوص علیہ کار کے مهو ات ز یادہ بابرا بر ہو وہک یرد اک رکم 
ولو ۳ 

8 کشک انز درک کل هدرم ۱ 
9- امام خزالی 2040105 دو سرا تول س ےک کیب ردوصصخیر دا مور اضافیہ بل سے ہیں ہ گنها تحت کے اعتہار سے 7 
ہے اور بو کے اعتارسے صذ رد 1 
10 - ات هدس کہاکہ ہے بات ىہ ہ ےک ہیر م کو ات تح ریف تج بک ریت نے لب می ص یکو 
کاس تج کیا 22 تی رکیااور بہت سےگذاہوں کے بارے مس یک یرباص رین وہ 


تسس سس ان 
۱ کیک ایک مس ضر ور وشل ہیں اور عدم بیان ‏ ہو نٹ یی تو 
حشرة کا یلق ان کے علاوداور بت ے اقوال ہی یگ راکش رصر جورع ہیں مفلان کر 


سب سے بڑے گناه 
انث ایت : عن میں نون عضو قال : قال جل : با مهو لو نهد ند اللو؟ اخ 
فا .من مودک لاک رد جیا یت فک وشن نے زی یش ول مرا سار 
کا کے کے کر ور پا تارمن سک ام کر که پا نیا ات ال یک سیر من 
گناہ پا جاتے ہیں ۔ ایک و تل دوس رااپے ول کو ےن e‏ پا کے وت تی اکنا خڑاکی 
رزاقیت پر عد م یمان پایاجاتاے۔- بیز ای رب کے روا جکی ی ف ور ویو ںکوزنروو رگ رکر لے 
»ال طرف ی اشر مقر ےا یطر ملق ز: یرم یف مس پٹ و یک لی کے ساتھ کون کیاگیا۔ 
یاه تیاحت وشاع تکو ظاہ رک نے کے کے اس ےک ایک یڑ وک دوسرے پڑ وک پر لو رااغتا رتا ے اور ا یکو ایق چان 
ویال اور مزت کے تن یس این وی ہش تا کیااور ابات 
دار گی یی خان تگی۔ بنا ں علیلہ جا رکون کر کے یا نکیا 
جار بڑم گناہ 
یت لین : کن ڪپ لو ځرو قال: تال شون للوضل اه علیووسلر الا : رال پا 
تشریح: شر کک ده سل ہیں۔ ایک ش رک اک رووائش کی ذات وصفات وعبادت م یکوش ری کک نال ارآ معاف 
لگ دنمان ضرورت + وگ دوس ری مش رک اص نشرک کی کے عبات میس در یاش یک فاص ۱ 
ورد باب اور تیک تال سے ماف ہو جاتاہے۔ اب عدریت ال بحت ہوک ال شک کف ربا مرادے یا 
ش رک بی مراد ہے ٹین 2 کب ھال ترک س هک ربا راد ہے کی دک ا لوا کبرالکباش رک کی اور لق ش رک 
کف رس کہ لکلا عرب می ش رک کے بکشرت موجود ہو ن ےکی با کر کے ا کو زک کیا 0 
دک ش رک سے مق ش رک می مرادے۔والراجچھوالاول- ۱ 
وق الال دیں: پچ وک اللہ تھا کو تایبا یس و ل سے ای ط ر وال ر نک بھی اییاد ہندہ س و شل ہے اکر دونوں 
یں فرقی ےک اسب شی سے اور وال رن سب خظاہ رک ہیں ت سیت یس اشت را کک متاپ اش راک الثم کے بحر کہا س 
عقوقالوال د نکودوسرے مر شیر یں رکھاگیا۔ ای ے ترآ وحدریث مس جہاں کی این تعائی ھی اطاع ت کا وک کی کیاد ہاں 
سات ساتھ اطاعت والد بی نک ی زک رگیاگیا۔ کے وال وا له ولا تفرگوا به شیا وان اخسانا -آن اکن 
وَلوَالَِيْكَ'وغرہ۔ ۱ 
ہلاک کرینے والی باتوں سے بچو 
ید الین : کن اي مق قال :قال یمر لاشو صل اللہ علیووسلّراجعبر شب یقت 


یلاس س ر و چا برا و 
تفریج :یبال پیل نب یک رم مك نے اب ال بیان فرما پگ تفصیل فرمائی اک او نی اننس ہو۔ اوران چول ے ر وعاتیت 
جال ے۔ ب رآہت ہآہتہ جسانیت کے بھی بلاک مو ےکا قوی خطروے۔ 
سحر کی تعریف واقسام: رک ت ر لف ی سب کہ اسباب خفیہ کے زر لدم ایس امو کو ان تابوش آنا 
جو خمارق للعادت ہواور ا یکی سیت خداکی زات یاصفا تک طرف ن ہک جائۓ۔اور ا سکی بہت ہیں ہیں 1۔ اوقت 
اروا شیا ین اي بہاد رآو یکی رو گوس رک لیا اسب اور ال کے دی ای امو رکو یج ابو می يک رلیا جانا ے جو 
دوسروں کے لے کل ہوتے ہیں اوران روا ی ایی نظ مکی ہا سے جس طرع خاک س مکی اتی ہے۔ تو یہ حر 
الا تھا گنر ے۔ 2- دوس رکی یک ایق قوت اب کو دگل ہا س ہک یش ایک طرف دحیان ہو ہاور تام ۱ 
توتو ںکو یکر ی انی ے اور اک کی اہم شط ہج قلت بعامء قلت منام اور قل تکلام۔ 
تال میں اگ راسلام کے خلا فکف رک تا مقضود ہو وکذرے اور اگ راسلا مک اکر مقصود ہے تو مرواب 00 
اگ گرگ متصورن ہو صرف چاو ے ایق تفت کر ترد چ۶ مال چ اود بہت کی اقام یت مبل ان رن کا 
کچھ ارہ یں سے فلائل کزها۔ 
اب ال پٹ ہوک ہآ یا ح ر کول عق ہے یاصرف ایک خال امر چ زان تم وید مل دی وجفر سآ بای 
شنادراک حھمم اللہ کے نزدیک ح رک یکوئی عقیقت لس ایک خیالی یز ے وود بل کرت ہیں 
امین عون کے رس تک اس کے باب میں ت رآ نکر ماعلا کے : فاا الُم و ِصِیِثُم یل له من 
یضر دخ تا کن یک نیال اور سل خساپ کل ہو ۓ تے بل حضرت مو کی و کے یل ی سانپ 2 
ڈال د یگ 9 امزایم خالا م ہوا قیشت نیس سے کن علا وی نرہ ے ہیں اکلہ حر کی نیت سے ین 
چز رل ای ے اور بی وال سنت واا عت یارائے ےت رآ نع د ع رٹ الپ شاب کیل اور پاروت ومار و ت کاڈ لے تشہور 
ہے اور معوز انلیا یمیت کا کہ حضور ما ی جاو و لام دفعیہ کے لے بر رونول 
سور ہیں نازل ہوٗیں نیز حضرت ع اور جن سلا م ماف مات ہی ںکہ رن چن رآ یا ق رہ نیٹ صتا یبد هه ار کے 
سا تاش کیت می آن الس رحق کے الفاظ آۓ ہیں مخز ویر نے ج یت شی کی ہے دہ جا وی 

ایک تانق کین نہیں۔ 

سحر. معجره. گناه کرابت کا فرق: اب تست دق للا نے ل شراک 

ہے الن شی ماب ال تیا زکیاے فو ند افتپا.ست ان یش فرت میا نکی الا سب - 

1- ریش اباب خفی ہکی ضر ورت ناس ر ا ورت مرن کا ۳ ہوجاتاے۔ 
2 تن مک چا امت لامک خر ریہ پاپ ی 

دقت چام ظاہرہو جا ہیں۔ ٴ 

3- کرس تیم 2 کی ضر ورت »ول ہے ان دونوں می ال و 3 

4۔ح متا مور کن ے مججزدوکرامتکاسقابلہ کن ںاور مز وکرامت یس فرقی ہے ےک رہش تور 


چیا رس دون سر > ہداں پٹ 
کی د وت موی ےکرامت میں لول رفن میک عام نے ازن لت فار للعادت ام اہر 
وشات نہ ہو وہ روا اسب اور اکر وہ شف ی ش یعت ہے اود سا تم ای نبو تکا وکوک دام مر 
ے اکر بو تکار ان ہو وک رات ے۔ 


وه بد ترین گناہ جن کے ارتکاب سے گناہ باتی نہیں رھتا 
ریت الات :ونه تال قال صل اللہ عَلیووملًی: ین ان جیں‌تزنومولزم ناخ 
فوع ان کرک ےسیک اف یام خر کال مان یں اور ا کے مز لہ وخوار نکی 
تا در یسب جو م رم کہا رکو ادر گن ال مان ترا دی یں اور ہے حدمت اب رال سنت دااع ت کے تالف ورن 
س ےکی دگل ان کے نزدی ککیبرہ رگن الا مان بل سے ایبول نے دوس رک اعارییف کے بش اران امار کی 
توبات وتاویلات کے تاکہ اجادیث کے ددمیان تخر ش وان د ہو۔ چنا فرا کہ (ا کے صرف دی ر وو ید کے لے ہیں 
کہ لمان ان افعال سے پر ہی نکر ٣(‏ )امام خا یڈ فر مات ہیں کہ ال ےکال ایا نکی فی مراد ال 
ایا نکی ی مراد (۳)حعطرت این عیاش ےہ اراس یج هک اس سے ور ایما کا ون رارے نس ابا نک 
خر وج مراد ل ہیں (م)تسن بص کی لن فر ات ہی کہ اس سے مراد کر مو من جھ ایک الب تاد ا 
یر جتابکہ ا کو دو ہے برے القاب سے باد کیا جا ۓگا۔ ملا ا یکو ارق زا ش را کہا جات -(۵)حضررت این 
عادو سرا قول بيس ےکہ ال وقت ال کے اندر سے یمان کل کم سره اتبا جن جات کنکداب سے بھانے 
کے گن کےا کان رہ ےکا را نل سے فراخت کے بعد وای ںآ جات ےک (۹) بر رات کہ اس 
یمان سے ابیمان بالمشاہدۃمرادے اور هو ینک مطلب مو ن انیب ےکی وک یں کو پور ان ہوکہ کے رد 
ہے اور زا بک گے سے شود ده راو دوہ رگزاییاکام نی سکرتاہے۔(ے)علامہ تو ن فرماتے ہی ںکے ا کن ی 
کے سے مطلب یمس هک ایما نکی عالت بیس ای اکام ن ہکر و چناتم تشر وایات مل کی کے گی ےآ یاے۔(۸)علامہ 
شی ہل رات ں کہ یہاں ی ایمان سے ای شا جیا مراد س هکم میا ہوتے ہوے ااام نی کر کت 
ہے۔(۹)علامہ تا کن ناویل فرماتے ہی کہ و تن سے مامون من العزاب مراد ے ایک حالت مل وہ 
زاب سے اصون نیل ہوگا۔(+۱علامرائن زم خر مات ہی کیہ مو مین مخ کے معن یس ہےکہ اھ کے ار دار مو کے ایا 
کم نکی سکر کتا۔ یلک عهرء ایلع 
منافق کی علامتیں 
لت الت :عاي هُرَيرة ي الف عه کن . قال : قال شرل انی صل اللہ هوام یه لتافن لا ال 

تشریح 7 کی بات بے سب کہ اس می تین علامت با یگ الم حط رت این عم راپ کی صرت مل پار ' 
مل ی تال یں فصارضا ال کے ملف جوابت ده گے یں( یچ رت علامات موق ہیں ۱ یسب کیان 
کیا اتاہے اور ی نف ضکواس لے ایک کے ذک کر سے سے ووسرو کی ئی یں ویک دک عرو تس بت موم الف 


هرت مد 3 
مخت لس (۳د وراج اب بی ےک نکر ینیوآ ون بیان فر مایا بعد شس الیک او هک وی آ یو 
چاه بیان فرمایا(٣)‏ تہ راج اب ہے ے ہک تین تو غوس فا کی علاصت ہیں اور جو الیل غلو ص ننا میں کال ہی راک نے کے 
ل ےکہاکیا۔ ۱ 
دو رک بات ہے س کہ ات نفا کوان کوره ٹین مرول فا لک رن ےکی دج ہے س که اکے لیے باسوایر اطلا مو جال 
س ےکی درآ دیات تین چیزول پر متحصرے تل کل اورضیت۔ جب ان تلم فاد انا سب قودیانت می رکا ڑآ جانا 
ہے إا ےت ے فساد قول ریب ہا ہے لانشن اع سے شاه ل ی إا خاک ے فسادضیتپ اطلاغ٭ 
بسچ ۱ ۱ 

تہ رک بات ہے س کہ ال عدیث ٹیل ایک مشہور اشکال ہوا کے یہاں جھ زی علامت نفاق تال ہے سب ہے 

م ومن کے اند بھی پا انی ہیں کے یمان ملک کلب وغ لس قوب مطلب مہ کر سب مون منا فی 
یں الا من شام آو علما نے اک تلف جواب د ےد (۱) حمر شاه صا حب کک الیکا فرماتے بی سکہ علاصت وعلت ٹیل 

۱ فرت ے علت پاۓ جانے سے معلو ل کاہوناض رو رک ے مین علامت موجود ہونے سے زوا لام ایض رو رک نیل ے 

ماک چ رک علامت دو سرک یز می پل جا ےکر دو سری نز بی پچ یش نیس ہو لباز ماک 
علامت یں کان کسی میا کے اندر پاے جانے سے ا کا من ہونالازم ہیں ہوم کرک ال اییان دننک تعطق 
تلب کے ساھ ہے ۔(۲)شاء صاحب الکو سرا قول می ےک یہاں لفت اذاو لا سے جوددام اراد وال س گر 
پیش قرف ر کے ۳ تس وجہالدوام دالا راز ہیں 
پائی انش ۔ اکر ایک وفع وت بو سل بھی تو دو سر ی رف بولاے۔(۳)ہ تضور زار کے میاق نکیساتجھ 
خائ ہے۔(۴ )اس ے نف کل مراد ے نف اخنقادم راد لاور نفاقی گل مسمافول کے اندر ہو کا ہے۔(۵) مہ ایک 
ملق کے پاد ے می فرما یاکھا قال نایک و ی ماد ی 5 کو راب رای طرف موب 
یں نرا ےت باشلا دکر دی تھے یت وال کچھ د میدوتہد یدک سے ا پک سان ایی خصلتوں ے 
پر یی زک ۱ 
نو واضح احکام سے متعلق یہود کا سوال 

لیت لورت : عن‌ضفوان‌ن عمال قال قال تقو وي لا جبه اهب یکاخ 
تشریح: لان یعاخن اس هس کنا ے خوش ہو ےک ط رفک وک انان جب خوش موتا سے تو1 سس دی 
ہو اتی ہیں ویارد کل چار ہو ہا ہیں و مطلب جاک جب دو ت کاک تم نے یکہہ دیا دہ خوش ہو ہے کک 
ملین ن کے 7 کدی کنا ہے سے انظارسفت کوک انان ج باک چ رک تھ کےا یں پھاڑپھاڑکر راربا 
ہے فو مطلب یواک جب ت کک کے اسے یدیا ها اف دک ےگا ھار سےا کے ات نک 
سلا عن آیاټ نان : اس شلد لک آ یات ہینات ےکیامرادے تو عضو لگ رائۓ کر ان سے موی وا 
کے و رات مراد ڑل العصاء و الینو الط دان رن صورت میں جواب مب نے و رات ان فرط 


م 


¥ د‎ gee CGD Re E 


انذار وار شاد زیر چندا<کام فرماۓ_ 

ان لاش رکوا یاو | سے لین اصلی جاب نو جرا تکوق رآ نکمم کے کر پر اکتذاکرتے بو عز فک دید 
بش پاک سوال تو وات بی کے بارے میس تام رآ پ نے را تکاجواب یس د بابک ہآپ سبط رز اسلوب 
اگیم جواب دس ہو فربایاککہ ہزات کے جواب سے که هل موک اس ےکی بات سنوتو اجام بیان راد ے۔ 
علا حافظ فل ار رتور شق تاکن نرا )کہ یات بات وەاحکام ٣‏ در مین 
مش رک تے ان سے سوا لکیااور ایک گم جوان کے ساتھ تھل( سن کے ون شک کی حرمت )ا کو شیر هرک اتا نکی 
رپس عام وا س بکوبیان فرماد یا ےآپ وو کی بو تک صداقت ان کے سا من طابر وک اور 
آپ پل کے IYA‏ مارک کو لوس داور وت کات رل نان یں ینار 21 ملران غر کین ےن 

ال اعدا ہے حظرت داد یلاہ مر ت تان سے اس 2 د داد ایا ہر تی ا 1 7 2 یکلہ ان 1 
کاب ز لور میں کوب _ کر ترش کے تبیہ سے ایک آ رک با بیدا ہوگا نکنام نا .تن رال وگ اور ا کاوین 
قماماد ان کے ے زا ہوگاتوجب الد تھی نے ا یرالد کیت ہو نکاس کہ و ها سے اس کے خلاف دع اک میں نو 
چکمہانہوں نے یہاں و کہا تاد اتا فور نفا کہا تھا نا یں صاحب مصاع نے اس داق کو علامت 
تفا کے باب کل لیا ۱ 


اب کفر ہے یا ایمان 

لات از : عن مدي تقال إ تما قاق کان عل عو ول انو صل امد لولم اغ 
تشریج: یکر مم کے زاۓ می چن ر کت و صا کے پیش نظ رما شقن کے تیر مسلرانو ںکاساب رتا کیا جانا اک 
نکی جان دا کات رض نمی کیا ان رآپ کے بعد وو صا بوک اما کاو مگ گیل اب دوہی 
سورت ق ریپ مان جو زا یف یں اگ م ری کے پارے میس معلوم ہو چائے کہ ام سلدان ےکر ول ںکفرسے زاس 
کارا رال جیامعا مکی کاب وہ میهف ماع ی کے کے _ ۱ 
(۱)بتزاءاسلام میں ماران کم تے اس لے ناک مسلمانوں کے سات رت ےکی وچس کف بت معلوم موی 2920 
فا پر عب پڑت تھا(۴)ان منانقی یرکف مسلرانوں میں شا رکرتے تھے۔ اب اکر لان ا نک وق یکرت کف کر 
ملمانوں کے بی میں ناد لاد ری یی بج ےا نکی ہمت عق( )کی صورت میں ج 
لوگ نا ایمان لان کاارادور کھت ہیں و و بھی اس ڈر سے مسلران نہ ہو کہ معلوم یل شایرا نکی بان ہیں کی موان ۔ 
بج ےکر مار ڈانے جس سے اسلا مکی تر میں رکاوٹ جوا( ۳) لقن کے ساتھ اس سن سل و کک با ہت سے ماو 
یر مزا حعلقہ اسلام یش گے کر جب و مشول کے سیا اتا تن سلوک ے تو پھر اص مسلمان ہو نے سس ےکتنااپچھا برا ہوا 
وہ تا لے رسک مسلرانو نک تح داو بڑ مک کہ ود مول ہکھٹرے مو کے تھے ووسرو ںکی نمر تک 
. رورت ثم و تیور کال درد 


چا رس سس map‏ جداں لے 
پان الوسر یہ باب ووس کے بیان ‏ ے) 
۔ لت ارت : ناي هُرَبْرة ءضي الله عنذقال: تال ءغرل اشٰوصل الد علیووسر إا جاوز ناء کی الس 
تشریح: دل میں جو حطر گے ہیں وہ ا روا ہوں ش رکی طرف توا ںکووسوسہ اتا ہے اور گر دای ہوں خر 10 
طرفواں ابا مکہاجاتاے۔ ۱ 
وسوسه کی قسمیس: رع وق یکا شف سی اگ تن ے 
جرح رس نی اسان تادر ٹنیس سے مہ تام تو لکومحا کر کلف الد نفساالا وسعما۔دوص ری افیاری وہ 
ےک لب می لک نے کے بعد داماد بتاب اور ای ے لزت ها کک حار تتا ے اور ا کو DF‏ ی و رت کر 
کامیاب کیل ہہوتاہے ہے امت حر یہ کے لے مواف ےکی امتول کے لئ معا ف کل تھا کر یاو رکھنا چا ےکہ عتا سره 
اوراخلاقی ذمیہ اس وسوس میں ہ رگزداخ ل نویس ہیں( )رو ری تیم وسو کی ےس ےک اس کے پاچ راب ہیں 
اول: کہ و وس رآ 2 زر سکره ۱ 
رو سرا Si:‏ بآ ارچ سل وعدم لک طرف لکل موجن ہکرے۔ 
را ہیی ٹوو ہآ اکر ل وعم لک طرف سوج کر گر همع لاخ 
چو تھا :ھ مکہ جانب تح لکورا کرد ےکر ودرجا قوی نہ موی زور مور 
ال :عز کہ وسوس کر ہاب لکورا کر رازم کم یار بر م کے اسب بھی مب اکر لئے صرف 
موان گی منایر جور س نہ لا کان یل سے ول قمام امتوں کیل محاف ہیں او رآخ ری مه تام امتوں کر مواخزهکیا 
اک مین اس ہو ےس بعد وف خداون کل اي بازد گیا وہ لواب کے اور چو 3 تم بل تون کیل مجاف 
یی ہے صرف امت مج یہ کے لے سعاف ہے فو حدریت :کور میں کی چو ھی تم مراد هک بهاری ص وی ابت ہو۔ ۱ 
بر انسان کے ساتھ جن اور فرشتے مقرر ہیں 
لیت الات : عن ابن کشو رکال »سول الو صل اللہ عليه ولم تا ینگری نکر قد دق پوگریدهین ناخ 
تویج: ندال میں دوصور ہیں ہوسکتی ہیں (ا)صینہ ور ما مضار اس وقت مطلب ہوک میں کفو رت 
ہہوں (٢)افعالل‏ سے واعد کر تا بکاصیضہ سے اور شیطان فا ۶ل سے مطلب ی وکاک وہ می ر سے جابجدرار ہوگیاپااسلام قبول 
کرلیا۔ شع محر تن نے بل ور کو رر قرار دیاس ےک شیطا نک لام تقو لکرن تصو رتیل ہو کک کوک ا کی 
۳ یال کي درآ ہی ںکہ نارسفا لک کف ری ییا تال قد رت ہ کر ال کے اندر قول 
اسلام گی صلاحیت پید اکر درے۔ نیز راید 8 اج تال صور تکی امن جکر ین من ال نهر نو السراس 
کے ہیں ار قرن ماه کے ہیں۔ 
SS EEE‏ وی مو سے 
ر قال لحري اکان 


ددرت سر وہہ ہہ چا جال ہے 
تشریح: ا ی تا کان کے ہی لک دل ت کااشار ہ مون ماس کی ط رف کہ مار ےرل میں سوت 
1 ےی نکاا ہار ز انس نہایت تم کت چہ جائیہ انتا هگرب | لس گت کوضریخ الإا نکہاکیا۔ دک ہے 
ان چزوں کے بطلا اتاد اور ختیت خد اون د کب ہے۔اور کی فاع ایمان ہے۔ تی شل وسو کی طرف شرب 
کی کہ شیطا نکفار کے معاملمہ سے فاس و چکاکہ میشر انس یار ہتاے صرف وسوس یراکنا کی کرد مخلاف مو ین 
ےک ا نکاا یمان جوا لب کی ےا کو یں نے کالما نقصا نکر ناچابتاے ل زاو سوس ڈاتتار بتاے۔ ال زایا وسوسہ 
ہو ایا نکی و یل مول کل کے کہ تد ال میس نیس دا بالا کےگھ میں دا وتات مو ےن 
گھم میں دولت ایمان ے۔ ا سے شیطان چو رول یس وسوس دیا ےد توو سو ہو زا یما نکی و مل ہو گی 
شیطان انسان کی رگون میں دوزتا رہتا ہے 
ریت انیت : عن اتی کال : کال تشو ل انو صل اه عله ومع لبان ري ون انان ری الم ال 
تریح ریالم : اس میں روا تال ہیں(ا) صر کبک شس طر خن انان کے اندر رای تک اہ اکا 
طرح شیطاان بھی انان کے ان سرلی تکرتار تا سب اور اس سے اشھا ہے ال با تک طر فک انان پرا یکی تر ت تام 
اور تصرف کال ہے۔(۲ )دوس ال یس کر مج ری خظر فکاصیضہ ہے۔ مطلب ہے ےکہ خون جل کی چ من رگوں یل 
رای تکہتاہے۔ اب ال یل ے جک مہ دداشمال ہی ںک بات قیقت پر ول ہے اور اھر کی کوک ہے م لطیف ے۔ 
دو راتا لے هک ور سح ۱ ٠‏ 


شیطان بجوں کی پیدائش کے وقت کجوکے لگاتاہے 

لت الت : وعن آي‌هرنرة تال : کال مول او صل الہ علیووسلّم امن بنيآوممولرو يمه اسان جين 
رن یستهل صار گان تی الكيظان .بعري .ايها 

تشریج: رک ا رأۃ ان نے اس دعاکی گی : وإ یت دزا س انط الأجم ایس 
شیطان سے م > ی علیھ ماالسلا کو ون رکھاگیا ا برا نک فی خابت یں مو یکوک 
ود روف رت برغ سس E‏ لی فضی تکی سک 
ما نیس ہیں نو کہا جا هکم بھی عم سے خر نع ہوتاے۔ 

جزیره عرب سے شیطان مایوسی کا شکار . 
دیش الات : و .کال مش ول الو صل یه ول 9101 آیس‌ینآنبتبنه الال 

ققصولج: ال عبات شیطان سے ش رک هرادج -او رفظ ون سے م ومن مراد بولک رکل مرادلیاگیا۔ 
سوال :اب اس میس اشکال ہے ےکہ جب شیطان :امیر ہ وکی اتو حضو ر ززم کے بط لوگ مسیل کراب اور اسو ونی 
۳ درل مر اس ۱ 


رسد هسرپ ] جداں لے 
جوانب: وال بہت سے جواب دیے گے (۱) عباوت اصنام راوس اور سیل اور اسوو گنی کے ین ارچ رد 
ہو یگ کر عبات اصنام لک ( ۳ حدی ٹکامطلب یہ ےکہ حور یل یه رک نارای بط ی اب 
تام ت کل پو رید از سر گیل جلا یل ہو ی(۳)شیطان اسلام رشان وش وکت رک ےکر پل نامب یاقا کی 
رآ پ مل نے دی اس سے عد م وق رازم لآتگ دک بہت کی زی نمی یس باوجودحاصل ہو جائییں۔ 2 
العرب اس لے نا یاک الاما یوقت ا سے بابر یں پم تھا 


اي مان کین) 
تقدیر کیا چیز ہے :سل نز یر مزلۃ الأقدداہ می سے ہے۔سر من سرا اه تعالی سے کی پپری عق تک اطلار 
دک قرب فرشت رکوو یکی اور کی ی ور سو لیکواس لے اس می دور وق کناچا نیس ہے بک جہا ں کک قرآان 
ریت می اج کور ہے اک پر تفر کے ایا لا ناچا احق الکو تعاشا طاقت و کلب باہرے۔ لت 
فی تی رب وی نے اشار و غیج ایک سا ل نے 


ان سے ال بارے لور یاف تگیا- 

أخبرني عن القدہ؟ قال :طریق مظلم فلاتسلکہ فأعارالسوال‌فقال: بھرعمیؾلاتاجہ. فأعادالسؤ ال فقال: سر اللہ 
خفيعليكنلاتفشه. 

ای لے رت ما کت کیل سم ریب +01 توم لیامت ومنل 
یه ریسا ڪه 


لیذ اا کے پارسے مل تار پاش کال درد تدر ہے یاج ریے وس کان ریش ے جیمال بہت بڑے سس عیام 
ال یس بنا ہو گے لیس اتا قیرو رکھناواجب ے هک اش تی نے لبق تلو کو پیداکیااوران کے دو روو یٹاے ایک رو 
کے ول وک رم سے جت کے لے پ سر باب مر رو وکوع رل وانصاف سے دوزغ کے ےپ الا دی بان 
لول نہیں 

تقدیر کا مفهوم :تر کے انرازہ کان اور ش رما 7 کہا جانا ےک مو کیپ اکٹ کے ہز ارول سال پچ اش 
تال اوہ معلوم تناک فلا ںآ وی فلاں وقت فلا لکام پچ فیس ےکر ےکا یکا مکواوڈرنے اس کے مت سر نواس 
ستل تیر کے بارے می امت تین گرده م موی ایک بجر کا دہ کت ہی ںکہ بن ہ کول قدرت کل بل وہ یعاد 
شف کی رح ہے۔ کان بی نیب رایت عق لکاخلاف ہ ےک وک رن ولپ لش ںکو یر غل ن ہو کت اخقیار 
اور کت ر عش می کول فرت نکاما اک فرق اکل بد ییاور ظاہر ہے۔ نج مار افعا لکھاناہ پا نا راو لے 
اھ کے رن ےکی بتر یں یذ معلوم واک بد پلک جح نہیں پل نہ یھ تیا سب 

مسئلہ تقدیر میں مختلف مذاہب :اب ای افقیار یش اختلاف برد مت کو قر ہے بھی کے یں گی 
دا ےک اللہ تال صرف فال اعیان ہے فاحل یل خا لق انول خود بنا دہے وواپنے اتی دک ےکا رتاپ 


Cy Few‏ ل مدال لے 
دور ن نکر افعال بن ترو شر ہوتا ہے۔ گرا تا یکو خان افعال قرار دیاجاۓ توشر ذش کی سبت ال ک 
رف .ماش کی اود جائز کل دو کد ات کہ اگ راید غا افعال ہولو نرہ مجبور ہو جا ےگا پچ را لا ومکلف بٹانا 
لیف الا بیطاق لاز مآ ےکی یکناو را لکامواخ وک اظاف تافو سای صو رت می ار سال ر کل وان لکتب بر 
ہو الہ ایند ه رخا افعا لیکہاجا ےکک ہے مشکلات در بل نہ ہوں۔ ۱ 
ال ست وایماعت کے ہی ںکہ ست ین ین هک هن ور گل سے اور نت هکل چپ هخا اور نی 
ےکہ تتام فا کے خان تال ان اور بنرا سے لکاکاسب ہے لک نان ول لس بکااغتار ہے وہ 
اچ ادال ش آیت ققرآی یکرت ہی لک :قال اللمتعال الله اق کي 5 کی اود سء عام ے خواداعیان ہول با 
7 8× :قال امتعال وال کم وما عو کہ ال تی نے ت مکواورتمہارے افوا لکوپی ایا نیز کر 
بن ہکوغ الق افوا لکہاجاے نو بندو ںکی عفلوق ز یاو مو چا ۓگ ایند کی لون ےک وک اعیان کم ہیں افعال سے۔انہوں نے چھ 
لد کی اس کاجواب ہہ ےکہ لق رش یں کب غر شر ہے اما تدا یکی طرف ش کی نبت تذل مور 
وو رکد لی لکاجواب ہی ےک بن کسب سک نبا سے مکلف ے او رسب یس ا لک یره ال مارا تک ط رح ور 
یں اود اکی اعتپار نے اسر کل وان لکتب بیکار یں اورا یکسب پر مواغذہ ہے۔ ظا ص کلام ہے وال رها افعال 
میس نہ متا رک اورنہ ور یل و تست اور نوج غار یں ےاورائں ایا ے وہ بھی اللہ تا ی 
کے افظیار کے حت :وم اون ال آن اء له جاک ححضرت تن فز بل پارے یں سوا کر ۱ 
والے ایک تفع لکوفرماپاکہ ایک پا اراک دو عیشت مان تفاي مین مرکا لس بکرم خر 
ے اور هل ہام ابو ضیف لس ایک قد ہے سے فرمااکہ صاد ضا دکواپن اپنے مرن سے واوا نے پڑھا۔ 
پھر را )کہ تمہارے تیر ے کے مطا بن فدواپنے افوا لکاخالقی ہے ت اب صا دکوضار کے ری ے ار اکرو تووو شی نہ 
خوش ہ وکیا قواس سے صاف معلومہواکہ بندہ کے افعا لکا مال بھی ایشدے بندہ کل واه تر ہو یاشر۔ اب بحت بو یک 
تاوت ر ایک جر ے یاه فرق ے و اکٹ علا مکی راے ےک دونوں ایک بی ہیں اور ی کہ اک یھ رق با 
اما جوازل مس ہیں دو قضاے اور اکم تقصلے وال کے مرا اه تر ے اور حر بت او وی کیل ادڈائ کال نے ا سکا 
۳ 27 کیال TEA‏ ایک اجھالی شش ز جن می سا سے ہہ زل قر ے اور ای قش کے مطا ری ج 
مکان تار ہ وکر موجور ار ہوا بزل قضاے۔ 
خلق اور کسب کا فرق: کب وا کہ لقن یادا شلد وط آلہے۔ ادر ره بت 
وتا سے دوس رافرقی این تھے کلف بیان را جو لک تر تکیاتھ قائم ہو و کسب مل ایمان الجر 
وروند ہ کے ساتھ قا ہے جوققررت حاد کا کل ہے اور اگ حل کل ق ر تکیت امد ہو تو وو خی سب تی رارت ہے 
ے کہ ج CEOS‏ مامت ن ے اور ج ترت ماد ے صاد ر موو ہب ے۔ ۱ 
ایک اشکال اور اس کا جواب :یہ بات کم ےکم معا وکر شب ان تاو تست ںاور رشا اقا گی 
واجب ساب 2 ہے ناک ر ضا با می سی وار واجب_ج- اور ضایر رف ہے اب وونوں سول میں توا ر ل م وکیا 


چا رس عون سر >> جیا بلداوں 2 
ا لکاجو اب ہہ ہ ےکہ یہاں دوز ہیں ء ایک فا بھی ممت ر ے لین لق وا ار ووم ا بھی مفعول تج سکیم 
کیاگیاج ند ہک فح ہے تور ضاال تفای واجب ے جر من صر ری سنا کی صفت اور ضایر رکف رد وه قضا هر لاب 
ج تی معول م وکر بن ہک صفت ہو۔ فلا شال فی - 


کائنات کی تقدیر سے پہلے تقدیر لکھی گنی 
زیت لت : کن عبر اون ځرو قال : کال سول لول ا لملم گب اللہ مقاریر ا ا اخ 

قشریج: یہا کب مراد ے اللہ تھی نے تکوم د کہ لوں فو می سآنے وانے تام امو رک هر تهج 
لک ندرا مرا الاب مر ار 00 

وق زی الماء: ‏ ا سکامطلب ہے ےکآ ان وز نک پی رال سے یی عرش‌پاله اور پان ہو ایر اور ہوا 
ا تال یکی قر ر ت یر اور تا تی یناد کک اکا کے ہی ںکہ اس سے مراد يس هکم عرش اور پل کے در میا نکوگی ال 
نیس تھا پا سے ناراد لس اور ان الق لاف رات ہی ںکمہ اس پا ے در یا پالی مرا نیش نہ اس 
ہے مر کے تک پل سب هراد تن کر ںان لن کا مایم زگ سک از سے 
و جک ای رر تور کن مقائل بلادت ےلو رد ومو شیا کیا سےکام دس کم نکم ےکاور #ل 
مراد ل وذانت سے کام زا و داکو معلوم تاک فلاں آری ایا بکامیال افقیار نکر ےکا ای تام مگ اور فلاں 
ا مہا بکامیال ایا رک کےکامیاب ہوگا۔ ہے دولوں شاه موم انال کی طرف۔ 


تقدیر میں حضرت آدم وموسی کی گنتگو 

لت لین : نای هیر قال :قال مول ای صل اله عیوومگیر حت اوھ وم می ند یوما .کب رد شوت ؟ ۸ 
تریح یبال تن اشکالات »وت ہیں۔(ا پہلا اشکال ىہ کہ حر آرم وت ات کون 
ہزاروں سا لکافاصلہ ہے توا ہوں کے در میا اتا امس رب مواد (۳)دو رال ہے ے (Se‏ عدیت س کہ اکاک 
یبآ یک پات زر سالپ اود اس دیف شس س ےک حضرت آدم وق کی یال ے لیس سال ق لکھھی 
۱ گئی۔(٣)‏ تس رااشکال ج ہت ام وی کہ عفر ت آ د اذل میت کے عزر یش قز ر ی نخس ے 
حضرت مو کی ایو موش ہو کے اور یکر کم نے بھی فیصلہ فرب کہ حر بت مکی نيرمت کے اعتبار 
سے فال بآ کے ٹجس سے صاف معلوم ہواکہ محصیت کے مزر ثل تق ین یکر نا جات ہے۔ للا گرا گناو یہ زر یش 
کر سا ےک می ری نی میں ی ایکا ول امز ااب ا کو بلاس تک نمیا ما ویتکا رکب ٠‏ 
ارسال دانزا لب سب بیکار ہو جاۓ ےک 

پیل افا لکاجواب بے ہک جب اشر تیال ادر ملق ے وہ و کے 7 حزن مو سم 6 رم ا 
کو زنر کر دیا با مرت مو کی اغلا ے اققال کے بعد جب وولوں اکرو ناماد ول مج موی تور وھا فی مناظروہو یا 
حر 70 کے من جات ںان ا 7 اک ہآ دم نی رو کے پا ال جار 0201 سے نظ ر وجرت 


درس :اوسر وہ ےس چا جراں لت 
کی کر ی و کے تھے اس و قت مارو موا 
دوسرے اف لکاجواب ہی کہ اما تق یکی ی ے ال جزار سال پیل مرا کی ق لکیکئی حطر آم وین کی 
یال الس سال پل بچھ م ای کک تفہ یر نف کی جا ہے اس کی رو و کے ے لس دن بط ۔ 
تساک لکاجو اب بے ہک چنروجودی وج ے حط رت مو کی لان کا اعت را شآرم‌ویتزوی ر میس نم قول تقو اس 
ےا نکوخاموش کر نے کے ے نفقی مج کی مزر محصیت پر نش سکیا ہی دجہ ےیک جہاںانہوں نے اعتزر ضکیا 
دا رتلیف نہ کی د دو سرک وجہ یہ ےک کک یگناوپہ مت ال ےکی جا ہس ےک ا لک اصلاح ہو کے اور وودار لیف 
راھ غا ہے اماب ازع تکر یکا بوک دا ش مر کر نے کے او رگ مت ع جب ند ا مرک وچ یک 
E‏ مور نز بعر ا کی امم تک نا میک کد ہے۔ بنا ری ضرت آرم و نے رت موک او 
او شکرنے کے سے الزابی طورپر نف یر جرک عم محصبیت پر ٹیل کی ل .ییوج س هکم جب ودرا لیف میس جے 
ب سول اپ گنه رورپ اور ہک ے رہے۔اس وقت نز یر بل شی کی لم زادار نیف یں روک ریگ کاپان 
محصیت کے مزر پر تق یر ٹن یکر نا خیش ہوم کی وک وہ محاملہ ے عام غی بکااور ہے معا مل سے عام د اکا اور ایک عام کے 
موا ہکودوسرے ام کے معاملہ پر تیا لک نادرست دلب 
دوس رک بات یہ کہ یہاں جنر تآدم .ای محصیت ی تقر ٹل لک با مراب پر دی ےکیلئے زی ی 
لک حضرت موی لسن عر کیک آپکی خاک رنب ہآ گی ذریت دیاس اک رت مصاشب کیل رسب ہیں و طررت 
آدم لوان حضرت مو کی وی کو لی دب دقن لک یکہ ہیاک یکرو گے تق ہر یس بھی قد قاس مسر تی عل 
الما بکاے؛ ا تذرار نالعاب ات .کا رجب م میس ملام تک جا ےکی وہ Hr‏ کرس گے۔ جیا 
ک کلام پاک یں ے: الوا یی لن عقت کلم الاب ع اذ یق ۔لمذااب عدریت سکوی شال نہیں 


۱ تقدیر غالب آتی ہے 
دی لت : عن ان تشفورمهي اله عنۂ .کال : کنا سول اللوصل اه لملم وفو اش این لش زرا 
ای صارق نی جمیع نله رات اله ومصدو قف جمیعاتأومنالوی‌الکريم 

قشریح: القس ار انض دوی: ے جم ححضرت این مسج دیپان بق عقیرت کے انار کے لے رماي تچ راس دات سے 
معلوم ہوا ےکلہ فر شے تر ارب« ۲ بع رآ کے ہیں اور سم شیف ل حضرت عذ ینہ کی روایت کم بالیس 
دن کے بح فرش ےآ جات ہیں اور نطف ہکوعلقہ ضز بتار بتاے :فتعا رض دا لکاجواب ہرے کک یہا ںالک الک فر څے ہیں ایک 
هن کی ات کے لے کیا جاتاہے ءا کا بیان کم ی فک رولیت شش ے اور دوس اف رش تفر رین سے 2 کی 
اتب جو رسدور کے بع رآتاے لل کول اال یں دو راغا لے ے کہ رولیت هزات معلوم ہوا کہ 2 ۱ 
سے پیل تفز کی ہا ے۔ اور تک روایت سے معلوم ہوتا ےک ری بعد تقد کی جال ہے ا سکاجوابے 
ےک تا یکی رولیت میس ترتیب اضر ے ترتیب وا تع نہیں یاو تین کی رولی تکور ان قرارد یاجا ےگا تس اشکال ہے ےک 


چا (yo FG ew‏ چا مرا لے 
اس شی چار کات کک کا زک ہے۔ دور کر ولیت ٹل پاچ ما تکاس جو اب بی کم یہاں اختار دای ایک عر رکو 
لگ رککرنےے دوسرے عددکی ش یں ہولی۔فلا اشکال فی 
کسی پر یقینی حکم نہیں لگنا چاہئے 
دنت این : عن اقات : وعي مشول اللو صل اللہ ايمل إلى جتاروضرن. .رم با ها خ 

تشریح: 7 آو س چتداخالات یں یا مر تام کے لئے اور وفع عاطفہ ے, توف علیہ موف ای 
وحن او الم رغیر ڈلک۔ ناسا نت اور یا نک چن تج بو رگید سالگ 
ھی ان خی ار نی اش 7 رآ نکر یش چترلتالواز سل ان لآ یزنژن - 
ای‌بل‌یزیدون- 

رعدریث پاس اشکال »وتا گر مو ن کے ابول کے بے شل مارا کہ ووک ہیں اس کے باوجو و ریت 
ماش تیپ نکی کیوں فر ای ؟ عم کي جاب دیک ہو نے کے کم ناز ل ہونے 
سے پل ہکاواقعہ ہے واس رفاک دامن کے جائع م وک تقو اور وال ی کات پل نامع ی . 
سب ے وا ات رز یہال اطفال مو مین کے "ہی ہونے پرالیار کل فرما یہہ حر ت عافترا مک ۱ 
ارب سکھانا صر تاک تاک کے ا م کے بارے میس امت نشی نیکینا تج ھہکہنا مناسب ہیں چ ر صاحب و کی کے سا جب دہ 


وريا موب 


ہنی آدم کے قلوب اللہ کے تبضہ میں ہیں 
ی ین : کن کی لول عغر وال : اممو نانو صل اه علیو وس اجرب ادكلا 
تشریح: یہال‌اش یح شاد تن یس اصائ عکااطلا قکیاگیا سی رح ق رآ نکر کم وص رٹ میں الد تال کے بر ت لد موچ 
کااطلا کیا اکا مالا یه سب اجام کے لوازمات مک سے ہیں اور الد تال اس سے ال مز ہد پگ یں نواس کے پارے 
می امت کے تن فا ہوگئے۔ ایک کروم تم ومشیہ ے ج وک ہی کر اش تال کے لے بھی ناتک طررآیدوقدم 
ونر ہیں لان ال السنت وایماعت ت کت ہیں )کہ الہ ای سے پاک ڈیل اب ان یس و وکرو و یں (۱) << نز مین رات کے 
ہی کال کے اھ رڑیں کر متا تک ط رح نی بل دا شان کے مطا لی ہیں ادرا کی کیفیت ہیں معلوم ول 
بی ور سل فک ر اسے سے اور ارت امام الو یل کا نم ہب بھی یی ہے ا کو مفو ض کے ہیں اور( )وو سرا 
کرو ملس جو متاخ نکاس وہ کے ہی ںکہ ان الفا کی ابی تاک جائۓ جو ام تال یی شان کے موافن ہو اور نصوص 
قط ہکا خلا ف کید ہو۔ شای ر ے قررت مراد ی چا ے اوروجہ سے ذات مراد موا نک ول کل ضر ورت اس لے یی ںہ کی 
کہ عوام کے ایما کی تفاظت ہدورنہ ہے لوگ ات الفاظا کے مع نہ نهک نہ زا کر ینس ال این ے 
الد تھا یکی طاقت وتو کی طر ف اشاردد ےک تام تیآ وم کے تلوب ال قبعزہ قررت بیس ہیں جی اک یم ی کے ہیں 
کہ فلا ںآ وی میرے تخل ہے۔ا سکامطلب تی لک و ہار ےہ تھ میس سدیاہواہے بکلہ مراد موتا ےک 


E‏ رب ےجو کاو 
دوہمارے ات ہے۔ یی ج کب ںگاددا هیا ضبن ست تع یکی دو یں م راو ہیں صفت جلالی وصفت جھالی۔ جما 
سے ام وگ و صنات ہوتاے اور جلالی سے ٹس وو رکا لاء ہوتاہے۔ ہے ان تمابہات میں سے ہیں مجن کے لغوی مق 
۱ سو سر ری یھ ون تچ ہے 


.سرت نا 
بر بچه فطرت اسلام پر بوتا ہے 


ی لین : عن ای ردقال : قال ول الو صلی اه علیه ول انمو لور | للع الفظرقا 2 
تشریح: یہاں فط رت کیام راد ہے اس یس علا کرام راہ یں اک علا مکی را ہے س کہ اک سے اعلام مراد 
چام عمبدالہرفرماتے ہیں دہو اعروت عند عامة السلف۔او ریت ق رآ وخرت الال ی بھی کی مرارے 
اور امام ابر ال کے بھی بی مر وکے۔اور سس امارٹ ۓے بھی کار ہے جیا الہ عا شی مین عار ا 
ہے اي خلقت عبادی حنفاءمسلمین۔ فو ال وقت عری ثکامطلب ہے مواکہ ہرانما نک پیا اسلا یر توق سب گر کافر 

کرٹ ہو گر ماحول ا سکو پگ کر غیر کم ادا ماخول کے میں نہپ تا و یش مان کی رتا علا شی 
1 الکن با ہیں فطرت ے مراواسلام و لکرن ےکی استعدار کر چو می ہو پیا ی ویر انس کے ار اسلا 
ټول رس ےکی صلاحیت واستعداد موجود و ے گرچرکافر یکیوں نہ ہو کر ماحول تخحصوظا وال رہن ال استعدا رکو ظاہر 
ہونے کل د تال لے ودیبوری» هرا اور بو کی ہو جات ہیں اکر ہے ماحول سے پاککں الیک موا تو ہے اتح دا رکو ظاہ رہ وکر 
ماران ہو ماتا اور ہے تول زیادہ ماس ے کہ چیہ قول کے اعتپا ر سے ن اخکالات جر یآاتے یلا اشکال ہے 
نے کل فطرت سے اسلا مراد لے سے ق رآ کر کم اور عدریث س توار ل وا ہو جانا اس کر ترآن سے معلوم ہو 
کہ فطرت(اسلام )ک وکو برل یل سنا اور حدریث سے معلوم ہوتا ےک حول وال درن الکو برل دق ہیی 
جواب :اتح رار مر اد تخار کلب کم والد ن ہوک اور تھا لی بنالے کے پاوجوداستحدا رکوپرل ہیں کے مزا 
لات لاب چپ خی ےدوس رما شک ے ہک کم ش رای کی صرت سے معلوم »وتا ےک حضرت شوه 
نس یہ روف کیا تی رک راتوا ہی سے وار م وگیا۔ جواب :ات ارات ہے یں وک کی وک کاف رہونے کے پاوجود 
استعرادموچورے تیر ااشکال ہے ے کہ اسلا م قول کم ناما مور ہہ ہے اور اهر امیا ری ہل :وناے ابا اگ راسلام ی پر سب 71 
یال ہو مہ اھر ناریگ ای مریم ی ہو کا اور ل وگو ںکومکلف الا ملام رال یاج اور بد یی 
البطلان سے جواب : فطرت ے استحراو مراد نهک کال یٹ سآن لذ ایی او ور ا وک ۔ رت انور شا کی ری 
لسن فرہا یاک فط رت مقدمات اسلام یش سے سے مین اعلام لک بر ایک انا نکاماد ہکف روش رک سے فا ہوتا 
ہے اگ رکو تصارم ہو تو مش با ری اود اگ کاس کک رلک جا ووت جا گی مہ قول دوسرے قول کے تریب 
قر یب سے ضرت شاد و لی اٹک التاق صاحب نے فرما ینہ یلم وتا تی ہر نو عکیلے اص ناش یمو علم داو راک دیا 
اش هک یر نا يا اسب در خت ےکوی م لک کے نا تم گر رده اش ری 


تیووس سے لیس سو رر و 
کی کو اص علم دیاگیاکہ وکس ط ر آشیاقہ نا او کن ری ہکودان ہکا ےکس ط رم اڑا موقس علی ھا ۔ ای 
ر ںو انا کو بھی یک فا کم داد راک ریا ٹس سے له فا اور ا کی اطاعت تح کے ے 
نار توا ل ہیں ان کے علاوواور بہت سے اقوال ہی ںگ رکذ غر مت رہیں۔ 

۳ واؤ ازیو ز الک سے اشمار ہک یاککہ ماحول اس استعدا رکو ظاہر ہونے نکی وااو رق نت 9 
لئ خصو ی طو پر انیس زک کیاکیا۔ گمائنتج: ‏ ١ں‏ ے ایک وی شل ریم بھاناجاتے ہیں پک ای کال سم 
اما وال پیا وتا سب اس می لیکو تس ےا دوکر بعد بی لوگ بت کے نام یہ وه کے 
ےا سکاکا کاٹ و ہے ہیں توپید ال ور یہ پل الم تب ل وگوں نے عیب دا نی سیر انان پان طور 
هسام ستعرارموتا رما حول یک ژد الے۔ 


مشرخین کو اولاد کہاں ؟ 
زیت الزن :نای هر رتال 9+ یتال انعا 1 

تشریح: ا کے دومطلبہیں) ایک کہ اللہ اعلم ماکان و اصائرین الی اجلنته والی الما دو سرا مطلب کر اللہ تھا ی بانج 
وت موک کا ےی ات ان ےس را مل ہکیاجاتےگا۔اب ایی اش ر یج کے باس میں لف اقوال 
ON.‏ فطر کی بناپہ بشت می چلیں گے (۴ باوالدین کے ایح م وکر دوذرن میس جئئیں گے۔(۳٣اعراف‏ می 
ہو گے۔(م)جت می چائیں کے کر اتات یں بل کی مو ن کے ناوم ب کر ۔(۵ )نہ م ہوں کے نہ معزب۔ 
(۹ ان کے با میں تو قف ے اک علم اش تھا یکاحوالرے کیو یکلہ ان f‏ 7 ی ی فیلکت" کلب 
سیت بھی چیاراے ہے ادر رٹ جا بھی ا سکی طرف شیر 


انسان کی پیدائش کا قصه 
یت توت : عَنمسْلم نیسای کال میل مز نی الاب عَن مَزوالاية وود ال رَبك من تی ام اغ 

قشویج: ال حریث مل چند ماح ٹ یل : 
بحت اول :ی کٹ ی س کہ تاب رات رآ نکریم و ری می ترش معلوم مور ہا کوک قآ نکر مک یآبیت سے معلوم 
ہوتا کہ بآ مکی بی سے ذد یات کاس کے ادر حدیث سے معلوم ہور پا ےک حر تآدم تال پشت سے کا ل کر 
جر گیا اوا کا گل ہے ےکہ اص میس اخرا کی کیفیت ہے یکہ یل خر ت آرم هی پشت سے چندذریات ملا 
»پاک کال کیا راز سے ترتیب ایی سک نتب سے مت تفآ وا اولاد با یگئی توق رآ نکر مم میس ترتیب 
مار گی کے انار سے ہیا نکیا یا اور ریت می ا کل کے اعتبار سے میا کیاکی کی وک پالو اسطہ ا لس بکاحضر آرم ولا 
ہیں دو سراجواب دیاگیاکہ یل حر تدم لکشت چندذر یات هه بی رانچ یک پشت پر ایک دوع رت 
تیاس تک کآنے وا یات مان گے محر یآ دم وڈ کی پش ے ایک ساتحھ س بکو وکا دی ریت میں اغ رع 
اذ یکو بیا نکیا۔اور عدریث مل اخ انال ییا نگیاگیا۔فلاتع ار ض۔ 


چیا درسمدکون سره »3 جلراور لے 
بحت دوم :دہ ریا :کٹ ہے ے هک خر ےک اک و ق سر بال کک یاو ل 
کت و لک بی یس مورا ےکر کے کال کیا ہب سے کی قول ےک یک سالات سے ال یل 

بت سوم :تہ رک کٹ یس کہ اخرا خکہہاں ہواتھا شنت نت سے نکاس جانے کے بعد متقام ند بیس ہو اتر 
و 700 وا کی مان“ ' یس واا عم فیہ کے تقر یب سے جییہاک رت این عبا له کی رولیت میں ے۔ 
بحث چہارم: :چ کی بحٹ یہ جک دالس کول مواقم تی شل ے فو نف کت یک ہکوئی وا تی قصہ نیل 
اجان کے لئ بطو ر شل بیا کیک انل تال نے زد یا تکوپ اکر کے اکے اتر ر صلا جرت واست ارال ر یں ے 
وغد اک بو تکااقرا رک لا یکو ع رآلشث سے تی رک یکیاد حقیق کول قصہ کل تھا دی ق تی یداو کی رات ےکر 
مور سلف وغل ف کے ہی نکر یقت میس ہے ایک تصہ ھاجیانہ رت ان با پاپ کی ر ایت سے معلوم ہوا ےک 
واو ی مان بل اتھااور راوراست الد تی ن کلم کید الہ تعاس یر نہیں ےت زان کب ول روات ٹل 

س ےک ایل تھا نے ا نک وگو یا د ی اور سا کلا مکیا۔ ا ق ننک پاووداسکو تشر و لک ناقرین قیال دلج 
بحت پفجم : بانچ مس که انہوں نے ز بان حال سے اتر رکیااور تفن راک ان قال سے جو اب دیور حش 
گیاراۓ بر کم تال وال سے اتر کیا ۱ 

بح ششم: کن کٹ یہ جک جب سب نے اترا رکیاقود نایس اکر ت ےکیوں ایا رید وا یکا جاب ہے س کہ 
کافروں پر عب و ایت طار کیال ے انہوں نے خو فک وجہ ےگ کہہ و یاو مسلرانوں پر رح تک ای ای 
انہوں مو یی یکہا۔ 

اشکال: راشکال ہدک جب ایک واقعہ ہوا پچ کل ی دیول کل ؟ اک جو اي ےک رور اتکی بنا یال وگیا 
ی دج که اه تال و نار سل کے او رن قرات سے منقول ےک "لیر الست یاد سے چاه 
حضرت یی اف مات ہی ںکہ ہر الس تک یآواز ا بتک مر کال مھ کو ری ے او رکون میرک وال طرف او رکون 
ایس طرف تسب هیده اور کل بن دار ری فرماتے ہی ںک کے عہد الس تکی شا کروی یاد ے ذوالنوں مصری 
فرماتے ہی یک کیک وہک لکاواقعہ ے لزا گمہچیں یال سے اسکاعدم وجودطایت کل موتا و الأمتع ای اعلم بالصواب۔ 


تقدیر کے دو مکتوب 
نيت لیت : عن می اون خشروقال : حرج مول انو صل ال لیو مل ون ری تابا اغ 
تشریح: دیف پاش کت ہوک ىہ تقد کنیس ب بطو ر شل ف ایا و ال تول کے ی لک 0 و 
گول ے E‏ نی ب مکل مت رکو ہیا نے کے کے اس شس مکی مثال دی جا سے تور وال مت ور 
ن تو اس می ںکی مق وش د گی کال حوس ہے قواس ام ممتو لک و سک ات ھ یی در ای 
کو اتاد صراب اه کے لے راو مق تیلم مچھازا ےک کو بات کاغز و لم ہے۔ 
اک طر حآپ نے مایا می کو زاب نہیں کی ر لیان تن ے نزدیک رم حقیقت میس مام غی بک دوکر 


چا 1y‏ ھا بدال 3 
ٹیس اوراس می کوک استعاد نی سے کی وک یکر کم کان کے انان ےکی قوت دک اور یا ہکرام وا کو 
دینکیسدمازلک علی اللہ بعزیز۔ امز اع کو قاری و ل کر نی اول ہے بلاضر ورمتہتا وی کر ناخلاف اصل ے۔ 


تقدیر میں بحث نہ کریں 

لذبت لت : خن أيهرَيرةقال : عرجعلیتام شو ایل اله تلیو وس .نب کی 3 
تشریح: نف یر کے مستا میں بک کر کے یی یکر کم پر کے نارای مو وج یر کہ تز یکا متلہ راز خد اوت یاس 
اور رازلگ ی طلب و ا هدک اس میں قد م کته تایآ ی انار اعت الپ تا مر ہنا ہت لب کرک درب 
ارہ ےکی طرف مان مو کا قوی خطردے اور بن ہک و م ےکس اور لکرے اور وی سے پر ہی زک سے بلا رورت 
تی ہکی بث نہ پچھیٹرے بت جائل وا مین عوام کے سان یروت ہیں اں فان کے دع اراس کے لئے 
رت دی نکی الما یں ہے۔ ۱ 

قدریه. جبریه کون ہیں 

یت لین : عن ان عباس غي اللہ عتهعاگال :کال مول او صل اه علیوومر : : صقان ینمی | 
مرچه: ال نر تک و کے ہیں ج اعا لکوایمان کے بے ژالم ےے ہیں وک انا لکی پل رورت بی کل اور ا نکايم نز ہب 
بھی سے 27 مکاخیار وم مو کی ےویم ۳ ادا ے ۱ 
قدریه: وو ر تہ س کہ جو نف ی رکاا لگا کرت ہیں اود چوک لوگ نل یر کے بارے ٹیل بہت .کمک تے ہیں اس لے ال نکو 
تی کے ہیں اور ظاہر حدیث سے معلوم ہوا ہک یہ لوگ الام سے ار رت جنات لین حرا تک ہی رائے سے 
کن عم ور لفات ہا ہیںک۔ ا نکی گنیر گت 27 او من ین با 
ووا یی ناو کر ے ہیں البدا کو فا پاب رک٣‏ ہے کے یں ۔ بال زل مر ثکاجو اب ہے کہ ال سے و ید ود ید مراد 
۸۰۳۴" کل کی ے۔ 


تقدیر کے منکرین کی سرا 

تالت کن ان حر قال: یغ شول انو صل اه یو وس لول کر دن أي نف وشا 
۱ ےت ا ا ای ور کی لا 000 ا ی کل و صوررت 
ٹیس تپ رہ لکردینا۔ معا بک بین نظ یر کے ام من تیش لعل کے طور پر ے ای کی یہ لوگ تتام افعا لکو غیر 
ایند کی طرف مضو بک ے ہیں توکو کر او نےافعا لکوجو اش تما یکی تلو ہیں ماد اور ا ی صورت کورگاڑد لد 
تیل کیان و من کے یی د باک مناد ہیں اوران ال صحورت ژد بت ہیں۔ : 
سوال اپ سط زاش شل تچ مر سید نیک فرح رش ما 
نازان ف ث می ےک قرب رگ۔فتعارضا۔ 
جواب: :وی تخار شیک وک میٹ ال هس تدم لک تپ و 


چا :»3 جداں ھا 
فرش کے ہ ےک اک می ری امت میں ضف وس موتا وک ٹین تی سم ہوتاجب ان هل ہے که لگ تس را 
جواب یہ ےک یکی هر گول ہے موی طوري ضف و سن نہ ہونے پراوراشبات وال حدیث عمول ہے نا ایک فرتی 
یس ضف و یر ودک ٹن تی ہیں۔ چو تاجواب یہس ہک یکی حدریف گول چ صورت ضف وم یہ اور ایا تکی 
حریث گول ے موی ضف و ما یہ لف ان کے چچرے اور تلوب میں خف و روگ اور ت نے ےکہاکنہ اس سے 
مراد ےک قیامت بی ضف و ہوگا 
اس امت کی مجوس قدریه ہیں ۱ 
دی الات : وعند. کال: قال مشو ل الو صل ان لیو ومام له وس هنماخ 
شریح: چگ وکا ہب یہہ کہ فا دوہیں۔ ایک خالقی نرچ سکویزدا نکچ ہیں اور ووس راتان شرب جکر 
اع رم نکچ ہیں اور تر ہے جب تام افعا لکاخا لن بند هب ہیں و وی تحرو خالقی کے تاک ہیں توا س تحرو خالق میس پوس 
کے سا یلاب ییا نگ کیا ید یک اگ عادت اور جاتو سے گیا ریک اد اک میں 
کے اتبا رآ ےکی کر بط حصت رات ت رر ےک وکا کے ہیں ءاگیر اتے کے انا سے مہ مع تیت پرعمول ے۔ 


ابل باطل سے میل جول نہ رکھو 
لت ایت : عن غعرتال : کال مول او صل اللہ لیو سل اسر هل القن فان مزال 
تشریح. :اس چند مطالب ہو کے ہیں (۱)۱ کے پاش ان تفیل دا (۳) و سلام کرو( )کے 
سلا مکاجواب نہ دو( )ان سے پا تم درو ان چا دول مطال بکاخلاصہ ىہ ہ کہ ان کے پال مت تشو اورا نکی نم 
دک در د(۵ )ان کے تیه مناظ رو کر وک وک رکشل ہے ا نون مھا سو کے بک اپنے قد دی شب وات 


ہو کااند یش 


۱ فوت شدہ جھوٹے بچوں کاهکم 

زین ا غیت : نْعَايْمَة. رضي الله نها الت :فلت : يام سول ال ! اي ینب ؟قال من بائوم ال 
تشریح: یہاں حدریث کے بے جر ءاورخالی جزم میں تیار ض معلوم ہو رپا ےکی وک پپیلہ جء یں ہے بیان فرمایاکہ مو سن و 
مش کین کے نابا چے اپ ےآ با کے تا + ول گے اور دوسرے رل ہہ بیا کیاکی اک اکا معا بل ای جا کون 
فیصلہ خی ں کی کیا اک جاب یہ ےکن پیل نز یں اکم دنا کے اتا س ےکپاکیاملامی رات صلوۃنازوغی ہلان تضور 
نے عام طور یر را ای لئ حضرت تاش تاذ سوا ل کیک بلا نل تو آپ طا نے ام ارو یوش کے 
وا کدی ۱ ۱ ۱ 


زنده درگور کرنے والسی سرا 
نیت الت : کن ائکشفرر. رضي اللۂُعَثەقال: قال تسول او صل اه عیووس رن وال عون ال اخ 


چا رھ ور ی چا مدای 8 
.هلر ندمو رگ هر وال عورت وددوزرغ می جاگ اپ کف کی بنا اور ند ود رکو رک وگو 
دور مین چا گی وا :کے جالع کراس مطلب کے اقتا سے ہے رمث »وا ان را کی جواطفال مش کین 
کے ووز تی ہونے کے تال بین اور جو حعفرات ا کے مر وه وار سے مراد دارم عورت لئے ہیں اور موو ہے مور ولبات 
الک دال رہ رار 2 ہیں اور ام جا لیت مل ہے عادات 1 اہ جب گور تک ور وزو شور وناو وهای کنوال کے دوثوں 
کار ولپ دونوں پاوں رکھ رک رکف یا٤‏ جا ارات تقو رت الرور زر یوو یک کر ےآ ن ورگ کی مون 
وکنواں کے اندر ژد توا کل زنر مو رگو رک نے وای داب ہہ و گی اور مال مووژدهلبا+و گی اس ے ہے دونوں ووز میس پاس 
یدگ ولاو نی ہے اذا کے بت کل 

اب جات لاب القنئر(تھزاب ال شبوتکایان) 

اشکال: ہل سر سرب نظررت ایک اکال ہوا ےک مان الباب مس ج اعادیث ہیں ان جس عزاب تی رکا کی وکر سے اور 
نت تر رکاذ کے ب صرف عذاب قب رکا نوا رک کی وج ہکیاے ؟ 
جواب: ۶اک2 بے کہ موز ینک 7 ت کی ناپ خاش طوري ا سکاعنوان رک زج احوال بر رگا کرت ہیں 
و زیادہ تر اب لکا زا کر ے یں تا نکی تردید کے لے ہے عنوان ا مکی سل بات ی ےک ال باب سے مقصید عام 
ہرز غکوخاب تک نانو چ دک عم بر زر ینش و هشت :اک ےےمرجہ اهر می لت حرا کو نھر ہ وال کے اعتپار 
سے هزاب تر بت چم کید پر تا کم اماریٹ یں جو تب رکا ہک رآناال سے مٹ یکا مروف اهر ار یں سے بل 
اس سے مادام رز مجن مرنے کے بعد سے بعت سے ی تل کی الت مراد واه کی میں رفون »ویاد اش غرتی 
جو یاجل اک موا اڑادیاجاۓ یاجہاں این وین زب رک یکن جک 1ک لوگ لی شع ون تین ا لے 
اکریستکی مایق رک زک رآڑے۔ 
والمم: اب متا تک عام تین ہیں۔(۱)عال د ای اک کک کازانشدے اش 
اجامکا تل را یات بالات ہوتاہے اور دور کے سا تم پواسیلہ دن ہوتاہے۔(٢ھالم‏ بر زرا کی بھی ابر اءاور انم 
ہس ےکہ موت کے بعد سے بح تک ککاز مانہ سے ال می احا مکا ق بالنزت رو ںیسا تھ ی 
واواسیط رو موتا ے۔(۳) عا مآ غر ت ا لک ابر اء کر انا لک بعث بعد لوت سے شرو ہکم ال ها 7 
زا6 تا ے اک میس اکا مکا ا یسا تھ بالات واصال ہے 
رک ])۹446٘ھپٰھ و ی 
سے عام رز اجوال پ ہکوئی شال تن وگ عالم آخرت تلا کت جو ہکم درو کیا تھے م وکا کی لبون 
وگ دوآدمیوں نے ایک درخت کے کچل چو ر یکر کارا هی کر ان ٹیس سے ایک را اوردوسرااندھا سے و 
دونوں نے ہے شور هگ یاک اند ھے کے کند سے پر را سوار ہواوز ووا کودرخت کے یچ نے جا اور وو دک ےکر موز 
نے ہماراکام جن جا چا ایا یکیاد ماک نے آکر دونو ںکو لاو سزار یک وک دونوں سیب ہو ے اک طرح 
آخرت میس شی درو سکاب سزام وگی۔ 


رس مدکون سوه ہے چے جلداول ]8 
عذاب قبر: ‏ تام سای کرام وتان عظام و ہو رای سنت دام عت عام بر زر کے عزاب دنت کے تال ہیں اور 
آیات ترآ واحادیٹغ مش پور ہے روز رو نکی طرر) لکا بوت »وتاب چا رآ نکر مم آیت آلکاز بعَرَضُوْن علا 
عا وه سی سے بر تی زاب مراد کیو ہآ خر ت کے اب سا کلمت آرہاہے جی قال تال ۱ 
یوم تقوم الکَاع اَذْحِلڑا ال فزعون اسل ال اب_دوسر ی آیبت :الوم رون عاب اون ا کنر 
َشعَیرون-یهال کی بر زی عذاب مرااسب وکوک ال سے ی موت کا زگ جاور موت کے رر رس کے نز 
گرا سے ام کاخذاب رود کاترتب لے ماج یں بو مرت ون راهم 
رال يوھ يف تچ ‌آییت: امن ان من لین قرو بوجت توم 0- ۱ 
ال ال سور کباش اکم اغ وک بیان کے سک اس کے بر مو تک کر سے پھر اس سے لا سآیت کوک رکیاگیا 
اوراس ے احوال رز م ان موتو گار لاز مآ ۓگا نیزا روم گی تیب بعد ہو گیا پا نچوی آیت : یکت الله 
لن اموا اولقاب ی ےآیت عام ب ز کے بارے مس تاز ل و کے مرت الیاب سے ابت مور ہا ے اور عام 
ہرز کے اشبات کے پا سل اعا ری کہا ں کک ج ںکی ہا ے اف الما بل اعارمت "لک ہیں ی س بک ت ر رش رک و 
سکاو مخزل اور من رواضض بر فی احوا لکا کے ہیں اورا کی بناصرف او و قل ے وویو نت 
ہی کر اکر عزاب قب ہو مان ہیں نظ رآ ما اکلہ بہت سے مردو لک ت رکو رگر د یھت ہیں گر یھ نظ ہیں نابج مردہ 
یاک وی هکت چنا لایر نظ رک کون انپ ے دہ بو یره یز ینف مر وو ںکو ل اکر رھ بتاک زو جانا ے نیش 
کو شیر ویر هتسب کہ ال کا مین اتا سے بج را یکو گر ع اب دیا جا توش و غیر وکو "لیف بو اور وودوڑتا 
ھکار ال دکھائی تس دی مزا بد بجی بات کے خلاف عام ہزغ کے احوا لکی تشر کی ےکی جاے۔ بنا ہیں معلوم ۱ 
ماک سوائۓ ال م آ غت کے در مان لول عام ل ے تمد رکی طرف سے ا ںکااجمالی جاب ہے دیاجاتا ےک جب 
رآ کر > وحدیث ہو ر ے ا لکوت ہور پاے نوا کے متقابلہ س یا آرائ یکر اخود لک مک خلاف سے اورت ا یکا : 
کول اتپا ے دوس رکی بات ىہ ےکہ کپ تلا کے ہی نک عام رذن عم ده تیا لک ادرست یں ۔ نیزد یا لآ گوس 
ال ام کے احوال وین کن نیس یریک یکاہ سک عدم وجو کی دمص خودد نیش بت سے فقا ہیں جو ہیں 
نظ رن نآ گر وا میس ووسب کے نزدیک مسلم ہیں۔ 
یربک موت کے وقت فر شتآ ہیں اد تریب اموت دی وکرو ت یں حت یک من 

اور ضوقت وہ شس سلامکاجواب یدیا کر پش ٹین والو کو پا ساس یں وتادور ی نظیری ےک رت 
جر ل وی کر کم مر کے پا کہ وی تاز نکر ہیں اور شش او قات ترآ کرم کی گرا رکرتے کے الاک 
رب ٹین وانے سکاب ہکرام کو بیقر ترس کر دآدئی ایک تپ کیل ایک با اے اور دوس سور 

ہے اود خواب ‏ هپس ےک اسے شیر یا انپ دوڑا اے اور دہ چلاتا ےکر ا کے سا کبک پچ کنر سے ۱ 

کہ جنات کی یھ وار ہیں اور اے دوڑااڑارپاے گر اظ ر ہی ںآ علاودازل 7 “ جنک کی ن ر ی کر 


”ابی کو سے ہر و 
تار ے او رم 7 کرت اک طر عذاب قی کو ا گے 7 22 2۸ ی تین ال ور سو لکی خر 
سل نکیل نو اوران مین شک نک یت اکن گت کل کر راک وھا نے پاش کارا س کا چون ا ے 
ق را بکس طر ہوگا تا کا جاب ہےکہ مر دہ کے اجزاء جہا کین +ول کات ان کے ساتھ ہوگا اود رد 
اص عذاب ہوگااوراگے اس سے ہرم ع عذاب ہوگا۔ باق شی رو خی رہکواکے واسطہ سے راب ہیں م وگ کی دگل شی فو 
انل کا جم ء لت اورد تشه کی تیر موجودرے شیوشت سک در ملا لن کے امار ےک موا و 
دواکے زر ید ا نکوماراچاتاے ی ےکیڑو لکوت »بت تیف موف ے کراس خی کپ چا اس طر شی ر کے 
اندر مر دہ کے اجا هزاب »کرش کوپ کیل الاب ما رزخ ع اب وت کے وت بل کک 5 
وغ بال سیف ٠‏ 


مرنے جوتون کی آبت سنتے ہیں _ 
لن ات : نآ قال. قا لشو ن اول اللہ لملم إن ابد راځ ترو اغ 

قشریج: سال تب ر کے بارے میں علا مہ اہ رال کی التاق کے ہیں کہ سوال معن اور منا فی ے م وگ ,کارت سوال 

تن ہوگا هک لہ سوال وا تیاز سک ہوگاکاف اہ رٹیل لاس نیس اهاز کیا ض رورت ے اور جبال میٹ لکافر 
کاذ ہآنتا سے وہا ںکافر سے من مر ای امن ! مم کی راگ ے۔ لان خر بت شا صاحب تن لقع اور 2 تین ۱ 

فرماتے ہی ںک ہکافر سے بھی سوال »وک ی ےآی ت ق رآ داحادریث ے ثابت وتاب اور سوال صرف انقیاز کے ے نیس با 

پا حضو رم رش انت او رکافرول پ الام بھی وو : 

پر کٹ ہوک اسن مسلران ھی سول ایت رکز رآ امامت مق موم کالہ کال ونات کی 
کول قیر ہیں اور شل د یل سے خابت ہوا ےک حض موی نک بھی عذاب تر ہوگا۔ ہنا برریں دونوں م جر یلاو 

لانے سے نہ خلاصہ تا ےک کال مون جاب د ےک اور ا کیلع ترم فیط ںکی_ مق ره ون جنشت 

ے خوش بو وراح تکاساماان یل ےگا اور مو ںی فان ! کل جواب میں مو نکا لکاش ریک موک گر ول اور ور چات میں 
رک کل گاور عزا بکا کیا خا لے پچ رچندروز کے بحر ضجات لے اش الیل ی ے جات دس کنا ے۔ 

الم ا اشارویش چنداخال ہیں(۱) مر ده ر اور روضے اق ر کے در میان سے تام تابات دو رک کے 

ده وس ہوگا(+) آ کی صورت شال مردہ کے سا سے لک ا( تضور سل مشپور اور موجور فی 
الز کن ےنات شا ہما ےگا 

یو لا ای کش ان . ری ی ی 
کلم هت تما او رکاف رکو جواب نہ دے کے کا با صرف لااد رک کک ےکا کی هکلم موز پان سے ک نکم ن ہکہتناتھا۔ اون 

رات ہی کھت بی یک کار کی اپ ےآ پک عذاب سے ہے کے ے ہے وراج کک ےگ کان موی احعادریث دک ے 

معلوم وتا ککافر صرف لآو کی کااور منافی اس کے سات کو لاشو الا یسک هک 


چا few‏ سر وس چا ہا لے 
مان یلعای لور پر فرایاکہ عدت یساس دجن کے علاووسب ال گر انسانی قوی 
٠اا‏ کے ع قور ل ہیں: باان اگ ظاف عاد ی اساد یاس ہے اور بات سے دو سرو لاه سگرن جنس 
۱ ےب ان کے نہ سط دک اور ایک وجہ ےک این پیب باقی ر ہے اور لوگ ڈ کر ردوں کے٠‏ ری وگنن کے اتظام سے 
پازا سے اور دو سر ےافظام ھی در ہم بر من دسج الہ دور کیا صدیث مم لآاے۔ ۱ 
قبرکا عذاب حق ہے ١‏ 
ریت لین : عن اوه عضي اللہ عٹھا .نبور ريحت ليها .ككرت عَدَاب الکٹرالح 
تشریح: حریث پزا معلوم ہوا کرک یکر وس لو دی با کو پر ق را رکھاکہ عذاب تبر کن ےکر کم 
شرف اور صن اج رل ری سے معلوم پوت کر ضور مم نے انی لک داو رکه کزب يهور وهم ولاعذاب‌دون 
عذاب یوم القیام فتعارض | ریغان- علامہ و و31 ی وا وی جواب دک یبال 0 
ڑیں۔پہلاداتھ ہے ے کیہ وو یال اور عطاب تب راز کر وکیا وپ نے اپن عدم :2 کی بای انا راید پھر حضو رك مکو 
اشک زف سے اطلاںدیر یآ یک عزاب قب رج ے_ کا ححضرت ماک اذا نةا ال وقت مارد ہیں ۔ پر جب ہے 
ود شاف وف اک کہا تو عا تش قز ینتا نے اکا رک جواب وی شب ور مرم نے ماش تانز لکنا ے فرما یاکہ ات 
داب تی کے بادے میس وی نازل م وکیلو تقر یر وائیار واقی کے مت سے فلا تخر نش اف ان رات فرمایا 
کہ حضو ر ملاع اب قیرے اکا ر کل را اللہ صرف مو من پر زاب تب کار فرما یا نچ رجب اطلا کیک 
ال کک چاسے عذاب د ےکاخواہ موحد یکیوں نہ ہو تو حضو ر َو جز مآگیااوراستغفار فرماتے کے _ 
عذاب تبر کا مشاشده 
یت یت : عن رن تانب قال بيا ۰ توا 

تریح :ریغ نم ذزاکے قمع موم ہور پا ےک عذاب یرفن مو وف س ےک دک ہکہاگیاکہ اگرتم عذاب قمر سن 2 
مردو کو درن ہکرتے۔ ال پل خا کہاکیاکہ زاب تبر دفن پر مو وف سب بل میت جہا ہیں اور جس 
` عالت پر مو عفر اب ہوگا لوا لک واب ی ےکلہ حدریث هزاس هرایم س کہ تم راب ت رک سن ےت مکوایاخوف ور 
لا موک تم : ہو ده ہوجا ےک ون هقرت وفرصت نہ پاتے یا راد یے س کہ جوک مار ٹیس یار رت کھج 
لوگون ابقر ہواے۔ اب اگ ع اب تر نے جات ولو پنے ءم دول کو مکانوں سے وو ری جل میں الہ تال 
ارگ ان کے تیوب ی ن مول يا راد ےک زاب قبر فاگ ڈر کے مارے یش ای رل رت دوسرول 
کےکام کہ دن می تک ژد ان وج با تک نایر حضو ر لو یك نے عز اب تیر سنا کی رعا کس فرمائی۔ 


قبر میں (۹۹)اژدھے 
لنت ارت : نآ یسوی قال : قال مول الو صل نله علیو وس لياط عل افر ن رواخ 
تشریج: ع رٹ زاس تقو سانیو ںکاذکر ہے اور ری رل فک رقایت میں ست رکا کر سے اس سے فا کول عرو 


سره مرهج جلداول ا 
مقصودنڑیں بل ا ے مالغ و یت مر ال ا عددکافائزہ مرف شای کو معلوم ے۔ حش خر تس مب 

ہے کہ حدریث مل نات هک اش تال کے تسه نام ہیں وج بتکافر شتا ابا کل لا یلو ریش تیا کے تام سا ۱ 
نجل لا یا ہر ایک کے سابل بل ایک ایک اد پامسل رياس هگا نز ہے عکست کی بیان یگ کہ رٹ 
رف میں س کہ لس الیک سور مت پیداکی۔ ان مل ے ای کرد تیاس ناز ل کیا کے اش ے ایک دو سرے سے محبت 
کر سے ہیں اور تلو رحم تآخرت کے لے ع رکھا تج بکافرنے الد تال کے اوامروڈوای کے مطا کمن سکیا ومر 
ایک ر مت کے مقاللہ شی ایک ایک ساپ مسل اکر دیاجاۓگااور ست کی ایک حکمت یہ بیا نک یگ کہ حدریث تلا س کہ 
اھان کے تر شع ہیں او رکاف ر نے ترام شعبوں سے اکا ریا لاجر ایک کے مقابلہ ایک ایک ساپ مسل کیا جا کاس اور 
نے مہ فر ما اہ اغات زم اصل کے باسح سن ز ہیں اور فر وج کے تیار سے تاو ے ہیں و ایک میت شی لے 
اعتپارے بیال نکیاگیا۔اوردو سر رمث یں رو کے افقیاات- 


حضرت سعد کی وفات پر عرش کا متحرک بونا 

للدت اتوت : کن ابن مر قال قال7سول او صل الہ علیو سل دياش اعرش ال 
قشریح: رت معرب معا پاپ دکی مو تک وجہ سے عرش الر ن کے کت می ںآ جا ےکی ف وجوبات بیان کے 
گے ینف نے ےکہاکہ اس سے ہلال رش مراد ہیں اور تش کاک تقیققت عرش جی مراد ےکی دک الد توا 
قدزت س ےکہ ال ٹس ا سا پیر اکر دے۔ پچ رپ ہو کیاہے مقیقت رک پر مول ے اي هت ےکہا 
کہ اس سے اک تست شان اور علو مرح کی طرف اشارد ہے بکرم بان یش سک ہی ںک فلال کے مرن سے دی 
نل ری دک جات رآ نکر مم ے : : ا کٹ عَلییم الما وَالكزضی۔ 
کن جع بت ہد ےکم ون کے RE‏ 00" 
کت ولیہ ےکہ اب سے اس کے اکال صالہ اد رک طرف نیس پر سک دو سرک وچ سکم خو کی وج سے 
۶کت آ لک ایک پاک مہا کک دو مار طرف آ ر می ہے اور ا کیل آسان کے در از کول پا کے زول 
ر مت وفر کیل اب بیہاں اشکال ہوتا کہ جب اتی ہی تق سے لو برا کو زاب قر س متلا کیو کیاکی یک 
وو و ری 2 ۳ 
مال عَایفعل وه یلو ۔ 
داب سک و کاچ ان کا مو کنا رک ہکرام لیم ار السلاہ کے علاوہ تی بای ی ۱ 
ولد بو موم لاو را تا یکو ہے منظور تر ادا خرت ٹیل ا نکادر ج بل رک ے۔ اور ہے کی مو کے کہ دوک 7 
کو تخب ےکر نا مقصودہ وک جب اتا بای ی آنا مزاب ق ر مووا ہوئے فذدوسرو ںکومامون تہ ناج یش یی کا ۱ 
انیل / چا 


سی روج جلدادل پل 
اب الاخ وام پال کتا ب الو کلب وسنت پر اھ وک کیان ) 
دین میس نسٰی بات نکالنا بدعت ہے ۱ 
للدت لت : کن اة ضی الله کتھا. کال :قالبشرل الو صل اه عَلیو وسلی مَنْأَحدَكَنأَمرِتَامَدَاال 
تشریح: آثر پا: سے دزن الام مراد ہے انس سے ال بات کر ف اشا ہک ا ے 7 سلا ن کاک م دن بی ہو نا چاہیے۔ پر 
ما اشا سو نک کے رتوبک رین اسلا مکی نیت ات بد بجی سی کہ وکا و کی ہے اکال دک اگوا مین 
وآسان نتاس ۱ 2 
بدعت کی تعریف اوراسکی پپچان  :‏ برعت کے اغوی تن مال سال کے مل ہک ہچ یناور 
کشک ریف تلف انا یگکئی لین ا کی جا ماع تیف ہے ےک کی ایی ےکا مکوا یپا کر نا جج یکی مال ونر 
یکر کم مو و سا ہکا موان تن مھم الہ کے زی ان بی تہ تلا رام وجو ہو اور ن گنای آورن کیت متناہواور 
الا بکاکام بج ھک کیا ہا سے اور کا ہکرام ڑا کا کی ضر ورت ہو نے کے پاوجوو ی کیل یہ چند یود ات ہیں کی تیر 
سے وو اور پر عت ے کل گے کا مو ترون ششہ بی مو جور سے پااانع سے متبط یں یے ما لفق وکلامیے ۔ وو ری 
تیر ے ووامو ر کل کے ج یکواب بج ھکرن ہکیاجاے کے توسع ق ال شوم کل والمشارب اور ری آ بد ور شت تی ری 
یز وهامور لک کی ضر ورت کاب کر ام وکود یژ ی ی اهر والو رت ی ۱ 
ا ےکیاجییہاکہ خاس اتنظام سے مدارس بنانااورعلوم عربیت کے واعد و یرد ال تر یل ۓبرع تک تم حم وے 
کر ےکی تن ےگ کو م کر کان اروام نع رگر بت کل ہو کو ے٠‏ 
ہیں کے بر لوگ ا سکوحسنہکیں کے اور حدیث کل بذعو ق له رتولج ہو جا ےکی اور تش سلف سے جو 
تم سقو لے اس سے برعت وی مرادے ورتدال یناف کے 07 کل بس یکر کے اور مک رام جب برخعت 
حن کے ہیں و«لفت اختبار سے ے ودنہ ش گی ہشیت سے بد عت الیل سنت میس وا شل ےکی وک اس کے اصول 
ترون شل یں مو جور ہیں۔ الغ ر پا عت سب کے سب بے سے صن پچ بھی کئیں۔ بای حضرت مروا نے جو ترا 
لماعت کے بارے میں نعمة الہ عة نت فرمایادہاں بد عت ے لق کی بد عت هرا ااے هک کیہ اہ کرام جک تاروت 
ش ی نہیں م وکن با مراد یے س جک برع تکوگیاٹھی وی وی ول اور ہے بد عت نیل سے مزاع تاو فرحنم 
لک بات هک احادیت می بد ع تک بہت زم تک کی یک کہ یاک جو کیک مر ےگا دوسلا مکی 
فی یش اعا تر ےگا ر کوسلا مک سے سے کیال 
اتی غذمت برا یکی وج یے کر جسان ےکوقی بد عت اد وگو الس نے رای ور سال کاو عو یکردیااس سل کہ وب 
کیاکام جلانامنصب خد اون ری و رسال تکاکام ہے نیزا نے اسلام کی عدم کیل کر کے کیب خد اور کک وک الد تاک 
ارشارے: الوم ا ملت لگو ويك یز اللہ ور سو لکی یش لاز مآ کر ایک ٹوا بکاکام جوا ہوں بیان 
کی ںکیا۔ 


مسیون و 
ضور کی اطاعت دخول جنت کا ذریعه پم 
لیت ایت :عَنْأيِمُرَیْرۃقال: کال شول ای صل الله ایو سل نيون لیبق لان ا اح 
تشریح: پل گرا مت سے ات ر وتر اوہوآووخول جنددے ملق ر تول مرادے شواوابنقراء مو اسیا وقت اوراہامے 

72 بحت پر عر ما یمان مراد سح هن ج رکف دہ پل جنت می را ی گا۔اور اگ راصت سے امت اجابت 
راو ے آووتول جنت سے دخول او مرا اد ہے رپوس شرب لتر ملد نام ادے ق کت 5 
یں ون 


عمل میں نبی سے آگے نہ بزهو 
لاد لت : عن انیس م خیب اله عن قال + اة ھا ...... کر قا ھا ; قالرا :تفن ۸ 
شریج: صا ہکرام نپ کو جب تضور مال مکی عباد تک ر و یگ نوانہوں ن ےکم ماک ان کے خیال ب شآ پک 
شا نکی حشیت سے اور یاه ات ہوگی۔ بر فرمایاکہ ار کیا بت ہے۔ حور ما مکی تق ہک کلم ور 
موم یں اور اضر ِا ہا مون العاق یں اور "یں نے اجا مکی خر نھیں۔ پھر حضو ر ڑا کی ای کت دی 
مامت یسار ی زئ ر یکی عپارت ےا ات نزاوت رط 
عصمت انبیاء کا مسظه: چم ریہاں ے حصمت نا تبث ش رو کی جا ہے۔ تیه اهاط 
کے گس تکہاجانا ےگزا ہک ت درت واتار موجودہوتے »و پا ات تخوظا رکھنا۔اسی لام ابو مور فرب یاک 
مسرت ملف موز پل زو اب ده مسوم بہونے کے باوجو و کلف ٢ک‏ ر تاہے۔ اب ال یل اہب ی لاک 
ال شش اقا ےک اقا کرام ہل انعر نو کروغ رک سے موم ہیں اراس بارے میں بعر نبورت مصوم ‏ 
ہونے می اٹل السنت واا ع تکالبمار) ے۔ اور وی 7 سا کا نازر مو سک ون اورا کے پاررۓ 
لا روک ہی ںکہ دصار ہو کے ہیں خاک + واور قرط کے ہیں۔ فرق ی کے زیت انیا ہکرام کار 
سے مطاقا وم ہیں دو ضر تآدم اقلا سے کل | ره کے قصہ سے ار کرت ہیں۔ نیز ول 
س٣‏ ایا مخطر یکرو لاور مغفر ت و تو فو ب کو زم ہے۔ائل سنت دابا عت کھت ہی ںکہ رای کرام وم 
نہ ہو ترا نکی تصو می شا ن کیام وگ اود وہ کے ہو گے اور الد کی رف نت نان یکی ےکر سے وی نے جو ولل 
یکیء قص ہآ دم+ اس کے جوابات تا ناویل یرل آفصی لکیہ تر و ہے ہیں وق دک لیاجاے۔ ق ر سیک 
تواپ بت دک وواکی | 3" تل الوت ہواءیاوہ 421 ا حور کے پارے میس جو مغر کال کے 
پارے یں حع رت شاه صاحب ھاللا فر مات ہی ںکہ حصت اور لوب میں فرق ہے۔ محصیبت | در ج ہکی نافرب یکو 
کہا ااہے دب سب سے اد در ہے اورقرآ نم مفرت ذقوبکاذکرے یتک و او صنات 
الا برار یکات الین کے ٹیل ے ے از الول اال ہیں ۔ حضو ر رش کات کر از ےت کیاد رنف 
لش ووصنات ہیں- 


دس سر :لے رو وہ ہس چا مدال ال 
اب اشکال ہوجا ےک مغر ت .اٹل نے یتآ کر فرت ناخ کے مت که نی ںآ ےک وک مخفرت کے لئے 
ولا ںککاوجود رو رک ہے تا کا جاب ہہ جک یہاں قفرت کے مع عد م مواغزه که اگ رآپ س کول زنب صادر 
ہو اس فو مواغذہ نی لکیاجا ےگا یا کہا اس هک ڈلوب با ارچ رر بیس ہیں ہیں گر کم خد اون ری یں سب 
موجودہیں فال زاس بک مغفرت رف يا کہا جا هک مغفرت ام رخ دک ہے اور وال سب ماضی من ہیں سکب 
مخفرت اتا کے مل ڈلوب او رآ ے در میا نآڑڈ الد یاجا ےکک صاد ر »وکا کول شکال ہیں _ 
حضور کی اطاعت میں کامیابی ہے 
للتریت یت : ن اة قات : صتع مر ل انو صل الد علیو مم َا قر صن زيه .ةقر ا¿ 
قشریح: ”یا کر اکچ نے خیا ل کی اک زیت مرچ زیاددے اور ر خضرت میں کم اور حضو رط کار چ باس اور 
آپ شار ہیں خواہ زیت پ رع کب یار خصتپ رآ پکاور ج بد ہوتار ےکااور ہم وگنہگار ہیں ہیں ع یت برع لکنا 
چا ناک کالات زیادہ عا سل ہوں۔ ای لے صحاب ہکرام دا رخصت سے بے د آپ نے جع کرو یک ی بھی 
ر تي ضس الاک اش کے ساتے ایک ریت اک ایکا طبار بو 
تابیرنخل میں آنحضرت کا ایک حکم 
زیت لسوت عانعن کریج - )ضس الله عنْه- تال : : رم تین ال وصل الله علیو وس وم تاغل | 
تشریح: ایک اوت ورضت عقوت زر مومت ورضت ع قوف ار ان رای ۶ز بک 
عات کی ای سے کور یاهآ کا ہے ا وگ ا یکو عات کت ے اور سیب الاسہا بک طرف سے نظ رپچ را لے 
تے۔ :ارب یآ پ نے ابتقراءا کاک سے ن فرمایناکہ ووا سکوسبب کف کل اور ایشہ کی طرف ر مہ زول ہو جا ' 
اور اسبا بکوشکن حیث الاسپاب افیا هرذ میں شر اکوگی مرح تال توجب ہے تیان کے دلوں بی راغ م وکیا تو اجاززت 
دیرک-وزاامرتکم بشٹی نامور ڈنیا کم پر ائی واخطئتفیەفلاتستبودوافامم)انابشر مغلکم آخطشیکماتفیلون- 
چوک نی تشر یعات کے حائل ہوتے ہیں اورا مو رأخر و کی تم کے سے ن کی بعشت ہو ے اور امور گوذیات جو معاشیات 
کے یل یس سے ہیں ان س بکوانسانو نک لپ و یوک ہے لے گی جال ہیں اور تال قل تک باب 
ان سے وک یکا آغاز ہوا ہے۔ بنا ری شریعت نے رال ماش می کول پیت ری یں کا جو نا طریقد چاے افیا رس 
کول مات ہیں البتد ا سکاط رت یق استعھال بتلا کے چا ط ریس ےکر ےا ی ےآ پ نے فرمایاکہ امور درن بیس می رک بات 
تس هک دگل ده وق خد اورک سے ہو کے ہیں ای یړ لک ناف رض ے او رامو ر یال ھکہوں فی میرک را موق ے 
الیل خطاء ہو کته یادا لکااتاضروری لیر صرف ایک شور وم وگ ی وجہ ے ہک دو رک حدریث یں 
ے أنعم اعلم بآموی‌دنیا کم ۔ 


حضو ر زز 2 کی ایک مغال 
لت لین : وشن اي مو قال 0ھ تا باق عدي اهومن ازیو الولم اخ 


E. E E 
تشریح: یک یی کی لول ہد یت وع کیٹ کے سات تھی دی ےکی دجہ ےس کہ ی تکبا مان امک بارش‎ 
کوج ہت دن یط مط کے بحر م وک لوگ بارش کے لئے بہت ہہ یشان و ماج ہیں۔ ای ط رب نہ کر کم مکی بع بھی ایس‎ 
وقت تج رکید یام دہدایت سے با خالی یلوگ اس کے بہت تاج تھے علوم و کی منززلہ بارش و ستاو‎ 
تلوب نان لزان کے مو سول رع بارش کے بع دز نکی ین عا ںہ ون یں ایک دوز مین ج پا اجب‎ 
ہے اور ایس سے زر اعت لی ہے۔دو سر وه جن جو پیک جذب نی لک ری :02.2 نت‎ 8 
فارعا س کے ہیں تی ری دہز ین جونہ پا )کوچ بک گی ہے اور نہر وک رک سے یابقر زان ومد خو ہے اور‎ .: 
ردو سرو ںکو تی اتی یی تن ماش تلوب النا ی اور و گی کی ہو گے می قال دی نک ہے کہ علوم وی کے اصول‎ 
سے مال اتپ ارت ہیں نجس سے لوگ نیش ہو ت ہیں دوس بی شال رش کر مکی جو علو مآوا سین سول میس‎ 
تفوطو رت ہیں او رل وگو ںکوپی کر ے ہیں ترس ودرگ جنہوں نے علوم و یکو الیل توت کیان رای حاص کیا‎ 
اوز تہ ووسرو لک فائرہ تیاب یہاں ظاہ شا ہوا کر زی نکی تن یں ہیا ن کل یک دج پان جن بکرے‎ 
دو رک پا ده کے ر کے کیان اور لو ول میں صرف دو "مکش لاور ۶ سان تلو جواب ہے‎ 
ےکہ مال می اول ار یکو ایک شا کیا ا ےکہ و ہ ہے ردو سرک مینست ہیں‎ 
تار و کا کے ہکہاجائۓے مل یں حققہ تین سین یں اول تو زیر ضر ورت کے مطاللی رم صل‎ 
کی افو یوت رر س کے تال کل چوا اورو و اجکی وق در بی ای ابیت کی حاص لک اور یس راج ہے حا مل ں کیا نویل‎ 
۱ رونو ںکویک بی م کے ین می داف لک دید فلا شالف عر ثکاخلاصہ یہ مک جس طررح بارش قام زی نکو ابر‎ 
نی ےگ رز می نکی اتح دار کے ناوت کے اعتہار سے تبولیت میس ناوت هتسه اک ط رح بل سک دہدایت‎ 
۱ یمام انان کے ,رین استعدارے تاوت کے اعتپار ے انسان مل تفاوت »وا‎ 11 
آیات محکمات ومتشابهات‎ 
لت الات : َءالت تلا سول اللوصل اللہ علیه مل مو اي ول عليك الکتاب ال‎ ۱ 
تشدیج: ت رآ نک یآجتیں تین مک ہیں ایک مات ہآ یات میں ای مضبوعی م رک فا مع ودلا ال می شب‎ 
لگنا نہ ہودوس ری ضحم تاب مطلقہ ود کر نشی مت ال معلوم نہ ہوں یس حر وف قراس میں نی مت‎ 
با نکر کے ہیں بش رطیکہ مات سے ار د ہو تی ری مشاب من وج جس کے افو مت می کشا لب وکر ولا لت‎ 
اور ہن مرا انشتباوہو کے یداللہء وج اللہ استتوی و غی رہ ا یکی تاو یکی پاک ے ج با کیا کے توا خی نہ ہو۔ پھر‎ 
یہاں ظا رآ رآ نکر مکی آیوں میں توار ل ےکی وکل اف ضآبیت سے معلوم ہوا ےکہ پو راق رآ نکر مم کے تی ےکہا‎ 
کید أَخکمَث ایځۂ ده سر یآیت سے معلوم »وتا کہ لور رآن معش ابہے کے تول تال هکل اخسن الَيِيْب یلما‎ 
کک اادد حدیث مکورییش جوایت ال معلوم ہوجا ےک اش گام اور تفا_ سل کا جاب يس کر‎ 
ایک لک امتا سے الک الک تم گید کیت میں رلالت ومعالی کے اعتپارے شکو گم رک ہاگیااور شض کو متا اور‎ 
دسر آیت ین مہو کی اور مرم تق رو تبر ل کے اغقبار سے س بکو حا مکارت ریآیت شی بلا غت وفصاحت وم‎ 


fw E‏ اف gg‏ جلیں اول ا 


ومک کے اتتا ر ے لور ےق رآ نکر مکو ٹا کیا ام کول تارش ول 
کتاب الہی میں اختلاف کرنا ہلاکت کا باعث ہے 


اث الات : عن میں اللونن مر وال هجزثلی...... تمایق َحَرجعیتا . . . باخیلاه مرن الاب اخ 
٠‏ تشریج: ال اختلاف ے مدای را و تفا خو ا ی کے اتبا ے انتا فکر اہ ے اکر ولیت کے انتا فک 
انتا کرو منورع یل 


بلاضرورت مسائل میں نہیں الجھنا چابنیم 
انث الات : عنمي ناي اص کال کال شون لول له علیو مق عم سیب ارين ا ' 
تشریح: می می چز ہے متعلق ا ضر وت سوا ليکرے اور ای وجہ سے بدا تآ جا و و ہگنہگار م وگ کی وک اس 
تم سول می ایب مک ری باہو ے اوراپے لآ بوذ کا ووی مر ہوا سک میں ا سک وکر سا بول اور 
خداو قد ول کے ہا وکام بل وہاں ارآ یزاس میں ل وگو ںکو گس ات 
منکرین حدیث کی تردید - 
انیت دوعنآیمانوقال: کال :شر الو صل اللہ علیه وس اناع رکو عتککاع نآ یکی ۸ 

تشریح: ے نی می نی ارس م 17 ی بہت زورداراور موشرہہوکی ے ملام * لی ال ڈ الخ ات ب ںک 7 ۱ 
ڑیے کے باپ اپنے ہے £ و بانج 2 و ازار ست وکھوں_ لا آي سے اشار :کیا الہ دو حدی ثکاکیت ڑل > 
ماعلا ریگره: تا ژر حر کی عل تک طرف اشا کرد یل وقت وول وگ تہ وم میس مون کے #اژار رٹ 
کر یگ ےک وک حدریث ان پر تود کان ے ولوگ تمر چ رآ مان و ولت پہند ہیں حدریث مان سے انی گی موک اعلے 
انا هکرس ہیں علا می تال ف مات ہیں کہ اس ےآ رام لیب لوگ مم راو ہی کوک عدیمث ما لکرنے مل بہت 
مشقت برداش تک ناپڑتاے اور دور درا زکاسٹر کر ناتا سے و جوان مشقتول سےکنارہکش یکر اس وهآ امس بط کب 
رتاے کہ اب میک ضر ورت نی ہے رآن یک ے۔ 

ما مان تاب اللواقبفتاۂ: ظاہ رآ نرہ بہت اچاد لفریب سے گر حقیقت مس اس کے اند زہر راوس ےکی وگنہ 
حدریث کے ا کار سے ق رآ ن کار لاز مآتاے۔ 

قرآن کریم کی طرع احادیث بھی واجب العمل ہیں 

زیت :وک دامن تشر بگرزقال کال شو ل او صل انه ليه وس اي انیٹ زان وَوِفْلَهمَمڈالح 
تشریح: ا رف خی اور إن رف شقن ے اور جملہ اس کر ای با تکی طرف اشا ہے کہ ماع یس جھ بات بای 

ای ہے دہنہایت اہم اور "تم پالشان ہے رال لا تچ کر ترآ ق ہے اور حدریث نی ہے توش لک ےکا 
یجاب ےس کہ ها لاتم تس ےکہاکیاک ی ط رق رآ کر یم ے اکا بت ہو تے ہی حرف سے 
کک امت ہو ے ہیں دز راج ابر ہے ۶ وو ل اخادیتث کے اختبار سکب 1 اکل کے اتتپارے ین کی ایا اور احارث 


E‏ درس مشکرة 33 گیا جلدادل اہ 
یں سے موی متزات لی ے اج مک رکافر سے جس طرں قر آ یکر مک مک رکافرے و و 
تاکان امستصفی میس رای ما کرام تک مر یں تل یں کرک وو رات شاف ضور هت 

سے سے 7 لم کک وشیہنہ تاور مارے لے کک ت واک ایو چ ہے خی ہو نر کلب ہکرام کے افقبار 

س ےکہاگیا۔ لفظا شبعان سے اکا عری کی عل تکی طرف اشار هک اک وک موصوف پاصفته م کے سے وی مفت اس 

م 7 علت ہواکرتی ے ور اح حدیث باس سب کن اک ل ےک ت لعا سے یر ش مآ وی مر ادے جال نا مر ے 

که ربیف کے لئے نت محر اٹھالی اتی ے او کرت بعام سے ست وکا لی پیداہوئی ے امزاحتت نمی ںکر تیاس 
207 اال مراد ےاور وہ رض 2ھ ہیں کر می بر ر اد گااور باس پیٹ دالا اک ڑبلیر دکندذ ہکن ہوتا ہے حدریث 
یک نکی صلاحیت »و سابل حدی کا رکرجڑے۔ - 
ايل گر الما الال ان خریث سے جو ہت اام خایت ہوتے ہیں ا ک‌چرخش بل یں اضافت 
شی کاف حر ی کے ابر سے ے مساو سے شی سکرنے کے .لج نہیں ے اس ےک مسلرانو کات بط موی 
ام ہوگا۔یالوں میس من ین کے حال کے افیا سے سے اس لے کہ اس وقت مسلرانوں کے لق رک زت وا را مک ے 
تھے اورا کو رام کیا ل کے تے فان میوں کے تقل کے ا سک ون نیس کی طرر علال یکم ےا لے خاش طوریه 
با نک یاگیاکہ وہ بھی مسلمانوں کے القا ےکی طرع رام ہے پھر عام طوریر لق طکاىی م جیا نکیاگیاکہ ایک سال کک اعلا نکیا - 
چا کیال زاس کے لے سے ج بک رر سا کے ذدرائع و وار تھے اب جب ری ڈو ابا زر یو خ رسائ یآسان 
ہو ول تواب ایک سالک اعلات کر ناضر ور ہیں بللہ ا دن اعلا نکر ےک ا لکوششین ہو جا ےک اک کول کک موتو 
ض رو اتاب اگ کول دنه نع کے نزو یک ملت هقی سے چا ے خوداستعا لک ے ی یکودریرے توا ریب ہو 

کر احا فاد کے زک رتاک رد سر کاس سط کرک 


تخعیل کاب اه ںای ے۔ 
ان یتفن عنهاصایها: استغنا کی جن ضور شس ہیں ۔ (۱)اعلان کے بح کوک ماک نہ لے( ۴ )مالک خود ا یکو 
دیرے۔(۴ )اتی تق رق رہ رک ال کک یی خر لد ہو۔ 


دلقم .تَعلببِۂ أَنِلفُزرۂ: أ اس سے معلوم موتا کہ ہما نکی مارا ری ضرو رک سے اکر د گے 
ہمان کواجازت ے هک شی رانا ی کے مال سے لق ان وصول کے الا کرو وس جر و7 ان ۳۳ یم سے معلوم ہوا 
۱ ےک ہک یک اجازت کے ایر اس کے مال پہ ہاتھ ڈالنا جائز ہیں چہ ای تصر فکرے آو اک تلف جوابات دیے 
کے( الط کے ےس کہ گرا کر سے لو ہلاگ ہونےکاانر یش کر ای راجاز تکھانے را کا و اوا ۔ 
۱ کرد -(۲) ایت دا اعلام یھ ول 7- فو زم جب کی قوم سے محاہدوف مات لوا ال وقت بر اہو ٹیک ھرے 
عابد بن تمہارے پا س ےگ نے او هرس مجان ہو تقر را نکی مار ضر وی گر کرو گے تاه 
اتمه یہ سلو کیا چا پھر جب مساو نک مالی عالت | گنی اور اط راف میس بہت سے افراو مسانان ہو گے اور ذمیوں 


ا سا ری چا بدیں لا 


کے پال مان ٢و‏ ےکی ضرورت نہ تلم مورب یاس 


بشرے پیٹ والے فافل لوگ حدیث کا انکار کرتے ہیں 
ریثات : ون راض بن مار قال کاب تمو لاله ...نکن شلر ار تغل الکتاب إلارإڈن ال 
قشریح: جب عدریث می کاب شول ال تا ہے ذاس سے مراوتقریر دوعظاہوتاسے مر کم عر بک عام عات ی 
کات وگول کےگھروں میس !خی راجا زت داخل م وکر ا نکی ور ول کے سا تج پر لوک یکرت اود ان کے لول میں 
ابق م تی کے مطابق تصر فکرتے تھے و یکر مم نے ان ری عادتو ںکودو کر نے کے لے فرمایاکہ یو ںکی عمزت 
ور واوران کے قوق مساو ںکی عزت وآ بو تقو سک اند ند 


ہر بدعت گمراہی ہے 

رت این :عن کال : صل پتا مشو الو صل الہ لی ووم دات یوم .و مل ايكاب ووك عم طلغ 
تشریح: ال رولیت ل وقت غا زکا ژر لس کر دو سک رولیت ل کہ وو عص رک راز نی اور ال وقت کے 
انا بک وج کیا اتی ص رد علوم و وم گنت هک اس وق تآپپ ایک خاش کت وی بولگ دا 
6 خی حص ے فر څح اھا لآ سان ی نے جار ہے ہیں جن بی ںآ پ ن ےآ آخری وصیت رال 
یڈ کے ناش ھان الائناہوالتخر یف اور ای ئن کے و سے خقر ےکر موان بہت جے 

0۳ ان گل اده يم 
کٹ نا الیرن: سے اشا کاک ددوعظ نبایت مو خر تاک 720 مد ب 
مر بعد می ہونا مناسب تیاور وجلت منرہا اقلوب یی ون تم کہ اش ہے دل پر #وتاسب اور کے پرا کاش بعد یش طابر 
ہواہے الک داب ےک و لکی خر یکو نمی بولگ کےآنسوسے اس کے اش رکااندازولگایااڑاے اس ا کو مقر م 
کی ایھر جلت سے اشا رویط تک طر فکہ ردنا ایا کس ہک وای دی تا شی رکی بنا یھ ے۔ 
مه وع: کول رقص ہونے وال جب تیعر تکراے تو تی ضروری ال مون اور دار مل قیوعت ہوں 
ان پیت روص ییالال ہیا کرجا ے وضو کي دع ا بھی ایا تا اس سا تج تخیر دک 
أ وصیکم بِتَقوی الو: رل جاع الم بی سے ہے ای ےک ال ای کک ٹیس دی کے ا 
کاس ےکآ تتو یکی ١ای‏ تر بف ہے امتغال امامو رات واجتناب امنھیات۔ اک لے ضررت اہن عب ا وا ر ماتے 
ہیں راس الد بن الت وی پچھ رتفصیلا قوی کے مراتب ہیں ۔ر(!) الاتقاء عن الش رک(۳ الاتقاءعن الکباثر(۳) الاتقاء عن 
السثیات(۴)الاتقاءعن الباحات و الشبہات حن۶اعن الوقو عن امحرمات(۵) الاعراض عماسوی اتال 
ہے عام لوگوں کے لے نیس لماع امت انم و صد مین کے لے ے عافظ ا نکر نے ححضرت ال ب نکحب پاپ سے 
تق یکی جو تعر یف لک ہے وہ سب ے جائع ہے دک ایک دن رت م بے حر ت ای کبس نت 
کے بارے می دریافت فری خضرت دی نے فا یاککہ جب تم کان وار جل میں چل کے توکس طرح چلو کے تو 


ا fw‏ سر ال ج جلراول ]چ 
هریت سے ف ما اہ اس ط رح دان سی ٹکر چلو ں کاک ایک کان بھی د کے او حطر ای وا نے فرمایاکہ قوی 
اس ک درن پر ای ط رح چلناککہ غی ر دی نک ای کان کیہ کے پاے۔ ۱ 
والمَمعواللَاعَة کے .إن کان عَبنا حجییّا: دو کی حدریث مل ے الثم ة من قریش ۔ * لت اشمار٥ہ٭اکہ‏ غلام بادشاه با 
ام میں ہو سک زاریش ہزاکامطلبپ ے ہو ال امیر ر اطاعت تکر ناضرو ری ے بالف رض واحال| اگرفلامی یول نہ مو 
وراد کر لام ویر نانا چان جاگ + لی ری کے توم ہونے لیکن اگرزو زی ذس کے بو ان ۱ 
چا تی رک بات یہ جک ال سے نخس عبر مرو لب عہد سے نالک تل کم ہم مراد اور سس 
بر کل اور بر صورت سام لاب هک ام را ارب صورت ور کل ونالا ن ہو ین نہ اہ رک کال ہے اور نہ با کال تب پر 
تہ و شارت کر کے مان لیناچاۓ 7-7 ۳۶ یراطاعت اس وقت سے جک اللہ تال کی محصیت نہ ہو ورن اطاعت ضرورگی 
نی ای کی کیو گر حبیث سے سلاطاعةلمخلوۃ قف معصیةا حالق۔ 
لیک م بسک ةا لقاء الاشرین: اس سے ہ یکر مم مل نے ایک فاص ماع تک بان کے داد بیان 
فرماد یآ پ نے اتی سنت با تھے تھے خلطاءار و ےکی سد تکوملاد یہ ال نک ہآ پکواپ را رشان تاک ہے می کی سنت سے 
اجتہا رکر کے جو سنت ولا اس میں و تج گرب کے وہ الک میرک سنت کے موافی موی زا نکی اتا ری ی 
اتا دو رک وجہ یہ ےک ضور ٹر تال طرف سے بے لاد ت یک ہآ پک خض نت7 زان 
یس ال مین 1 بل خلفاء راخ رن کے زمانہ یش شال ہو ںگ اورا نکی طرف موب ہوں کب گر صرف تا 
جا و حضو ر ئن کی حش یش ضار دما ہیں اس کے سنت خلفاء راہ ین ا اد اوران و غلفاء 
راش رل طرف عضو بکیاان کے زا س تام ہون کی اه ورن یقت میں ہے تضور یکی مل ہیں۔ 
وکوا لھا اقولین: ‏ اس سے مضو يت لکن کی طرف شاه هک ج بکوئیکسی رکو سفبرش 
کیساتھ پڑت ے فو داشت سے کاغا ے باتو اشارہ سے ال باتک طر فک اکر سنت پر لکرنے میں بہت زيار مشت ` 
لیف ہوت ب بھی سنت یرگ لکر مامت چھوڑ واو لیف بر داش کر وکوک لیف وقت انان داش تکاغاے۔ 


دین اطاعت کا نام ہے 
یت : کن ټی لو ځرو قال :قال ت مول انو صلی الله علیو ول :لَالزم ن آعن گرا 

تشریح: وی یہاں ای مرا ہے یا کال تو بح کے ہیں کہ یہاں تفص مراد ےک ول سے 
۱ تورم کے لاس ہونے احا مکو تی نکرے ما تین کی طرح رال و وا کی ہنا نہ موی کال تاررقم 

اجک ہہ کے تایح وف زک موو رنہ اوو م نی زا سل ایا نی مر 

ملام تور نن نت فرماتے ہی کہ یہا کال اییا نکی یمر اد ہے اور مطلب ہے کہ سین خو بات وبل فات 

ہے محبت و س اک ط رن یک کم کے لا ہدے اع ام ناد وان سے قو لک ےکی ض مکی گی شرس 

ندال ول می فر جرت وتو شون )کر سے اور یی الد تال کے ا پندوں کو عامصل ہوتاے اور اوقت ماگل ٠‏ 


دا رو 2 ہلا لال 8 


ہواسے جیب ول میس الا نو رتیت ہو اور یت اور الاش تفاع تم ہو تو اعمال شرع ہکھانے پٹ کی طرحع م روب 
دما سب ۱ 


سنت زنده کرنے کا خواب 
ریخ انز کن لال نمی ان تال :تال مول الو صل الله علیو وس من آخیا تین مل ال 
تشریح: : احاءگی ین صو ر ٹیں ہیں سب سے ای صورت ہے ےک شود لککرے اور ووسرو ںکو یی لکر_ ےکی 
تر نیپ دهد زمرق صورت ہے کہ خو لکرے لان ھت فیپ تہ دے۔ تی رکا صورت ہے ےک خود کل زد 
2 277 رول کو کے 1 7 خیب دے۔ بی سب ےادل٤ے۔‏ 
مس ابد عبلع عَدضلاله: یہی ہدج کی تی سفق لالب سب صف تکاشف ہی کہ بد عت مریگ رای جس 
پراش ور سول رای نی یں اکچ نے پر عت ح کو کا لے کے لے صفت متیر ہرد لے و رت 


یه امت قپتر فرقون میں بت جائے کی 
بت دی لت : حَن عبد اون عمر وکال : کال مول او صل اه علو رمام ال ميا 

تشویج: افتال-ک بعد جب کل آتاے اور زمانہ ا کافا گل وتا ے وال ے پلک تکاز مان مرا وت سے تیا راتنل 
یھ بلاک تکاز مان ہآیاتھاہ امت حیہ یھ گی جلاک تکاز ملن ہآ کہ بی اص رائتل کے مان نام اھا لکرس گے ء ان پر تفای 
وش ا کی نان وج ما ںکی نزن وگ (اعاذنااللر مضہ یبال جلف فرتے بیان کے کان .ت ود فرتے 
مرادڈیں جو یک دوسر ےکوکاف کے ہیں فر وی مسا مس انتا تک افو سے ووم رار ہیں ہیں کے ا می نک 
قافتا 

اف تخل اللہ تو رشن تباب کر اصول کے ابا سے چ فرتے ہیں (خوارج(۴)مخولہ )ری 7 
)رح (۵) مش( )شیع پھر ہر فرقہ یس شاشیل ہیں۔ای طر مر فرتے ہوگے۔ چنا چ خوار کے ماحیت پندرہ 
ہیں۔ شی کے ات ی فرتے یہ رل کے مات بارہہ بر کے ات تین ء مر جیہ کے ما تحت پا مشب کے ما تحت 
پائ و رف ر ے ہو ے۔ ایک فرق صرف ال سنت وا ماع تک 

لن القار لا عيلَقد اڈ اب یہاں اشکال موتا ےک دخول فی النار سے دخول اہ رک مرا ہے یاغی راید ی۔ اکر وخول 
ہبی مراد ہوا نی منہ کےاعقبار سے سج یں ہوتا۔ اس ےکہ ام مکمک فرت بلط کال ہیں لہذاے 
اپرالا اد کے لج دو زتی یں مون ا ون یراب ری مراد موتو تش سک اعبار سے ع نہیں ہو کی کہ هوص 
قآ دع رہش سے ثبت _ ہک ال ست واشاعت گنگ و لکا کی ایک د فی دوز رخ یس دال ہو کال سب ارچ 
بعد خجات ہو اک اس اشکا لکی طرف !کر شار یں نے توج کی پر جوا بک سوال بی پیداننیل مور صرف 
جفرت شاه برا مجر ث ر تالاق نے اشعةاللمعات یس ایک جوا بک طرف اشاروفربایاکہ دخول ناد اقا 
ہے ہو گا ایک خرال اختاد کباب دو را خر لال 1 ناو عریث پزا شس وخول غر ای دک مرادے۔ نوغرل بل 


f‏ سر 0 ج بداں ‏ کے 
اتا رک ابر ےء خر لک بار شس توفرق باط دا ی نار ہہوں گے خرالی اتتا کی نر اود دپ ی جات نہ 
نک سنت وا ات سک مات ا من سے خر ای اعا لک نا فل ال فی ناحفظ- 

قرآن وحدیث کی موجودگی میں تورات وانجیل کو دیکهنا 
للذ المت : عن جاب رن ال صل اله ورمام جي نامر تقال سم عآعارست ین تفر هیهت 

تشریح: جوک حضرت ر ر رش هید ووت ل کے قاض مق ورڈ سک خر مت ںآ کے وقت اٹل 
کاب مکانات پڑت جے تو کی کیان کی کی میس چ جا ے اوران مکو لی شوق تیاور ہے ال قرا ے ےک جہاں 
ےکی مر بن مس رو انا یسب 

تو گون: هوا التحیر وعدم القراوالاستقامةعل شئ یک کیا م مترددہ وکر دو مرس ادیان سے دین کناچا سے 
ماک ,000000000 

> وانےاپنےدی نکوغیر مل کے ہیں .کاب ال کو چو زک اجار دد بان سے س کاک عکرتے تے۔ تم تلبت بن 


چاؤٴگے گرا س می رار وا تق ات ہو- 
یا ما اا ات و کن دی نکی دومفت اند ینار ہے اج اس سے فطل 


دارم کے کوک انل رب کے نزو بک س فیدر تک تام الوان ےا دارم تاور نقیہ ستاشاره سا لس صاف 
سھرے ہون ےکی طر فک و رش مکی ریف هتخت پاک وصاف ہے اور ندال مل اضافہ مو سکناے۔ 

لو کان‌مرتیعیّا: ا E TAN‏ شقن کے لے وصفب لا کہ اکر رت موی اویل ال وقت زنر ومو کے امیر ی 
کرادت کید که مان سک اجام ای ہا کیلع مزاسب نیل ولآ ادن کے اجام و 


کامیابی کی تین باتین 

تفت : ون ای 9 انی صل اه ییوس ناک ی و39 

تشویج: لو ستلیآ مطلب ی کہ ال کے سارے اکال سنت کے 
۱ موق بو اور لور زنر 1 سنت ٹل گذارے۔اسلام میں دو توق ہیں حول اش اور تقو العا ال حریث س 
رولوں اذا 12 گی طر ف اجمالااار:'ادیا۔ مل سل م ون اش رک فاش ار کرد ادرا رن الاس ے تام 
خوقالبار کی طرز ف اشمار:فرمادیاادر طابر بات ے ےک رونول cf‏ حول را ریت کے کا 
تقالء ل: اعتروشس شف کے ا کم 0 کیا ت ھکیار بط ہے ؟ و وچ بط یہ بیان 71 جالب »کج بآپ 
لے بیان ریالم ہے الیک تت ے وال شس نے 7 رمث پات کے اعتپار سے بطور شگرپ ایا ور ما نے 
وخول جن تک جو ش رط بیان فرمائی وای پاک ہآ پک کب تک ب کت سے اس زمانہ یٹ بہت لوگ ایس ہی یمر بعد وا 
اس میں لوگ شیطالی ہا دک می لژ ها مم سک دول سک دک ےکا بت مکل ہے ت تضور یم 
نے اس دہ مکودو ےرمیک بعد می بھی سے لوگ بہت ہوں کے اکر چ رکفت« قل تکافرق موک چک رآپ نے اک 


وس س لے 
۱ طی بکو مل پر مقدم اسلے فرمااکہ اعمال صال رک تون بخ رال ال کے نیس ہو ای ےت رآ نکر مم میس بھی انی م 
اسلو السلا مکو یسل کل طیہا تک عم یراس سل صا مکو عط کی بانچ الو شل وا من الکلیبب وَاغوْا ایا 
دور اول میں تبلیخ کی زیادہ ضرورت تهی 
للدت الت : وع نای رر قال : کال مول انو صل اه لیو وم اکن زعان من ترك ینگ غُمْراخ 
قشریج: یہاں اشکال ےک ما ایر ےکیام راو ے اگرفراکک م راو ے جا فوپہلا <صہ تو E‏ کر ری 
تر ککروے وتات تن یکر دوسرے حص کا مطلب یں موتا س ل ےک فا کیک ج کی تر کے 
سے پلاک ہوگاچہ او صے تر کے سے چات ہواور اگراس سے سفن وص بات مراد لے اس ود ورس حص کا 
مطلبب وتا هک دن چ کل کے نے یت دک دگل کی توب ال هکرب نهک جات ہو ہاگ 
چا هک گیل حص کا مطلب شی ال ہو تا کوک ما کرام نی بھی سفن و بل کر :اضر وی نڑیں 
کال کے کش ر چھوڑو سے بلاق ہو۔ اس لئے شا انس هکل یرس ام بالمعروف و نی نار مراد ہک پل . 
زان میں تن غاب اور ال کے انصمار وعددگار بہت تے اس ے ال وقت ہکم مشک ورشوار لا اوقت امم 
لمرو ف وی گن اکر چوژد ینا نکی طرف ے تلق تھی اس وق تکس یکو مور قرر لا بنا بی ڈ راحص 
بوڈ ہے سے بات + دک رآ خ ری از ال الاو قآ ےک کہ اسلا مک زور ہو جا وا وب وگار پلک لک ہو گے 
اس وقت ام امروف و نی کن انگ ریس وشوا ری ہ وگی لمذااس وقت اب طاقت کے اندازتھوڑاس اکر ے با موژی رے تو 
اس اوحور ماگ ور ضا موا ےک 
صحابه کرام :کی شان 
ریت ایت : ون ائن عسو رکال :من کان هگا َل دما ت تن ای تومن علبوالیٹتڈال 

تشریح: خضرت ان عو ووا زان کے مایا نکو نطاب فر مار ے ہیں۔ علامہ شی لکن لاف ات ہی ںک اصول تو 
هک دت رآ دحدریث سے اشا هکرس کان ہر ایک میس ا سکیا صلاحیت ہیں ہے اس لے قل دک رن ےکی ضروزت 
ے نوک سکی تقلیددکی جاتے؟ این مس تو وف بات ہی ںکہ جو یہہ اک ہیں ا نکی قلی دک ےکی وک ہے ری اعت من 
جیث اا عت ت وفسمالی وال ے مامون ہیں اور جیگ واوو اجتپاو واخ لا پر ھی سے مخلاف بعد والول ک کر وولو ری 
تفت سے مامون یں سے اور عو کی قید الم لک ذفرون کے نات رو نہیں اس ا نف سکی٠‏ 
طرف آم لیک حاورا کاپ نآ لا کے لن مقصورے_ 

1 3 آضعاب کح صل الله ليوام : جماعت صحا کی ط را مارح کک ان کے اعمال داغلاتی 
ایس پور و مروف ہی ںگوپاکہ وو رات قور مو جو ہیں۔ این مسمود نے حا ہکی ار دانع تر بی کی۔ 

براقا علامہر شی فر ےی ںک اتبعھاصراباواحسنھاقاوباوازکاھانفسا۔ 

. وا یہاں ام فطل ارت جک پہ ے ن ان کے انر ری چیو س تلف تس تھا ار اعتیار سے کی اور 


سگرن سس ره جداال فلت 
انی اتتہارے کی اناد ی٠‏ یئ می اخلا یہر افقبااست بے کلف ناب اشال »وتاب هک جب ا را کی قلیر 
کر نا برا کرا مکی قل کے ار تج داب یہ کہ ما ہکرام نک یآراہ شت تی حا لوگ ا کوک ے 
یل نی کر کے ا ہکرام نے ا کو نج کر سک کروی ااا نکی تین ضروری ہوک توا نکی تق ہکرن ما 
کرمہڑد لیے 

اروا اڈ ائ سے لاک ان کے بارے مس عقیدہکیسارکناچایے سین فربایک کدافضل الام ةکا . 
خقید و رکھنا ضر ور کیٰہے ونر ع نار یدیز سے ان کے اعما لک تال طرف اشارهفراید 


ناسخ ومنسوخ کا مسئله 
یت لت : ن جاب رکال :کال شو لانو صل الله ليوام کلام ي نسم سل وکلم یڈ 1۳ 


تشریح: غررغ حر نے دک عدف رآ نے 2 نار ٹین جن کن اور احتاف کے نزدیک حریث نشور 
ومتقوات کلام الیل کو مفو لک ری ہے شرا هریت ہزا سے شالت حتاف بعد وال عریث ان رولب 
اترا لکربے ی ںک اقا أحاریٹتا ينسح بنشها بعصا کشخ الق زآن . _ نی زق رآ نکر یی آیت وارلا ی 
ہت لاقاس ما ڑل ریہ مک آپ یا نکی هگ بان خاس وگو بھی بیان دقت ہگ ادر ی لے نیزقرآن 
ور مق دص تک کم سب اور رت کی رر ی 
عدریث سے اتد لا ل کیا ا یکا جاب ہے هکم ىہ رٹ رف ے کہ ال شش ایک رای حرو بین داد شی اشر در کا 
وف مات لال کل ہے ملا تفا کہ اس سے مون تلاوت مرا اود ہ مھ یکت ۱ 
ہی ںکہ عدیث ٹرآ نکر لآ تک و شور اناوت لک رک يم عمش تان کر نکی حدیث ے ضورغ_ب اتف 
ن کال اس سے حضو ر مایا ومجتها مراد کل میں وک نہ ووا اعلم بالصواب 
کاب ار درا گیل تکابیلن) . 

لاز کناب الجمان اوراس کے لوا ات کبیا کیال لئے کہ تام مور نع خواو گن تل اختاوہوں بان یل 2 
داغلا ہوں‌س بکامو توف علیہ ا یمان ہے اس کے اوت نت پیک لباب میس اما نی مکش کو مقدم کیااورایمان 
کے بعد اعما لکا رر جر ے اور تما وا یا ات بل یامعاطلات یامتاش رات ہوں سب مو توف ہیں لم یر مزاب پ مم کو 
مقر مکی جانناچاٹ هک کاٹ الول کے عنوان تا مک رن کا قصو را لک تر یف و یقت بیا نکر نا نیل ےکی دک ہے 
ال لفات سنوی نکاکام ہے کد شی نکاکام تچ ورن ش یع تک تصو_چ یہاں عنوان رک تکفا ریات 
اورا کی نیم وع مکی فضیت بیان ناه 
علم کی تعریف: :اکچ توي یس تلب؟ "+0 ری ےون ۱ 
روز اتی س سو سی حفرا ت کیت ںکہ علم تاب ل تح ری لسکا قال اام اھ ین والغرای رتم کرک 

رع یز لئے سا ا 


دس ت ےر و چ ہداں و 
ما مکی شاضت تح ید سے ٹیس وگ یک ا کی اقسام داسثال سے موک اور ام الم رزیت ف ات ہیک 
لم کالب یہات ون ےک نپ ال تح یٹنیس لیکن ہو کے زدیک کم قاب ل میدس پھر انی تح ریف میں ملف 
اقوال ہیں فلاسفہ کے نز ریک مکہا جات ے موحصول الصورة اوالصورة الحا صلة ف الزن اود یر تزدیک العلمر ' 
صفة مودعة ف القلب تتکشف بھاالاہوں کماه وھ عام للمجوروامعورم اور علامہ ق 00ل انے ہے تح ری کک 
العلم صفة من صفات النفس تو جب میز ال يعمل النقيض ف الامو امعنوية حطرت شاه صاحب تق الع نے 
دی تی فکوت ی د کی ہے اور ش رعا مکی تحریفہرے۔ 
هو نور ف قلب الومن مقتبس من مصابیح مشکوڈالنبوتمن الاقوال الحمدیة والافعال الا مدیة والاحوال الحمررية 
بهندی به ال اشتعال وصفاتمراتعالمراکانم -- 
ملم کی اقسام: کک دہ یں ہیں ایک مکی ج کی پش رکے دایار سے ما سل ہوتاہے دوس ری تم رل 
جو خر 7 بشما کل ہوتاے اکر بیط و ما مل مووا یکو 2 بوت ت کہا تسب جو صرف انیا هی تھ خماع سے دوس را ۱ 

ور الا القلب ہوالالہام اف است سے ما ہوتاہے ده تاو رک ہ رای ککوحاصمل وتاب پچ مم دن ج مکی سے 
و 
یل مقاصد جن کے سواارٹہ ور سو لکی اطاعت مر لسن ووعاوم جو تالز داکام سے تخل ہیں رورا یکوعلوم شرع کہا 
جاتاہے۔ پر مکی خر کے می کے اق ے ددم یں ایک فرش مین ہے جو مس وت ر جوا را 
دواجہا تک فرش مین ہے طاسب سے پیل هکل اور اس کے معن سیکھناف رض ہے پر جب نماز فر م وی یا زکوۃف رض 
E‏ 
کر کے ۔ا یکو حدیثطلب الم ذریضقعلی کل مسلح ومسلم تد ال کے علاوویقیہ علو مک یناف رخ کفایے س ےک ہر فن 
یس عپور ها لک ناف رت کفایے سک سے کم ایک نان بر ایک ف نکاایک اہ ہو ناف رح کنایے ے۔ 


علم کو عام کرو اور جهوت کو نه پشیلاؤ 
لذت ات : ڪن بي ال غخرر رفس الله هما .قال :کال مول لو صل الله عم وس باعل و ی 
تشریح: شرا میٹ کے در میان .کٹ ہو کہ آپڈے یاراد حدریث تو راو لوق اس سن ےک یم تک طاقن 
حدریث یھ نیس ہو گا کناب ال رک مراد ہو نا گی تید ہے اس کر ا کی ذمہ دا کی ندال تال نے لے کی توبن الوب نے 
انان نے عدی ک تل راد ہے اور صرت بو لک ھآی تکااطلا نکر ےکی وج س ےک ترآ نکر مکی زمر داری 
اللہ تالم کے باوجو وجب الک نکی کی دک یگئی تق حدری تک بط راو ضر ور ی وی زمر دار غور لے 
کہ امت کے حوال کر دیا۔اور ی نپا که آیت سے اصطلا ی آیت مراد یں ے بک لغوی مت مراد سے مت علامت 
مطلب ہے ے ےہ ولبات یاس کو بھی دو سرو ںکک کاو الیل 
یراع وخ نیش اٹیل  :‏ دوس رک حدریث مم س ےکہ ہیاس راس ل سے مھ بیان ن ہکر داب دونول مل یل ے 


7 | جلداوں ند 
7 ا ان آپنے نیا سر اسل ے تق لک ےکی ممانعت فرا کہ درن اسلام دوسرے ادیان سے ختاط تہ 
ہو جب مسلمانوں کے اندرا سیکا مکیاد ر ا سے درن اد سرت او یا ے تم زک ےک صلاحت پم وتان کے شس 
وامشال باك رک جازت دی رتاک ال عبرتت ھا کل ہو اور عم کاورواز وبتر ت مو 
ون لق مت ںا: .پل هم مر تک کی رک یکی تومو کے ےک کول جوش می سکم انراد ند فلا 
اعاد شر وای تکر ناش و دا لے !حر می لآپ نے یہ تم بیان بای عدریتث بیا نکمرنے س اخقیاط ےکم ے 
علامہ ور شی تال فرماتے ہی کہ یس نے ال عدییث کے بان او کول جرت سر یه نقریباست رصخاب کرام 
ا ےر وای تک ن شش رو رة بھی ہیں ای لے ترام سک نز ریک و هریم بنانابیا نکر نامام لام ہے 
خواو تر خیب وت جیب کے ل یل ہو کک الو مہ جو نیباک ماهر ںکہ ایآ یکافر ےکر ہو رکا ر یں 
کے ہیں بک کی رونا کت ہیں کرت کر ےگا ناو ماف امین ا سکی ر وبی ت بھی مول یب رگ 

علم بزی دولت ہے ۱ 

رن ان : وخ نما رة کال : کال مولن اللو صلاللہ علیو سل من ئر رالپ ال 3 
تشریح: علامہ ور فرماتے ہی کر لفقه هو الٹوصل من علم شأهن لد غاب اس کے زر لیر 
رآ وصرث ے لیے کات کا کہ ا لکد روشن ما او رین ماک سین ن حرٹ پڈاٹل فقہ 
سے ند مرو یں کال تام ھر داید اط یق رس نی مج حن بھری 
ال لاف باتے ہیں کہ الفقيه الزامذق الدنیا الراغب ف الاخرة البصیر ق امردینه امدارم عبر ری یہاں 
حور تین ل بیان فرماۓ ان یں جیب دخریب ر بط ےک اشکال بوتکم حضور میم و بکو بار م 
سا تھے لم نکیا ج ےک مکو لفط وت او رکو فقیہ ٹیس وا ے نوف ا یاکہ می ڈو یی مکرۓ والاہوں اق اللہ 
تاد وال جح متعلق نم کااراد ہکا سے اسے فقہ عطاف راتاے۔ نج بات ےک ور برا تی مکرتے 
یب گر ہر یک لب استحدارکے مطاافق وس لک علت ذی لک یٹ مس با نک جاری ے- 
۱ انسانی ملکات کا ذکر 

لت ایت :کن أي هر یره تال : کال مول الو صل ان علیه سل ": الاس معاون گمعاین اح اة اخ 
تشریح: : جس طر می من جث الا کل سب براہرے من تراد فاو تک با اش یں ناوت ہوا ےکی سے سونا 
اتا ےکی سے چاند یکی سے پا یس * یل اکا ہے ای طرر انان ”ن حیث المادہ سب رار یں کر استعرار کے 
تاو تک بایان کے مرا اتب میں تاوت بوتا کہ وق وتا اک پا بت مغ کیساتھ 
صف ہوتاے اور زک رڈ اغاق کیا تیر تصف تس ہوتاے۔ اپ انان نود سس چواہرا اٹ 0 موز ڑکرصرف سناچاندگا 
اه دہ گی بت سی کم یی نی( پا دک اشر ف راب رات یں ای طرں انان اشرف 
وتات (۴) سو نا ند یکو جقنازیاد هگ می ڈا ل کر باعلا جتاہے اتی ال یکی تمت زیادہ مو ے۔ائی طر انان 


E‏ سن تسس وو کج بداں ھے 
تیاده نت وریاض کر کے اپنے شلک خواہشات کو جلا انا زیاد ہا لکیادام ورڈ ے کل () چاندکی سے کوج 
لار ےا یر انان ےبد پر زکوف ر۶ یت کہ یی اد وقت عبادست نآزا( ۴۳س نا چان که باد شادکا مرت 

` ہے ای رع قب مو کن هب رخداوندیی کا کب لور انان (۵) تام رون کل ترو ت سو نا چان دک کے 

زریمی ول عای سر انان کے استعال سے تروت ول ہے۔ (۹ سو نا چان کی سے زینت ما مم لک ای سب ای 

مر انان سے درا مکی زینت+وثی ے۔ 

عازن ییاز ن النشلاعر: مطلب یک جو شس یتخس مکار م اغاق اور ای بکی ات تصف 

تھ مان نے کے بد ا کار رجہ سب ے بلثر وگ بطم فققیہ ہو۔ تسب عالی کے سجب سے درچہ بلنلد یں ہوگا 

ایک ایک شف ا علی نب ومکار ماضلا ات متصف ہواور ووفقیہ یچ اوره و سر تس تید فتیہ رال نب وا یس 
ہے ودر ج لیا بات ہوگااور اسیک شس وع ب وال ج نر کان اور دو سرا کر فت کنب دا 

کل تیال فت کرد گا۔ 


دوقابل شک چیزیں 
تیش لین : نای مضغرر کال کال مرل الاو صل اللہ عَليووملّم لحد إن انت ال 

تشریح: ےہا جانا ہ ےکک یکی نھ کے زوا لکی نتا کے بو اپنے لے حصو لک نکر نااورخیط کہا اتا ےک 
دو سرس ےکی لقت کے انر ت ما مل ہوک تناک ناور ا کے زوا لک تمتا ہک ند اول پالا نفاقی ام ج ادر رای الام 
ہے اور بل جا کک تن وم روب ہے۔اب عدریٹ بذائٹش جو حم رای ال سے فیط مرا ہے۔ چوک ف حصول 
تو نکی تمنادووں مس مش رک ہے اس ای ککااطلاقی دو سره جائڑے۔ يم راد ےک اگ ضر چائہوتالوان وونوں 
س اون تش کب اک ان دونو ںکی فضیل تک بنا أن بش هر جائڑے اور کی میں ا تور 
تالكا راک بیہاں حصد سے صر ر نت وخر ۶ یں مرا اور جب ہے دولوں حہر کے ے رال ہیں اس ے 
بر کنر انان ے مکنا ہک یاگیااور نش کہ اک ان د ونوں کے صول 1 کے ےلاک ودا ی 
بھی تون کہ ا نکوحاص لکر نارود یچ ارچ بال رو یال دک ضردرت کی ںآ اتب کی در بچھوڑو 


۱ تین چیزیں صدته جاریہ ہیں 
ریت یت : کن أي هری رة کال؟ کال مرن او صل اه لملم مات ال مان انقطع عنه مله ا2 
تشریح: مطلب ىہ کہ مرنے کے بعد لکافائردداجرو اب بن ہو چنا اسان کر ان کے لی کااجرواب 
را و رنہ کیل توا نک بت ہو پاچ دو سروک طر پیل دوٹول می نو ارس ےک ا نک گل تھا س لے خواب مل 
را ےگ ترس بار سے می اکا ےکہ یہاں توا سکوی کل نہیں سے کہ تاب از ے اواب بے نے نہ وال 
بب ہیں ا رہ نہ مو کے لوول رن دا سس اناور مل ابیت کی نایر ول کے والر کالب سن ریغ ۱ 
سآ تاہے نت ومالك ییات اوران ولا کر من آطیب کب کم ان لے ول کودال دن کے کل کشر وقرار وی پھر 


نوس( بداں و 
ولد صا پا ےد اکر ے یا ہک سے والد 5 پکونواب انار ےکا گر ریا الوا ۱۴ھ لس ردول کی قید کا ی 
ول رکورعای تر خی ند سک ور نہد اکر ےکی صو ر ت میں ول رک کول تصوعیبت یں جو کی دعاکر ےکا رد ہک ولواب لے 
نطاب ور لان نے امام حا وک ہے ایک اکال ہیں ار دو سرک احا ہت سے معلوم ہور ہا ے ان ن 
مرنے کے بعد عم لکا تاب جا کید تا ہے ایک مراب فی سیل ال کااوردو ران من سے اما صریث پذاس جو تین پر 
حم رکیادہ ال ہو جاتا ہے وود ایام ارت جواب دیک دو سے شا مل عم نی مد میں واشخل 
هدرکن کے گل سے وو گل مراد جودوسرے کے مم لکیاتھملائے یردان کے عم کان اب مار س ےگا 
اور ری الاب اییے کل لکاذکر ہے جود و سر کته لکر قذ اب گا کب اس کم ہاں حصراضانی ہے۔ 


گنتگو اور سلام کا طریقه 
یت یت :عنآتی‌کال : کان الک سل اللہ علیو وس نکر کم ماما ۱ 2 
تشریج: ال سے مرادہر بات ںیک کول اتم بات ترا کے روک بی گنیس میس ہو پامتحدد میلس میں۔ 
اور ین مرج ال لے فرما ےک لوگوں میس تن در چ ہیں۔ ادف اوسط»ا لاک کہا جاتاہے ۔ کن لح یهمر فی ثلاث 
مراتلم یفھم اب او رک قوم کے پا اکر جو ین لا مک سے اس کے باس می حافظ این ام ڈنل نرا ے ہیں 
گآ پ گام مات ال ماع کر ہے ساٹ ی جن ایک ملام نکی پچ تھا نویک سملا م سا ےکی رف د ین اور ایک 
یل طرف اود ایک بائیں طرف (۴) ایک سلام ابتداء ا می اود ایک در مان می اور ایآ خی بی (۳) جینوں سا 
استیزان کے لئ ہیں (۴ )ایک امین کے ے اور و سراوخو ل کے وقت جو سلام الام ہے۔ اور تس راسلام رخصت۔ 


ففراء کیلئے چندے کی اپیل. .۰ . 
یت الات : وحن کریرقال: ان صني ات نن ول الو صل اه ییوس اء کو بغرا 

قشویج: صدرزہاردن کے د کیمک وق تک کہا اتا چاو ار ماع درمیان نار تور معلوم 
تا ای کر عر ا سے معلوم ہورہاے ہک ان کے پا ل گرا یل 7 هک 
کپ سے ےا کے دوجواب دیع ک(۱)پس هه 771 ۳ کا فی تھے و دواختارسے رولفظ اس لک گیا(۲) ج تھے وہ 
اپنے نیش یک میاه من لو ہگ ارچ غریب ےگ بہادر ے جس پر اف تقد وایبوف وال ے اور ہے وی - 
ارگ ول جو وذ ر عبر الق لک حضور پا سک نے سے ز کت ۱ 
مر وتسول الو صلی ا عَلیووسلم: ان کے کت وال کر حضو ر در مکو رشان رحن ہوک ج یکی 
۱ وج سے چرہافور تقر ہوگیا۔ ال کر آپ کے پا ا کو د سے کے لے بے یس تاو اک وچ سگم مر اه 

اور2 ے کہ ازواجع رات کے پا ھ ہے یا لپ رآپ من ری مش نکوردد وی تلاوت فرائ کہ 
کیت می ہہ کار کہ لوگوں پر اللہ تھا یکا بہت بڑااحسان ہے ا کا تقاضہ ےس کہ دودو سرول پہ اما یگرب نیز 
اس سے کی پر ان لہ مآد خی ای کآ دم یٹ کی او لاد ہیں۔ مار ایک نیف دوسرے کے لے باعح ث نیف ہو لی 


دس ٹر _ رمع | جلدادل ¥ 
چا لکد للم مرکا عبت تلا ا کک ایا خر نامان ار 
کر نا چان اور صقان نیل نے ا ااا 

تصرّقمجل: . وط کت اف ِ سا تا اوقت ل وگو ںکوصدرق پر ب اف ی 
ارے تال گیا الہ کر فان نے صدقہ دیدید یا ںکوا مکاصحینہ پڑھاجاےا کل میں لین تد لام ام کو 
فام فکز: کیان : 

0ہ A‏ کر نوز کے تی کی ددوجہ ہوگتی ہیں (۱)ل رگون 
کے صد ق هک وجہ سے ان ری بآدمیو ںکی شس مات | ی جک اور حضو ر هی یشان دربن رک 
` (۲)جپ لوگوںۓ بہت صدقہ دالو آپ رل ویآ کر می رک امت ٹیل بر رد لکاجذ پر موجودے لمزاچره . 
الو یتاپ . 6 ۱ 

من سین لمعته ت وت مراد جج سک اصل پل تی سے موجود تیگ رل وگوں نے۱ الي تل 

دیاس ۳ یل یہ راوج لک ای طرف ے کول فی سنت ایھا دک توب عت ج 
علماء وطلباء کے فضائل ۱ 
تن کو رن یف ان عن -قال : گئٹ جاسامع ال ال عشج رعق تاجن اج 

تشریج: ا یں ۶ کل پات ہے کال شض بط سے ہہ حدریرث موم تھی یرای کے لج ارو رس کر نے 
کیا وت ی وا اواب یب هک یال محلوم شی اب تفص معوم اج هط سس شی 
اب زیدا یبن ما ہی دو سر بات ,هال یب ےہ حطر ااوالدرداء نے ج عرمخغیان کیا ای 
ای تفر کی مرب تاو وی ملوب عرش دو مرک ترش ۱ 
صرف ان کے مرک مو نے اورسف رک لت یا یکره کے ے بیا نکیا۔ اهکناب ام کے ات کی مناسبت 
سے اس ےصاخ کاب نے اک دیا کید و سر حدم فکویان کی _ 

ملع ال پوظریقاین موی َو تار یط رک بک مل 
3 مق عا رہ ےکاجو جب ہوگادخول توا 

وق الک :و جنل ے اض حرا ت لوا شع مرا وس رن ہک کم نوا خهش لها کتاع ال 
میں واضشح مراد ے اور نف کے ی لک خی ماد سل طالب رتلیف سے بانے کے گے یی مراد ےک اڑنا 
بن دک کے قرآن ن وحدیك سے کے لئ بیٹھ جات ہیں اور طالب انو کی معوشت ونص رب یکر ے ایں۔ شش وا تعات سے 
معلوم ہوا کہ تمد ڑں۔ چنا حافظ این ا م0 مر بین شیب ے | 1 کے کہ م برش 
ایک یر ٹکی بلس یش کے تک ا نہوں نے ہے یٹ پک اور کی میں یں مڑںل شس تاس نے لور تیر اء اہ 
8 7 تروکل من وت فر شتو ںکاپرروندو لگ چنانچہ الین یبا ایا نیہ ہہ ہوا اہ ال کے دواول پاؤںز ین کے نر 
و نس کے اور یں رک مگیااور ا پر ول س ےکھالیل دو سوق رن یس ہے این کیا فراۓے ہیں کہ رسد میں 


لا درس مشکوة | 2 ا جلدارل ہے 
تل ر ہے کے اور جموارے مات | 7 ردق اک اک آہ ہآہعہ چاوور شتو کاب ٹوٹ با ۔گویاحدریث کے 
ات استہزا هر راید لی ا کہ دول پال زر نس کے اور زر ال تال حدریث تو کیاکی بے 
ال سے جع 

ول الاو ی ی انت 
ہیں۔ رت اب قاس ںکہ بیہاں عام سے دعام مرادے جو ماب ی یمن وصف نم الب موک 
راکش واجبات اور سنن مرها دار کے درس وت لی میں مصروف ہو جانا ے_ نوافال زار ویاوو تال اور عاہرے وہ ۔ 
عاپد مرا شج سکوضرورت کے ائرازہ 27 بھی سے کرو صف عادت نالبس کہ اکا او قات وال میں مض وف تاے. 
لی خف نی رکتا۔ ا عا مکی ضیات ال مار منک تاه کل دعد بے گل قابل ذکرہی نہیں 
پھر عا )کو ت ریات تشیہ دک اور عاہ دکوستاروں کے تیال کم جس طر ستار و نک روش تع ری یں یل لپ زارت 
پم رتاک رح عای دک عباد تکاذائر و صرف ابق ذات پر صر ے ووسرو ںکیک متحدری نیس مخلاف تم رس که ا یکی " 
رو ی وو مرو لک مت ری اک طر عام کے فا ووو سرو ںکک جرک ہے۔ پچ ر جس طرق رک رو شا زا 
۱ یک تدم شس ہے ایشا قار کاو سی و 
تسس مت 


علمی نکته متاع گمشده ہے 

یت این :وعنآي خر بر کال :کال مول اللو صل اللہ علیووس لالم مكمه كال مکی ۸۱ 
ویج : عدیث باش اي دک دفق ہک باس اک کسی نیال پا مل جائے فو در عقیقت فق ہک یم شرهچز 
ہے اس سے ما س لک راچا ےکی دک فقیہ ارکاز یادہ مقار ہے .ال شک نابل کی طرف نہ له جیا رس کر 
4 رم جائےاوزدو مرا تخس ترا لے لیتاے ا یط ت یں رکا الہ وہکیآو گے ایچھاسے باخراب۔ 
غلا کلام ے ے ہک اتا دکی رف تہ مهو درک دہکییساہے باس گی جا تک رف دیو یکن الوصا اعدیث 
سے تار ہو جانا کہ إن ہنا العلم رین فانظر و عمنتأخزون رینکم ۔ ا لت صاف معلوم ہوتا ےک ات کے 
کل وا طرف دک ھکر فق بآرو۔ جواب س ےکہ دولوں عدیث کیا مراگ لالگ ےک عریث اباب اه رگول 
کے ےک جن کے ان رعلا برای زک ے کی صلاحیت موجود ے۔ کے کچ در کرام اورد وس کرٹ ایے د ول ے 
باس می سے نیٹ کم لس ووستادکی انبا سی )کی با نادب 


ملم کو چهپانا گناہ ہے 
لت خن تاکن مر ام ای سر ومن سول کن ول ملع كه اخ ` 
روج :مان ے پاب ہو ف کی کے عوف ورگ () کرک تسه اي 
فوقیت ہو جا ۓگی(۴) کی ونیو ی غر شک بت (۵) کی سب اصول رین کے خلاف ہیں۔ اس لئے یہ سزاے۔ 


چا :8ے س ور 2( چا بلداں لد 

پچ رآ کک لام اس ے لگائی جا ےکی کہ م یکا مت میس لام لگا اس نے وہاں زا صن نش ال موی الب رن 
ملح تک ناپ چا تویہ مزال رکنتمان مان رائط کے ات ام ہے(ا)بہت ض رو ری شت ے کی ضرورت 
فی الال ہے (۴ اس کے پاس دوس راو باس والا ٹیس ہے (۳) عناؤاسوال کی کیا یکلہ خا غیت سے کی کے لے سوال 
کیا ہے ( )ای کے اند ر یکن کی صلاحیه ہو(۵)عاگم سکاو مز رور یی نہ د۔ اریہ ش ان چیا نے سے ویرک 
ا 

قرآن کی تفسیر میں رائے شامل نه کرو 
یت ایت : وکن ان با قال : قال تمو ل اللہ صل اللہ يملح :ومن قالن امزآنبر رتیت غ 
تشریح: سکونہ یتآ سے اور نہ ق رآ نکر مکی ات نیا عت سے ات کے اوی شی کر جو ور 
وص کے خلاف ہوء عل ملک خلاف و ۔ نی آیت کے میا وسباقی کے غلاق ہو۔ ان تام صو رل میں تیر 
ال رای ہو گی اورا 1 کید ے اور ایا ہو بلک او رکوک کات بیان »تا یکو تفر 1 نی لباک 
قرآن کا سات لغات پر نازل ہونا 
لذت الوت : وڪن ابن مخفررتال :تال ءشول او حل اه لیو ولم : "درل ال ز أن عل ماخر ا2 

قشریح: ہے عریٹ مشکل انار س سے ے اود مش کل ان اسک اعاری ک کہا ہاتاے مجن کے معالی کے اندر ہت سے 
اتلات جن از ريگ کن ور ناش ہو اور علا مک را مکا اس یل بت اخ فجن کے ی ن ةن 
بہت سے فاقوا ہو کے اس میں تقر یپا نیس اقوال ہیں چ هگنل جو اف رفس لات ٹیل اس کے بہت 

۱ سے معال یت ہیں بھی طرف وکنار کے می آتے ہیں اد بھی اسم ول کے مقاہلہ م آتاے اور کی حروف گی مراد 
ہوتاہے ال نے اختلاف ہوا ان علامہ حتف کےا ادال ف رما ہی یکر اک ڑا قوال ضوف ونر متار بر تال اعتبار چنر 
اقا لک بیہاں ذک کیا جاتاے (۱) بناج وک فر نے ہی ںک مات روف سے سات ترات مراد ہیں لیکن می ده 
توکس ہے ال ےک رولیت بل جک مات رو فکو جلاک ایک حر فکو الب "ی سات ق رات موجود ہیں۔ 
(٣)ہور‏ خلا ےکر امم مش امام ار کیت 0 اع کے مخ ابو عبید ابو ات تاش ا بر وان حبان و خی رہم کے ہی ںکہ سات 
اخات مراد جو ۶ر ب می فصاحت ویلا غت کے انار ے مہو ر یں _ ووت رمل »و از تیف ال ین ء پیل ہو 
تیان یز بان الگ الک نایک پر دوسر ےکا تفن مشکل ہو تھا سے اکر ایی لخت پر نا کیا جات توان پ لیف 
الایطاق ہوتی۔ باریس نات لفات میس ناز لکيایاورا شک مطلب کی کہ بقل سامت لات بل لس 
انتلاف وتا ے۔ ٹل ال تور ن :3343 اس حدی کی ایی شر کی U2‏ ار وا ا جا 
ہو جات ہیں۔ چنا نہ دوفرمات ہی ںکہ عضو رل بعش تک دنا یک طرف ہوک یگ اولین مقاطب ال عر بکو الاو 
امک اسلاج کے لے ال عر بکوا متا بک اک گرا نکی ہدایت + توس عال مکی ہدایت ہو اس ےکی اور ا کو 
چ بک ر ےکی ت نے بے تا لک ان کے در بر یادہ ی اس لے پیل ان ویتکا نے مہ راک جیا 


kk gew E‏ ہے نسشسنھش۔ باوج 


اسر برائیاں یدای طر تا ن اخلاق بھی بہت زیادہ تھ دوسروں می ای نہیں سے نیزسار ید نا حلوم تن ۱ 


ایران وروم سک تحت رال عرب الگ لآزاد تے اس لے ان یس اصلی فطرت ب تین فان سک راوس 
انان مایم نسبت دوصروں کے زان کے اندہ ب م کےکمالات موجود سے صرف ضرورت یک ري 
استعا لکراتے اس دو سروک فطرت بد لکر لای ب کی ی نیز عرف ز بان مس جو طافت ومزہ ہے دودو سرو ںکی 
بان یس نیس ہے الن دجو با تک اي ال عر بک عا ن ت رآن ود بن ہنایااورا نکی اصلا ریک جیراکہ رت شاه ولا 
فرماتے ہیں ان اه راد اصلاح العالعر باصلاح العرب۔اکے بعد رب میں دو م کے لوگ تھ ایک شب ری دوسرے بل 
وروی ان ڈو لک پان الگ الک ا بی سے سات تاک مشپور ہو گے اور رای ککیاز بان الک کی ارچ معان َف 
ل ہو تے تے ادب ایک ای بان کے عا رک تھے دو سروک بان اوا یکر کے تھے یرام س ق رن کک لشت قر یل 

. میں ناز لک گیا و موک س اط راف سے لو کفآتے ے و رب ی لف کات نز بان می داخ کر تاب 
قآ نکر مکو یں لخت میس بے ھن مکل ہ وکیا تو تضور مل مکی ور خواست پر اللہ تاف نے شور سات لفات می ڑج ےکی 
اجازت دیرگیا۔ چنائچہ حاوی شر یف میس حخرت الی ب نکعب ٹل سے رولیت کم ایک دفعہ حضور مل تیل بی غار 
یش قرف فرہاستے ۔ا سے میں رت جی مل علیہ اسلام تن لیف لا سے اور فا اہ اتال کم کر ے ایک لفت میں 
قرآن یک رس فرمایاکہ می رک امت تلف اللفا ت ہیں ایک لت مس مکل ہ وگ ود دک ا جازت دیاس 
ہب یآپ نے مکل ظاہ رک ہو نے #وسته سات لقا تک اچازت د یی اور فر ای اما انزل الق رآن على سبع ۔ا کی نار 

۱ دو سرک ایک اور رولیت سے مون ہے جو ابوداود شیف میں موجود کہ ایک دفو حضرت کم بن ام نماز سل سورہ 


ر قان پڑھدرہے تھے ات میس حضرت عم نا اس گزرے اورا ہوں نے لیم بن حزا مکوسناع رح کی ق رت کے ملاو ۔ 


دوس کی ترات سے پڑھ رہے مه حط رت روا کوخ ص ےآ یاد فما سے ہی ںکہ خیال تھا نرا ی میں الکو لو گر ھپ رکیا 
نماز سے فار ہوتے بی رووا گردن میل بان هکر ضور یل مکی فر مت می حا رکیااو رکہ اک حضور ہق نکر مم 
فاط یڑ عتتا سآ پ ملغ نے اي چا و ژد وم مس فرمایا می موا نہوں نے پڑھاآپ مك نے فاشکنا انزل 
پچ رحضرت کرت رای ہی وتوا ہوں نے پڑھاآپ ملس ذفرایهکن ا انزل- ‏ 

ادر ںار نعل معو خزی: پر حضور کے زب لاک سات لفات چا کی اور صر اکر نے ج رآ ن شع 
کیا ای سات لقات یلک کہ ححقرت زوالئو ر رین ضایف الت حر ت نانز ناولم خا عرب شس 
کیک چگ میں ما کرام یپ گئ ونو سام جحضرات بھی تے وہل اختلاف اقا تک با ایک دو سر ےکی فیط 
رن ش رو کیا یکہ ریت کیک ری لس تن زا کوک کار رک ھن لام قبل ان بھلکوا_ 7 
رت عثان بے تام یو کو ی کیااور حطر حفص وا کے پا لتق کیک صحیذہ قاس بھی اور بن 
کرک واخ ت قر لی شس کر کے بق تلام لفات کے یو لیکو جلادیاور چند من لگ ےکر اط راف میس ارسا لک دی ابر 


سے رت عثان چٹ کو ہا الق رآ کہا جانا ےن اال تعاس پال جو ق رآ نکر میم ے وو حطرت عثان وڈ کے عمکمروو ٠‏ 
0 1 0 بت 


7 


وی DE‏ ور کے 
لخت ترک نہ ے۔ نین کال سخا م ف سے ترآ نکر مم کے ات مان اھر ی »ال »و ید وعدہہ 
وعظ اور تن نے مہات مضاشی نکی تفسی او لک عقال احا ماران ض٠‏ واثال+وعد و عیداور تل فرماتے ہی کہ ات 
جوف ے ساتا م رادت کہ ترآ ب دنک ہدای کیل ناز لکیا اک یاگکیا ٹس میں سات اتا ہیں اور نے اک سید 
ار کول فا ع‌عرمرا اد سک کو مرا هک 13 ا نکر بت ما ظا مین لیک رنازل ہو 

رل آي ییاهر وبطان: برای کآیت کے ایک ظاہ ری مت بھی اور ایک نی ملتی بھی ہیں تست وه مت راد ہیں 
92 کو تام از بان سیت ہوں اور بن سے مرا ادوہ معن ہیں جو اد کے خا ی بنرے کے ہیں(٣)نظکہرے‏ وہ مت مراد 
ہیں جوا تقیر با نکرتے ہیں اور لن سے وه مراد ج کول :تاویل بیا کے ہیں۔(۳)ظہرسے وه رادے ج 
سن بی کهآ جائے اور بن ے وہ کن م راو سے مج سکوعاباءاضصول رڈ اش ار ہکا لے ہیں( ) ظہرسے تابن ے 
مجن مرادہے(۵) ہے تلاوت هرا .اور یلع سے ١س‏ میں ر وت ہک نامرا ارہ اور بہت سے االات 2ک کے گے 
ولل .میت متا مکوکہا جانا ے جہاں جع ھکر اا یکی اطلاع سا سل ہو کے ۔ ٹیل رگ جائے اطلاع عم 
ریت وم شان نزول ون و سورخ اور وہ تام علوم ہیں ن سے قرآن ریم کے ظاہری نی تلق رتا ہے اور نکی 
جاے اطلاعر یاضت و ماد وت کی فلس 


۱ علم کے بغیر فتوی دینا جانز نہیں ۱ 
تیان : ع نآ شرنرةقال: کال هرن او صل اه لومم من ی بقار ل کان نله من اء اغ 
تشویج: ن صاحب ےگ کار ہو ےکی دوش میں ہیں (۱ دمم ل(۳)مال ےکر ابی طرح تبن سے بغ ر فوی 
۱ دیاس رعام_چاو ربق قدت کے موا بجع و لال کیا ام رانفاقیے نایا ہو و۳ گار یس موک او راگ رومام و 
لس بھی جا تنا ےکہ یہ ام باہمیشہ غلط وک د تاج اوردوسرے بڑے عام ھی موجو ہیں تب کالب کو چتاے 

تو مت قب یکا رہوگ ۱ 

ریت لین : وعن معاریة - بغي اللہ عنة -کال : ال صل اه عليو وس ىعن الغلوطات ال 
تشویج: حا :افلویدکی جع ہے ی ات سا لک کہا ہا ے جو ظاہ رآبہت یرہ تاج جس کے جاب سکف 
لوک ماج ہو جاتے ہیں اور تمس تاه سوا لکر نے ےآپ نے نع فرما اک کہ اس میس ای ود 
دوسر هک تارمن گی ہوتی سے لین رومام یل میس ناب لو جزاے تد سے سی نراک بموجب 
افلوطت سوال بای ۱ 


تین خاص علوم کا سیکدنا 
ات وڪن کجی اون کخرر رض ي ال هما .قال :کال رل او صل اه علیو وس ول لکد 
تشریح: یہاں ا مع مکی دید دضہط مراد ہے کا ناف رخ کفاي ےک موف شم ران سے خالی نہ ہو نا چان (اقرآن 
کر مآ ر کی تفیل ات( )سنت تات یات العبادات من لالح وا سفن جو منسوغ لاور اپ مور 


چا رر Ff‏ سره چھا بدال ا 
او نکاما ے۔( ۳ )ری عاد لے م مر اٹ مرادے یاف رض عاد ل ہے رادو گم سے جو رآ وسنت ے 
متا ہو ئ عا قیال اب با اصول دنس نبا وسنت رسول ارو تال وال طرف اشاروہ وکیا اک 


کے مل کول ش رخال نہ ہوناچا نے ان کے سوابقیہ علوم فضول وز یادوڑیں چا ے کت چا ےہ کے 


کاب ا3ا( اک زگ کایان) 

کتاب .باب ۳۹ میں فرق: :مق نکی عام عدمت ےک لپ کل بک بوا ناب دراب وت رو کرت ہیں 
او ا یں ہے فر کرت ہی ںکہ گر تلف الا جنا مقر ال نوا مس ال ہیا نکر ناچا سے ہیں وبا کا بکا نون کت اور 
جہاں شلف الا نوا تر الا خاش مسا کو یکر مقصورہومانے وہاں لفظ بلب سے ٹون رک ہیں اور جہاں تیا 
میا یمان گرا ن قصوو ہوا ہے وپال لفظ لت وان کت ہیں_ ۱ 

اب مصنف علا م کلک تدا نکب الا یمان اود ای کے لوا تن کے بح ه کاب الا “کوش ر وں ]کیاکی ومک ہق رآلن د عرف مل 
امان کے بعد لوا کا درچہ ہے او یک مل کو مان کے بعد نماز یک گم یگیل او رآپ مل یمان کے بعد ماز 
کیک و نے تھے اس س کہ نا زا عباوت سے مجس میں تام پارا تک مقصود کل وج رالا تم پیا اتال ےکی کہ ام عپاراست ‏ 
کال مقصوداظہار پیت ے اور ما زکا ہر ہر جر کی وج الام دالب پھر نماز کے اندر ام عبادات الا موجوریں 
کید نماز کے اندر شجوات ہکا اماک پایا اتاہے تقایل روز هیال میس ست ر وات کے ےکپ ےکی ضروررت 
ہے اور ا میں مال خر +وتاه زآوۃ ی رات میں توج لاد سے تور کیا نزو ناس ی چ ری عباد تک کی ہیں دہ 
سب از مآ جا ےکو کف زا وکر عباد تکرتاہے جب ادرخت ویر نما یس قیام ہے او رو بی ھکر عباد تک رتا سب 
تج پہاڑوغیرواور نازخ ود ہے او کو کی لی تک عباد تکراے جیسے ہانپ دخ رداور نماز یس ایشا ے بحالت چوراور 
جع رکو ری عالت بیل عیاد تکراہے تچ چو پایہ نو اور نماز شی رکو ے بنا میں امان کے بعد سلو کورچ رما 
اور تما زک مو توف علیہ ہار ت ے بتار ی طمارت دش یط شر ملد 

اب طہارت کے لفوی مق النظانة والنزاھة من کل عیب حسی اومعنوی. او شر مس طہار تکہا جاتاے نظافة البدن 
والثوب و امکان من ا لحدث وا حبث وفضلات 2 


پاکیزگی نصف ایمان ہے 
یی ری :عق يمال لد شعري قال : قال مشر ل ال ایوا ررغ ھتان 
تضریح: کے ”ن نمف ہیں جراکہ ر وایات میس نصف الا یما نتسه اب ال میس اخکال ہوا ےک جس نما زکا 
مو توف علیہ طہارت ے اکا لواب یکلم تما عبادا تک توب بھی این کے ٹوا ب کا آدھا نیس ہو سا سے وم طہارت 
نف الابما نکیا ہوا ا کی تلف تین (۱) مطلب ہے س کہ طبار تماخض اب م لکرایمان کے اص . 
ٹوا بکانصف ہوگا۔(۴)ایمان س تکار وصفائر ماف وس ہیں اور طہارت سے صرف صفام محاف ہو کے ہیں۔ اس اعتبار 
سے نص فکہاگیا۔(۳)' یمان سے ل کے تما گناہ معاف ہو جات ہیں اک مرح طہارت سس ھی سب معاف ہو تے ہیں 


چا سر ےو وو ہے چا بدالل ا 
ان بخیراییان کے ا سکاکوئی نار یل با علیہ خم رک ا(٣‏ ) میہاں این سے صلوۃ مراد ے تج وماکان ملیضیع 
منکیم ای صلواتکم اور غر تشرط ے الزامطلب باکر طهارت صلو کی غ رط سے۔(۵)امام خرزالی کات 
نے فرمایاکہ ایمان بی دودرجہ ہیں ایک تحلیہ کا دوسا لالز طهادت سے لیر ہا کل ہوا سے اذا یما کا ضف 
ہوا۔(۹) یہاں شر سے مطلقا حص م راد ے نصف مرا یل زاوی اشکال لس 
وا لوٹ نماز نشاف خواہشات و ٹیا کرو رک کے باعل کوآہا اکن ے اسلے نو ريز ان الصلو تھی 

کن انحا وا کک الا اق درب سل راط ہس ريد رت تلا ایال ایک پک رل یراک 
رايا ماهم ف و جیهم قن أَثر السود 

والقَدَكَدُلْزْمَاغ: اپنےایمان‌اوراللد رک بت هبل مک کک وک انیبان اور ال دکی محبت تہ ول وص رم نہ ین 
کے دن جب ال کے باب میں سوا لکیا ماتا صرق | 7 اکیاراست ازیو کے راس یں خر ند پیل ہوگا۔ 

دالب ضیا: صبر کی اقسام: بر ے بر گور و روف مرا او ہے اورا کی چٹ یں ہیں الصبر على الطاعات. 
والصبرعن المعصیأت :والصبر علی البلاء و امصائب۔ فیا ء کے اندرز یااود و ے ہہ تبت نور کے تھے رآ نکر میں رکو 
فو رکپاگمیااور سور کو ضیاء چات ف٥و‏ ال جَعل الس ضھاء الق توا ۔اود ص رکو ضیاء ای سے ےکہاگیاکہ مر 
کے سوا صلوچ وص رق ےکر کل ے تور سے عموم مراد ے اور ظاہ ری را معلوم موتا ےکی وک با ٹل میں ای کے 
تین صلووو ص د ہکا زک ے اور حدریث ے اهر مضان کو رغ رال رکماگیااورروزہ کے ذریع تام تفا وشات دب ما 
ہیں جو تام عبادا تکا بدا ای کے صب رکوضیاءکہاگیا۔ 

تین جیزوں سے گناہ مٹ جاتے ہیں 

نیت الت : رکن أَيهریرة کال: کال سول افو صل اه ليوام آل نکم عل مانو ابوا تابا اخ 
تشریح: تو نطایا سے مراد معا کرد ینا یانامہ اال س ےگنا مو ںکو مایت مراد سے جیا کہ ق رآ نکر کم ٹل ار شاد سب 
اوليك بل الله اة عسنید 

نبا غ الو على اما رو: ہا الکو کی رورت( وضو سے تام کش جات رآ 
کر کے کال طور پر وض وکر نز )٣(‏ مق ہار فرش دجو نے کے بعد اطالت غرة کے لے ہے زان حصہ دنا اس یر خضرت 
اد رمث دال ہے ادر ہے تب سے بش ریہ فرح نہ جھے۔( ۳م وضوے فارن ہہونے کے بعد ایک چاو لے 

11 با ڈالدے هک سے پر نار ے ای یر رت می لے پچ کل دای ہے اود ماگ بھی چند صورقیں ہیں۔(ا) بہت . 
یدرد یکا موم کہ پان سے بہت نیف ہوئی ہے (۴) یم میں زم س کہ پا استعا لک نے لیف ہنی ہے تب 
بھی کال طوری وض وکنا( ۳ )عدم پا یک باپ زیر ل/پالّےغوچے۔ _ 
گرا ک دوصورت ہیں۔(امگھر سے ہر بہت دور ہے تب کی جماعت غل چاناتاکہ قرم زیادہ )ود 
(۴)پمیضہ اعت مس باتک مصو رک طرف قم زیادوہو اگ رص رقریب ہواور و ھوٹے قرم یاه قدم نا 


تسس سے 
2 م جانایے مراد لس 

۱ نیام لبنت ال ۱ ال کا مطلب ہے ےکہ ایک نما کے بعر دوس ری نما زگ گر رل یل پیش ہو جیی اک بخاری 
اور کمک شجور حدیث ہے جل لب ناتساد ت ج ایک نماز کے بح دد ری فا کے ے 
مج میس +یٹھار ہے۔ ال اگ کان ای کیب یال کے حت موگا۔ 

فَذَلِگُم لبط 7 ار هو تون کی رف سے یاصر فآ ری مرف مطلب ہے کہ جس طرع قاری د گنت 
هداد ی کے لئ اسای خرن رای منت ی رع بایرد من شیطان کے مت هه 2 ےرل 
071 وہ بای دارالاسلام تلب یں داش نہ ہو کے اور بو یا تیر کال سک ہر «دارک سے ال 
سے د لکی طفاظت ہوٹی ہے کہ اکٹ رلوگ صرف پل کور بط ھت ہیں اس لئ تم ریف الست نکر کے لور رال 
کیا تھے بیا نک کیک ا کل مل بی ہر مدا رکاسے۔ 


وضو سے گناه دهل جاتے ہیں 

نی یت : نآ هرن »غي اللہ ڪه قال :کال ,شون و صل اللہ لملم تشن اماد اغ 
تشریح: عدریت ڑا میں اشکال وتاس ےک گناواجرام ین سے نس سے بک اعرا میں سے سے اور اتا رور مت 
وتا اجرام کک اعرا اک٠‏ یہاں کنا دک صفت اف خر و وگب تر ارد یاگیا۔ تو علاء نے ال کے بہت جوا بات دی 
نس حرا ت نیباک اس سے معاف ہوم رادے :اور نل ن ےکہاکہ مٹاد س کو خر وج ے تج رکیا۔ لین ححضرت شاو 
صاحب الف بات ہی کہ نراقت گول ہے۔ ان ام مال کے نتاس یارجام س 
چوا عراش ہیں عام مان وواجمام و چا 2 ہیں اور کر کت او 0-2 یا کر 
ہیں فلااشال‌فیت ‏ ۱ 

دو رکی کٹ ہے س کہ SM a‏ «ماعت 
بسک ںکہ دورس تو ی سے معلوم وتاس یک کپا مغ معافت کیل ہو ے ہیں چنا ئی ینف روایات میس اموت ٠‏ 
کیہ کی قیدآئی ہے۔ نیرآ نکر مکیآیت ان تیذا گجایر ھا نون اح تھی اس یرال ہے بان کٹراعادیث شس ج ۔ 
کی دو رد یرنه الب تک طرف شاا ءکرنے کے س که ملا نکی شان بے دنچ کہ اس س کیره 
صاددنہ ہو ء اگ رئاد موں و مر ومو نے ال اور ود اغیر تو فض ال اتال سے محاف مو میں گے_ ۱ 

قیامت میں وضو کے اعضاء جمکتے ہونگے 
لد الات : وع أي رة کال :قال ,سول اذو صل اه عیو وم يعون ترم لاخ 
تشریح: عبال امت سے خواص امت لاد تگزار امت مراد ےد پھر عدریث کے دو مطلب زی ۔ ایک ہے رک نکانام 
لا پل ہوگا۔دوسرامطلب ہے کر ا کو ا بک لہ کے پکاراجا ےگا ر تش حرا کے ہی ںکہ وضو کے ہے ار 

صرف امت میم کے لے اص ہیں دو سرک امتوںل کے وضو کے یہ آثار سول گے۔ لن اظ ان و 0ت 


7 :هتشر جدیں ہے 
فرہاتے ہی کہ دوم ری امتوں سک بھی انار ہوں کے ۔البتہ امت ہے کے نمایاں شا نکی سا تھ ہوں گے کی وک ضور 
ےڈ کے اندر شان عبریت فالب ای ےآپ مو کی امت یں بھی یغاب موی ۔ 


استقامت کی نفلت 
ایت ند لبان( مضي اه ع عنم قال: قا لشو ل صل اللہ علیو وس امکقیو اون ضر اَاعْلُواالح 
تشریح: علا ی لان فراتے ہی کہ اتقام کہا جاتاے اتبا ع الق واقامة العدل وملازمة منهج الستقیم_ 
دڈلک خطیب جسیم رف را اک کو ری طر نی کر کو گے تک س ےکم اب ری اقاپ موق کر ور وو بث 
ہو گی اتا مت زور وضو ام کی مواظبت بح 7 اس وآداب رات کرت مو ےکر واور پا ی مواظبت بی ے 7 
یش پاوضو ر باس ہار اب قلو ب کے ہی نک یش باوضورے سےگناوے تفت ہو ے۔ الو ضوءسلاح الومن- 


۰ اب تاج اوه وج(تا نش وضوکایان) 
ال شی اتھالی طورپر ہے چا ینار و ہ کہ نف پاک لک جن کے موجب وضو ہونے میس جمہور ای وتان 
وا گرا مکااتفاقی ے اور جن ٹیس احادی ثکھی مطا بن ہیں ء هار احادیت ہیں ہیں۔ کے یقاب٠‏ پاخانہہ خر ور ک اور 
بش چز اک ںکہ جن هامریت تھا ر بہیں۔ بن بر بی ا کرا مات اختلاف ے یل مس ال نکر ومس 
مرا نماست خاجة من خی السپیلین»اور اف زین انی یں نع شل الط خی کی وج سب شآ ہوک کان 
20 کرام ما نکاا یماح هگ بس کے عدم موجب وضو یه و ضو مأمست النارب 

وضو کے بغیر نماز صحیح نہیں 

یت لوزن :عن ان ممزقال قال شو ل ان صل الد علییوس مر تفیل صَلَهبدث هري :ولا ص مین لوا 
تشریح: امادیث کل لفط ول و و می میں تم لموتا چت 
(ا)آن یکون اش مستجما للا کان والشر انط اور ہے مرارف سے کت وا ہزاء کے تب عریث عل لا قبل صلاة 
اض إا ما )۲ )ادر دورب ن کون الشئی یترتب عليه وقوعه عند الله موقع الرضاء۔ اور اک پر درچات وتاب 
مرتب»وناسب- کے عدیف مل ےل قل صلا اہن الاب ئی تزجع عت ہراس قبول سے باجم مامت بط ”ی 
مرادے۔ اب مطلب یی ہوالہ کول نما خر وضو 3 یس ہوئی_ اب صلوو جازم اور ره تلاوت پر صلوویاطلاتی تس 
لئے لا کا اتا ف ہ وگل سلو ۃجناز ماو رہ توت کے لج وضو شرم ے پا یں ؟ مور علا کے نزد یک ووو کبلع وضو 
رو ری ے اورامام شجی کے نزویں صلوم جنازہ کے لے وضوضر گی یناو از یی کے نا ضز وف کے 
2 کی طہارت شرط کییں۔ وہ ات لال کر 2 کہ صرت میں ملق صل وک یکی اور تک اطلاق فر رک ی یر بولا 
اب اور صلوۃ جناز میس قش ےک ال یس کور ره تچ اور یرہ تلاوت می کی رگورع بل یبای 
شر یف تلا عم رواک کل ہے کان یسسجد علی غیر وضو- ور عدریث پذاسے ات لا لک ے ہیں ال کہ عدریتثف شس 


»من وس بر و 
کہاگیاک کول نماز !خر طہارت کی و ئا تی ہوا لو یز چده تلاوت نما ذکا ایک بء سے اور جس 
کے کل لے طہارت ضر ورک ے وال کے ج کی لغ رطہارت کے کی کل ہوا اور ان لت ان رکا جو اب ہے سے 
EEE GOES‏ ران ے۔ اذاتھار ضاتساقطا اور جناز ہے لے سلو کااطلرن ہو 
ہے جیے صلواعلی اخیکیر النجاٹی۔ اذا کے لے بھی طمارت ضروری ے۔ 
مسئله فاقد الطہورین : فاق الطھو رین ای خش انا توا کش م وک و 
وا ن عم سے پارے میں بہت سے اقوال ہیں امام با کل کے تزریک لایصلی ولایقضی۔اام انی 
ننک شہور قول کم یصلی ویقضی۔ امام ابو یف کے نزو سیک لایصل ریقضی» ام اص ے زدیلیصلی ویقضی. 
ہمادے صا ین فرماتے ہیں :یعشبهبالمصلیں ثم یقضی۔ و علیه الفتوی حندالاحناف۔اور شر لت میں ا کی بہت ی تقر 
موجور ی ل کر ار یقت و کر کے نواس کے اتی تتش افیا ررست_ مل یک مالک تحرم کے سره بال نہ موں لو 
طال »وت وقت تخبه باملحلقی نکر اگو گا آری از مش ترآ کل یه کاس و«تشبهبالقا شی نکرتے بہوئے 
مونت پلاتار ے کول تی وال مان کے د نکو اک بو اب یت صوم یں رک سعتی وس کے لے e‏ کہ تشبه 
بالصائمیناغتا رکرے و یال کی ید از 7) تاک رتشبهبالصلین اف دکرے۔ ۲ 
َلَاصَدَكَذُمِنُُْول: ول کے اسل من غیت کے مال سے چو در یکر تاچ راس میس وسمت موی اور رم کی پورگ 
کے ال لیهست کار مطاقاال رام لا ہونے اور یت زا یط مرادے 2 
ال حر ام سے صد ق کر نے یس واب ونر سب با ثواب کی تک اس دک رکا خطرد ہے اب جب یہاں ول 
سے ای حا ر ادیپ صاف ال رام تر بول کر لول کے لفظ لا نے مل ال با تک طرف اشمار در ےکہ جب مت کے 
لپ جونے کے بوجو دیز سے پل صرق سا الیل ال یں ہے اس سے صدقہ 
رن کا اکیاحال ہ واو رائ راز هگ راو 
اب بیہاںاشکال ہوتاے کر اتا فک * کتاہوں میں بر ون کہ مال ام سے صرق کر کے وا بکرنے می کف رکا اندلیشہ 
ے کمایشر حدما لمحتا اور نت کتابوں میس ہے کہ اگ کوک مال حرا کا مالک ہوا روم یی صلی مال وی وال 
کہ ناچاتاے راک یس لاور نہ ا ںکاک و وار ث ا ہے فو برامت ذم کی ہے صمو دت کر نق راوپہ صرق کرو اور ال 
کالپ ثواب یس هک کمن اهدایص یم قول عریٹ ذاسل ظا ف قوس ی خوداحزاف سل قول ے بھی ترش 
ہے تو رت شاو صاحب ق2541 فربا هل کہ بیہاں ال یں دہ بات الگ الگ ہیں ایک ے مال خی کو حاصل 
کر کے اس سے ص دق ہک ناوراک مال کے صرق توا بک امب کر ناو دوس رام شاد کا اتا کر ناوراک اتال پر تا بکی 
امیر کر زا عرمث اور پل تول ول بل سورت پراوروو سرا تول گول ےرو رک صورت پر فا نوار ش‌ولااغغکال- 


مذی کا هکم 
دیش لت : وعن لن کال : لاملا قکشث نط اشخان E‏ 


٦ 


2 ورس هک( سر 0 جلداول‎ E 
تشریح: اغال هل غن حدریث کے اقا سے ایک ال ہوا کہ ال دوایت یس س ہک ظررت مق راو نک م‎ 
فرمایااورانہوں ۓ سوال ددم کیاردیت میس ےک ححضرت کارا ٹک عم فرمایااورانہوں نے لو چھا ہس‎ 
ورش روایلت ئی ے کہ شور حطر ت ی و نے سوا لکیافتوار ضت الر وایات-‎ 
جواب امن حبان نے ان روایات میس لول یں ر یک اصل میں ول حرا ت ایک کی میں ڈیہ ہو سے تھے ۔اور‎ 
رت لها عا لکا نز ریاد دوف سے مل ور ات نے کے لن ےکہانودوٹوں نے در یاف تکیا بر مزر‎ 
امین کے ے خو بھی در یاف تک لیا اور ان ےکہاکہ ارڈ ادر ای طرف نسبت ی سے اور ححفریت ی‎ 
پاپ چوک مکرنے وانے تے اس لے ا نکی طرف کی بو ات ی کرو گی را از زی‎ 
نا پا سے اور ال کے وت شس واجب کی »وتیل صرف وضوواجب ہوتاے کان اختاف اس بات شل ےک‎ 
صرق مو نع ماس ت کاو حون اض رو رک ے یام زیر اور ی حص بھی و مو ناپڈےگا۔ واام ابو یر وای نانک نزک‎ 
صر فمو اس تکار ونار ورک ے اور یلماک داح له سے ایک رولیت ادا دوع کر ولیت ےج.‎ 
کہ لورت ذک کار ناضر گے اوراگی تم رولیت ے 27 یم نکادھوما بھی ضر ودرکیےاگیاد ولاو ین و ت‎ 
راف بن حدم کی رولیت سے شس میس یفسل مذاکیر کا لفط ے اور بان سع رک رولت ٹل فیفسل من ڈالک‎ 
فرجک وانثییک کماف ای داؤد۔‎ 
امام مولام شاف تن اتد لال ین کرت ہی ںکہ حر رش کور ےکہ من المنی الوضوء۔ اور‎ 
ایک رولیت یل ہے اھمایعزنک من ذالک الوضوءاور ا ملک رولیت یل تو ضا واغسلہ ہے۔ یہال رزیل طرف‎ 
دات ے ام زا صرف بز یکو ر سو اض رو رک ے نج زجب ره لوا ول وضو میں سے ےو نر وو اش شی طرفت‎ 
مومع ناس کور عونت ہے اک طرع یال بھی صرف مو شح ھاس کو ر عونا ض رور ی م گا عزید رآ چک سل‎ 
خلاف قیاس معلوم بوتا ے اب جن ردایات سے ایام مالک واتھ ادن نے اتد لال اچاب سے کہ دہ کم اسای‎ 
سے وہجو لی کی قاط رہن ہو کے کے لے بطوز علخ بے‎ 

مسئلہ الوضو ممامست الغار 

زیت لین : نأ شور قان: يعت مول اللو صل اه ومام رن ور اتاتب الاب اغ 

تشریح: آ کل ال چ رگا بیرق وضو پارے می ابر ال اي کرام کے در مین یھ اختلاف 
قاط میا ہکرام وھا تقض وضو کے تال تھے جیسے ظرست این مره جریرہ اور زیر بن مت رهم 
دوسرے ام کرام پان کے نزو کیک وہ قش ووبب یں تا لے خلفاء راش »ان حور اہن عبا یکو ر 9 
لن ال ان 7 "رو جن بیس وض وکر ےکا رآ یاب اوردوسرے حنقمرات کے پا ل بے ار 
احاریث یں جن من کوک ہآپ .مامت لا تاو رای نامر وضو کے نمازیڑ کی کے عرش ان 
عاو سویرن نھان انس ہن مان ک۷ام لاور مور م رم ی تنم مامتا نکن م وکیا 


ا 


1 


دنسر ہو ہس چا بداں لے 
رم تقض یر نیزا ہکرام لس کوک نت وضو لگ 
اب جن اعادیث یل وض وکا امر ے ان کے ف جوابات د ہے -(۱)صاحب صقن تو بے جاب دیا 020 
” شور ہیں۔ حضرت این عبال ا کی عدیمت ےک ا بشول ای صلی الله ایو وسل اکل کیت ماو .فعض ول 
رتا ا قرش نیہ صراحبولاات نی سک کی ای ده یبال جار ت معلوم یں ہو کے هک امن عا کی ریف 
پل ےکی سے اور وضو وال اعاریسث بح هگ ے للذ اکا ہے ےک رت ہام پل کی عر کو نا قرا دیاجائے۔ ددفرماتے ہیں : 
کان خر رین مول الو - صل اللہ عایو سل -تزاٹ الوضو ,امت الا کماف ان داؤر۔ 
نض حفرات نے دوم رار اس ایا رک یاکہ ا کو ضور قرار نہ دیاجاۓ امد اا ن کے نزدیک تلف جوا بات ہیں (۳) یہاں وضو 
سے ش ری وضو م راو ال پل وضو لغ وی مرادے وهپ تم من دجو اےء اور بہت کی احادیث میں وضو ے لوگ وضو مراد 
گیا کے تر زک دغیررش ے برکة الطعام ال وضو قبله و الوضوء ہیں ۔ (۳)وضو شر ی نی مراد گر اھر بطوز 
اا د وجل ھ0 لگ مظہ رغضب ہے نیز شیطا نکاماددے ان کے اا تکودو رک نے کے لے ور اتباب 
عم دیاگیا۔ (۴کمامست ان تیال کے بح نان کے اتر جو لیت ی دھ تت ال اور مایت غال بآمال 
ہے۔ ناس کے اند رای تکیت پیداکرنے کے ے وض وکا کم ريگ (۵) حطر ت شاد ول ان قراس ںکے 
ار وتو کر ےکم وم کے لے ئ02 کرھا۔ _ 


مسئله الوضة من لحوم اذ بل 

ریت الت : وغن‌جابر 00٣"‏ شول اللہ صل له عليه مل کوش من رم الکو 19 

. تشریح: رٹ ن کور مم دو جزء ہیں۔ پہلا یسک جرب کاگوش تکھوانے کے بحر وض وکر کے اور نهر نے ٹیل افقیار ۱ 
دپاگیااور اونٹ کےگوش تکھانے کے بعد وضوکا مدید قاس پا میں ائ کرام کے ور مین اختلاف ے۔ فقہا ہک 
اتلاف :ماما وا کن فرماتے ہی لک وم از لکھانے سے وضوٹوٹ چاتا سپ اور موم مامست انا سے یہ خر مذاال 
کے شور ہو چائ سے ہے حم ضور یل وکا کلام مم اور شای اور امام انکر مھم اک ریک وم ایل بھی 
مامصت النارل دا لے لزان ا یں ہے۔ ایام امھ وا اخ عرف زور اتترلال مر نت ہیں۔ تز الو داور 
ریف میس حفرت برام ان عازب پاٹ کی حدیث سے ات لا لک ہیں: سیل شون الله صلی الله علیہ ورن 

افو رین نوم الإب 0[ ۱ 
مورا نکی دی رفس ھی اس مات 
۱ کہ مور وتان عدم تقض وضو کے تاک ڑیں۔ جتان لام اوو یتفر ہے ہی ںکہ بیان مسعود ءال 
ب نکب این »لد یرای نب ہے۔ رک بات جو امام ویتکا کے راک هام 
وم دی ووم ابل مت ای لول فر للم زاوضو کے بارے مس مبھی فرت نہ ہو ناچایے۔ اب جن اعادیث ٹل 
وضوکا خان وتا بات ول مال ےچ تش ارز اور لک خصو می جوابات زک کے بات 


سروس رن ال 
ہیں (ا)چ هگ اونٹ بہت سیر نورب چنا نش اعادیت ٹیل اون فکو خیطا کیش یک اور جس چاو رکاگوشت 
اي جانا ا ک نہ یھ اش رآساتاہے مزا کو زا یکر نے کے لئ وضوکا کم يا )٣(‏ ححضرت شاه ول نان 
فرماتے لک لوم اب ل کا کلپ ام کیا کیا تاو امت جج یہ کے لئے صلا کرو ی اا ی کےکھانے کے بعد ت 
کے لے وضو کا جم د یگیل )٣(‏ اذ لو دول ول میں ہے شب ہآ سکم ےک یط رام قااب کیت علا ل ہ گیا کھانے یل 
کسوس ےآ سکس ا ںکو زا لکرنے کے سے وض وکا ميا 
عد ثکادوسراجزء یہ کر اونٹ کے باڑے میں نما زب کی اماز ت ول د یکی او هرک کے باڑے می اجازت دی 
گئی۔ اس بنا لام ا وان وال وا ادیک مہ رک ال میں نمازٹڑ نا یل اک کی نم فی تذاعاد ضروری 
ہے ۔ ہچ ور امہ کے نزو یک نمازث یق و کی وجو با تک بنا کرودے۔ ۱ 
ران اول اک عدیث ے ات دلا لکرتے ہی لک آپ نے من راید مورا اتد لا ل کر ے ہیں جعلت الأ رض کلھا 
مسجلا وطهو راا نگ اماریٹ ے جن بیس بیو ری سر زین کو کل سلوو قر ارو گیا کے او لچر واإوزرگی مور حدیتث ے۔ 
امام ات وا کن هن وال وا جن کی کل احعادیث سے اتد لا لکرتے ہیں جھہو ر کی طرف سے اکے مخلف جوابات 
OLE‏ شریر جار ہے اس کے پال نا ین میں خشوع وخحضوع ما کل یں ہوک وکل فظرهس ےک اکر 
چٹ جائے نو جا کا خطرہ ہے اس لے عک یاگیا۔ ( ۴اس کو شیطا نکیساتھھ مناسبت بنا ببس اس کے پال نمازیٹڑ کے سے 
شیطان وسوسہ ژاتاد_ ےگا۔( ئل عر بکی عام عات ی کہ اونٹ کے باڑ کوتموا یں ہنا کے تے انوا اور 
ہراون ٹکا تاب زیادہ ہوتاے دو رک سرلی کرجا تھ نیز دداونٹ کے باس ےکو صاف "نا نیس رک ے بل خوداس 
کے پا یا بکی اکر سے تھے اس لے اس کے پال ناس تکااندیشہ ہوتاتھا۔ ان دجو پا کی بنا ماع ےکی ماص تک گئی 
اور لول میں ہہ وجو پات موچو ر ہیں تھے بنا بر میں دامع نی کي 
مسئلہ تکبیر التحریمه 
میت یت : وعن صن روغب الله کن کال: کال بشول او صل اللہ علیو سل وفتا خ ال الوم ال 
تضریح: حریث زایش تین اجزاء ہیں۔پہلا فا الق لا ات کول اختلا ف لفق علیہ ستل ے۔بقیہ 
دووں رل اختلاف چا میس لمعلا لیر اس مم انتلاف ہ کم تح ریہ کے ل کونالفٹا رض ے۔ 
ققها حتاف :اام مالک دام رکا اذد کے نزدیک صرف لف ال اکر کے دو رے کالنات جر ادا لو 
کالم شای ھکال کے زد یک الیل اکر اور ار ار فرط .ام سف اکال کے خزدریک ان کے سات اور 
دوف وال کی اوہ اللہ ارام ابو فیذہ وم رتا از کے نزدریک وم اف ار گر واجب ے اور فرضیت ارا 
ہونے کے ماکان سے جس میں الم تیا یکی قم موجودہواور یات ناکشا نہ ہو۔ کے له عم لاله ال 
له سبحان اڈادوغی رپا الغ رس وہ حرا ت با کا تاره اور امام صا حب تفت مع یکا گر ہیں۔ امام 
ایک دا رتا ای امت لال جن کرت ہیں ”ضور مل مکی حداومت ‏ ےکآ پ می یش لفط ”اکر کے تریمہ 


کیا رس هرن سرت »و جدال 23 
الد سے تھے ءال کے علادددو سرے لفط سے تخریہثابت یں ہے۔ اکر ہا موتا آپ 7 مین جواز کے ے ےکم ےکم 
ایک دفعہ "دورس اف سس تر ادا گر تے_ تو معلوم وال لفظ ال اکر کی ضر ورک لام 205000 فاۓ' 
ہی شک ادا اکر میس ایک اتا سے تھے کہ آپ سے ابت یں کر جب خر معرف لامج وکی۔ او مرک ایز ہا سل 
ہوکیانواسں یکا انار ہو گیا لیزاا لے بھی جا ہوگ.. امام الولو سف کت ہے ہیں )کہ ال تال کے ںا 
تفحیلکاصیذہ بھی ماخ وصفت مش سک بیس سے لاک راو ری کے ایک بی ملع ہوں کے بنا ری الد کی ون اي 
بت تمریمہ ام دا ال علاددیہ سب رات حدیت پا کے ماک حالس ات لا کے ہی ںکہ با 
مت اور مرف ہیں جو حم رفاک مر ےچ ہیں تو طلب یرہ وکاک جر هرب ری لا او ای غ کر امام دی اور 
مت ان کی (۱ )د کل ترآ نکی مکیآیت ے وگو امم جم صلی ۔ یہاں اسم ر بکاؤکرے خصو س لفن ط گی رکاذکر 
یت کی تو معلوم ہواکہ اللہ کے اسمام کی میں سے جس سے کک رم رم لیا جا اداہو اک ٣(‏ )دوس ری ول 
وک قیگنزیہاں مخ مف رین کے ہی ںک کہ ر سے مرادلفظط اد اک نمی بلک اس سے مرا عم ہے۔ تھے دو سرک ایت میں . 
ہے قولہتعال ا اك ة تک یہاں اکبرج سے ن مرادہے.(۳ تس ری مل ابو کر رازیا ام رن غر ے 
.تور تال لہ الما ا شای قاذغۇ یا ی ما تل غوا قله ال نْمَاء الشا پان جن تسام ہلا ےکا کہ 
ہے ایس افشاح لوق کے وقت ہلان کی شائل ->-(۳) چولب ےک مصنف ان ال شیر تلور ےک “معت 

٠‏ آباالعاليةستل.بأي شي کان الأنبیا یسضتحون الصلاۃ؟ تال :باتوحیں, والتسبیح الیل .(۵) نت رات 
یں بای شی ین اسماء متا ستضتحت الصلوق ذقں اجزا تک (۹)مامابرائیم ی فراس ہی ںکہ افھللک اوسچتفقن ۰ 
اجزآیک اغ ج پر رال ین العیتی۔(ے)علامہ کی نے طور ترو فت انت رال جن یکیاکہ عدیث م ے آُیزٹ آن قال 
اگاس عتی شور آن 3 ها ساب بیہاں اک کو ینہ یہ فانک کان کے مل یام دو سرت الفا 

کے لاله لا ال رن و ال تاق ا کو لدان قرار دیاجا ےگا تو جب| ان اماک دی ہے اس میں معن کانتبار 

کیاکیباد؛کااعتا رڈ تھی ںک يکي فرع ہے اس می بط ول جا ہوگا۔ 
ام اک الاق نے جو مامت ر سول سے اتر ال کیا کاجواب ہے ہ کہ روصت سے فرطب ت ابت ول 

بگمہ زیاددے زیاوہ سنت یاوجو ب ابت ہوتاے اور م ترا ا ی رن ضب کات هرگ 

۱ سے تلا کیا سکاجواب یہ ےک تر یف رفن بیش حم کے لے لآ ےء کماقال الطتاز ای کی 
فر ری کی طرف اشا هساو اتنام شا نکی خر ےآ ے۔ کے کہا اتا سے یرام زک مطلب ہے ت تب 
کہ یاب اق سب پال ےد لا کے مامح هک ید فر دکا لے عر زاش بھی افظ لد اہر رتم 
شان اور فر وکا ی دکھانے کے لے محرفہ یگیم فرط کہ دوسرے الفا تال دوس رکی بات ہے ہ کہ 
تر یں لطر دن س ای ترا فصر ہوجاے خر میں اور بھی خبر خر ہو سے ترا اود ا نک دعوکخبت ہوگا مکی 
مورت مل دو مم کی صصورت شیل ابت یں ہو توج با تا لآ گیا وا ی ے اتد لا لکرنا یں ہوگا۔ تس رک بات ےک 


¥ جداں‎ >»: rE 
اکر ار لاس اقا کہ کر شرو کناچا اللہ ابر کہا جس ےک دبا هر یه موی زر‎ 
ج بآپ تراتسا ایک نے اور ؟ بھمنےدوسرے معن ینز کنا راو لاو ديا 2 نب نیزا تام وجو جات کے‎ 
لاوم می کت ہی ںکہ ىہ خر واحد سے اور ترآ نکر کم میں اق ام ر بکا گر تاب اگ قر واعد سے ( صو لفط‎ 
ثرا بر فرضی تاب تک جا سے تقیید کتاب اللہ بر و احد لا مآ ےکی ۔وذالایجوز۔ امذا رای بقل خی پر رک‎ 
کر مع لک ناچا اورا لکی صورت مکی ےک ق رآ نے دد جف کوبیا نکیااور حدریتث نے در جہ وجو بکو می احا ف کچ‎ 
ہیں۔ رسب ی ودک یواعد فر ہت ثابت تذل ول نیز نہوم خالف_ کول کم ثابت تنل‎ 
ہو مزا ریٹ بڑاسے خصو لقن بر فر غیت پ امت لال یل وس‎ 

لیا لیے : ای کی اکتا ف ےکہ خر وج من لصاو کیل خصوص السلا م ذ رش سے یلام لک 

ریک لف لام علیکم فر ہے۔ دوسر ےکی طریقہ زین سے نماز نیس »دی امام ابو ی وصا .0 
ال کے رر ریک افظاالسلام توواجب سب رووس ت سی طر تہ ے جو منانی صلو چ ہو کے ے یز شت ادام ما 14 12 
ک مار یاک رکتابوں میں خر وج ‌بصنع صلی ے تی کیاگیا۔ائم خاظ یی دحل بک م رٹ ے اور طر رت ات ر لال وی ے ج 
یل متلہ مس گز را احا فک طرف ے وی جوابات ہیں جو لے گکزرے۔ باقی احا فک و مل ایک حضرت می و 

م رث سے کاو ی ش ریف غل-ازا لش احَل کم مقداالتشهد ثم احزّت فقد نت صلوته: اور عیث الاب کے ر اوک 
حر ت یما ہیں وہ فرماتے ہی ںکہ مقدار تشہد ٹیٹھنے ے نمزم وہای ے_ تو معلوم موا اک دش الاب سے فرضیت 
سییر( نی ہوئی۔ 

دوس رکد عل ضرت عبرال جن روا e‏ رفع امصلی رأسه‌من آخر صلو اته و قضی‌وتشه ثم آحرث فقد 
مت صلو اته اخرجہ الترمنیو الطحاوی- 

تی ری رمل حفرت بدا بن حول عدریث دپ نے ان هد م دی فربایا۔ ازاقلت هذا وفعلت هنا 
فقد مت‌صاو اتک_ اخرجه املف مستدط 


توانر وای ات میں بخ سلام ترام وکام کی لز تلم وال سلام فرش کم ہے۔ 


مسئله تجدید الوضو لكل صلوة 
ایت :ڪن ريل ۳ 0 .09 وم مَمَحَعَلی ها 


تشریح: وو موہ وہ سم کو ار یت ۱ 
امت ور فقهاء کے زاوی ای عدت کے پر از وض وگن فطل الین کب ےگ رش رط یے س ےک چپ وضو ے 
کو ازسی عبار تک ہوجو !خی وضو کے لول یتہر ملس ہو 

ما نین لوضو اتد لال چ کر ے ہیں ت رآ نکر آیت ادا یر ای ال لوق یہاں تیال اصلوۃ کے وقت وضو مب 
حر ث ویر حر ٹک کول تی ر لآ معلوم واک ہر ماز کے لج ری وضوضروری ے۔ جہو رک رل دی بر 


موس بر ول 
کا ع رٹ ے ا ان آپ نے چند نازو کو ایک بی وضو سے پٹ ڑھھی۔ ای طم را بے # احادیث بل جن سے 
معلوم ہوا کہ آپ مش او قات ایک وضو ے چند از ینب سے سے تب ویر بین مان ام کے خط ووا 
و میم مم مکی احادیت ہیں تا ۶ نے یت خ زان پٹ کیا ا کک کواب سب 2 دوآیت مرچ نع E‏ 
کے ات وسا سے معلوم »تاک مقید ہے محد تین کے ات ھک دگل بعد دا آیت بی ہے و لکن رل کر کر ۳۷ 
آیت مل انعم حرثو نکی قی رکو مج وف مایب ےگا۔ رت شاه صاحب 30142 فرماتے ہی کہ محد نو نکو زوف 
اس کی ضر ورت نی ی عا رکا چا ےکن خواہ محر ث پا ہد وض وک ناا ےکر حیشیت میں فرق کل اک جر ہو 
وضوکرناف رخ ہے اور محر ث نہ ہو تی عم ابی بوک ۱ مسب کر ورن رگيا یرال رت عبر این ب نظ کی 
حدریث الوداؤدی ےآ تشول الو -صَل اللہ انو سل - ایا ضر ولکلِ صَلاوِطادر 0020 امن 
علي ووضع عن لش ول ینکن 
۱ ہے نیند نانص وضو ہے یا نہیں ؟ 
نر الات کن صلی قال کال شول ایو صل الله لووسم رک الکو ايتا متا کایتوش ]| + 

تشریح: وم کے پارے یں قرو نایب ہیں (۱)ابو موی اشع ریہ سین سیب این تم او لاوز کے 
ری وم میا اق وضو کل ہے۔ اود بھی ال لور مہب ے۔(۲) نهر یدق ین لام بن 
اور واؤر تار کے نزدیک وم ملق 2 وضو ہے (۳ )امام نہ رک اور ری ارا کے زدیک وم تیل ناف تس اور نوم 
7 ۳ شض وضو ےی ام الک واوزا کر ھم لهس ایک ردت ے۔( )م امم ال لے دوس کر وات 
۰ ےکیہ آوم اد ناف وضو ے۔(۵ )۷م اض ھھڈلڈ لہ سے تی رک رولیت گر وم رامع افش وضو ہے۔(۷)نماز شس 
نوم ساد عصدااور خاررج لت یس نوم ساد مطلفا ال ہے الہ از یس "او ساد نات نیس ہے اور اج وج 
میں نا ت ہب لاقتنا ایک تول ے۔(ع) ارج رای صصورت ٹیس سوک جوز نپ لگاہواہوٹونا تض 
وضو نی ہوگا۔ اکر چو گاہوانہ مولو ناس وضو ہوگاہ یمام شا نی کال ہب ہے۔(۸)احتاف کے دیک چت سا یوس 

لیخ یاک زیر کیک اکر سآ نا ل وضو ہے اور نماز 11 ای بیت سنوت یر سوناخواہ راز ٹس ہو یاخاررج ما میں ناف وضو 
یں ر ۱ ۱ 
ہب او لک ول ریت الس نکی حبیث کان آضحاب تسول الو - صل الله علیه وس - ترون اليمَاءعقی 
٦بی‏ بب رر 
فرب ید یل مکورہحدیٹے جو حضرت کیت مر وک چ وکا الک نانک توش ال ملق 
وم وضوک عم يگیادو سرد بل مشوان بن عسا یک صم قال سول ‌صل اله علیہ وسلم الوضوء من بول اوغائط 
اونوم ہوا الترمذی و یہاں وم و ول دفائل کے ساتھ ذک ہک یاپیشاب فاد جس طررمطنا نات وضو ہیں نوم بھی 
مان وضو ہوا 


چو سوؤییلمسصبہ N‏ ار کہ 
تیسرے رہب وانے حرا ال کی حدیث سے اتد لا لککرتے ہیں اور ا یکو وم ور نع تن زر شا 
2 بھی اک حدریث ے اتد لال من کر ے ہیں اورا سکوحالت تعوریر مو لکرتے ہیں زا نکی دو سرک د مل 
رت این ع با مکی میہف ےک ہآپ من ربالا الو ہو۶ على من دام ضط جع تو معلوم ہو اک اضنفیا ےکی 
عاات کے سواد و سرک عالت سوق وونل ے۔ بقیہ ا قوال وانے د کل ٹین کر ے ہی ںک رار قش اسر ا مفاصل 
پاس مر ایک نے اپے اجنجھادسے استرخاء ال کی صورت ار رل ےجا رک کک ےب ا و کی 
عالت یر سلو کو ای نارس قل وضو کے ال ہوے۔احتا فک و ملل ححخرت این عا ا ی صرت اعم 
الرضوء على من نام مضطجعا . فیانہ [زا اضصطجع استرخت مفاصله روا ال ک۔ اس سے معلوم مراک نوم ینف نا ص 
وونل بک استزغاء شا لگ وج سے فورظ ہوتا ہے اس بل نا نل ہے اور ظاہر بات ےک ما زک کی تپ 
سونے سے اسز ایو رن »ناس لے ا قفش وضو نیس ہوگا۔ اور یک زیامت لے پاک وٹ پر لیے ے است رام 

. ال جا ۓگا_اس لے وہ زا ہوگا نیت میس این او حدیث ہے لایب الوضدء علی من نام جالساآو 
قائما أوساجداحتی یضع جنبه فانه إذا وضع جنبه استرخت مفاصل۔اور ند ا می رولیت ے۔ گن این رن 
الا ایس مل می زا ساجدارضوءحی بضطجر 
رہب او لکد کاجواب ہہ کہ صحا کرام طا کی نت رک ہیں ی اور راسوۓے تے اس لے ق یس موی 
اک لے تو سند بار بیس ےکہ جن حرا تک نیند ستخرقی بت نہوں نے وض وگن معلوم وا نید ے مات زر 
وف مترلال 3 یں ہے۔ فرلی خا کید یل کاجواب ی ے ک او انس و گی صرت میس مطلتا خی رکا کر کر 
دگگراعاریث ے ال کو نوم تفر قکیساتھ مقی کیا جا گا۔ ابام مالک وار یفاک تمل رمش کی سے 
گر تیل کش کے در مین مزن سل معلوم ایک مہو یزیر مل کاب ا کنا یت ہوگا۔ ماه رات جس 
کو نوم ی کم رے ہیں وہ ور قیقت نوم ہی بل واگ لام شان کک الاک د لکا جاب ہے ےک وه 
مار غلاف ہیں کوک م تیا لیا عکی صبورت میں نوم کون کت ہیں کان حدبیث کے دوسرے بل جوعلت 
با نک گی اسر ناء مف سل ہے علت کیک لگا ےکی صورت میں پائی ہا سب اما :اف وضو ہوگی۔او نما زک یت مل 
امت ر خاء مف ل نہیں ہوح اس لئ وون ت نیس وگ بر حال نص وی و قیال کے انتباست احا ف کان ہب دازهب 


بیوی سے اغلام بازی حرام ہے ۱ 
یت لیت :: وعن علق ن لن کال :کال مو ل انی صل اه له وس و سکن گم كليركا + 
قشریج: الب اشغال ”ا ےل حدریث کے اول اور خی بل ظاہر کول رب معلوم نیس مورب ےلو جواب ہے 
ہ ےک جب موہ ایک یف پیز ہے اس سے وضوٹوٹ 9 000 ۱ 
افلظ ۓ ول مل ناو نا شب کاو ر خر ای کوک گن دیج ها کی یل این ات صرف کرای ے ھی 
ہے اش تھالی نے یناک حزٹ لگ اور ہے مو حر نجل سے اسل جہورا ست کے ردي ماغ الدب رام 


کاو روچ ہن لا 
سے صرف شید اکے جوا کے تا لاد بر ا حر نے وا لے پر خد کہ یٹ کی طرف ررمت 
ہی ان مت ٠‏ 


مسلہ الوضؤ من مس الذکر 
ایتا لزت :کشر شرو کات :کال مول الو صل اه علو ول ام أَعَ کرو گر 0 
تشریج: یہاں ایک ملف نہ سب 7 و تش وضو با ایس نومام شا ق داکک دار مهم له کے نذویک 
مس زرف وضو ہے پھر ان کے در میا آ یی لب اتف اف کے نزو یک مطاظا :ات وضو ے ارب بغیر 
ا تیر کے ہیں اور جس پا کف کش ط لے ہیں اور یس وتک تید کے ہیں او رام ایک 1لا ے 
ایک رولیت کاس ےک و وکر ناواجب ہیں ہک :تخب ہے اور مخرب می ا کا مکی قول زیارہ شور ے اورای پر گل 
ہ کاقال ان شر بد ای لجتهر- احزاف کے ادیک مس کر اتان ت وضو یں ہے ی سفیان و ریا ام 
. این امیا رک اور ن بعر کر مھم الیکا ہب ے۔ شوانع وغیر مات لال ل کرت ببس وال مرف نے ج 
یں صاف زک سے وض وکا گم ہے۔احناف اتد لال ج کرت ہیں لن بن یپک مر سے :انستل‌عن‌مس 
الرجل کر بعد مایتو ضافقال علیہ السلام کل ہوالابضعة منه ( رواد الترمزی ابو داؤد ن کے دوسرے اعضاء کے 
مس سے وضو ہیں لو ای ط رع مس ؤکرسے کي وضو کلف ےگا نز تس هآ ہیں تر تن عا ربا 
ہی ںکہ بای ایاہ مته آوانفی۔ این حور یز راب اي گر ي سمت ف السلاة ا ان او انی ۔ کا بن 
افر کے یں : اناو بضع منک مدل انی اد انفک- »کل عمران بن نو مجل آخخر یانوالادرون 
فیمسالنکرالوضو۔ _ ۱ 
امت لا لکااب سی کچ دیع کی حدریث بر مال کی حدریث ترا( فا کی بان 
لم اور ابو عم دی بن الفا سک ہیں کہ تک حدیث ب ر ہک حدمث ے زیادہ KO‏ ضلےرہل 
کے سا الال پادے یس مر وک رولیت زیادہ کم ری )ہے وم بلو یکا ستل سے تیک و 
ہونے میس اغکال ہوگاچہ چا عور تک رولیت ”تول ٣(۸‏ )ہے عریت شیف کال دل روا ایک راوی ج وہ 
ایک ظا با شاہ تھا۔ پیر ای نے ایک شی کر بس ردپ سے حدیت کن اور ووش ی ول لزان صدریث ای 
اتد لال کل ے۔ پھر ریت ان کت رآتار کہہے ولا کماذکر نا نز تال بھی ا کا مود ہے بر نل وضو 
اس رون سکن ادان ہے۔ نز ران کرت یس شال ہے ال کے ساتھ ذک کیش سل موتا بنا ےکر قش 
وضو لته عورت تذل کے مس سے لق وضو ہو جائۓ تیا لباب چات کے مس سے وضو ہیں 
اود کر ٹس بھی نی ہے اس کے مس س ےکیے کل وضو ہو جائے ان تام وتات سے دا رمک رمث 
زیادوراے اور عدم تقشم تول ز باده که ۱ 
علام ہاگن ام نے دوٹوں عدیو نک کرلک رمک رش ر روح تواست ے اور #ض 


سروس ماس لے 
ضرات نے اس ط ریق تک ال منک حدیث اصل ستل نار نی ے اور بسر ہک صرت اتباب پر گول ے۔ با 
دونوں می کول توا رض تال 
وال سیم ماد يياهن مهو بل صاحب الصائع الک طرف سے یکنا چان ہی ںکہ 
احا فک سے کت هش جب تک در یس 
وق تاکر سلاو ءال وقت ہے عدیث ک رد مھ یر جیا ںآ ے۔ اور ظرت الور ر 0 هم میں لان ہو اور 
ان سے رولیت کہ مس دک سے وض وک ناج اما عدیمث ال ہر رپپ زا موک مرت طل نکیل ۔ احا فک طرف 
سے ا کے ببت جوابات کے( ک حرف کے نان نے کے ے TIA‏ گس اور لور رم 
us‏ سے مت ات 
(۳ )تم الا لام داو کی عریہث سل NEN‏ ند کل ین )کہ ایک متاخ الا سلام راو اس کے غلاف 
زوس گرد اس کے لے بہت رال # سکوحافط این تج رکون نے غر نہ مس تفصی ل ے بیا نکیل مکی 
۱ رط یہس کہ تقد مالا لام راک سے اوقت زد حدریث کی ہو اح مم می وق تک رنہ سی ہہ دو ریش رط یی کر 
متاخ الا لام راو ود بلاواسطہ حضور هک ہو بعد الا سلام» ال کے ناوت و ضور مت نکر نے می اال 
ہے۔ یہاں ہے دونوں ش رط موجود ہونے بی اخال ےکی کل ہو کا ےک حضرت مب پان دو ری وف آک الو رہ 
و می تی سشکوجہ کت پا کک کے بعد 
ر لخد مت ل پچ رآ سے تے۔ نیز اور« کے بارے میس ىہ تال ےک انپوں نے بول اسسلام سے بہت 
مرو وو وج کک مت 
ہے۔ لزا تن ات کے ہوتے ہے مرت ا نک یه مور قرار یاچ بنا میں ا ا فک دلب ی 


تم 
مسئله تقبیل الرأة 

للكت الكت : وعن ماه الف : قان الي صل الہ لومم بقبل تعض آزو وک لي ليتوأ _ 
تشریح: یہاں سے مس مرآ کا ستل شر و موتا ےک ہآیاوہ ناف وضو سے الب تا ملظ کے نزدیک مس مراد 
اش وضوہے واو اورت بوسہ کے ہیاپ تھے یاو رک یمکیفیت سے ہو رف کے مزدریک شوت ش رط سے اور تش 
کے ادیک بالغہ رطس اور بط کے نیک غیر رم رطس اور تغل حضرات خی ال ش رط کے ہیں احناف کے 
یلم مس م رو نض وض و نہیں ی سغیان فو رک اور ایام اوزاگی تَا کان ہب ے۔ فرلق او لکی 7 
رفوع ے بل کل صرف قرآن If‏ ایب تح لآیت اور ر ویک ای کے اشر سے ات لال ٭ یں کرت ہی ںآیت تقولہ 
تال او لهس اسر یال لام سے مس الیرم راد یت ہیں قرینہ ہے دوس ری رت می لمت رآ یاہے اور اکے مس 
۱ ا بای دا یل :کے بعد می سرت معلوم ہرک ای شوہ مرک 
ول ضرت مرن اث ہے ان لبم اللمس فعو شوہ مه رل حفرت این سور کا 2 سے من تبلة 


ew‏ وس چ ہو و 
الرجل امرأته لوضو- چو ان رب قبلة الرجل امرأته وجتھا ہیںہ من البلامسة ومن قبل امرأتہ وجشها 
بین» فعلیه الوضوء۔۔ 
احا فکی کید بل حضرت ما کش 0ة اکی ہے عدریث جو باب کردم کول بغار ی شراب میں حشر 
ماش تیال سیث :لقن وتسول ال صل اللہ عليه وس صلی تا مضطجعة يته رجن الکو 
را ون شبن ای تا ری ضرت ما اتکی رٹ سے بذاک ش لیف شی طلبت النبی صلی 
الہ علیہ وسلم یل فوقعت یی علی قرمه وه ساجں۔ چو ی ر بل حضرت تقد ئل کی حدیت سے مسلم شرف و 
با کی شر بف شس انه علیه السلا کان یل دہو کامل امامة بنت ابی العاص الخ پا ید حطر تام سر تن 
گی عدیث ے انه عليه السلام يقيل عند الضرم فلایتوضا ولاينقض الصوم و ادالترمزى-ان روا بات ے صاقف وا 2 
کیہ مس م راونا قش وضو ںی ہے لمذادو سرک بات یہ ےکہ ق وضو وتاب نع ا ی ان ا 
خر ون تست یں نے امان نیس ہوگا۔ ف ربق او لک لک ج اب ہے ہک آیت غل ست سے با رادرس لس 

.ید مراد نیش ہے اورا کے لئ دس پاس بہت سے ولاک موجودہیں(۱) رل !رین ج رازام حطر ت این عا لاا 
نے بی فی رک نی زاک ما کرام ووا کک ر سے ہے۔(۲ یہ فا کاصیف سے اورال کی خاصیست سے جا نین کون 
ضرغ و تادر یہال تما 1 صورت ٹل ہو کے( ۳ )کے مراوف حتۓ الفاظا ہیں اک مشعول جب مم ہے لو 

۱ نف غو ین ما مر اد ہوا ہے اگ چا کےا کل می دو سے ہہوں کے فقو شی اس کے ا کل مت ر ون نااور جب ال 
کا مفعول عورت ہو تذ مت با ہو کے ہیں با کے لفظط مس اس کے مم ہا تھے سے مرج مفعول مر )نون مت جا 
وس ہیں کے من قبل آن تمسو و ۔ اک مرح لفت ہلا ست یا کی کے ارچ تست چھونام وکر هال مفعول نا ۱ 
ہے الذاجماع مراد ہوگا۔(۴) رای سے برع را لا لد مت رکیل ھمکاجوازق رآ نکر میم سے تلاکو 
ترآ نکر یک اہم عم سے خالی رہ جا ےگا ت زآیت پر مال کے لے عام ہو جال تک واه شوت دیات ہو ای کآیت - 
کو ما رخ ار عام قرار دیتاول ے۔ با کا نا دوس کت رت ل مجر دکاصیضہرے جو سس بالیپرولالت رتا سے ت کہ کے 
ہی کہ مرو مفعول ہو ےکی صورت شش ہر حال بی مار را وا سے تک بان ۰ سے 7 سے شواک 
اتد لا لکرنا ی ں۔ بانج وار سا ہک کے ان کے بارے ٹیل ہم کے ہی لک اعادیث م رفوع کے مقاب سار سے 
ات لا لک نا میک ل- ان سے اتباب مراد بی ت رر قا کی ہے ماک اعادیث م رفوع کے ات توا ر تہ ہف 
وال اي :اصح ئد اَضکاہنا: یہاں شواک طرف سے ہہارکی کی د بل حدیث عائکشہ 03یہ افش 
کے ی ,۲۸ بی عدیث اناد کے اغٹپا ے یں ہے اس هک یہاں رواک سے ر ولی یکر کے ہیں۔ اور عو خی 
موب ے معلوم نی ںکونا و رهب زیر ہونا یق یں اور اکر رو مزن مو ا کا برع خضرت ماک 

ادا کال إذاجاءالاحعمال تال الامعدلال۔ 
انا کی طرف سے ا کا جو اب بسک یبال رود روز جن ال ری مراد یں اور کے لے ہہمارے پا 


۰٦ 


چندترئی 


چیا رس (yn f‏ و و کج جلداں ڑا 
مموجورہیں(١)مسفد‏ ات اوراءتن ماجہ ٹیل صر اح ون خن خر وت مین الزییر ره رون ازجم حر ما کش تال تلا 
کے پواغیہ اور خحصوصی ش اکر وت اور اگی کشر وایات وا ام کہ کے ہیں مزا یہاں دی مرادہوں گے (۳)عرو کے نام 
سے ان ال پر وهای اده شور ے ادر قاعر سے مش رک ناموں میں جو شور وتا ,ماوت سے وتک مرا ار موتا ے 
( )نٹ حدیت یل ایماایک ”مل ے جو زوین الز ہب یک کے ہیں یط رولیت تن ہک ردد کباھل ھی 
لاان فضحکتءا ی کم اک تک سے یں ہوک ر شت داروں جس موک ہے۔ یال دوس رک ایک ئ رن 
ابرائیم ای ن عا شلات رولیت سے ای یر ی انہوں نے اکتزا کی کہ ابام سیک مزع ریت عاش 
قاتا للم زا هریش مع ہو ئن 
احا فک طر ف ےج اب بے ے 0 دعن ابر اھیم التیی‌ عن ابیه‌عن عأتشه لگنا امز اا ر کرٹ :لن 
کل اغال را پر ور پل شمان لس کہ ىہ عدریث اقترا سے فا یں کر بقیہ چا اعاویٹ یر توکو تی اعتزاض 
ہیں یزاجم راٹس مت ال ورای ےک مس م روقش وضو یں ہے واللہ اعم " 


. مصئلہ الوضؤ من کل دم سائل 

یت این بوعن مرن ڪپ نیز نتب ال يئال قال يمو للوصل اللہ میس وضو معن کت ال 
تشریح: مسئله خارج من غیر السبیلین : ام شاق د کک وحار مھم الک دیک خر مین 
فی سم نش وضو یں ہے خواوخون ہو یلپیپ د فر اہو تق کہ ایام اک تس نز کیک یر مقادطوںی رین 
کول جس ین بھی ق وضو نیس کے دم استحاض.۔ امام الو عیفر دا رمتا کے نزدی ک کل ماخ رع کن البد لع مطلتا 
2 وضوے۔ خواه ملین ے ہو پر مین ے ہو مقاد ہو یا غیر متادہو۔ البتہ امام اج کے ٹم ہے تید کے ہی کہ 
فان ہو. فرب اول و ل تی کر ے ہیں ضرت چا پاپ کی حریت سے مج سکوامام با یتح اور ابو داد 
کد اکان نے مو صو لس هک غر وزات الر قارع ورس هدک لئے دو اي الیک انصاد اور 
ایک مہاج کو مقر رکی تیاو انصا رک سو کے اور مہا جر ندز کے سل ایک هش رک ان یہ تین تست کے 
دن ے خون لکلناش روح ہوا کن ٹازڑ جارے تی کر خون انار ا ال سک چا اکیاا سی ے ہما اک وار 
کنا فش وضو ہوجو فور نما ز چھوڑ ر ے رو ید یل ی حور بای ال بی رث ے۔احتجم النی صل الله 
علیہ ولم فص ولم یتو ضا تیمک و مل مو طا انک کل مسوربن گرم ہے رولیت آنه رخل علی عمر بن 
الخطاب ,ضي اللہ عنه من الليلة الي طعن فیها . فأيقظ عمر لصلاة الصبح . فقال عمژ : نعم ‏ ولا ني الإسلام من 
ترك الصلاة , فصلىعمر وجر ەک دما 

رون نش وضو ہو نواس کے ساتم نما زکیسے ےکی اور ال وقت بہت ابر زر کرش ووي 
زجاع می ہہ بیاعم پر۔مام وف لام نانک کہت کی ولا کی ہیں ایک و لآ حدیث الاب ے وشوو 
وخ کل بر از سب سے انم د ویر مل بخ رک ش ریف میس حطر ت ما کش نف ی حدیث کہ جامتفاطمه‌بنت 


...سر کک ےس لے وو ےہ چا ہداں لے 
ای حبیش الی النبی‌ضی اللہ علیہ وسلم فقالت ان امرأۃ استحاض فلا اطهر اذرع الصلرة قال لا نما زلک دم عرق ثم تو 
ما 
او یہاں دم عر پر وض وکا کم وتو معلوم ہو ال ن کل ورنہتوفاشددم فرب فرماتے دوس رکید --- 
عا ہناگی عرش اکن ماجہ س قالت قال النی صل اللہ عليه وسم من اص ابق او عأت اومزی فاینصرت ولیتوض] 
ای شا یل بین عیاش ایک رادک یړ اک چ بے کلام ہے گر اوی اہ ےا تا #و ری سے از اضف و 
گید تی ری و ل وار تی میں ححضرت ابوسعید ای رک لک رولیت اک رح اد ره تن عپان» بل ردام رت 
کل اسان فار کی ویر مکی روایات تلا گرچ لفط تلف ہی نکر ون س ب کا ایک ب کہ فاد گنیر 
ا بین سے وضوٹوٹ جانا ے اور انفرادی طو یر ہر ایک یں یه ی شحف ےگ رکذ تک هن کے ور جر می کج 
کس لزا تال اتر لال ہیں۔ نیز ایح مین ا بی نان وضو ہون ےکی علت رو چاست ے۔اور دی عل بر 
لین میس بھی پل مان ے لزان نس وضو وگ ۱ 
ONE‏ لوت نے 7 رارق ول ے ای وجہ سےاہام بغار ی نے صغ ریش ے 
لالز ملست لال ں۲ )ہے ایک صعال یکاواقعہ ے معلوم ہیں حضو ر موز مکو کی طلا ہوک ہے یال او رآ پکی 
طرف سے اک یت هیا یں( )ایی صحالی کے غل عا کا اقب اکن مال جت کل ہو سکناووتو معز ور 
ہے۔(۴)ابوداددشریف مل ےکہ جب ا نکو معلوم پا از چو ڑ دیاب ہے یش مارد نب نگئی (۵)علامہ خطای 
یئا جو شاق رسک ہیں ودفرماتے ہی ںکہ اس واقعہ سے خوا نع کات رال کر نادرست نیل سے اس 0 
2 دیف ناپ اک سے اور سای وا پٹ اکے رن ود میس خون لگا سے اوا یکو نےکر رازہ می حال اک ناک نل ےکر 
اهن ی( نزدریک ام ہیں ال ذاال وات ے یکا ات لال کنا 2 نیس ہ کالہ ا کا نکیا تم خاش ما اک 
دوس رکد یل کاجواب ہے ۶ 0 9 و لمان بن واوو ضوف ہیں لز اقاب استر رال یں جمری 
بلاج اب بی ےکہ مرت مراک خون ان ن کم نت ا کات ارت 
سے فلایسترل ہہ اتا فک ایک کل جو موی بن راز تنل سر سے ر دایت ہے اس پرا ہوں نے اغا 
کاک رن عبر الح رر تھ اکال نے یم دار کے یں کی لیزا E ef‏ رااظکال ہے کہ یہاں ددرا دک یز رین 
الد اور زین تہ ول ہیں۔ ال لکاجو اب ہہ ےکہ امام زی نے ا 27 رکیساتھ زین خابت سے لسکا نیک ل 
مرک با یز جن الہ اور یت رکی چات جہالت کل یلم ولا ال ہیں ان سے بہت نہ راوی رولیت 
کر ے یں امزاجمالت م وک شا ۱ 


اب آواب ریت فد نیا 
لا ال مس خالی مک وکہاجاتاسے راکفا سول اسکااسی بوذ کاک | 
۱ کہ کوج ال تی ہے پاک انان دہاں پبی ٹکو خجاست سے خا کہا ے یا ےک ووچ زگ رات فال موف ے۔ 


اج روس وھچ ہو وا 
چند آداب :داب غلا کے سلسلے میس چند پولک ان دک اگیا۔(اببیت ال کی نمیا خیال کیاچا ےک ای طرف سرام با 
پٹ ھکر کے قضاء عاجت ت کیا جائے۔(٢)نطافت‏ وصفائ یکا خی لکیا جا ےک تین بر ےکم میں امن کیا جائے۔ 
()لوگوں کے قتصان سے پ ی زکیا جا هکم سای دا درخت کے پچ یا پالی کےگحاٹ اور عام رات یں قضاء ماجت نہ 
و لے نتمان سپ ہیی زکر ےک مورا یش یناب نہکرے(۵)جوقی جوارکاخیا لک ری یک جنا تک خوراک 
پڑ یگ و رک وکل سے اتن ہک ر( )قوق انس خیال رک یک داس ات سے ا توا هکرب( )لس بد نک 
تچاست ‏ با ےک خیا لک ی نکر دای طرف م وکر باب ھک او رک طرف یقاب کریں۔(۸)لوگو ں کی نظرست 
تر اق رکریں۔(۹)وسوسہ سے سی ےک یک وش شکری کہ کل غا نے می یشاب نہک رمیں۔(۱۰ب اکا خیا لکرس بفی رٹ ی 
تضاءعاجت بی نہ ٹیش ادر پیل نکی ےکیٹڑے نہ اٹھاۓ بک تر یب چاکراٹھاۓے لک مع رکال ٠‏ 


لاٹ انیت : عن ای اب اناري کال : قال رشو ل الاو صل اللہ علي ملم إا اٹ اماز تلا تستفبلر اا¿ 
یہاں خطاب صرف ان ین اوران کیا مت شش ری وانے ل وگوں کے لے سے ودنہ جو لوک ہاب شر قوب می رج 
ہیں ان کے لے وتاب وگ 
مسئله‌استقبال الِقبْلقو اشوزباها:فقهاه کا اختلاف ال سل س کی سات مایب ہیں( ا )ادد طابر ک اور ر عا ال ے 
وی استقبال وات بر مطاقا چائزے خواہ یا رک میں ہو یافیا میس (۳)دام شاثل مالک وا کے نزدیک دووں صواری 
ٹیس تاا یں اوربنیان س جا یں می امام اج ے ایک د ولیت سے (۳)استتقتبال مطالقا نا سے اور استد بار یمان میں جار 
ہے اور اک لنچ ام لس ف کا ہب ے ( اتال مطلقا ام سے اور اتد ہار مطلتًا مه لام 
ینہ نظ ان سے ایک رولیت ہے نیز ام اج سے کی رولیت -- (۵)رولول مل دوفول ترا »اور میت 
انق ر سک بھی کم ابن سی رین اورابرائیم یکا ہب ہے (۹ یہ عم اس رف ال هدک ہب سے 
الو گات صاحب مر لی کا۔(ے)رونوں مطاتا نع یں 82ھ۷ھ) 00 ور یک 
وات ری ر وود ہب بو راید وا تن 
دلائلی:ان زاب می ےا 1 تمن اہب ں ز یاه تر پٹ »وال ظواہر و شوانع واحاف کے در میا ن ای ےا 14 
کو بیا نکیا اتاہے۔ تال واہر اتد لال خی یکرت ہیں حضرت جا رپ کی حدریث سے ھی رسول اللہ -صل اللہ عليه 
وسلم -أن نستقبل الق ببول. ف ره بل آن لفن بعام هرمز دابا ۱ 
دوسری دليل: عن عر اك بن مالك عن عائشة تالت :کر عنں سول الله صلی اللہ عليه و سلم قوم یکرهون آن یستقبلوا 
بفروجهم لقبلة.فقال (آاهمرقلفعلوها . استقبلو ا ممقعد ق القبلة) (مراه امد وابن‌ماجه)_دهاناعایی کو ی ی اعارث 

کار ترادو سے ہیں۔امام شا فی و ایک تما انی اتد لال ٹن کر ے ہیں حطر ت این عم کی حدیث: (متقیت عل ظھر 
۱ بيت حفصة فرأیت النبی صلی الله علیه وسلم على حاجته مستقبل الشام مستد بر القبل ت( مارح سترروسری رل 
۶اک 1 4 وه عدیسث - چ وگل ہے داقع بیان کے و معلوم م واک نیال و اجاور ۳ 1 مریٹ مول ے کار کے 


. .تبون‎ I E 
یراک هرت این رکه "لاور ول چان اد رود ے: حن الحسن بن کو ان عن مروان لأصفرقال:رأیت اہن‎ 
عم رأنا خی حلته‌مستقبل القبلة : ٹہ جلس یبول إلیھا فقلت :یا با عبن ال رمن‌لیس تن نمی عن‌ھنا؟قال :بل إ مانھی‎ 

عن ذلك الفضاء. فإذاکان ہینات و بین القبل‌ی میس ترا‌فلاپأس, 

نان مس چا اور موا ری شس چام نیس وگل دوٹوں م حدیٹول پچ کل ہو جائے۔احاف اوران کے تن کے 
لال اک کی وعامم جد یں ہیں جن ےکی عم بت ہوتاہے۔ ان ٹس سب سے ار انی الباب حدریث الا الوب 
الا سارک اپ ے اج الک صلی اللہ عليه وسلم قال: عراز مقار لول ول کشتپژوها ن علي _ 
درک مل یت یبن وی الات نج زو اي کال تن کیال صل ان علیو ور رن : از 
بولق اخ کم تقر الب" رواہاین اج داہن حبان۔ تی رکو بل عدیمث عن عن ای درتال کال ول اللہ می 
اله عليه وسلم < ِا اتا لك رل لول لکد کل أل آعن گر المازط کل ستقیل اه ول ستزیزها ول 
شاب پیمیو» ردا ”لم وال داد چو گی یل حضرت سلمان اک کی عدیث ے: :ا آن تفیل 
بلاط َو ڑل روا سکم وار 7 

ان تام اعاریث شل مت تال ور ری ماع تک یگ سیا ری ونیا ن لکل یس نہیں ے۔ یز دوس رک اعادیث 
سے معلوم ہوا ےک ال مقر ےن ین ار ونیان لاو فر ن ہیی ےک حضررت مزر ی 
٠‏ حدیث ے :من تفل تجاه القبلةجاءیوم القیامةوتفله بین عینیەواہ ابن خزیمەوابن حبان۔ 

ای طرر] ای منک حدریث این عم رع نت مرو ہے۔ جب تھ وک میں مار ونیا کے در میا نکر فرق نہیں تو 
پاب پاخانہ س اط لق او کوک فرن کیل ہوناچاے۔ 

اعال جاب اور ملک اح فک تفرجات: رق ن هنال جاب ہہ ے کہ (١)نچھاریی‏ و اض تصوصاعریث 
لی الوب ار ان الاب او ری ے اود ا نکی اعادیث ج یں (۳)بارے ولال ول اور ا کی لا شی اور تو 
اعاریوث قانون مون ہیں اور ی اماریٹ می بہت کی خصوصیا تکا اتال ہوتاے۔ لاو کی 7ج ہیر ری 
اعادیث رم تکوبتار یتیل اوران ممصفاوت نار رض سا میک رل 
() ہا ری اعار ث علت نفی وصرف معلوم مطرد با ہی ہیں دہ تلم قبلہ ہے (۵)اصل کے اختبار سے میا ری ونان ش 71 
فرق کل کوک نان یل تی آڑ ےج ما رک لک پہاڑہ خی رہ کے بت سے تما بات یں صرف مین یلاعت 
هوالع سک 01 کول نیل ہے ۔الن وج با تک با احا کاخ ہب د ارک سے ۔اب فی جوابات نے 

تفص جات: : ایل خواہرنے ج حدریث جا وت د مل چ یک ال لکاجواب ے کہ اکٹ م رشن کے نزدیک ووضعف 
ےکی وک اک بیس ایک راو ٹم بن ا کت دهاز بانب صارع دوفول سک دونول ضیف بل لان ضیف عریرف وی 
000 کی وب اضالات ہو کے ہیں جو این عم یپا کی حدی کیل یں گے رو رید لیل 
ج ۶اک عن مائ شک حدیث ہے اسکاجواب غوئ کے ججوابات کے ز ہل می سآ ےکا فاتتظروار وان تح رات نے وابن تمر 


Cp E N:‏ ی و 
نکی صدیث سے اتد لا لکیااسکاجھاب ىہ کہ دہ ایک ج داقعہ ہے اس یس بہت سے اخالا ت ہیں (ا ا حال کہ 
تضور هچروم رک قب کی طرف تاور کضوو و ری طرف تھااورامتتتبال اتر ہارکااعتیا رض وکسا تھ ہوتاے جیا کے 
رولیت میں ےلایستقبل القبلة ولایستن ہرھا بف رجہ اور این عم کاڈ نے چ روت انداز ہک ایا دوس را اتال ہے سے 
کت لا ی رح کل داب تا راو ایی عالت می سکئی نظ ہ اک یل هه سنا خصوصا 
رن مکی طرف اور ایی نظرسے پور یکیفی تکاانداز کر نامشکل ہے۔ چا این غزیم یں ہے وان النبی صلی الہ 
ہہ نس صول بین ےف ر آیعەن کنیف راا خال ہے ے ہک ہو کے کہ ب حضو رد 22 
تصوصییت بی سے مو اور ایر ایک عریث دلا کرت ے جلو تی عیاش نے خفاء بیس حظضزت ماش ا 
جال ال سے کول الو صل اللہ یوما ِا معل قبط کلف عونت میا گر فلك لہ قال: با 

امد أَماعلِت أ لمعلا واج فقوتم ريت وین لی رم اقا سکن ۱ 

کے فضلات پاک ہیں اور ھی نا پاک ٢وک‏ متا ے اذا حضو رالات ا 

شاک دوس بی کل حدریث ۶ راک گن مات اور ا ی خواہ رک بھی ولیل ی تا گاج و اب بی ےکہ او گر 
چام رگا این جما م نے ن کہا کاک رح تین نے اا یہ تکظا مکیاد چا علامہ ذ »تن حزم اد انم ایام ات اور 
امام خاد کی مه لهس هکلم هداس ٹیس راو خالمد بن اہی الصصلت مر ہو ل اور یف ے۔ پھر دو چگ می فطع 
ہے ۔بھراین م لوحا ت نے مو قوف کل ما ہکہا۔ رب ہے واگ حول پر لکررے ہیں وکیے ہو نس 
کہا پآ پ گی راد بل عدیت یل تام د کے دل ین کن ہے۔ ب راک ان س تو حضرت تابن 

تال7ا کی ر نالک جیب جواب سن ےکہ استقبال واستد ب کی بی س نکر لول غل ھکر اش رو کاک عام نشت کے 
وقت بھی قبل رک طرف مک اترام نها نک تر دی رکیل آپ نے اپنے مکان کے عام مقع رکو تب ر کر گم 
فرایابیتالقلاء کے مقعد مرا و ہیں ۔ ,ار یاس ا سکوی تلق ہیں رز اس ے اتر لکنا جج نہیں با 

ان رک ناوراک قول پالتات کل ےک وک اس یس راو نسن بن زان !کشر جر شین کے ادیک یف ے۔ 
چا امام امہ ابو عاتم ان تن اور ام نامهم اه ضیف قرار اور اریت بھی تسلی مک لیا جاے نے مرفوںع 
عدیث کے ممقابلہ مم کل سیل ت ل ات لال نھیں۔ یزاین را هجو علت بیان ربا علت می ریس کی پل مان 
ہے کوک اس می کی بہت سے پپاڑاور ور ضتول کے آڑ موجود ہیں بہرحال دلا کی ر وے احا کا ہب را ے۔ بی 
وج ے کہ ی الو کرای اھر( ا پاوچوواور اہن زم ظاہ رک ہو نے کے باوج داور اہ | 4 وجو تبون 

کے اس ستل یس احناف کے مہ بکواتقیا ہکیاا و لای سے ای مز ہ کو راقرا د باس واه اعلم لصو اب 


مسئظلہ الاستنجاء بالا حجار 
۳+ ٌ 00 مشو ل او صل 99 
تشریح: ال حدریتف میس چار ست ہکی طرف اشا ہک کیا (۱)اول اتال اسر پا کالہ »الک تفصیل تا یکزری۔ 


۰ 


]رس :ہے _ ۔ رم ےہ چا ہداں لے 
(۴)دوس رامستلہ امو بای نکی مامتها بارے مم ال اہ کے ززد یک امیا این سے طہارت تیم سل 
درگ اور 'حض شوانح وحناپ لکا ھی می خر ہب کر ہو راھ کے نز دیک ہے کی دایاں | رات کچ ور ا مل 
مقصر ازالہ است ہے وہ تکاپ تمه سے ھی ہو ها کل ہوک ہے اور ش لیت نے دایاں بات مک وکر امت وش انت مکی 
ہے چنا مضور لِم تام تکام دایاں ام ےکر سے سے اور زا چاست وغیره بایاں بات س ےکر ے تے۔ چا 
ابوداژد یس حضرت عائشہ فالتا ی صیث ے :کاٹ یل سول الو صلی الله لیو وَمَلَم الیفتی لطهو رو وطعایه 
کان الیش ی لاوما کان ون یا شریعت_ذ مرف رایس ات ھک ہیں یلم مطاقادا: پل طر فکوشرات شی 
اس کہ تتام ایت ےکا مو ںکودائیں ط رذ ف سے شور کر نا عم ہے اور برس ےکا مو کو پل طرف ے کی هکبا لاک جب پر 
میس ماوق دای پیر پپیلے دا خح کر واو نت وقت بای بر جو یات جانب کین ے بو او رکھو لے وقت پل جانب سے 
پیل لو لو ونر لاشم ای نکی ی شر ات کی ن کیلع ے للا اگ رک میا نذازالہ ماس تک باه ہارت ہو جائۓے گی لیکن 
ھی نکی بے مق ہوک سے اھر وہ وگ( )تیر الہ ایا ی الا چا : 8 یل طلب ستل سے اور اک می اختلاف 
لام شاف اور اد رت ند کے دک انقاء اور تین پھر ے کر ناد وفول واجب ہیں اور اینار فوقی اشزات خجب 
ہے ء امام اب حفیفہ اود مالک سک نزدیک اصل واجب انقاء سے خوا ہکم سے و یا زیادو سے اور یار تب ے۔ 
ام شاق وا تاه دم کے ہیں حدریث الاب سے جس میں تین برس کم میس امن ری نیک نی دوات 
تام اعادیث سے اتر لال ی یکرت ہیں ہن یس ایت رک کم د ی امام اب یشم واگ تا و کل کک 
رت الوم پا کی ری سے قال ہد مول انلو صل الہ علیه ول مُکَجْحَرَفَلَيرتِز ,من تَعَلكَقَنْأَحُمَن, ون 
,قارع" ج '۔ یبال ایتا رکو اظا رککرنے میں خر دید اود ام اجب می یه نیس وتف دوسرک رت 
مہ مر :وم هب آک گم ال لاط هب مه ۳ ا ۴ 9 ڪلف 
بیو 7ص می لسم مت مار ار E‏ 
اگ رایک دوم تب رون ازالہ مجاست واودوہو ات تن مر بر دجو ای کے نزو یک واج ب یں ے۔ للزااروش 
بھی بی تم ہو زا چان کی کلم علت دونوں می ایک ے وو سے اواج ویس جود بل کی ا کا جاب 
یہ ےکہ اکٹ جن پھر سے اناد جانا ہے جی اک عا کشر فذ نہذ کی عدریث م بعش باس ت کاعر و کر 
کیا دو راجواب بے سب کم نکاعزد کل دج الا تیاب سے تاکہ الو ہی مگ حدریث سے تفا نہ ہو اور اک بہت کی 
مر یں ہیں جہاں تن کے عر وکا زک رآیائے گر سب وہاں | باب کے لئ لے ہیں۔ یاک نی ش ریف میں تل 
ایت کے ہاب میس ضور ی مکی صا تزا دی کے 7 E‏ دلاخ وا عورتونن کدفرایا: اغْيأنها . 
لکش ۔اس حدری تک لکرنے کے بعد ام تر زک فرمات ہی ںکہ فتہاء معان اعادری کو زیادہ جا و ہیں ال 
سے انہوں نے تن اود پ کے عددکووجو کل کال تخب قراردیا۔ اصل متت اقا سے تو اتی می بھی ال 
تمسق سے ھی ہو جا اور انار تحب ہے لک نہ جاء ق الیدیٹد نیوانع ھی اس حرف کے ناب ہہ گل 


سکن سر و تس چا ہدراں ہے 

لک ےکی ری ےھ ےت کو ےر تن مر کن ون سے کت ادا ےکا ال 
مقصودان کے نزدیک بھی ین پت نیس کل ین ہکات ہیں۔ اذا ہم بھی تاو بی کی ےک ام روجو بکیلے تن ی اقب 
کی سس کی ۱ 


بیت الخلاء جانیم کی دعا 
ی تین نآ کال :کان شون ال صل اه يملح زعل اکا تقون : يآ غرویاق الخ 
قفصویج: :0 خی ک.- نکر شیا ن۔ اد بای خی شک تع سے ملف مون ت غیا لین اور کے ہیں 
22 خث ے افعال ذمیمہ اور خپا سے عقا باط راد ل- یال طابر عدریث سے موم وتا یک ہآپ نے ببیت الفلاء 
یس وا ل ہ وکر ہے د عای کی حال اک وکر انار لدع ےکواے موا شع کم عتا ےا اج اب ہے ےک مرن 
کرام کچ ہی نک ہا بل ارا کا لفت مج وف ہے ای اذاا رادان یں خل؛ تس از قرات الق رآن ای زرا الق رآن؛اور ضرت 
شاہ صاحب 394 فرباتے ہی ںکہ لن روایت میس ران بھی ازا موجود ے۔ چنا نہ لام ہار تارب 
رد حفرت ان هل یت :ادن یدخل۔ لاا بکوئی انار مم کف رک طرف رج 
کر لیاجا ۓگاادر مد ابیت اغلا سک ساتنے جو خالی لهس و له ازرد تے اهر ار میرن بل تھا مات درو 
س کو لے سے پیل اہ ے۔ا بکوگ یھو کر دیع اندر چلا با امام مارک تے ان کے کے ادیک ز بان سے کی اندر 
کاب EE‏ نیس یڑ کاب دلے بڑھے هد دکانام کل تجاست میں نہ لہاچاجے۔ 
اب ا یدای یھت یا نک جال س کیت افلا مدرد منک چوں ‏ خن ہیں چنا وداش ی فک 
صرث بان هو اون ش حر اور باو قات ہہ انسا نکونتصان یاچ چنا رت معد بن عاد وکا مور واقعہ 
ہج ےکا نکوجنات نمرژ ود بل چندابیات تم ان الا ستعاب می وات کار 
قتلناسیں اعخزی جسعدبنعبادة ہمینادبسھمین فلم خط فواره 
اس سآ پ نےشفقةللامة ان دائ نکی لیم یک و نقصان دنه او رآ پ شیطان سس کنو ہوے کے پاوجوو 
هریت کے لے ع2 ے۔ نیزتشرزعللادة بھی مقصورے_ 
قبروں پر ٹہنی لگانیم کا بیان 
تیگ تین کپ ان عباس + ضس اللہ هما .کال : مر الل صل اللہ عليه وما قري .قال ايعان | ± 
تشریح: حدیث بذاک تار سے معلوم ہوا ےک ہے دونو کا ہکیبرہ یل ہیں حا لامک ہکی رہ ہیں اور بغارک شر فکی ٠‏ 
- روات یں صراحدموجودے :وه لکییر 7-0 لف جواباتد گے۔(ا )پل آپ ویر ہو ےکا 
علم نہ تھ اسل نفی فا رورا اک ےکہا ت یش سے ہیں ۔ فو گی سے انات فرمادا۔ فلا تار (۴)ان کے غل س ہے 
کہا کی ںاور حتیقت لکیام تو ئی اوراشبات دواعتبار سے ہے۳ کرام لس نیس سے لین ص لک ر سے 
ہے( گناو کر ےگھران سے پر ہیک کوک ام شاق و شکل نہ تماد لایع با نی کہیر این امر شاق یشق الاحتر از عنص 


بی کیم 


هس وی بدن و 
ار ےا یکوز یاه دگیا۔ ۱ 

رکٹ و نکر صاحب تر دونو ںکافر ےے پا مسلیان۔ و فش کہ اکا رک وک e‏ باکر ے اور 
ق مال وق کو کی نینک حرا کے فیک و ران کر رولیت مل بیجن 
اور ایک رولیت ل ہش کافنڑے اور سا کو خطاب ار ات ۳2 اال ی هکفا رکوعزاب لب مسا نآو وگاور 
رس ے سلا نکا تر نارای معلوم وتاب 

ان دوگناہوں کا عذاب قبر سے متعلق: ‏ تسری بحٹ بيس کہ عذاب ت رکو ان د وکنا کیہ ت کیا متا ہت سے 
نواس یں کیب و ریب مناسبت بیان 1 کہ روز قیامت میں حفوق الہ یش سے سب ےپ سوال م وگ نماز کے بارے 
ٹیش اور طهارت مق مہ ہے نما زکا اور تقوق العپاو بش سے سب سے پیب سوال »کون کے بارے می اور خو کا مقر مہ 
چقل خوری ے او رآ خر کا مقرمردے ۳ مین اگوست مد مہ ال عذ اب گت 

چ تھی بحٹ یہ ہے کہ آپ نے ان پچ د وتر شا کا ڑ ی اود فرمااکنہ ج ب کک ہے شک نہ ہو جا ےا کے عزاب میں تخفیف 


وک تمایق لک ال ےآپ کے پان ویآ یک ا مدت یف + درگ اور نف یقن آپ 


نے فی فک سفارش کی کهآ متسد دن کے ںک جب کک رت کاش کی 
کارا سک رکت سے طقف وگ 
اب بحٹ ہوک ہے و مکیساتھ خاش شی یاو سے کک یکر کے ہیں جب ]کہ1 کل بت هب کرت بو 
ض رات گیارائے ے 7/7 سے ڑ نے مزاب ای وگ کیا اجازت ے۔ ین ور علب کے بی ںکہ 
اڈ لق رت نش تی کہ حر رت مارک هکت ق دپ نب 
ای کی ا کے یا کے E‏ 
ہے سب یھ دوسروں میں مفقورے لل زاو سر و لکواجازت تلم وگل دج ےک ا ایک اک جو یں با سای کرام ےن 
لے کی ار لک اوت یرو اقب کے اہو کے ابر رش ا ےکی و ن 
و مهو الصحابقةاول انیتبعوا - 
کن چیرون سے استنجاء جائز اور کن سے ناجائز ہے؟ 
الات عن ابن عشغورگال: کال ول اڈ صل انه علیو و کستجرا اون ول الا اغ 


۱ ج و مت جو ۲۳| 


رات عظام رف اور روبع عظامکااور وک 9 کہ نان عظام ان زاب اور روث ان کے دو 
اک غزا جیلخ ریت مس رو تکفا لآ يارجا لکباگيد اي گول کر جب نو رو ںکی تز اے 
و وی زاس لنچ هگ انان اک طر ملف ہیں اس اعتبار سے ا نکیا کہا گیا بگو بر وی جنگ خو رال ہو ےکی 
کیفیت می ہہ پیا نکی گیا کہ پک فو خودا نکی خوراک ہے اورا کو پک یش پا گوشت متا ہے چنانچہ بخاری شیف میں 
رولیت ہے لاعمرون عل عظم إلاوجدداعليهأوفر ما کان علیه من اللحم- ای چ اکر اس وکھاتے ہیں کے بر سک 


پل رس :وٹ ہے ور ہو چا جداں ]8 
کھاتے ہیں یدو سر کول کیفیت ہوک او رک بر کے بارے میں کہا انا کہ ا نک وگو بر یس دا لے ہیں چا مام نے 
رال یش رولیت کال ے مک لاوجدووثالاوجدو افیه‌حه الذ ی کان یوم اکل حکاهالعینی(اء )بان کے رواب 
کی خوراک ہے یا پم زار شل دی یی تج یت - ۱ 
ب رگو بر ویک لیامت کرنے سے ابل خواہ ر کے زد یک متا ال کر مور کے نز ویک اتا ہانگ کرو 
خر« وکا کی دگل ازال تواست ما ل س ےگو بر وزی کے ذریعہ ات کی مان تک ایک اور دج و 
مھا ے تطبر مت نچاست ہوگی۔اور پڈڑکی سے ریت بھی ہ گی اور زم ہون ذک بھی انر یش ہے۔ 
فسل خانه میں پیشاب کرنا منح ہے 
ریت نت : رن عي بقل قال : قالش 0- 7)1 کل کین مستعیه ام 

تشریح: FEE‏ ال میں ای خسان ہکا re‏ 
: اتا لکیاجاۓ پھر عام سا اطلای مو نے لگاخواہ کر مینز 1 اپا عام کے مم جج لی ونر نو بین اس اذ کو 
اضف تکیں تھ استحا لک یکا لیا کر کے ہیں بلک دوک ای ںکہ ہے حال دا ہوتاہے تو ریت باس ا نکی دید یک اس 
یں اضان کیہ تیر تل ہوا ے یز لام فتا ان نے شر مقاصد کے خطبہ میں زک رکیاحضرت فار وق اکم وای نے بھی 
ان اواضافت کیت استعا لکیاے۔ 

وشواس: پا کے می ریہ اض ہیں اور اضر مصددر ے اور حدری کا مطلب ہے وال سافاسه یس تا بر نے 
سے بہت وسوسہ یاس ےکہ الک دلوا پیا بک ینگ سے > وق تست بان مک گیا درب 
بے ہے ھت نماز یس بھی وسوسہ ہو نے گ هکل نا پا یکی مایت میں می ری نمازہورہی ے پا نیس وم جرا اور کت رات 
فرمات للم یبال وسوسہ سے مراد ون سب چنا مصنف این ای شیم مس حر ت الس :پا دکی رولیت کا کر 
ول نيال ائ الم . الم رت ون ون ش کور وو یس اٹول کہا اتا ے اور لچ رات نرہ نے ہیں ۔ 
کہ ال سے نان م راد ہے چنا نم علامہ شای نے موجب نان چن چیزو ںکو شا رکیاان میس البول نی الختس لک وی شا رکیاے 
اپ ایت اک یھ سے با میں تین اقوال ہیں :2ا ابن سی رن کے ریک طاتا اسب (٣)او‏ رن تم 
ہیں مطلتا کر د(۳ )٤ہو‏ ر کے نزدیک ل ہک اگ خسان ایام وک پل بہاد سے سے فور اکل جاتاے کر ی فت 
ہے با تس افانہ ہے او یشاب جذب نیس ہہوتا سے اسب اور ICS‏ وک شاب جذب رتیت چم جات اہے وجار 
میں کی کک اس یس نیا کااند یش ے۔ 

بیت الخلاء سے نکلئے کی دعا 

لت لین : عن عاِةضي اللہ عٹھا .قات : گنل صل الله يولم خر جن الا ءقال: خفرانلق| ۸ 
قشریج: رداق : مفعول ے حل زو کات گرا سل خزوف مازا جا تو مفعول ہہ وگ لور گراخ رانا تو ملق 
ہوگا یت شاه صاحب ققل رفاک مفعول ملق وی مین ہے اور ان موا مع میں سے جہں لکو 


fe‏ ر ل ہس چا باون لے 
وجو با ماعاحز فکیاجاتاہے تی ےکافیہ ور« لیا نکی کیا اور علامم شیا نے ایک تقاعدہبیا نکیاکہ چہال مص ر رک نا عل یا 
مفعو لکی طرف اضاف کیا جاتا ے تو کو مز فک ناواجب ے گے صبغة اللہ وعد اللہ .سبحان اللہ ماه اب 
عذف قا ام دیا یہاں مشہوراشکال ےک بیت الا سس اکر وک گنه کیال خر ت انیس فو ا کی بہت کا 
چم( لکھانے پنے میس زد مشفول ہون ےکی بنا ضا ماج تک ضر در ت لی سے اور تلا قمر ہے 
لزااستغفا کی ضرورت ہے( ۲ )حطر تآدم لا طا سے اجتہاد یک کے گنر مکھالیا تی کی بنابہ قضاء عاج تک 
ضرورت ری اور انجول نے استغفار کیان 2 مکوا نکی نب کرت ہے افق کر نله -(۳) ان رن کے بعد 
پا نکا ا ان نا دناد ا یداو جانای راتفر رے لکودو کر ناچایے۔(۴)جب 
تک بیت الفلاء شی ر پاشیطا نک جاور کر کر ے مر وم راکو رک نے کے ے استفار ے۔(۵)غزا رف تال ۱ 
نے ی تآ ا نکیا تیر من مک راک مہ ولت الد یا اکر ہے اندددہ جات انا نکی حال کیا مو ہا ی اک ڈگ نت کر 
اکا غر کاحق انان کے الک بات نیل تو اس ماه امتخفا کنا چا نے ی تبیہ سب سے انی دما ہے 
(٦)ححضرت‏ رک اکا فر بات ہی ں کہ ملاس مم شک ایک ے الخال یی نھیں۔ 


مجبوری کی بناء پر برتن میں پیشاب کرنا 
دنت ات «عنآمیمة رن قیقة کالٹ : لین صل له علیو وق ین عيان گنک براغ 
تشریح: ہے عدیث معار شش ہے دو سرک ایک عدریتث کے سا #ل یش یہ اد کم حم سگھ یں پیشاب »وال س 
رت کے فر شع داشل کل ہوتے۔ا لوب یس ہک پیل ہآ پکو معلوم نیس تیاس لے پیتاب رکھتے تے۔بعد س 
و رر ےت تاس وقت داشخل کل ہوتے جب تاب زیادہ 
اور کک رکھاجاے اور حضو ر ما رشاب پا بک دک کک تن ربا تما کو چیٹک دیا جانا تی راجواب بر ےکہ 
ات میب کت وک پاب ت اک ہے ال اوق تن 


کھڑے ہوکر پیشاب کرنے کا حکم 
تیانع دة( غي اللہ نف قال : ی ال صل اللہ علیو وس سباطه‌گوم.تبالقانها ا + 

تشریح: رٹ بزات معلوم ہواکہ آپ کر م وکر پیشاب ریا ود سان رت اش نک 

حدیت سے معلوم ہوتا کہ آپ موا نے کت م وکر تی پاب یں فرمایابللہ قاعدا پاب فرماتے تے فتعارضا۔ 

دنع تار یی سک خضرت عذیفہ پا س رکا واقعہ ہیا نکررے ہیں لک مرت ماشہ ذذ نت کو نیس تناو ہک رکا 

وای یا کر ری ے نو دواپنے کم کے اختپار سے انا گر ریق دوسراجواب یی کر حعفررت عاش هنک 
عادت ترو ییا کر ری ے اور ححضرت مذ رف وا ایک دفع ہکا واقعہ نیا نکر ر سے ہیں اب ده ایک دفعہ تاا پا بکرنا 
مو دآمنقا بک ےک ماوت ستمر کے منانی نی ے زاو ول عدیچوں کے در میان ول توارض ند 

اب ضور لق همیب فرمان ےکی چن وتات بیا نکی جا ہیں۔(ا)بیان جوز او رآپ ۳ 


دنسر کج جلا 2 
جاک ےک ہیں تپ کے ل ےکر وہ نی جب اک اعضاء وض وکو ایک مت دون ودب او رآپ نے .کی ایک مرت 
اکتناکیا( 1)٣‏ کے این بان رکب می درد تھ ٹین میس لیف ہوتی تھی۔(٣)‏ کک مہا رک می درد تاو عرب کے 
دک الکاعلان تھا اما بک نا۔(۴) مہ جس کی میٹ کپ وت ہو کنر یش تھا (۵ )پیا بکانقاضاز ور 
سے توااس لئ یھ نہ کے (۹ )این غ ی بن کہاکہ له جائز ھا پر فور م وکیا او ربھی ہت کی وجو پات ہو کبس ' 
یالاک عم : لام ار تقتل‌کا کے زر یک مطلقا جا سے امام اک فقس نزو یک اکر جح گر ےا 
یش ہو ناجائز ہے درن امس ور کے دک رود کرام یل گر حط رت شاه صاحب تفاس کہ 
ال زمانے ٹیل یہ کر مینک شعار ہ گیا رتش بر تام ے امز ااب ہے حرام خی ردم وکو فی نفسہ ام ھک راہ تکیسا کے 
اور گم اختلاف زان ہکی بنا یہ بر جاتا سے جیہاکہ ہکا کرام کے مد مامتان اتف« چان تاد وہ 
نفک نمزاکھاتے تے اس لے حاجت منگ کی ط رہ نفک موق کی و سکن تھی بت کے زیریس کوک ع رض٠ن‏ زا 
کھانے گے اس لے عماجت بھی تر ہو نے هکل اد راو رک جا سے مزال باتفا وجا ہیں اب پاٹی سے صا تک نا 
طرودکنب ان رل اما مکافمل تابر کس وا کلام کل فقیرکاکام ے ورت توغرا لپت ونان با ۶ 

شرمگاه پر چشینٹیں دینیم کا مطلب 
ریت نیت ۶ ۰۶ ۹۶ تقل اکن شاخ 
قشریح: ا کے چند مطااب ہیں.۔(ا)جب وضوست فا جا وش رمگا بب پالی رک دو جی اک ماش لک حدریث شا 
آ پکا گل کور ے او را یک مقر یہ ہوتاہے وساو کارت گنل شیطان تاب کے کین گر ہا کاو سو نہ ڈال 
کے باتع بو لک افیا وش و مک نهک اور صوفیا ےک ام کے ہاں ىہ ممول ہے اور اہ کوب ل الس اویل سے تحبیر 
کر یں یاس تو تطرا تکام سے ووالیانہ :کہ٣‏ )وضو سے پیل متا امرس (۳) وضو سے ممل اخضاء 
وضو ی پچ رک دے :کہ انم ہو جا اور ان بھی طرں ی جائے۔ 


استنجاء کے آداب 
لات میت :نآ و بوجایرو وائیں تین ۰ ارات 0 دسجي بالماوالح 
تشریح: : سعیز بن سیب اور اہن عجییب ال کے ز رو E‏ یں یوک ای روب سے اس کنا پاکی س 
استحال نہک ناچا بے یکن متا راہ جا ئزہ ا بت ٤0‏ 9ە- 6 ق رآلی اورےے شاراحاریرث 0۸09 
اتقیاء بالما ہکا زک ے اب اکے مقابلہ شی ا یکا قاس نیس رگ نزدیک بھ یکپڑے ورد ونم وہاں 
مشروی تکہاں تیال تمن چ ر یں یں (۱)اولاکتفاء ہا کیاروا کے بارے میں مرت ”شو رترب Ie‏ 
اکتفا بالماءاس میس بھی حریت مشہور سے (۳)سوم من اجار ال کپ قر ے صا کی .2 پھر پا سے دع یا 
جاے۔ اس کے پا می امار ضیف ہیں زص رن گت لگ جلف وغل تک تال اور ضیف حدریث 
پے جب تعال ہو چان ے توو قوی ہو جا ے هی سب سےا فضل سورت ہے اس لئے نہ اس میس صفال اور نظاو مغ 


¥ سک ےج رہ کج جداں‎ E 

صورت تغل ہولی سے اب ایک لہ ہے ے کہ تا یقرت | نف ہے انیس یکر ۷ا د0 ہو رک ر اے ىہ ے 8 
ال کرک رت لپت گرا رت ار لے معا 
ارات ت مکی دور ہو جات میں نیز ال دل نظاات E‏ 


مسلمان اپنے معاملات میں کسی کے محتاج نہیں 
للد ايت : عَن مَلَعَانَقَالَ :ال عضن اشر کیت . وَهُویَستَه ی :ی صاجبکم هکم ال 

تشریح: یہاں ظا راہ معلوم وتا ےک yy‏ 
مو رکیاجاتۓ نے ار راک انہوں نے يم کیا کک جواب علی اسلوب انیم ےک وس چ کو نتصمان و عیب که ۱ 
ہے در تقیقت وو وکا لکد لس کہ اسلام نے م وه بڑے مل مک تلم دی مخلاف دوسرے نس کر ال ل 
مرف باب پچ کی آم دتا تاای طرف ت رآن نے اشا یالیو م آمل لک ویکگۂ ےت مش کین ے ےکنا ےک 
هثل ریف کہ کل استجزاء یزار رکیاجاے تو وھا جانا کہ ایک پاات کے ستل مس بو سے دی یرابجا ور 
کہ ی اتال نت بد س مقس لاس ے 07 بتک ولا تشتتجي ماع من 
می تفر نش سک مایت ول تی ا کے من یس نف ار لش زر چیغ مس حقو جوا ورگ مایت 
ی ڑا ی سے زیاد کال کیا ہو سے هک ایک پاغانہ کے مس یل لور سے د تناها مکوبیا کرو یاو وا یکو اق تا 
ےاگرذرای قل بوا لر پان ہو ناچاے۔ بال حدریث می جاح میں کی قصیل زرد 


اب تال ( سوا ککیان) 
ریت یت کنا شون قال: کال شون لو صلی اللہ علیووسل لآ نع اي ال 

تشریح: عبال عبت کے ا ختبار سے ایک اکال ہوا کہ لولا موضورع لقاال اوجودالاول اور یہاں ہے صورت 
لک گر وج مشق یل اک ارب وال ی ہق ی جاب ہ ہک ال د کالفا جز وف س کم 
مشق غوف نموت ۶ رشق تکاخوف موجود قاس ام پالسواک ی ہوادوس ااشکالل ہے س کم اھر بالسواک و 
اتر عش وی فاد اب بھی و مسواک اور ماخ رع رکا عم ہے نذا ںکاجواب یہ سے کہ وج الفط زوف ےک وج لی 
تع مکرالیان مقت کے تو فک ناپ عم دجو لی نیس دی فلااشکال فرعم طور سے ال لاف بیا نکیا تست سکم 
خوال یع ے ززدیک مسواک کنن سلوو یں سے سے اور اتناف کے دیک سفن وضو ہیں سے سے شوانع و یل کے ہیں 
الو ے ماک ال مرف ے سل یس دص ے لام ابو یز گی ول این خ نیم پا کی رولیت جوالوہریرہ 
تفت ے اس میں مر ك بالشر ا ئن ل وضو ےد و رکد مل صن دات ہاور بغار یں تعیتار وات ےل رھ 
الال ئر کل هوی تی ری ر مل ماشہ تال عریث ان حبان ل لامر یم مع الوضوءعنں کل صلوق 

انا فک طرف سے اگ دمح لکاجواب یہ ےک یہاں مضاف وضو زوف ے کان ظرت شاه صا حب ٹل لاف اتۓ 
لک کول لاف نی ا کید کال ہہ سے ام اد نے تام تلف یہ مسا کیا نکیامسواک کے بار ے میں 


ان ڈیا 


لئے رو چا ا 2 
کوئیاختلافبیان نی سکیا معلوم ماک اس می سکول نتلاف نیس ہے یل ایک کے نزدیک نماز ووضو سے وقت مسواک 
نا قب ے جاک علام شای کل ےہاک پا جل میں سوا کر زا مس تب ے عنرالوضو,عن ایام ال ااصلوۃ 
نایامن النومء وج دک اكلا مء کنر اصف رار ا را شاق از زار نت ور کہا جا ےکک شواک نزدریک نماز کے وقت 
زار کید اور احناف کے نزو کیک وضو وقت یاد وتاکیرے اور لصو ۷ لا کیہ ے۔ ۱ 


باب+شتي وش وو(وضوی سخ ںکابیان) 
ری ین نای هرر کل :کال مر لاو صل الله عملم :15 اسکیقط ادگ .ین نڑیواے 

تشریخ: عدیث باس استیتاظط "الوم یط ررض روایات یش ی کی تید ے نیزر وان قبودات اتاق ہیں 
عر کا قد ہے س ےک اکر بدن سک حصہ میس ناس کاش ہو تخیر لبم یل میں نہ ڈاے۔ اب اگ ری نے هر 
دو ے ڈالد بات جم ور کے نزدی کرو وکا مکی کر پا ناک تذل وگال خواہ ر کے نز ویک پاک ہو جا ےگااور اام ار 
وا ش٦‏ کی ایک ر ولیت ےک اگررا تک شیدنا اک ہو جیوه رات تلام حدریث سے اس لال بی کر یل رتور 
ےی ںکہ عست می جوعلت یا نک دک تواست اور پا پگ ہو ناشقی ے اور ین کح رال لبود 
اب ہاتھ دعو ےکی کات امام شا فی وت الال نے ہے بیا نکی ےک ال یا امن بل اکنا با لج هکره نیتال 
نی سکرتۓے جے اور اک لوگ لی اهراک کی گرم تالوجب سوتے بہت ز یدمن کاس لے اخال تھا اک 
کل نوات میس کر اک جا ےباب زی ل یک م دیدب اگ ریا کک کاعال ایا ہو کین ۱ 
ررض عم کل وج الا تاب بالگ 


مسئلہ المضمضه والأستنشاق 
از نت : عن کال قال »روص عَلیِوملَم و اسکیقط أن کین توو وق تنیز 

ققصریج: یہاں چنرماسث ہیں : کل بحٹ یہ ےک نوم تس شیطا نکی بجعت «قیقتتمولباازي تو نے 
پاک جاک دک شیطان اک تست برے برے خحیالات دول ڈالتا ےا کشت سے آجی کیاد سے حش 
حرا ت کے ہی کر چوک ہے کے بعد تارات ٹم جائے ہیں اور لگند ہ ہو جاتاے او رگن رے گلون ے شیطا نکیا 
مناسبت ے اک وجہ سے ا لکشت تی کیا :۸0 بی صادق ردیل کو تپ مو لکرنے می کول 
ابا اور شیطان عم لطیف ے بل ر د اس 

دو سرک کٹ مضو واستنثان کے کم میس وام شا دک رھبا کے ہیں 07 E E‏ 
وان ڑکا کے نزدیک ونوں وضو و سل میں رض ہیں اور اال تقوم اور کے نزدیک انثا وونوں میں فرش سے 
اور شم سنت ہے کی ام اھ رف ڈاظلۂ ال سے ایک ر دات ے اور ایم ابو حفیفہ او ر سفیان تو رک رمتا ان کے ن دیک دونوں 
شس میں فرض ہیں کان رض قطتی نہیں یش زا کے ال کال ہوگااور وضو تن دونوں سنت ہیں امام شنت الب 
یا دسل شی کرت ہیں ال طورپ هک ترآ نکریم می آیت وضو و کل میں مخرضہ واستنتا نک کر احریث 


چیا رس کون سر »و بادیں لد 
سے اگمزفرضی تاب تک روز انت کناب ال لاز مآ هدرک یل سم خرف من حطر ت ما کش تدای 
"بو عدریث ہے عشرمن سنن امرسلین ان ٹس مض واستنشا قکو غ کیا مزا سنت ہوں گے ام اھر دا کل متفه 
Na‏ تے بین صرت الور دو یر وم ےک وضو دل انشا کے بارے میس ام رکاصیض ہآ ا اور وجو بکاتقاضا 
کرت ہیں اور م ہکو اس رقیا کر کے ہیں توجب جت امغر میں فرض وا عد اکب میں بھی بط رب ول فرص وگال 
وا کتک وضوم انتا کے باس می امرکاصیفہآیا اذا وضو ہہ داجب گرب عرش اص داجب 
لوز اگج میں بر لن او اجب ہوگاور .> بارے یل اھ رکاصیق کیل ے اذاواجب لگ 

۱ اام الو نیز لال کی و ل ہے س ےک رآ نکر م سس آیت وضو یس صرف اعضاءار بعر کے دعون ےکا عم سے مض 
وانشا یکا زک لاور ندال میس صیذ مبالضہ ساب اگرال می دونو ںکوف رش قراردیاجائے توزیارۃعلی کتاب یخی 
الواحد لاز مآ ےگ ای ے وضو یل دونوں سنت ہہوں کے او ریت شس می گر صرا دی مض واستنٹا کا زکر نہیں 
ہے خاتحھرواصیضہ مان یاس :هل مبالق ہک نا چا اور ظاہر بات ےکہ مبالفہ رات میس تسایر وہ 
ن ہیں تن دنم کے ساتھ یز معلوم ہو اک ال سے اشار کیال بات کل طر فک جو اعضاع کن وج دال بدن ہیں اور 
من دج خرن دن یں ا نکاس ای شان ہے منہ اود تا کک ءاس لیے مل میں مضہ تفر ہیں ہے 
ا واحد سے کال ہے بک الا ق رآ نکی زیاد تک باه زیاات ے۔ فلا رف 
ام شاق دالک کیت ۂکاج اب یس ک بھی ہم تلا ہیں کر ان رفن فد هتقو 
نیل ےگ رصیفہ مال کی باه ال ٹل زیاد تک نای اد صر کا جاب ہہ ےکہ وہاں وضو کا مر واسنشاقی مرادے با 
سنت سے ط ریہ مراد سے یں میں فرش واجب سب شا ل ہیں۔ سنت اصطا ی م رار کچ امام اھ وال خواہ رکا رکاج اب 
بی هک ام مکاصیفہ بیش وجوب پرولالت نی ںکرجر ۱ 
ت ری کت مض واستنشا یک یکیفیت کے باس یل ہے نذا گی پا ور تس ہیں( )ایک غرف سے دونو کو فصل کے 
سات ھکیاجا ےک پیل تن دف ہگ لک جا پچ تین دفعہ ناک میں پا ڈالا جاسے(٣‏ )ایک حرف سے تن رف کیا جا و سل 
کی اتھ (۳)دوغخرفہ سے فص کیرات مکی جاۓ (۳) تن غرف سے وص لکی اق کیا باس (۵)سچھ فه سے فص لکیراجھ 
کیاجاس هکم پیل ٹین خر فہ سے ک کے ب ر تلن خرفہ سے ناک صا فکیاحجائے۔ سب کے نزدیک ہی سب صور یں چائز 
یں الب ارات میں انتلاف ے۔ شوافع سل نز یک صورت رال | شل دنه صی لکیاتھ تن رف کیا جائے۔ امام ابو 
یذ کے ریک پانچوریں صورت انل سے لته چ خرف سے نع لکیہ ت ھکیاجائے۔ 
شوانع اتر لال چ کر ے ہیں جرت کپرالتہ من زین و بے لفط َحَضحَض وا تمیق 
کپ اجب تَفْعَل َلِكَلَلاکارواہالخاری۔ 
ام یم کر ہیں شت بن س ہکی رمث شهدت علي بن ایی طالب وعنمان بن عفان 
توضتا ثلاثاثلاثا وأفردا الضمضة من الاستتشاق ثم تالا هکن! مین سول اللہ صل اللہ عليه و سلم توضاً هرا ابن 


کیل سم دنسر #» 33 بداں 2 
السکن ف صحیحدد دوس ری دلبل طا بن مصر فک عديث ے آن سول او صل الله علیه وم توا سفن 
لا واشتثقق‌تلاگا. من واجدةماء کرینا مره ابو راؤد۔ یمرک و مل تن لین ای نیہ قال: میت علیا توضاً 
ففسل کفیه حت أنقا ما . ثم مضمض لاا و استنشق ثلائا,واهالترمزی- 
دو رک بات یہ ےکہ جب دو حضوہیں تودونوں کے لئ اک الک پ ناه دوسرے اعضاء کے لے الک الک پا لیا 
جاتے۔انہوںنے جو و بل کی اکے کلف جوابات ہیں (۱)سب سس هآسان جواب ہے هک بیان جوا رل کیا( )ایک 
ات دونو کی با دونوں ہا استعال نی کی( ٣‏ ایک کی تھے پال لباقت یورتم 
ہو کے کہ شار یکا پان میادایاں سے اور نا کک پان لیا بایاں باه سے اس دگم کودو رکر د(۳ )پا بہت کم تھا چات 
نالک ولیت ٹیل سے دکان رر دلو ی رولیت می ات الات ہیں ا سے اولویت پر اتد لا کے درست ہوگا۔ 
قَمَسَحَبرَ أيه مسئلہ مسح الرأس: کی و فی تترآن ارم ے خابت سے اس اس میس ا یکانتلاف نر 
الب مق رار فر میس اختلاف ے۔ سو ایام ایک واج کے نزدی ککل س رکا ع فر ہی اام شاف یڈ کے دیک 

٠‏ کو خاص مقار خی بک اون ایل ملا ق ہے دودو تان بل یں۔احاف کے نز دی مقدار ای فر ہے ده 
چو تالم چا انرازدے۔ ۱ 
اام کک داح ان بل کرت ہی ںآیت قآ نوا توا بو یسک تک یہاں بازئکروہے ؛او رت رآن ملاس 
یکوئی فاص مق دا بیان تک ام کل مرکا کک ناف رض ہہوگااد وو تیا کے ہیں تم آآیت پ هکم بل قاهتر 
مکش بوذا ما نک کل رکا کے فر تراد وکیا اما یہاں بھی اما ہوگا۔ امام ات5 ر ل جل 
کی لک رآ نک ریم می ںآیت 2 ملق ہے .کول مقدار بیان تج یکی ۔ اور یی گم ہک اکے ادف رد ین 
کرنے سے کمک نیل ہو جال ہے۔اوردو تن بلو نکر ارچ ام ای فرب 
اتا ف کد کل ہے س ےک هآ تکرییمہ یل ہا سے اور با ہی اصل ےک ہآل یر دا شل ہوجاے او رک آل مرا »تیم 
باتو رال مقصور مرا اد ہوتاے_اور جب وہ کل + وکا داہن خاعییت کون ےکر وا غل م وکام یکل لن او یں وکاب 
بش کل مراد م وگال یہاں ا گل پر دا ایض سر مراد موک کین قرآن نے اس کی مقدار ہیں بیا نکی بک 
یل پھوڑ ییاور ل یر ل ک اس وق تک من یں ج بکک ا سکابیان نہآجاے ہن ہم نے ہر کیاق رآن شس بیان 
یں ما۔ تو ریش میں ملائ کر کے بیان الم مره بن شع بل کی حدیث ے آن سول اللہ صلی اللہ عليه و سل اق 
سبأطة‌قوم فبال علیها ٹم ترضاً ومسح علی نا وہ تو معلوم ہواکہ ق رآ نک مقصر بی مق رار ے_ معلوم ہواکہ می مقرار 
ر ےک وک آپ نے مقدار ناعی س تکوپ کی اکنا کی کی از اا یس ےکم ار لاور اوقا تآپ نے پوداسر 
ا ح ھی نہیں لزا معلوم ہو اک کل س رکا س رش تن ایام مانک دار تن ہکا جاب ے س کہ آیت ق رآھے ٹیل با 
اہو کاکو یق ینہ لاور > ی تا سکرن کچ ن٠ی‏ ںکی وک ہ تم میں روج غلبف ے وضو کاو وضوی س کل چچرہ 
رون ضروری ہے سل یم کل چرها حکر ناض رو رک ے۔ کہ فل اص کے خلاف نہ ہواور سح راس تقو رم 


درس :سر کج جرال اھ 
اکل ہے ده کار لس اود ا کو تیم پر تیا سکر نا تاس الا صل لافس وال موز امام شان کد 22ن ھا کا 
EET‏ کہ آیٹف قان لن تس کید اطلاقی و تھی رک مس افراد ٹل ہوتاسے متقادیر یس کل ہاور یہاں شب 
مقرار بی ابزا یہیں مع ہیں ری ہل ہگج کی تی ریت ےکرد یں امام شا کات لال 
مرو سو اللماعلمر۔ 
مسٹلہقلیٹالمسح: اام شا فی اہن کے رر رکا جن مر ۳ نون ے اور می امام تست مشہورروایت 
1 موی اود امام مالک تاه کے ریک یش سج صنون لت بل ایک مر کلم کا ت الا 
شا یلیل شی کرت ہیں حر ت عنان کی چنداحادیت سے جن یس شی ثکاذکر ہے دوس ری و کل قاس 
کے یں دور اخضاء کہ ان می یت مسفون ے۔ لہ زام میس بھی یت مسنون ہ وی لا و ماع لوضور 
اام ابو هی ومانک رَد بل يکرتے ہیں ان احادیث سے جن میں تام اع کو تین مر حبہ دعونے اور کا اسیک 
مرچ ہکرنےکاذکر دو رکد کل ےب کہ سم اصل مقر یف ہے اک لے توا کاخ رک سس رگید اب اکر 
تن مر عکیاجاۓ ماع مع کے کل ہو جا ےگا جو متدد تھا تخفیف وہ ت ہو جات ےگا ابام شاف نے 
حخرت عان پا کی صرت سے جو اتد لا لیا لک جاب ہے سب کہ تن رمث یل شای کا کے ووسب ضیف ہیں 
جیے )کہ امام الو داو فرماتے ہیں وأحادیٹ عثمان الصحاح کلھا یںل علی آن السحمر تد و راج اب ہے س ےکر | کل ل 
وال ین م رہ کنا راد کد ےکلہ ایک م رح استیعا بکی گر تن رکٹ ےا یکو ےت جر کیان ے 
تا کاجواب ےس ےک دوقال کک کوک مو یکا قاس ولپ رب یا کہا جا ےک مضسوزات می اصل 
مقف ر اکال فرح ہے اور وال چکمہ ایک مر ٹیہ استیعاب فرص ہے امان کے 7 ءھ و ان رل 
تی ٹف کی ضر ورت بزک» اور 6 مل کال تیاب گل سے وہاچ ال لے ی ےکی شر ورت یں ای لے 
کی کی ہہ »زاق ال جج ارت 
مسئلہ فسل رين 
ریت انیت :ڪن عب ون ځرو قال مجفتامعشول الو صل الله ومام ون ... ولل عقا ب ین ای | ۸ 
قشریح: رآ نکر کیآیت و اشتخوابز مو سک و لھ مم آز جر یش دوق رت مشہور ہیں خب لام وبکر ۔ 
الام اس ناعير ف رأ ر ملین یس امتلاف ہو دیا تو شی ایامیے کے نزدیک ف رکض ر مین 209 نس کیان جر یر 1 
اراک زر ری وونوں مل افیا چاے 1 ہے چاج 0ئ کے ااذ یاو رال ظواہر کے نزدیک 19 
۱ ن ار اور جھہور کاب وتان وچ پور انس کے زدیک د موز وک صصورت ٹل ریز رجلین کل 
ہے۔ شیع اامےد مل ہیں کرت ہیں اس طوری ہک اصل قرات کر در ے اور ہے وف رال مزا سور ہوگااو رقرات 
نمب بھی شوه کان وہ گول ہے منصوب زا وز دہچند کا ہکرام کا اعادیت سے اتد لا لکرتے ہیں 
وہ ریت لی کب اللہ ہن ید د فاعہ بن ان نیز رت اہن عبا کا قول س هکم أمر اللہ بامسح وی الداس إلا الفسل۔ ' 
صن بص ری اور ایی جرب مر کت ں کہ جب دوقراقیں ہیں مزاول می اختیار ہوگا اود لطاب رک ہی کر رولوں 


کیا درس مشگرة جلدادل 2 
قراقوں کے ”تی پر عم لک ناچا ین لزا نل اور کے در میان نکر ناچاہے۔ ۳ ۱ رک وکل ہے >( یکر مم پا لم 
کی پیر کیزن کی ایک مرج بت نیس ےک ہآپ نے عدم تتف کی عالت میس رتنیا سار رن 
رش ہوا یام ےک مکراہ کیا تھے جائ بھی ہو ماف بیان جوز کے لے ایک مر تک یکر کے دکھاتے جب اک + کروہ 
کیامو ںک وآ پ نے بیان جوا کی ےکر کے رکمایا و علوم وک ذریضدرجلین سس ہو نود رک کہ اہ تکیسا تیم بھی چا یل 
دوس ری د کل ود ویر ات ہیں جھآپ نے پل کے راسا حص نک رہ جانے پر ین فر یل جیما حدریٹ ن کور لی الباب۔ 
تی رید یل یہ کہ کل ر تن تام ارام کااجماع سے جک او شر یف مس عبرا ر تن بن ال لی یکا قول 
ےکہ آجمع أصحاب سول اللہ صلی اللہ علیه و سلم علی غسل القد مین ہاور عافظ امن 495 نرا )کہ لم 
یثبت تن آحرمن الصحابه علافزالک و عمن‌ثبت لاف فقدثبت ا لحلات عنهم الرجو ع بو 7 مو مور رٹ . 
نس می ںآپ مل نے فرماپاکہ اسبغواالوضو کماامر لیر خر می رای اغساو االرجلیں دل ل کور ہے ثابت الہ 
فریض یر جلین عدم تق فک عالت میں صرف کی ے۔ 
ان حضرات ,تی۸ میس سے اکا جاب بت هک ق رآ نکر ی ددق رمث دوعال تک طرا ف اشار موتا ے لو 
نم بک صوررت می موف ہوک نضواارت او رتسول گااور ول وکا مات عر م تق پراور مج رو رکی صورت میل 
علف ہوگار وو پراور گول ہوگا حالت تتف پر یا مسوں) ہوگامگر اس ضس سے سج اصطلای ماد نہیں سے بک لغوی سج 
مراد چات میں سخ کے من سل خفی ف بھی ہوتے ہیں یس ناه گول ہے جب رن ام تھا پھر ضسوخع 
ہو وگیا۔دوصراجواب بے ے کہ دولوں رات مل ار لاف شولات پر اورا کل ت رت کوب سے گر ج جوا ری بنا 
پر رود داش کر ور سے ا سک اط ریہ بھی ہج رود م وکیااور ا کی نظ ر رآ نکر میس موجودہے جییاک عذاب لوم امم 
کرام عفت ے عذا بک کن وم کے جور 1 بنا مج رورپر سنا جا ب یاعیراکہ دور ین یہ طوف ہے ود لن پر اور 
مرت لین مل نکاس جوا دک يور نا جائڑے۔ 
اا خی میزون حول رگ موب تصش ریپ 1 موا بر و سکم ولو 
ر تن صند تی نک ناپ رور عن کی ہا سے اور عنعت نبا دو قارب مالوں کے الک لگ 
رو مول ہو نو ایک عائ لکوحز فکر کے ا کے معمو لکیل ے مول یر عط ف کر کے ا کا عراب دید یاجائۓ یبال علفتھاً 
تب ماءابار دا تیہاں ماءآبدڈاسے ی ایک نل .تھا رهز کر کے ا کے مول وہر اک عط یکرو گیاعلفتھ ا ے 
مول نا اور اکا اعم راب دید ایو مت فکورو ٹیس بھی وا تل و اکو مز فک ر کے ا کے مول ار 2 کرو کوا ے متمول 
رو و پر عط فک کے اکا عراب جتراسکودير گام زاق رت جک بنا کے ی فا کات رال رست تس ق 
شیم ایام نے جو رت وا عباس اتف اسآ ت دلا لک اسکاجواب ےس کہ ان جحخرات سے مج 
اک یت یکن وه ر لن سل قانل سے یمک امام ھا ویتکا نے ان ر دایا تک ر اک 
وقت مر مین ایت ے رتش اس سے جرک ذس سے اتد لا لکنا نی سک قال این ج ھن 


f 


سس مد 2 
اب ال ل ایک شیر موتا کر جب فریضەہ,جلین عا کو مفسولات کے ات ذک رکیاچاتاے سورع کے تحت 
کیال ذک کی گیا نواس کے خلف وجو ہات بیان کے کے (ا)ال عرب وض وکا کم بل ہونے سے ی بھی پات مضہ دع یا 
کر سے کر پا لاور سل وو ے سے کم وض وآ نے کے بعد پات نم کے سات ر کین اور س رکااضا کیا جا سے لیے 
دولول خاش ام تش یہی ہیں اک ایک سا ذک رکاگل( )ان دوٹوں کے در میان جیب و ریب مناسبت ےک نج بآتے 
یک ایک سا تح ھت ہیں اورجب جاتے ہیں الیک اتمه جاتے ہیں کے یم میس دونوں لہ کے (۳) شس ر یکرت ما 
امتعا گر کامظنہ ے اس سو کے تحت زک کی کیااک با تک طرف اشاد هس کیل هک پان ا ی می لکم خر كکرے۔ 
)ایک صورت میں فریزر ملین سح ہو جلاے د« عالت تتف کر موزویر راتس اس سور سک تحت زر 
> کیگیا۔ فااشحال۔ ۱ 
۱ " مسئله مسح الخمامة 
یت ات :و یمن شب رفس اللہ عن تال إن ال صل اه لوول توق سح بتاص بيه اخ 
فقهاه کا اخخلاف مهاگن تاه کے نزدیک شام کناچا چ اگرچ مرک حصہ پر 6 کے 
لام وا اور داد اہ یکاخ ہب ہے پچ ران یس سے انس نزدیک طہار ت پر بانط اور کے نزد یل 
نامک ہو ناش رط ہے خن ق امہ ٹس ہ ےک امام اھ یہ شر ط کے ہیں اور کے نز دی یکو غ رط یں ے۔ امام الد 
نیف مالک ؛شانقی سغفیان رگم مھم اللہ کے ادیک سح کل العمامہ ما ہیں الب شا فق تھ اکتا فما کے ہیں کر 
مقداف رض سرپہ رس اور استیعاب عمامہ کر ے فو سیت اد وا ےی ووسرو لک نز دک نہ فرح ادا وگن سنت 
دلافل: امام اج رداص یکرت ہیں می دن شعب ہکی عرب ثکایک طر یت تر خی می ہے جس می را ورین 
وما ہکا لف ہے دوس ری ول حر ت با دی حدریث ہے مسلم مل وایت نی یه وسلم تمسح على این 
والحماںایالعمام تہ تس رکو کل مرو ام ہک عدریث ہے بخار ی شر نف رای سول الا صلی ال علیہ وسلم مسح 
علی عمامتہ والمذین۔ائمہ مشر یل پیش کرت ہیں چند وج ے۔(۱) رآ نکر ی مش وا کوک گیا راس چاہتا 
س کہ ره پل با چاست اور ظاہر بات ہے۔کہ امہ عم نیس ہے کے تن کو ماج ار کین کہ ای را 
لی الما م کو ماج ال راس ہیں کہاجا ےگا( ٣)ست‏ موا تر ہے شات سے ہک حور راس فرماتے کے اس کے تابر 
مس می اما ہک رمث شا مل ہے( ۳ ہم قا کرت ہیں تیم کے دج دید ہک وال جیپ کرنے 
سے وج ویدادا نیل ہوگاک در در مان ما لب یهانگ گام عائل سب رکے لئے اتیک سے سراذا 
نویس وگاان د لال ے ابت م واک کے یمام چام یل 
جوابات :ران تالف نے جود لاک یگ کےا نکاجو اب یس جک (۱ )سب اعادیث ضیف ہیں چنا مجر این عبرال رفرماتے . 
. ہیں کہ و الم سح عل العمامه وی من حدیث عمروبن امیدوبلال واملغیرة کلھا معلولة ( )د و راج اب ہے ےک رآ نکر مم 
کیت ضس راس تم ہے ا کے سابل رل امام ہکی احادیت کل وموول ہیں اور قاعد و ےک ق لکور جو کیا جا ےک 
مھ مکی طرف۔(۳٣)‏ تین اجواب ہے ےکہ اس می اخنار ہوگیاکہ اصل میں کے ارام والٹاصے تھا ج ےک ضر وات 


E‏ رر سر: (ye‏ ھا جداں لے 
ٹس ہے۔(۴ )چو تھاجواب بے 7 مب ی نب کہ سره ےکیادداں ان سرپ عمامہ تام مطلب ہیں 
کہ گام کیاادر بہت سے جوابات یں جو درس تک شآ لس انتا اٹہ از ۔ 
مسئلہ التسمبہ عندالوضوء 
ليت الت :عن سويد زیال ال مشول ‏ صل انل یه سل لو ض وع لن لیر يکر اش ال علیه اج 
فقا کرام کا اختلاف:ال' ظواہر اور انام اتر وگن کے نزدیک تشم عنرالوضوم فرش ے البت اام ١ب‏ وان 
یئن کے ہی ںک اکر نانا چھوڑ و ےلو وضو ہو جا ۓگا کن ر ر کفکر نے ے لوگ اور ال ٹوا کے ریک خواہ 
راوس نا رصورت وضو نین کال عراقی :امام ابو عفیفہ؛ادام شاف اور ام کک م مھم ال کے نزدیک میم 
وی ا سنت ے اود کی امام اہ سے ایک د ولیت ہے ال اہر امام اتھ وا تی دس یی کا ریت کا 
سک ینان لان یا کل لے ے۔دلائل :اک رو بل کرت ہی نک ت رآ نکر میں م رف اخعضاءار یع کے 0 
کاکرے ی رکازر کل اب | گر جمرواعدے فر ضرت ناب تک جاۓ نوز یادا تاب لش رواد لاز مآ گاوڈالک _ 
و دوس بی بل حضرت این عمرداین سود ات متسد قطن وی میوش گر ار 
یه کان ور یع رنه کن لوا ورن گر اشم اه یں کان وو ءا لاح اه تس رید کل ہا ج ن قن کی 
صریث ےک آپ بک نے عر م وضو عالت تلا سلا مکاجواب نیش دی وض وکر سک جواب دیور فا اي گر ف 
ناکر ایلہ لعل َء نآ پ نے ای مر کاوضوبغیرتعیہ کےکیااگرفرض ہوجو ضروریڈ تفر مخال فکاجواب یہ 
2 ار لان کال کیل ہے دوس راجواب بی ہے مر مرس ین کی کی هرت ہیں وهسب ضیف ہیں 
جیراکہ امام ال فرماتے ہیں۔ تیسراجواب مہ هکم ہے خر واعد ے اور ال سے فرطیت ثابت یں برل ۔لیڈا 
عوریث بڑاے نے یر تہ اتال کر ناور ست کے 
لزت الت :عاي دگرو شزو ل افص اوق کان نسم اقا 
تشریح: اام ذم ک داد ظاہ ری کے نزدیک تاک طابر کوب ی جص ررثوں مضو ل ہیں رہ کے سا کے اور ایام کے 
نز دیک بان در چ ریا تھ اور طابر سور ہیں کے سا کے اورامام LE‏ کور ے رکیسا تاور 
بن مغسول ہے چرس ات جم پور کے نزویک وولو حصہ "سل ممسوں ہیں پچھرجمہور ےآ ٹپ میں اختلاف کہ 
ان یا کے مب ہیں کہ تل پا یکی رورت نی ی سر باق ند پالی سے کال ہے یا رکے تلع کک اس 
کیل ماء ہدید لی ےکی ضرورت ہے خوا نع دوسرے قول کے ال ہیں اوراحناف چیہ کے تاک ہیں ۔لمام زج ری دداود ظاہ ری 
رل یکرت ہیں عبیر ال خو لا یکی حدریث سے جو اوائ مس سے کے الفاظ ہے قرب بِهَا ل وھ کر اق 
ایو ما آل ین اک واه ابو داود-ال کے ن از ننک ل کف کیااور تلا رکو اس یر تیا یک لی اور امام و 
کاانئکالن نے اس و مول یاچ طابر ادر ہا یکو مخرل کہا اور انم کن کے ہی ںکہ ال عدریث ے دونو لک سورج 
معلوم ہوا ہے لان هکلم ظاہ رک حصہ سر تریب ہے۔ اما لک مس رکیساتجھ کہ ناچا سج اود ان تریب ہے پچ رکا 


دس سر :لپ yy‏ ج جاور سے 
امزاا لو چروو عو وقت بج 27 ھہورکی ان "و اک وسح بر یو 28388 
اهرما کہ دوفوں < ص کو کر کا زک ے۔: 

وفع تلع حمر : تاس کک ح رٹ کی کے نہیں جس میس ہے الفاظ ہیں : رآخن ماء جدیں الصماخیه ره 
الطبر ان ددد ر وکل کل کرتےہیں ا کال ےو ے اعحضاکی بان لز اوو سے اعضاء کے رم اه 
2 وات سکب 

احاف کد ایک ل حطر ت دمم کک نے عریث ےکآ پ نے فرمایاالاذنان ین الآ سک کے سر کے جائع ہیں لزا 
باءجریرگ ضرورت یں دوس ری و لیل عبر ارم کی حدیث ناش شس ےآ میں ے الفاظ ہیں: وإزامسح 
راسه خرجت الا بای ی کان انا نک سر تعکر که بان راید ۱ 

ابو لس جو حدیث لک ال لکاجو اب ہہ ہ کہ ال شل احا ل س کہ پمپ بقل ںہ قات طور رورت ماءجدید - 
لیا قا یک جواب ہے ےک جب اوی سے ثبت م واک انان مر کے بائع ہیں تیا سکاو اعت ر ہیں_ 

مار ی کید مل حدریث امه مب داد اور تر زی نے اعت زا کیک جا ر کے ہیں که لا دري ھن امن قول النبي 
صلی اللہ علیه وسل أو من قول ای آمامت لذا فورح ہونے میس شیب وکیا بنا بر تال ات لال نہیں احنا کی طرف 
سے ا لکاآسالن جو اب ی کہ ماد کے تہ ان سے اک کا رفن نات نیس موک ا سکاعد م عم ر کے رل موک 
الا کل دوس کر وات یل صراحتغایت ‏ کم مر فو ہے چنا نہ ائکن ماجہ یل ہے :وقال ,سول اللہ صلی اللہ علي وسم نر 
ا کے چودومتائع موجود ہی ںکمالی موارف! کن للعلا مور یل زو راجواب بسک رم فوت وگل الاک 
۰ تول ہوتب بھی عدا رفوک ےک دک رد دک بالقااس کم میس صحا یکا قول حم م فور ہو تاے ال زاکو کیا شال تس 

دد ماخ کیک یہا ںآپ نے فلت بیا نک کہ کان خلقة مرکا جزوئیل با نکن مقر لالج راب ےک 
اذ نان سکع ونر کی بات چام بد می بات کے لے انیا کی !عشت کل ول دہ تو بیان احکام کے ے مبحوت 
ہدتے ہیں۔ مزا ال پل قاب ل اتقات یں ۔ بنا ب ری کیبل کی ضس کف نیس 


یت الیو وحن غفحان »في اللہ عله : أن ال صل له علیو وس کنیل ية ا + 
تشریح: ال قور یت ار اراد سک O‏ یلم اجب ےک رورا کے نزدیک واجب ال ے الب 
را ورک ہے۔ پگ رب پور میں سے یتح سنت کے ال لاور | بلب کے اور منص ادرب وم اج کے۔ 
9 تابر اد لا لکرتے تاد عدریث سے جو ضرت ال :اپ سے روک ےکآ آپ نے وراوضوکرے یل 
کرت ہو یہ فرمایا:کا ا يم ق رام ر رب سے فرض یاجب ہوجاتاے مزا یل کے واجب ہوگا ۔ و راترلال 
پٹ یکرتے ہی ںکہآیت ترآ مس یل ل یکا زک نہیں امذافرض یاواجب نہیں کت نیز حضور ےم کے وض وی 
کیفیت ی اعادیث یل مذکورے ازس کر ور لام اجب »کال ظواہرنے ج حدیث یٹ کی 
ا یکا جاب ي کہ ہے شا نے ءیااگمہ بان لی تال سے وجوب غیت نیس ہو سک اک کی اس میں تحص وضی تا شال 


ا سن :لے و و ےہ چا جداں لے 


او بن اامرکی سے وجب بت کل ہو کیو ید و ام لدب نی اس لئ اس سے اتال 
ا 


وضو کے بعدتولیه وغیرہ کا استحمال 
رت انیت عنم عازن جولِ قال :یف مشول الو صل اللہ لملم ارامح وجچهبطرتو اغ 
تضریح: استعال ال ر بل بح رالوضوء کے بارے می ای اور تن کے در میا اختلا ف رب الیک بای جماعت دق ی 
من لکی اجازت هار حضرت عثانء علی راٹس چات اور این ٹیل سے سن هنن یربنق اورا میں 
سے الام اتر وا گنو نو لهس می اجازت دی اوراحطاف 8 ناب ای خان سک لاباس دہ“ یجان 
جن یس سعیراین السیب اام زپ ری ابات ی او رعبدالہجلن بن ای لیخت ہی کہ تج مت بل کرو سے ا 
ری ول حضرت اس تال رث ے:لم یکن الذی صلی اللہ عليه وس مسح وجهه بعد ال وضو ولا ابو بکر ولا 
عمر ولاعل رواد این شاعمان۔ دوس ری رل رت مهو یالتک حدیث سے فاگ و سک میں نے ضور 
مزز دا کیا لان آپ نے نمی لیا اور اتد سجھاڑتے ہے له تی ری ول ہے ج یکرت ہی ںکہ ان ماء 
الوضوءیوزن یوم اللقیا ہانگ :ہک ناچا ےے۔ نیزا عبادت دور کر نا چم 
ین پلچواز ومیل شی کرت ہیں یک تو حضرت عا نش انت کی حبیث ے کاٹ لر مول ایل صل الله علیه وس 
خرف بَا الوم _دوسری, سل حضرت معاز یی حمیث مایت مش ول الو صل الله علیه ول ۳ ۱ 
مَمَجَرجْيَۂبطَرَيِلَزبو(ر امت ی)۔ . 
این الی یی بی و لکاجواب یہ س ےک دو حیف ےکا قال الیافط این جج کرو سرک ر لکاجواب یہ ےک 
حعافظ تن اتقات فرباتے ہی ںکہ ہو سکم ےک آپ نهک فاص وجہ ملا کرک ویر ہک وجہ سے نیل لمیا۔ چان 
امش سان جب بہ عدریف ج کی توا شش ےکہااعمالع یاخذلوج آخر۔ تی ریو بل ج یک یک وزن کیاجاتاے 
وخ کر نے کے واوو لے ال خشک ہو جات گا۔ یزار ی ون مٹانا جا بت 0-2 کیره رگا )کہ دیا 
کی هتاراک و طرف مر کک آپ مرس تھے ری 
ژد ےے تھے مزا یں ایا کر هن نہ رناناجاے۔ 
اب سل (غسل کابیان) 
فسل جنابت کا بیان 
رز تین : ع نآ هرترةقال: کال مسر ای صل له علیووسلر لس آعن گم تي شرا اع اغ 
تشریج: شعب: سب شعب کی جس کے معن قطغە من الشٹی۔ بہہاں ا کے مرو کے متحلق ملف تال ہیں(ا)دونوں 
ات دونوں ےر( ٣‏ )رونوں پیر ور ولو ران (٣)دوٹوں‏ ران وفرج کے دونوں طرف()فر کے جوانب اریت رجلوس 
س ےکتایے سے جما ک اور ہد و غیر و سے مرراد حتف کارا لکر نل بی اغزال کل مار والسا لکہاجاناہے۔ اس سے وجوب 


(ye Mew E‏ ج بریں لے 
2 عدم کے پا شی پل ما کرام سک در مین اتف نکی وک اس میں وو مکی سر ہیں شض 

69 معلوم ہوا ہے جیراکہ ىہ کور یٹ ہے اوه سے عرم وجوب معلوم موتا ے جیب کر رت الو 

سهرالزر کی حدیث ے کہ آپ نے فرمایا: اکنا ال ناویا اج ین ححضرات وجوب ا جال ے 

اور ا صا ری جعفرات عدم مل کے تال تے۔ عالت اک تی یہ ںک ککہ حطررت مرول غلا تکا نایک دن 

اس مت کات کرش ور ہوا ووی اختلاف ہونے اکا رت روا لسن فیک هبدن !اگ تم میس لاف ے تو 

ی سکن سے پچ کر مسا لکا فیس ہکروں او رآ ری ںک یکر یں کے ؟ا نے می ححفرت می وا نے فا کہ اے ید 

۱ 7 )کہ اس کے تصن کے ے از واج مرا تک طرف ر جو کیا ہا ےک حضو ر ڑم 

کي مل تھا 7271 معا ل ےا 4 ده مگ حضرت ابو مو کیش کون فک شش اس کا کل نآ 

مول تو وو نیت ام مس تحص نت کے پال کے تو انہوں ن ےکہاکہ ا کی ہو ری ین ما کش کر 
دی ضرت ما انیت کے پال کے نز ضررت عا کشر تن رای ا جاور الان اجان نم وجب 

سل تاه آتا ومول اف صل اللہ ومام ناكسا ۱ 

توجب حضرت م ول کے ال مہ خر ےک ھآ سے لوا ہوں نے تام ما ہکرام کے شیم نیم لکا ارخ سے ج انال 

سے وجوب لک کل یں م رگا یکو بی زادو کج وس وانے لول کے لے زت جوا ےک تیوقت تتام 

ی گرا کار هتوب لادج نتلاف تسب کیاد سب ال طرف ےک 2 الما دن الما کا 

عم ابا زمانہ س تھا مر ضورع ہہ گیا حطر ماش لقن وال ر 5 راد حریث .اور ما ہکرام ووا 

سے راح م روک ےک :اما الماء من الماء کان ,خصة فی اول الاسلام ثم نسخ. کماروی عن ای بن کعب وہافع ابن 

خریجمذاابالُل ا یکاانتلاف ۳3 پا موا کے داد ظاہ رکیاکے ولایعبایص 

رت اءکن ما ان دس امن الا ھک یک ایک تو لکی جس سےا سکو رخ کی ضر ور و دب 

کہ اک عدی ٹکا یل عالت اضظامرے اوی من وت کے وال نو ال تن رت لاير 

اویل رایت بہت ی کر مسلم رسک رت ا نوا ےک حطر الو عر ال ری اٹاف مات ہیں 

کہ یں ایک ند رت لا کے ساتھ تا کی طرف ردان ود ںت کہ بی سم کے ایک تخل سام ان بن 
اک تان ےکم یں ی کے ا کار واه ٹھپ نے دیک دی ورس اور ودای ےکام یس مشفول ت ےکر ازال 

نیس ہوا۔ وآ پ ما نے ربا کہ شار بھرنے ت کو ہل ری یں سلا اکرویا۔ ا کے ۶ ہاگیاہال کن تن بطن امرأق ولم ینزل- 

اب می لکیاکروں وآ پ نے فرمایاکہ تس لک ضر ورت خی لک دک ھا ایا ون اناا سے صاف فام ماک ہے 

عم عالت یقظ یش ہے۔ زاین عیاش لک اویل درست نیس ہے۔ اب اي ہوا ےک این اس نے ایک 

مر حدیث کے خلا ف کے تاد لک ۔ ا سکاجواب یی ےکہ ہو کا ےا کو 9 0 9 

کا جانا ضروربی نجل لان بہت رصورت یہ ےک حط رت این عا س کا مقر ےک ال حدیث کے دو مل ہیں بل 


دس که سر وہ چا جداں لے 

واضلام »لق * نی عالت برا رک کے پارے شا مور موک ی کک احتلا م کے باس مل اب کی با ے۔ 
مسئلہ احتلام المرأة 
لاتوت : وعن‌آرسلعة. .هلعل امزآوین شل إا اختلحت؟ قال: "نعم .وم الا ال 

قشریح: یہاں ب اشکال ہوتا ےک جع رت ام کے کے وروت بطو ر کار سوا ل کیک کیا کو رتو ںک بھی 
احتلام ہوجا سے ی سے ظاہرامعلوم ہوا کہ وہ احتلام سے اکر فرمارہی ہے عال اگم یہ ہداہت کے خلاف .وش 
حرا ت نے ہے جاب د یل از واج مه ات ال ے پاک یں دک احتلام وتا شیطان بک طرف ےک وہانما نکی کل 
ںآ ادا خواو شوہ رکی شکل سے بویا یکی کل ہے اور ازواج ہمہ رت کے من می ہے دول کن ہیں۔ اسل ےک 
شیطان تضور مل مکی کل میں ہیں سور وکرم یکی کل می ں کے فو از وارج می رات ا کو تاد لین کو نے ین کی 
اس وحم یس ہہوتاے۔بظار سس حر ت ام لے تاذ اکا کیا سو ون1 3 کل اسل کر ہے صوررت 
صرف رت عات تات اکنا کے بارے یش ہو کت ے۔ کی وہ دہ ای سے پل 2-71 ھ72 ی 
ازواجت حضو ر مکی زو جیت می سکنے سے یل ووسرو لک زوجیت میس یں ۔ اس وقت ت شیطان ال شوہ رگ صورت 
ںآ کا تاور احتلا مک اویتا۔ دو سرک بات س ےکہ تام صرف شیطا نکی طرف سے نکی ونابک دو سرے باب سے 
بھی ہو سکیا سے یاهزور بای ای مرح د غی روک ہناد وغیم رہ اس بت جاب ہہ ےک عو رو ںکی فط رت ہ ےک ایق 

١‏ جن کے توب چپ نا اہی ہیں_ اس حر ت ام کے تال عا رفا ہک کے ہو ے زار فرمایا۔ 


ہاب بے 


فسل کا مسنون طریقه 
رازن عن اكاك : گی مغرل افیصل نايوم ا نعل ین اتل يديه برا2 
وضو اورغسل میں پانی کی مقدار 


نی لیت 7070 کان ی صل اه یو وس بتوشا ان دیفتیل‌پالشاع إل سا 
تشریح: : وضواور سل لیے پا یک یکوئی ضا ص مقر امن گنی کے ات پائی ےک .ناگ دک تد ر کے س 
رج فی لامج وک موم راو سرب ابتار سے استقعال ٹیس بہت فرق ہوگا۔ 
خضرت ماش تال حریث سے معلوم ہوتا ےک ہآپ نے تل جنابت سے یی کال وض وکیاکہ قد می نک بھی 
ره لیا ۔ کان رت ومد حدیث سے معلوم بت ہک کل رت نک کل سم راکب وال ہے 
الفاط ی 

و سل تمه بنا علیہ تش صیا ہکرام رت مت مدش یڑ نے رن 
کل سے مقد م کر سے تھے اود مکی ام شال للع کان ہب ے اور اف حطرات حفررت موز نی 
عریثھ نک تک مت سل قد می نکو مخ کرت ہیں۔ چیا اکر اتاف کا ہب سے کر یدرس که اواوی تک 
بات سار صورت میں ے۔ لف متا خن احناف تج علامہ اہن ہیام نے تفیل اور دونوں عد ول یل ا 


I ek‏ جچ ہد لا 
A TS‏ جا پا یئ تم جانا ے تو رت لیت تال حریث پر لکرے اور رانک 
اوی یه لک کر پل جتا سے۔ تو حطر ت عا لقاال عدریث هلک ےک پیل ی پل 
دول اور حافظ ان نی یتفصی لکی۔ 


فسل میں سر کے بالوں کا مسئله 

1-7“ مَهّقَال : :یا مهو ل اللہ . ايام ری سی. آنا نہ لشضل التاب؟ ال 
تشریج: ارام کل کے زیی عور کیلع کل جنابت میس ضط رک وولناضر ٢ھ‏ ی کرت ہیں حضرت 
عبد اشن مرول حدریث سے انه یامر النساء ازاافتسان ان ینقضن ,وسین ینور کے نز یک قش فرلا م 
ہیں با اصول شع رک پل نکاس جیہاکہ حت ال فربایاکہ نف ضف رضروری ں۔ نیز خضرت ماک 
تال حدیث ے۔کانت احدٹا اذا اصابتھا جنابةاخزت ثلاث خضنات فصب عل رها (ابو راغ 
حضرت عبرال ہن ر و کے کم دی میں ہے تال ےک اصول شع رک پا نہ مکی کی صورت میں فرمایا( ۷ی ی 
اتال ےک کل وج الا تیاب فرمایا( )ہو ناس هکم ہے ا نک خر ہب تھا پر حدییث ام کہ یداہ نامر اخکال 
ہوتا ےک ال می صرف تین مرت یبد ےکا عم ے اصول شر تک پل ببس کا کر کل ہے۔ الاک می سب کے 
نزدیک ضر ورک سےا کا جاب ہے ے کنہ اک حدریث می امال ے دور مرت شس سیل ے کہ حت مذ یف لٹا 
کان یجلش الی جنب امرآته اذااغتسلت ویقول یا هند ابل الماءالی اصول شع ر ک. ز کر القاضی عیا ض ت49 چ وک 
عورتوں کے با لکھو لے میس حرج لاز مآتاہے اس ےان کو پا لکھو لے ےکا ۶م تلد ییاور م دول لازم ںای 
تاور ا لکا و عون اضر ور کی ترار د ییاوه ظاہر پر ق رآن و صرت اک یر دال ے۔ نیز ملک ملک میں اور اسان انان من 
بہت فر موتا پچ رط ربق سمل ی تلف بوچ اس شبیعت ول عد مقر گنک پا لالب ہدایت ضر ور 
دی ےک بی اصراف وی کے اق ضرورت ما کیا جائے اور یکر بر کی عام عادت ہے شیک ایک د 
سے وضوفریاتے ایک صا سے لفات الا ترسنک نیت ولا سس 
اب سے فاد ہوگا۔ 
اب یہاں ایک ستل بیس اختلاف م وگیاکہ صا ]کی مق د رکیاے۔ نواس ں انفاقی سک چا مد سے ایک صا ہوتاہے اور ر 
کی مقدرار یش اختلاف ہو نے بت صاں) ال مقار شس کی اختلاف ہ کیا تال او مار سے ای الولو سف کے ر زدیک 
مد ایک ر مل اور لق ر ل سے رتسب للزاصار پار گل و لث سے ہوگا۔ اور احناف کے فزدیک دور گل سے موتا ےد 
ااا ست وکا ال ار پا لکد عدیث مر فو نیل ے۔ صرف ایک واقعہ ہے ج مار ے تق شی ابو 
او سف لک حال سے بیان که ہیں: اخرجه البیھقی عن حسین بن ولیں القرشی_ قدم علینا ابو یوسف من ` 
المج فقال قدت الین ةفسالت عن الصا ع فقالو ا صاغنا صاع رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم : فقلت ما حجعکم فقالوا 
ناتیک غزا. فلما اصبحت اتان نحومن خم سین شیخنامن ابناء ا بھاجرین و الاتصای مع کل راحدمنهم صا تحت ,دا کل 


E‏ رس دنسر »و جلرال ول 
جل یخبر عن ابیه واهل بیته ان هذا صاع النی صل اللہ عليه وسلم فحرزته فوجد ته مسةا,طال وثلث بنقصان 
بسن فتر کت کول ای حنیفة و حزت بقول اهل المجاز 
ہام او نیز ت54 بہت کی حول سے ات لال لک ہیں۔ ان میس ےش بے ہیں (۱)حضرت الس و 
حدیث ہے ااوداودش ریف مل :کان الذی صل اللہ علی وس لم یتو ضأًباناویسع ,طلینویفتسل بالصاع۔ 
۱ اور بقار ی شر یف میں حط رت الس مل سے رولیت کہ آپ بت وضوکرتے تھے للزادوٹوں عدریث ملانے سے بے 
ابت ہہ وگ کہ پر دور کا ہوتا سے ورن تار ہو جا ۓگا۔ دوس ری و مل حاوی ش ریف مل ے:عن ابراهیم نخ عیرنا 
صاع عم ر اپ فوجدناحجاجةا؟والحجازی عند‌هم مانیةا,طال۔ 
تی ری ول نا شیف میس موی ق ہے رولیت کہ ان جاهد بقدح فحرزته مانیةارطال۔ فقال حد ثتنی 
عائشة نت ان النی صلی اللہ علیہ وسلٰم یختسل تغل هل - 
چو تھی و لیل را لن میں حضرت الس اور ححضرت عا کشر ت اتنا سے روایت ے انه علیہ السلام یتو ضأ ہیدہ طلین 
دیغفتنسل بالص اع عمانیخارطال۔الناردایات الا سے صاف ظاہ رہ دک بر روط نکاہواے اور صا خر ر گل ے۔ 
ال از نے جو الولو سف ت30 کے واقعہ سے اتد لال کیا ا کج اب ہے س کہ علامہائکن ہام نے اس پر رویط 
اکال جلاک هدقع کل فاط ے۔ بی بات ہے ے هک امام ام الولو سف کے خصو سی شا گرویی, دوااس واق کو بیان 
نی ںکر نے اورت تا ابو سف اک ولاف با نکر ے ہیں۔ حال اک ا نکی عادت ‏ ےکہ جہاں الولو فکا 
اختلاف ہوتاے قر ور بیا نککرتے ہیں اگر واقعہ ہوا مہ کے تر شی ہز تاور نہ الولو سف ا نکو بیان نکر کے 
ار ہب لوگوں کے پل بیان کر تے تو معلوم ہوک ہے واقعہ بی ہے۔دوص رک بات می ےک یال ہن پیا یآ ر یو ںکا 
زکر ے وہ باکل ول ڑیں۔ اہ زا یکاکواعتپار لاور کے ہیں ہے لف تفاسم زک ای و 
تھا نارکا اور بل ۱۶ کار ون تھا ہیں تا رکا۔ اور یں استار والا خر ر گل سے خی استار والار گل کے پا گل 
اور ےر گل ہوتاے۔ زا ولاف نہیں ` 
حطر ت شاه صا حب ال لاف ماتے زی سکمہ اکل میس دونوں م کے صاع تے۔ ایک اور ایک مود عضوم کے 
اد عیرے گی بی معلوم ہو ے۔ نہیں ای ککوال تا سل لاور ای کفکوائل عراقی نے نے یالما تا تق ی جوژی کتک 
رورت ں۔ 


لٹ الت .نماث : سیل شو ل الو صلی اللہ لولم عن ال جل تین الملل وليل گر اخیلاع 2 
تشریح: :اگ رس یکواظظام مگ ناس م سکوئی تری نہ دس فو پوت ن ات نس اگرتری نظ رآ 2 اور 
اخلام یدنہ و ابرائیم شی و شی کے نزو یک کل وجب ہے کان اک ما ے زک ج کک من یکین نہ ہو مل 
واجب تال ایام شا اور مالک تنل هک ہب ے اور ا" ال راک یس تر ی کے وا کی چودوصور خی بیان 
(۱) من ہونے میں لین ہو )٣(‏ نی میں ٹین ہو( )ود میس ٹین ہو( )پیل دونوں میس تک +و(۵)آخ ری دونوں بل 


چ ٤‏ لوصح وو کے 
شک و ٦(‏ )چچ اور رت میں کک ہد( ئینوں می تک ہوہ پھر ہر صورت مس الاب ال نو بوص چورو 
صور شش بو لو ین نی صورت مل تل واجب ے:ذکر الاحتلام ام لااور رک یکی صوررت یں | الم یروت 
شس واجب سے ورن نہیں اورودیی یس مطاق تل واجب بل زک ر الاحعلام املو اور ککی صورتزل می الام اہو ۱ 
کل وجب ے ور * کلب و لاص ہے ہوا اک سات صو ر ول میں نت کک انت من ۳ 


اب الاپ ناج لک( ی کے تن کایان) 
ہے جنبی آدمی کفانیم پیئے اور سونے کیلئے وضو کرے 

لت توت وحن عَاِشَةَکالٹ : کان ال صل اللہ علبي ول کان جا نلیتا .توشآزاش اج وا 
تشریح: راکد ام ی اوران یب ای کن اکا کے وکا یرل کو سے با فپ کے لے وض وکر ناواجب 
ت ین ور ون واجب یں سے بک ا ال وار رٹ ب ظکورے اتد لال بت ادو ی 
٠‏ ول تن مرت دی بقار مسل می ماه السلا ال توضأواغسل دک رک شم نم مرو . 

حض رت هل عرش قال یار سول الله ایر قد احدناوھو جنب تال نعم ازاتوضاً رو اهمسلم ۱ 
.درد یکرتے ہیں ضرت ام سلمہ قاتا حدیث ے انه عليه السلام ینب ٹم یتام ٹم نون وهو جنب 
روات ابو اد دوس ری وال حضرت مور 6ال کی مرٹ ے نس میں پک یکا لف بھی سے_ تی ری ضررت ماک 
E‏ 3 صدریث ے۔ کان النبی صلی الله علیه و سم یجن ب ثم ینام ولا مس ماء. رو ادالتر مزی‌وابوراژده ت‌ریل 
ان خزی کی عدیث ے یں ہے الغاظ یل ما امرت بالوضوء ازاتمت الی الصلو تد اال ظ اہر نے جن احاریٹ سے 
الال کا نکاجواب بے هآ اع سے ا تیاب م راد "اک احادیمث مل »وبا 


بت یت :نآ عیب اکن تال :تال تمو نانو صل اللہ علیووملء إ5ا أ أك أله .ةمادن هرا( 
وی یا شرب تن ورس نزدیک واجب ہیں بل تقب ے توا راس الو 
سل حدریث ےد مل ٹڈ یکرت ہیں جس می وض وکام تور بل لک ہیں ححضرت ماتش اتہک 
صدبیث ے کان النی صلی اللہ علیه و سم یجامح ثم یعودولایتوضازرواہالطحاوی)۔ 
ال ظوابری دب لکجواب رت هک دالا اتباب کے لے سے کی ندمت ما ایک زیدة_جفانهاذشط ‏ 
لع ملوم دای کم نطلا یت کے لئے ے لزا سب بر 


دوبارہ صحبت کیلئے وضوء کا حکم 
دی ات وحن یں مضي اللہ کن ن .قال : کان ال صل اللہ یو و سل ترف کل زس رش و اجب - 
تریح تہورائمہ کے نزدریک اگ رکوگی 2 ایک فد مار کے بعر دو می رہ ودک نا اہے فو در میان میں ا کنا 
واجب یں جیب اکہ عدریث ذال ےک ہ آپ ملا ید لت تلف اخ TT‏ و لیا سب 


جا درس مشکوة جلدایل ی 
سکب هم حر تابور اک عدیمث مم نے ا الل -صل اله علیہ و سل - طا تات تنعل زو 
ون زو. کال تفت لہا مول الو اع مساو اجه اکال <هَدَا ری یب طهر »,اد ابوراود. 
بر حدریث رل انا ہوتا کر تعرر اواج ہون ےکی صورت میں م وجب ہو ہے او رم س تست پر ےک 
بزو ج کیل پر ی ایک رات ہو فو بی رآپ ما ڑل ایک رات میس ہر ایک کے پا کے قرف نے جن این ات 
جواباتدۓ۔(ا)آپ مه ایی واجب ہیں ی٦‏ پ نے عورا تیاب ای ط رذ نے پر یتر رکر ی تم 
واجب نے ہے پل کا واتد ے_(٣)صاحب‏ ار یکا رضا مندی ‏ ےکا ب کی بادی و کے بعر 
از فد و ہو نے سے چپ کید (۵)رات یش ایک وقت تفن می لس کان نمی تھا وق تکیاخصہ ان لفق 
() صرف ایک رف کاواقد ےا۶ ام سے یط ہر ای کی عاجت لور یکر ے کے کیااک س بکادل معن بویا ای 
کوراوک کنات رایس تھی کیا ال زاکوئی اشال کمن تضور وش چارہزارآدمیوں 1 و 
ال لے ایک تیوقت فل سب سے جما کر ےکی قوت شی فلا شکال فر اور 7 کی توت کے اوجوو رک جوا یکازمانہ ایک 
بو ڑ ی لی لی کے ساتھ بس رک ناآ پکی اص ور ج کہا یکی ند ل ے۔لٰذا ےہاک ہآپ نے ادا وت رال 
کے سے لاذ با کی کفردعنادہے۔ ۱ 


یت تین : وڪن عَاِمَةٌضي اللہ عنها . قالٿ کان لس صَل الہ علیو ول ين گر اللہ خََوَجَل عل فل أخیانوال 
تریح :اس حدریث سے معلوم ہوا ےک آپ ہر عال میں زک رکرتے تے خواہ پاوضو ہوں پا لغ وضو عا کل ی ایک 
ثم لگذر چک إِن گرفث آنآ کر له تعال إلا هر فتعارضا۔اسکاجواب ہے س ےک کراہت خلاف اول پر ول 
ہے اور بیان جوا جع خر وضو ی ارت تے۔یاجہاں راہ تکا زک ہے وہاں زکر سای مرا لا ادامر وق کر کاذکرے 
ا نک زع راد ہے یااحیان سے احیان طہارت مراد ے با احا ہک یر تضور یق مکی طرف راع خی ے بل زک ری 
رف را ے اور مطلب ہے ےک شس زک رکا جووقت ے اس میں ہی کرتے حے مج سکو ححضرت شا صا حب تال نان 
تی کرت ہیں احوال متواردوسے ابیت ا خلا یا بازارٹش جا ےکا کہ ے یھی کر ے تے فلا شکال فی _ 
مسئلہ نضل طہورارأۃ 
لیت یت : عن ان عباس ٤‏ قي الله عنهما . قال : امعلمل‌تَفض آزواج ای له تلیو ورن 2 
فقہاء اکرام کا اختلاف:اام ار وا ن تفن کے ویک عورت کے شل طپورے مر رکو وضو تس یکرت میس 
اورا کا کی جات ے بی ال خواہ رکاذ ہب ہے اور فا ظواہر کے نزدیک دونوں صور یں چائ لاوما 
لاعف ا ی اور الک رخ الہ کے نزدیک رونول مور مین از الہ انی عورت کے مرو ا انان 
کرنالراست_-نال بل 
بل تور دل ٹین کرت ہیں مید می ر یک حدیث س ےک لی شوخ الو ۳ را 
پل ال یل اج بقل او دراو ۱ 


ا f‏ ددر O‏ ےہ ا جال لد 
امام ار وا گن ناا دعل جل کرتے ہیں عن جل ون تي قار کال کی شرل ال عل له لپا عن تضل 
هوي الم دوسری د عل عن ا گي ن مرو اليقا رپ أن الک صلی اه عليه تل ی َنب ا ژمل‌پتشل 
هوی زرابم الترمزى_ 
ار رل بل کے یں این ا :پٹ کی عدریث :کے جس می ںآپ نے فرمایاکہ یی 000 
ای نا اک کیل ہوتا۔دوس رکو کل حطر عا کش تال حدریث ے کنت أغتسل اناو سول الل صلی اللہ علیموسلمر 
من اذا واحد وهما جنبان رواہالٰخار کی ۔ تس ری و مل رت ابن مرن ی حدیث ے کان الرجال والنساء یتوضوون نی 
زمان النی صل اله علیہ وس لم من الاناءالو احدجمیعاًرواہابوراور۔ 
دوس رک بات ہہ کہ پل !خرو توم جاست کے ناک نکی تس فو چم Ea‏ ہکیاے۔ اا ظواہر 
کا اب بسک وہ ورن ا شیف ے ام ام دا رام کا جاب ہے سے۔ وو یاو مفسورغ سے پا شف یاک رابت 
کول ے۔ حضرت شاه صاحب تل عفر باتے ہی ںکہ ہے عمانعت دنع وساو للع اسل ےک کور تین فط رکم لیف 
مون ہیں پھر طر تہ استعال ماء سے بھی ناواقف مول ہیں اور مرد فط ”نیف ہواے اسلئے عورت کے ل یل ر 
یش وسو کر یا بغر وسوسہ ما زتک سرا تکمرےگا۔ اور شربعت یح تک بھی لوا کر نی سے یاک پان یش نوک اور 
هگنت مکی کیاکی بی غاد تکی باه ےہ آپ نے مر دک لا کے ہو ے تخل طہور م مک سے مع یال ایک 
مروا ینان کے ساتیر غد ا کے سال ےکم اہو ای علض روزیت مم س کہ اگ ر عورت نظیف ہواور ط ریت استعال سس 
واقف بو تیال ۱ ۱ 


۱ ۱ جنبی اورحانضه کا قرآن پزهنا 

ری ریت دوع ان حر کال :کال مشرل افو صل اله علیو وس کف ئن ول ا ب شیامن ار آن اغ 
تشریح: رآ نکر مم شمائر اش یش سے ے اور شعار ری م واجب ے ازات رآن کرک کو بلا وضو یڑ ھن چا نہ جوا 
چاینے تد کا ہر مزح ہقرات ترآ نکیل وض وکر نے میں حرج مم لازم م وکاک حون ال رآن میں غلل وا رح وکا مرج 
مدغو ن الدین :نا بر بی کی کے نزدریک بھی قرات ق رآ کیلع وض وکر ناض رور ی نس الب کک ت رن می اتا ع نیس سل 
و کے نز دیک بلاوض وق رآ ون انز یں اور ال وام کے دک چا ووو یال بی کرک یک رن 
مش کین کے پا وی ر ہا ل کر ے ہے جن می ںآبیت قرا ہوتی تھی مش کین م سکرتے تھے وجب ایک مش رک مس 
تس نے ایک ے وضو لدان و اس ے بہت لس اس کے لیے م سک نا چان ہکیوں مہ ہو ہو رات لال چئ کے 
یں رآن بکرم آیت ل شةر اوه ون سے دوس کی یل بر اللہ بال ج کی حدریثے سے موطا الک می اوردار ںی 
مک ہآ پ نے عمردین مز مکوج تنا بک ےکر ی تھی اس میس ہے کم کی یمس الق رآ هرا رکی لی لکا 
جواب ‏ هکم وال شرت ضر ور تک بتار خطوط میں آیت ترآ کک تے یر سل مقر تو کون خی ہوتاے او رآیت 
اع کی زو حر جع تہیں۔ 


کا رٹاو سس وس بدا 2 
رت کے با ے میں بھی اختلاف ے وال وہر ام با ی اور اہن الت زر کے زک شب »تیاور ناس وال گور تول کے 
لے قرا ت تر آن چا نے اور ور کے دیک مار میں ہے البتہ امام ملک کے نزو دی آیت زو طاظتپڑھ کے ے اور 
ان سے ایک اور رولیت کہ میسن تفای واه کق سک وک ایام زیادہ سے ہیں فا نکاانربیشہ سے ایام اتد کے 
دک ای کآیت پڑھ کے ہیں ایام الک نزو یک یف رض تلاوت نہیں پڑے کے بف رض زک وج زیڈ حتی 
ہیں اام الو ینہ کے اکال کے زر یل ادون الاد سن یں اس سے ز یاد کے کی اجازت یں الب نآ یات ٹیل دعاکا 
ون ہے ا نک نیت دعاپ ڈت ہک اجازت ے الغ ر اجھالا جم پور کے نزدیک ان ل وگو لیکو ق رات ت رآن جا یں انل 
وا ارم بار یو ی کر ے ہیں حضرت ما نش اتکی حریث ے کان ایی صل اللہ لیو ولم ن گر ال 
حَََبَل لی کل آخیازه اور رآ نکر مسب ےا لی وا لد ام ذاعالت جنات جس ع ہوں گے چھہورو ین 
کے ہیں حضرت یکم الفدوجہ مک حدیث ے ولم یکن یحجزہعن الق رآ شی لباب واه ۶ٰ0 
حدیث ‏ شکور ال ہاب ے۔ 
زان لفل رم یکاجواب بے O‏ سز کر ناااس وقت ا 
کول تصو کی حریث موجود نم ہو جال اکلہ ت رت ت رآآن 0ت دس میں خصوصی عری سے لزا موم سے او ی 
کر ایکا 


مسئلہ عبور السجدالحانض والجنت 
ریت لین عَايِهَةَكَال‌ٹ تال مرل الو صل ال عکیو وس وجه رالو اليرت حانج ال 

فقهاء کا اختخلاف :ال ار ان انز نزدیک کی خی وغل وال عورت کے لے مطاتارخو ل سر اب لام 
ات کے نزدیک اکر وض وگل توو خول مسود بل کی بھی چا سے لام شی ھکال کے دیک مرو رکیل وا غل وتا 
ہے۔اما ماد یف اور ملک اور مغیان ٹور ی مھم اد کے نز دیک مطلقاا نو ین نے لیے دخول سر جاگ یں ے۔ 
دای :ال خواہر ل خی یکرت ہیں زید بین ا مکی عیشت کان اصحاب سول صلی الہ عليه وسلیر جمشون نی 
امسجدوهم جنب ,و اوبن مدز دو ری دسل حضرت جار پاپ کی حدیث ے کان احد ایم رف ال سج جنباہواہابن ابی 
شیبه اور اام شف کیا ی ردایات سے اتد لال تج کے ہیں اورا کو صرف م رورپ و ل کر ے ہیں اود اٹل ظواہر عام 
2 ہیں۔ دوسربی دلیل امام شا تاهاب کے ہیں ترآ نکر مکی مت سے ۔قال المتعای لا روا اللو 
ام شکری حٹی تغلھوا ا تقولون ولا بل عابرق سیل یہاں صلوۃسے موضح صلوۃ دنر مرا اور 
عابر کی تست مر ور راو لے ہیں امام ابو حفیفہ مالک ماگ2 رٹ کور سے مس جیل لا احل 
السجد لحائض ولاجنب سے دوس ری ول حطر ت ام سل فا کی دریث ہے این ماجہ می ان السجدلایعل مائض 
ولاجنب تی ری ل حطر ت می لٹ کی عدیث ہے تر بی ش ریف می سک ہآ پ نے ال نکوفرمایایاعلی لایجللاحد ان پجنب ق 
۱ ھذاللسجدغیریوغیرک۔ ۱ 


¥ 


چ موا گا و کے حر وا ۳ 
جواب:ال ظاہر ولام شاق نے جو عد تس ہیی کی ا نکاجواب ہہ ے کہ ووصد یں کل ہیں اود ری مر یش محر ہیں 
زا مس رک تیم فا کے ہو انیب حم لکر اط ہوک یا ہکہا جا ۓگااجاز تک ریش پیل تس پھر ضوخ 
رکیل اور یی تن تاس سے لام شا تتفت هیقر نے سے جور مل بی کی ا سکاجواب ہے ےک صلوۃے 
مو شح سلوو مرا کیم عققت چو نکر رک کرت یامضاف کف اتتا را دج دوٹوں پار ہیں 
نیز چم مراد لیے یس ولاجذ اکا رب و آنعھ سکازی پر درست نیس »وال ےہ ال وقت ہے مطلب ہوگاکہ س رکی 
7 ےق مب تہ جا حال الہ ہے نزدریک میں ے اور صلوڑے نماز مرا لیے میس ہے مشکلات در جنگ ہیں 
ہوۓے کر مجاز تسج اور نہ جز وف کی ضر ورت یڑ ے ادرو لاجنباً6 رب یو آنتم سکازی پردرست ب وکاک 
بے از کے تریب نہ جاؤاور سک کی عالت یل بھی نانوی وچ ےکہ رتس ال رہ حطر این 

ٹون کی میتی کی اوران رت فی رکے نزدیک| بن عا ی اپ کی ی وو سرو ںک ی شرت رارق مو ے ام ذالیت 
َ۰ 027 23 جع میں وکا 

تین گفرون میں رحمت کے فرشتے داخل نہیں ہوتے 

ریت ایت عن مل کال کال مول و صل الیو ولاینخل اهب یضر اتاج ول جب الح 
تشریح: ,با یال طلست ملا مہ صت مرا یں ور هرا تن تیش ساتھ ر سے ہیں جاک عدیث می آنا نان 
تک شن فا راک فاتقوا اللہ واستحیو امنھم ۔ نیز ملک اموت کی اس ے شی ے اور ویس زیر ںک الک 
صو مرادہے جو یو اور مب ر کی اس اور اکر ڈیر درد ہو یا زک ر و وکر ا کے اعطناہ ر سرت مول بات وف 
کہ نظر ن1 تیاس گرا زاین + پل کے چ پات کے یچ بو باب اک طز اگ رک اکو ضر ورت غار 

1 ود نےکیلنے رکھاجاۓے فو ہا ےگمر فر شح رال بو گے ا س تو اش کے لک فرشتو ںک وکڑں ے فطری 

اوت و ترت ے مزاب رورت فر څح وا قل »ول کے اور لتق ںکہ #لکاا رگنب اک ہونے سے 
تا و صر سر 7 تس ریز 

بھی .بھی راکو مر نی ںکی دک نکر ی بھی ان جوا زکیلے دی سے ٹسل فرراتے تھے۔ 


بان کسائل 
پانی میں پیشاب کرنے کی ممانعت 
دی ات : نای هرن قال‌کال نول انو صل اه علیو وس ایب وان کون رای الا 
تشریح: کر یت ال کی بات ہے س ےکہ مطاقا پا شل یا بک نامع ہے پھر یہاں صرف ماد دائ مکی یش زیادہ 
قاح تکو ظاہ کرت کیلک دک اس دوقت پا نا پک ہو جاتاہے ادر جاک پالٰ ا پک نیش بوک هرن رگ نکوپالی ئل ۔ 
پیا بکمرن کی عام عادت »پاک نهک عادت نہ تیاس یا بکی نتشک خر ما نت بط راو ہو 
گا۔ کی وکر ال مد ے پا یکو ناس تفت تکر ناه للا اک ہا ریا بر تن یل تاب کر کے ماودائم میں ڈالنا ای کناره 


دس :»5 جلراول لے 
پ پیا بک ےک ددا دائم یس اک رمرے ووسب صور تیں مامت می داخل ہیں۔ کان اال توا رک ہی کہ صرف 
نبا دام میس پیشاب کر نا نا ے۔ باق سب صور ہیں پا یں حت یک پاتخان ہک نا چا ے۔ ای لے علامہ وی 
تلا تفر باس ہیں : عماحکی عن راد الظ اھ زی من اقبح جمورہعلی الظآھر من جو از الغائط ۔ 

رال لفظا ٹم لا کیا کے بارے میں کٹ وک ہکس غر سے لا اگمیا۔ فو علامہ شی 20 فر بات ہی ںکہ شم اتاد 
کیک ایک لت ملا نکیل ے اید ےک تا بک کے راس میں شس لبھ یکرے۔اور علا ہق نی فرماتے ہی کہ 
هل حال جا کر کے کے لے لا یکی اک ما دا میس تاب نہ و ای یکن ےکی ر ورت کق سے و 
کس منہ سے تس لکرد گے۔ یاک عدبت تلآ یرب ام ہکم ام رات ض رب الم ٹم اما ۔ بہرعال مطاقا یشاب 
کر ےکی مامت ہے پیشاب اور لابقا کی انع مقصورل_ ضرت شاه صاحب بلق را 2 یر ۳ 
عر کا مفعمدیہ ےک دام می نا بک ماع تک گنی پرا س پر س ںکوترت بک ال اور مطلب ہے ماک ماددائ ٹل . 
پاب کرو صوص اجب اس می مل نک کک نیت ہوا لے صرف پیا بک ر ےکاجواز معلوم تسوت اعلے 
کہ س روایات میں منفردا بیغا بکی ماع تآ ے جیما کر حضرت جاب پاٹ کی صرف سے کم شیف سا 20 
صل اه علیِوملَہ گیا نب لی الا الو کی 

ا مسئله بثر بضاعة 

دی ایت : عن ان مر مضي الد عنما . کال : سیل شرل انو صل اه علیو وس عن ایکون ناملا ± 
تشویج: ال یش س بابک پان نق ط ا پاک ہے زا اقا ےک لک چ زک با سے اس 
کی بویت با ہتی ےجب کک لا رہے اوراس میس بھی ات فاق سک کوک ناپاک چ زگ جانے سے الاک مو 
ما گرا تین میں اخطافے۔ 

فقهاء اکرام کا اخقلاف: ترا سکل پندرہنذاہب ہیں گر ٹین نز ہب مشبور ہیں (امام اک قمع 
تیک تق رامد ال وصاف اش رکاعتبار ے۔ تن است EDET TSE‏ إو زوش سے گول ایک 
وص ف بدل چاه پالی نا اک وگاور نی( )لام افیف وشافقی واج مهم اللہ کے نز دیک تلت وک تکا تباب 
مین ارين تل ہو فو نا پاک ہو جا اور اشر ونیک یں موک پھر تلت وکت 1 ین میس ان کے ہیں س 
لاف رین ایام شاف واج کے نزدی ک تین پر داس کہ رتنس ک موتو کیل ہے ناپاک ہو جا اور نزن 
ہو یازیادہہد کشر ے نا اک نیس م وگ امام ابو نیز لت نز ویک بل وک رک یک حد مقر ٹنیس یتیب 
را ےکا اختبا سے اگ وہ کک ےک ایک طرف خجاست رن سے دوس ری طرف ری ت کر جا هگ او یل سے پاک 
ہو جات هگا ورن کنر ے ناک لگ اور ا لک بیان ہے با نک گن کہ ایک طرف کت دسینے سے دوسری طرف 
7رک ت ہو جائے۔ بای انا فک یکزا ہو میں جوم هرک تر یف دهد رده تک کل اس ے تید ید راو ہیں بک ہے بطور یل 
کہاگ اہ امام مم خقڈ للع سح ٹل درس دے ر سے تھے انی درس ٹیس هو کی رک زک رآ یا کسی نے در یاف تکیاکہ وض 
کی رک مقدا رکیاے نوا نہوں نے شیا رای مسر ی زا وگوں نے ا کو ناپ ود و دردہ ایا اور اسلو یر لاور 


تسود ہد اند 
کے یں لام کال سے رجور )کر لاور کج کہ ہمارے ات کش میس ےکس یکا تول ینبل ابوسلیمان 
جوز انس با نکیا لین وه تسیر للداس ےء دیا لالخ احاف کے نزدیک پا کول دید ںی ے۔ 
دقاف :اک اور ال نواہردلیل جن یکرت ہیں بتربضاع هگ حدریث ے جو حضرت ابو سع راز روت م روا ےک 
اش یہت کی ناس ڈالی ایح سر تھ رادصا ف نہ وس ےکی :ناب پا نا ہوا ال سک باس ہی ںآپ نے ٠‏ 
جو لہ فرایاال کو موت ے نیز کی اسلا کر ے ہہیں۔ ان الداء طھو ہلاینجسه شئی۔ اذ امن باج ا 
مالم شیر احد الارصاف اقلا کید »لت جر ذر ی تقیراحدالاوصا فک و گر پل یق رآ نکر ےم 
کی آیت سے د مل کرت ہیں۔قولدتعال کرت من الما اء لپ اا یں پا یکو مط مکبا گید اور خی رادصا فک 
تید مرف لات ہیں۔ امام اف واج و عل یٹ یکرت ہیں ی نکی حدریث ے جو ححخرت نومروه 
کال شس صا ف عد یا نگم رکا ی:آدافان الم کان لر سمل اف 
احا فک ٢‏ ہت دلا ل ہیں ءان شی چند ہے یں (۱) صرت جا اھک حدبیث لایر ان احل کہ رف الماءال را کں روا ہمسلحم۔ 
دو رکد یل جرت الوم پٹ کی حدیث ے إذاشرب الکلب ف |ناء آحد کم فلیفسله سبع مر ات متفق عليه - می 
رل حر ت الوم مک عدیث ے إذا استیقظ أحل کم من نومه فلایغمس یر دن الإناءمتفقعلیه 
ان روایات تن ھی تیر اوصا کا وکر نہیں اور ہی نکاذکر سے تب بھی نا پاک ہون کا عم کا کیج یریل 
صرت بل زرا هک فی ہے + کو محاوی نے دک کاک ایک مرت بر زھزم میں ایک مک رک رکیل خضرت 
بر ان زی نے م دیاکہ تتام پان کال دیاجاے اور ہے تام مخ ہکرام دز کے سان تھا کی سے ہے یں کہاکے دیکھو 
تقیرادصاف مراک نیس اور پا یع نے مے یا نیش اور تپ ان نے یه انوم علوم واگ اب کاراب رک تقی رکا 
تچ اور تی کات سب تی ہہک را نتاس 
جواب: اک اور اال خواہر نے جو اتد لا ل کیا ا کا ج اب ہے سب کر ان الم ل جو الف لام سب دہ عم خار گی کیل سے اور دی 
“ل سب اک سے ربا کاپ مراد کید سوال ای کے بارے میس تھاعام پان راد نیس ہے ارچ کہ بے مر بضا ہکا 
ای اہ ار کے عم می اک دک اس سے با تکوسی را بکیا ایک مود شم ارت نکر ماد اور 
وات گر چ عرث س ضف ے ترش تہ ہے اد یت کی بات سے نیز یفاک ش لی کی ایک روات ے کی 
معلوم وتا ہک بر بضاعہ جار کی کے کم یس تھچ ھاوئ ی سے ایک ہا تک کہ اکر ارک نہ ماناجاے ستق مالک بھی ات رال 
ھی ںکر سیک ۔کی وکر بج سکنواں میس اتی خاست ڈالی جائے او رکنواں ی اور آخهراوصاف نہ ہو ےنا نس متا ےگا 
ک مارک کے عم یس اک پا یت تاور اقا 
دو سراجواب ےک انالراء یں الف لام ٹس کے لے ہو لکن مطلب ہے هک نا اک باعل ہتاے پا کے 
سے اک ہو جاتا هک کہ حا هکرام وو کی مکی شک تاک ناپ اک ہو نے کے اعد ڑ ولوار س رہ جا ے 5ک کے 
2 پاک ونوا یک کرو رکرو یال مز ناک بل یر بتاجیا الہ هریت ٹی سن ہے۔ان الھو من‌لاینجس۔ 


جچ CTD‏ چا 01ے 
ان الا رض لاتنجس ا لکامطلب یہ تو نی لک مو من وزشن نیال نیس ہو کے با مطلب ہے ےکہ نا پک بل رتے۔ 
تی راجواب جو حضرت شاه صا حب تسد پاک ا کل میس تضمور ا کاب فرمان سا کرام طا کے وسو کووور۔ 
کر ےکی نوا اصل صور تول ہے نک ہکنواں خالی مان یس تھا چاروں طرف سے بند یل تھا اس لے بارش سے 
ناس ت رن کااندبیشہ تاجن کی نے ا میس چام ت کے ہو سے نی د یھ اصرف وا دوسوسہ تلود و کر نے کے 
ل ےآ نے نراک پا کی یقت کی طرف دنکھووواصلا پک ے تال م وسوسہ سے نایک نیس ہوجاالفرٹ ١وس‏ 
عدریث ٹل پا یک حقیقت میں غو رک ےکی پر تک گنی زاس سل وال رارکت لال جج نیس نیترآ نکر مکی 
آیت می بھی پا کی اصلی قیقت بیا نک یک ىہ مطلب نلک ناک نیس ہ وگ 
حدیث فلتین کی بحث: ام انی واج تن کی کلک جاب ی کہ صر ی نکو کر ٹن نے ضیف 
رادیب چاچ لی بن الع »ان عبرال اہن تھے این ا یم ماد 1ھ ارام رال ویر من تح فکماسے پر 
عام طورپراحاف 1 طرف ےا ںکا کی جواب بد 7۷ 7 یہ عدیشسندأو متناومعناً محخطرب ےرا رتپ 
س کم ا لکا جدارولید ب کنر پر سے وہ 0 تک 9 0 وو 
عباوبن جر ے پھر ھی بیان پر ال ار بھی عبدانڈدابن عبدا سے متناأضطراب ہے سے کہ ینف روایات مل 
ری اور مض میں تین اور خلاشاے اور حض میس ار قل ے اد معنا ضط راب ہے س ےک کا خر رکا ےک 2 
دای جل ے بھی آتے ہیں او رت دآدم بھی ہیں اور ہکا کے کی ہیں اب معلوم یں یہاں کون "نی ماد سے پر رفاوت 
بھی مخطرب ہے علاوہ زیم ایک موم بلو یکا ستل سے طہارت و واس تک ستل سے ال ایک جم غذر صعلبہ وی 
رولیت ضرودت تی نین ال مرف حفر ت این روف وای کے ہیں راہن عم پٹ سے اکے مشہور ان وفع 
سام سعید اپ رولیت سکرتے بل ور مشپور ش گرد عبی اللہ اع بد ارد وای کنا سے اس سے بھی رال می کال نظ رآ 
E‏ شی رولیت ٹس ا تے شالت ہیں ددا اہم ایک ستل یں سد طرش که ۱ 
مرت شاه صاحب تفر ماۓ زی کم عرمٹ اہ پاچ موب کیا کجواب دی ہ کہ دق وساو ی 
کے لے فرب اہ سوال ایی ول کے بارے شی تاج دک هرید کے در مان ہوتے سے اور ما ہکرام ڑا کو وسوس بان 
یش بہت سے در نس پا ہے مول گے کیت وض وگر ی کاک سے پت ہو نکی دیکھاصصرف شب تھا آپ لا نے 
رال جب ہیں یط معلوم نمی تو پل ا پاک نیس ہوگاو ر ی نکی قیدانفاتی ےک ای ول !کشر دوتے پا 
وک لاک ے ینس روایات ٹیس تاک زک ے لہ ز اسل تزاز رف یاے ا سکوی حا نہیں_ 

مسئله ماء البحر و ميتتة 
لد این :وع نآ هدر کان مال مل مول او صل اللہ علهم وس تقال جا شون الڈو. | ت گب الخ ا 
قشریج: ,کوب رت در یا سر مراد ے تام راایک اشکال ہوا ےک ديتسه وور تیا ست سے بھ کسی 
کے نزدیک تاپ اک نی ہو جات پھر اب ہکرام درو سے وض وکر نے بیس شی ہکیوں بلط رام سوال یم محقول معلوم 


چیا رس شر :»و ہلداں 2 
رپا ے ا کا جو اب ےے کہ الوداوو شر یف یں ححخرت ان وتا عمش مز دک ہک حضو رشم نے فرمایا 
لاترکب البحر إلاحاجاأومعدمرا. أو غازیانی سبیل اله عز وجل فان تحت البحر نا ءاور این تم کے ل و گل میں 
کور ے۔ ان,قیل لعل کاڈ ا نفلاناالیھورییقول ان جهنم ف البح ر قال علا اا ادالاان صدی ٹم تلیواالبحارسجرت 
والبحرالسجور جس پا اگ ے جومت ر خضب پاک سے وض وکر نے میس شی نا قول_چ دوس رکاوج ہی ہے 
کہ در کاپان تک بو زور ارت مفلق پا متفر معلوم ہوجاہے اس سے الوا رک دج بسک دریاش 
بہت بڑے مڑے جاور مرتے نہیں گے ہیں ہت ہیں اییے پا یکو اتا لکر نے کر اہت معلوم موی ہے اس لئے اخکال 
ہواان وج بات سے معلوم ہو اک سی کرام کال وسوال پل متقول نا 

.یبال ت ریف الط رفن سے حص رم راد نان کے دہ میتی زا یکر نے کے لے لاید را 
کرام وس صرف وضو کے پارت میں سوا لکیا تھا لن 1 آپ نے نعم توضوو نف ایگ عام جاب دیاادر یکا 
طجوریت بیا یگریت سوال او جواب کے در میان مطابقت نیل + ولا لکاجواب ہے ےک گر صرق وض وک | ماز ت د ےے 
ت وتم وکا تاک شی دنس لکرنے او مرس دعوت ےکی اجازت یل نز وتم بسک تاک شاید صرف دربا سر 
کرنے والوں کے لج وض وکر ناچا ے رو سرول کے ے جائ ان اوا مکودو هرس کے لے مام جو اب دی شب کے 
ےم رمات میں سب بت بات 

و یب پک سا کہا ا کوج طرح ۲ کی ضر ورت ڑکاک طرں وکا کی بھی ضرورت پٹ قاس 
2 ضرورت کے بی نظ شفو زور از سوال ایک مل ظادیاد و ملوج ىہ کہ اک سل بد مکی ہو نے کے پا وجو رجب 
ماب ہکرام ال سے ناوا قف تے توآ پکو خیال ہوک ہکھوانے کے مسال سے اط ربق او ناواقف ہوں کے ال لے ا سک کی 
دار ماداب بیہاں سے نات الحرکامستلہ شرو ہوتاے۔ 

سمندری جانوروں کا حکم : تاک 20ن ے نزد یک جمیع ما البحر علا لے کو استشناء ۳ 
امش شای تھا ادف کان کے تلف قوال ہیں ایک تول تمارک تل کے ساتم وو سرا قول ضفد ع وحیة وسلحفانے 
علاوویقیہ سب علال ہیں ترا قول ہے ےکہ خی میں جر عدال سب بر کے وی جانور علال یں اور یں ج رام ے پر کے 
کی وی ترام ے اور ج سی ظر فلس نیس ده علا ل ہےامام ات کان ہب بھی ایام شاق 9ڈ کے دوسرے قول 
کے اتد ے احا ف کے ند 54 ھی کے سواسب تام ںاور * ل یس جو طائی ے“ تن جوخووه ودم رال یاوه 7ا ے۔ 
مهد رل بش کے ہیں ق رآ نک یمکیآیت سے لک یڈ الخ یہاں صیدرسے مصید مراد لیت ہی لک کیا 
ہوا انور طال ے ییہاں عام ے ریصن وو رید کل مرت کے ا لککڑے سے بیہاں بھی عام ےکوی اشنا 
وا سے تی کیاگیانے معلوم ہواکہ کی کے علادددو را جانو بھی علال ہے احتا فکی د ل ترآ نکر > آیمت ہے :مش 
لک لته و الم وھ انبر یہاں خی رکوعا مر کے رام 7 وو و سر کاآیتوٹھھ 


چب :ونر »3 جارالل 23 
لبم 90 اور ھی کے علا سب غبیث ہیں۔ تسرد ین وہ رک رام تپ کا ا ماع ہے هک الع یل سے یت بھی 
تل کے اف E‏ انور کا کھاناحابت تس ے اکر دوسرا جاور علال ہوا و ضرور ان سے کماناثابت مود 
وان و غیر مکی وش لکاجواب ہے س ےک صیر کن مفعول لیف اصل ے تو یک تی مع لین تجررے ہوں مجازی 
می مراد لیا ائز نی اور سیا قآبیت سے بی معلوم ہوا ہ کہ یبال صید سے مص د ری "مراد سک دگل یہاں جر کے 
ون ہل چائزاو رکونساناچائ سے ال لکابیان سے اور شا کر :ا ال ہونے سے دکھانا علال ہو نالازم 1 - > 
عد کاب یہ ےکہ یال هت ارچ عام سے لیکن دو سرک رایت میس لی کے ساتھ خا کر وکیا جیا کہ این رش 
کی حدریث ے:مسنں احمں ابن‌ماجه او ہیھقی میں احلت لناامیتتان والدمان فاما امیتتان فا جراد وا حوت واماالدمان 
فالکیں و الطحال۔ دوس راجواب ہے ے جو عفرت ا ہن فلاا نے دیس ےک بیہاں ل کے می علال کے نیس با 
ال مع طابر کے ہیں اور مطلب ہے ے مک در یال جاور مر نے کے بعد دہ پاک ر ہتاے ال توجیہ سے اب کرمگ 
وج اش کت چا م2 یں کا کی جات بویا اور نس موا ی شک واج کن ہیں دا بویا 
زرا سوال مان کی ضرودت لیگ اود کل کے طا کے بت عر میس موجود سے جی ماک بفا یش ریف ں ۱ 
صفی کا داقعہ ہے حتی اذاحلت بالصهباء ای طهرت عنبر وال عر کا جاب یک دو سرک د ولیت ملس کر ہو حورت 
ات ا جو بای بوذ کی باه داہن سے تی کیاکی مزال سے ات ہلال یل ہو ناور مهار نز ریک طالی جو 
مال یں ےا لاگ ے پا نے بین رت اب ماپ کی ص رث ے ایور اور لیف مل مامت فیەفطفافلاتا کر 

مسئله نبیذ التمر . 
ریت ات : وحن اي زيي . کن مج ون شورف له عة أ الک صل له علیو وس كال 0ة 2127 نا 
تشریح: ہی کیا اتاہے ا پا یکو سل ور یس الک چا اب الک چا یں ہیں۔(۱) روا کے بعد 
ر لد ےک اي سب اور مھا سآ جا ےکر مرن ہواور مطبوخ بھی نہ ہو( )مجو رکی وج سے پل مھا سنہ 
ہے (۳)مٹھاس بوگر رکی نوی ت آجاۓ () اگ سے پپکلیاجاے وہای و بگڑہاہو جال ےک اعضاء یر نہ باق 
1 خر دوفوں تک ےکی کے ادیک وضو جج لاور ود سک عم ے سب کے نزدیک وضو اسهم تاف نیہ 
ہے۔ ام خلاظ اور ہمارے تا شی ولو سف کے نزد یک ال سے وضو ہار لب بر نا ام ابو نیف کل 
کے اس سل چارا تال ہیں (۱ اس سے وض کر تال ها »وت ہے 3 پار یں بی ظاہ رک رولیت ے(٢)دوثوں‏ 
س کےا یکوامام راغت ر کیا( )و وکر ے کن ا کے مار مر اقب -(۳) اس سے وضوگر نا 
یں یل م هو رتو جن مرکم نے و دلج تک کہ امام ابو خفیفہ نے اکر ولیت کی طرف رج کر لی اور احا ف مس 
سے ایا کم صاحب با ارت ضی خان ےای کوافقیار کیا اور ایام و وی ت30 فرماتے ہیں و هو الزی استقر 
علیه مهب ای حنیفە 9 ۂلاڈ۔ وجب ایام صاحب سے و رک را ےکی طرف ر جو رشابت ے۔ توا بکوگیانتلاف 
نیس رہااس لے اس میں بح کو لباک رنا مناسب ہیں تھ بک ضرورت بی ہیں تھی لین !عض من اام صاحب 


دنسر »5 ہداں 2 
لق کے یل ول من و نٹ زان سے کبک تک ےکی ضر ورت کلم ہو جا ےک پہلا قول 
تلد نیس نی صرت سے ا کی و یل موجود ہے۔ توا لخد بیقر نکر بی مکی ایک مس لآنیت 
سے۔ مر ]کول حریث موجور نی ہے ۔آیت ے ے قل یروا ما٤‏ فکیتیوا میا یئا یہاں لا 
کی صورت ٹیش ھک کم یکی اور یذ قر ای نی لک وہ ال میس اضان یآ نی ال رکہاجاتاے اور اضافت نې 
فلاف ے 3 متیر ہے ازا اک سے وض کر نا ناس امام الو ینہ اڈ اکنل بل کرت ہیں حضرت این حوو 
بل نکی عدریث ےک آپ نے نی کے ھان فر ایر ےڈ اڈ رای سے دض وکھی فر ای زوم 
liy;‏ س سے وضو اب وضوتی می سے 3 شک 

نک لکا جاب ہہ کر نیز تر اہ اق ے خارج ننیں اور اضافت ہونا مل کا خلاف نیس اس لن ےک کول پا 
اضافت سے فان یسے ماء ال مسا ماءالوردو خی و کل ٹیل واقعہ ہے تھاکہ عر بکا یی کش کین ہو قاء سم لکرنا 
مکل وج ا کی کی کرو رک کے خوش ذائکقہبنانے کے لے پک جوریں ڈلی جاتی ھی جی ےک ہم پا یکو کر نو 
کے لے برف اس ہیں یاخوش داد نان کے عر نکلاب ڈا ہے ہیں ان وہ ملق پان ے خر ہوجاہے۔ مس یی 
عال تنیز تق رکا یزاس سے وض وکر نایا ملق سے وض وک ناہوگااو رآیت ترآ ےکا خلاف د ہوگا۔ بی وجہ کر جب 
کولس زیاد ور ڈالناشرو عکیااور پا ٰمڑھا ہونے اگا ال سے وض وکر کو من کر دار رجو )کر لیا ر جک 
مطلبب ہ ےک امام صاحب کے ہل زب مس نیام حضو رو کے ز ہا کنیس اور بعد یس لوگوں نے بگاڑ 
دیادہ نمی نیل راس لے کر دیا اگردہ یزاب کی بو وضو چا وکا جو رکی طرف سے صرت این حور یزیر بہت 
سے اعتراضات کے گے ان میس سے مین وور اور اکم ہیں اس لے اٹ یکو فک کیا پاتا سے ۔پہلااکتڑا ل ہے س ےک این حور 
ول جو الو ز یر رولیت دس والاے وہ ھول ے۔ دو اکتا ىہ کہ ابو زیر ے رای تک وال لو ف ارہ ٹہول 
ہے تس ااکت رال ہے سے ےک وان + سحور وراه ںکے ئن ین حور تجح ہیں تھا جی )کے الود ارو 
72 لیف مل سے ماکان معهآکدمنا۔ 

اتا فکی ط رف سے ان اتف شک جاب ہے ہے۔ از لکاجواب ىہ ےک الوزید پول شلک وہ رون کا 
موی ے اوران سے دور اوک ر اشد بی کیان اور الور ون عط ہن الیارث روات کرت ہیں زایا اعتبارے ول تس 
رپ رادید رد گیل اور وه این مسعودسے دولی تک ہیں۔ دو رے اعترات شکاجواب ىہ کہ امو زار 
بھی ول ہیں ب وراد نان ے اور ال سے کی #بت راوک روا کرت ہیں۔ چا سنن ڈریءاسرائیل, 
ریک ول تکرتے ہایں۔ کر ہے پا امک ایک سند ہے جس مس نہ الوق زار و ہے اور او زیچان شن ر اص میس ے 
من طریق علی بن جدعان عن ای افع عن ابن مسعودالذزااصل بی سے روتولاعتزاش وگ ۱ 
تیسرے اکتا کا جواب ی س کہ جنک آنا چ دفعہ ہوا ہے جاک تا ی پدرالمین» شی نے اپ تاب آکام امرجان فی 
احکام بان ل ذک کیا ے (۱) ہا ایک خاش متنا م پر ہوا تھا کے بارے جس ایل داستطیر و لثم سکہاگیا(٣)مقام‏ تون 


Eg Oy fw E‏ جلا چ 
میس ()ا لک میں( )یش غر تر ںاوراک میس حطر ت امن سحو وڈ (۵) غارچ دہ یس جس ٹیس ححضرت زی رمن 
کرام تے (۷) اض سف ر میں جس میں حضرت ہلال سا هه زا جہاں آی ہے دہ ایک سرک ہے اور جہاں اشبات ہے دہ 
دوسرے سر میں فلا کی وک ہک رر وایات مل خابت ہ کہ دوساتھ تے یبال تن ش ریف شل س کر دسا 
تھے نیز مصنفہ این الی شیبہ اور مصنف اہن زنل ہے۔ کد مع لیا ال مزا کاڈ ےکاکہ چنا رہ دات لد 
اشن ہوا تھاءکسی میس تے او ری میس ال تھے یا ہکہاجا ےک مقام لغش نیس ے۔ یاصا کد یا پا ےکہ مارک 

اعائزیث ‏ شرت ہیں اور ای عدریث ”یو التر جیسلل ثیت۔ رال مارد مل صرت ان حور اکل بے نها 

مسئلہ سؤر الهرة 
للدت زیت : ون یمد .ىگېت وشوو . ماس تیال 

فقہاء کرام کا اخخلاف: “رم 7 کے بارے می اختلاف ہے امہ خاش کے فزدیک سور هرق اک ہے بجی تقاضی ابو 
وسک اکا نکی مشبوررولیت ے۔ امام ابو عیفر اور گر کے تز دی کر وہ ہے۔ پچ راک یکراہت بی دو قول ہیں۔ ایک 

تول میں یگنت 4 کم جاو ی نے لیااورایک تولے ر یی کاس لام کر لاک 2-7 نے 

تول یفوک دیاب۔ 

ا شک و مل حضرت ابو تاد وک عدمث ‏ ےک آپ ےلیٹ ینکیں اید دور یر یل حخرت عا لش تدای 
صف ے اکٹ من یٹ اکان ار قات إن شول او صل الد علیو وم قال ایت پککی ںہو اھا اہر راؤر۔ 

ام ابو یز و کل حشرت ابو ہر رہ نکی عدیث ے ت فی شر یف ٹل إا لقث فیه 0۲ ١‏ 

وار تن میں حضرت اور و کی مر فوع و مو توف مہ یں ہیں جن مل الفاظ یں یغسل الاناءمن اطرۃ کمایفسل من 
الکلب طهوء الاناء زا ولغ فيه الکلب یفسل سبع مرات. والھرۃمرۃاومرتیں۔ 

امام ماو بطور رید بل کیک جب گی کاگوشت جس ے تولعا ب بھی جس ہوگا۔ لمزاسو ر کی نا اک ہو جات ۓگا 
نے مآوشت اور احا کی طرر- 

ات شل کی ر م لکاجواب بيس کل حافظ ان مندونے حریث قرو ماوق را دیاب ای کم اس کے روراو کش اور 

یره جول ہیں۔ حطر عائشہ انان اکیا عدری کا جاب ہے ے نہ وال داژدتن صا اورا ںگیماں دولوں چول ہیں۔ . 

ای لے ہز کے یں پز ایرث لیشت 


وحشی جانوروں کے جهونیم کا بیان 
لن ایت :ون جاب ر کال یل شول ول اللہ علیووسل رکشل ...الا غ اج 
تشویج: “ور مار کے بارے بیس انتلاف ہے۔ شواک نزو کیک اک سے ال ۃکہ اس کاچ ڑا تفع بہ ہے مزا سور پاک ے۔ 
امام ابو ین لت دو رولیت ہیں ء ایک یل تا رک ے اور دو ریارولیت ہے کہ سور مار ول وک ے اور 
می را ےک وکل ای می اعادیث تنامض ہیں۔ ینس ے پاک معلوم ہوجاے ادرف سے نایاک۔ اکا طراثوال 


لا رر نے و ا کج ہداں لے 
مایم بھی توا ر ہیں۔ نز تا کی توا ر ہیں کی درگ ہگوش تک طرف خیا لکیاجیاۓ تو معلوم ہو تا ےک تاپ اک ے۔ 
کی دک گوشت بالق حرام ہے اور الگ رپسی کی طرف خی لیا ہا ےت محلو م ہوتا کہ پاک ےکی وک مد باق پاک 
ہے بنا بر میں موک ہے۔ ام شا فی قتا کا نے جو ولیل ٹن کی ا سکاجواب ہے س ےک سو رکا تق بلاواسط رگوش تکیسا تج 
ہے جل دکیساتھ یں اورگوشت ناپ اک ہے + اور اک سے لعاب پیر موتا ے اور ای سے لوا بک افقپر ہوتا ہے اہاچ از 
تفر بای کے زر ليم سو رک طہوریتہپر اتد لال ور ست تلم 

دعا اقلت التبا ...نوک سور کے با می اختلاف ہوا۔ چنانچ امام شا ویر کے تزدی کلب اور 
زیر کے سواقھام د رنہ و ںکا سور پاک ہے۔امام الو حفیفہ کے نزدیک تلام در مروں ا و ان فراع صیث لاد 
اتد لال ین یکرت ہیں دوس رید مل حط رت او سعید ال رین مث سول عن الْياض لکد لتق 
روا الب الاب وا ر وعن الها نها تال ماما نت ن نظو ماو نام طرژاین ماجص 

ام الو یقلت بل کر ہیں ریت رسک قول س ےک صاحب حوض سے فرمایاکہ تمہ مکودرندوآنے 
کے بارے می رد هد تم مساف ہیں ۔ تم نے ردول کےآن ےکی دید تال ناک ہو جا ےگااور ہم کی میں 
ملا ہو هایس اگر سور سباغ پک وتو حط رت عم رما کو جرد یت مج ده فرماتے ووسر ی و سیل تی نکی عیث 
ے کیہ سور سیا پاک نہ مولو سن 1 ری ضر ددرت ده یر معلوم ہو اک دبا پاک رید مل جب 
گوشت اپا کے وسور ھی نا پک ہوگا۔ شوانع اک اد یل کاجواب یسب هک دپال دادن تین گن اہر ے اور دا دکا تا 
جار سے لب نزوو شف ہے لمزا فطع فلات ھل ہہیا کہ ما ج پھ گول ہے۔ دوس ری دی لکاجواب ہے 
کال میں عبدرین| کم راوی ضیف با 11 ابا ےکا عم ہے۔ یاساع طبور ہیں۔ بہر حال جب اک ا الات ہیں٠‏ 
نلایصح لاستبلال- 


تاب تع ودر الات( مجاستو لک پا کک نےکابیان) 

ینغ ایت : عن ای ھر برقال کال مو ل او صل اللہ علیو وس 5 قرب الاب ن تا اح كم لیف یله ۱ ۸ 
کتے کے جهونیی میں اختلاف :امام مالک اور لبم بغار ی هه کے دیک گ مکلاب پاک سے اما لک سور 3 
پا ے اور یس بل مل مد ڈالدے وہ بھی پاک ے باق ا کو رو ےک کم یایاده ت کیلع لب ودام تبریے 
اور علا کی اماب طف شاق دات ہے 7 میک سو رکلا ب نا پاک سے اک وچو وو ےکا مھ ہے دہبرائۓ ۳7 ے۔ 
لاف :امام اک وبفارک مت هل می کے ہیں ترآ نکر کک آیت قول تعا ی قل لا ج ن ما اوی اک وما 
عل طاجم کلم ۂ ل آن کون میڈ از دما شف جا آو کن نزن ال شی راک رست یں از يس 
و معلوم ماک ال آوشت پاک دوکر یل کا تا فشک عَلَیکۂ ۔ یہاں شاک کے کے شا رکررہ 
جانورو ںک وکھھانے کی اچازت د یگناور ال کور و ےکا ی 1 لاب اوضر ور گا ے_ تو معلوم ہواکہ 
پک ہے۔ تی رکید ادا شر یف تابن رل رث ہے کانت الکلاب تقبل رتدبرق مسجد النبی صل الله عليه 


ج رس مم e:‏ »وج جلداول ]کے 
وسلّم فلم یکونو ایرشون عليەما٤او‏ رل کی عادت ہے جد ر جات ہیں اعاب راربا تواجاب محر میں ضرو رگراے 
چم نی دو تے۔ لمزا معلوم م واک پا ے اور سو رکا کم لعاب سے ے سور پل وگ 
ات لئ کید مل ران 31 کی یت ( سر من علیکھ اجنائٹےء او رک خبییث ے۔ دو رکد گی عدیث مھ کور ے 
جس یس طھو اناءآکںک کالفظطہے۔اور ی رر ہوئی ہے نچاست ہک پیل ہکوگی یز نا اک مون بم پا کک با 
ہے پا پاک کیا جانا نیز بر تن میں جو یھ ہوڈاللد ی ےکا عم ہے حال کہ اضاعت ال ام ہے نو اکنا اک نموت 
چگ د ےکا مم نہ موتو معلو مہ واکہ ناپاک ے۔ 
جوا :ام نک د بقار منز ہی و کلک جاب ىہ کہ ترآ نکر کم یس نہ ہوناعل کی و عل نیش ای که 
کہ ت کی چتزو لکوحدریث نے تا میج دوسرے درندہے ج وآپ کے نزد یک بھی تراسج ربحت سے طہارت میں اور 
یت نک مت بسن کاپ ےا کے ا لے 
دو رکد لی لکاجو اب یہ ےک ہآی مقر مرف یہ کہ کار کا کے کے شا رکذت یرذن کے علالی ہے ب کے 
کھاناے وولزدو سر بت« ال جابت موک مر ر رج لاب د وکا زکر ںا کی ط رب خون دجو ےکا بھی ؤکر یی 
توکیاعدم ذکر ے خون کی طہارتثابت م کیپ رز ال -ک وکنہ ز نکی طہارت صرف کل سے نیس مون یلعف 
ہوجانے ے کی پاک ہو ال ہے۔ اور وہ خرات کی ہ نے پر مجبور ہوں کے اس ےک من رولیت میں نول لف گی 
ہے اور پاب فو سب کے دیک نیال ے لمذاکہناپڈڑ کہ شک م وکر مسج پاک موی اس لے دعو ےکی ضرورت 
نیس یی ام ذا ا کے طہارت لعا ب پات د لال 3 نہیں ۱ 
رورس آ یں میں ط ریت یں اتف وکیا ایام شاف ارو اک کے نزدیک مات مرت ھوناداجب ے اور 
ماما کے تز دیآ توا مرت مکی ماک دون کی لازم ہے۔امامابو نیہ کے دک ووس ری خجاسا تک طرں ن مر 
دع نے تیالو جا گا۔ ۱ 
وع دحل ہکی د کل ہے صریٹ کور سے جس می سات وفیہ "لک عھ ہے او رآ وال م رجہ مب کے کے ام اج 
گہرالر بن مخف لی حدیث ے ات لا ل کے ہیں یکره الام بالاراب۔ درمز یھ یس کا ے۔ 
ایام ار نیز ار یل پیش یکرت ہیں فرت الو ےتیک عت ے جودار تنل کور ے اذا ولغ الب فی 
الاناءاھرقەوغسل ثلاث مرات۔ 
دو رید یل ٹل بن ع رک می اب وگ رث ے:ولیغسلہ ثلاث مرات۔ تی ریو ملوار قطن می رولیت ے : 
فلیغسلےثلاٹا ماوقا دتا دحل کر سات مرت دعوناواجب نیس ہے۔ چوک و بل خود حضرت ابو 
ہری ما حادی شر یف میس خی کد اور داو کال رولیت خلاف فی وہنا کل ے اس کے رھ نیز 
فا لک بھی تقاضاے مہ تن مت دو نے سے پاک ہو جال ےک دک اغا حجاست یقاب + شراب خو دشاب تن رہ 
دوس سے پاک ہو جاتاے اد فو ال سے اخحف سے لن سے بطر( ان اول پاک ہو ناجاہے۔ شوالع حرا 2 تج 1 


o ew‏ او کج جلرال اق 
یٹ سے اتد لا لکا لکاجواب ہہ س کہ ده تاه گول ہے باعلا گول سک کل کے سور میس ایک م 
کت رام ہوتے ہیں وو سات مرچ و وس سے تم ہو جات ہیں اور زی بکی وجہ بھی می سے باکر مج وی ثٹکی 
روایات ٹل تق ہوجاتے۔دوسراجواب ی ےک مھ کا بدا اد گول ہے ج بک هکرس تشر رک یک 
عام ورپ 92 عم تھااس وقت نزت داانے کے لے مع مق برجب لوگ ول کے ولوں میں ر تآ ا 44 21 
مضوغ وکیا مات سات تع کا حم بھی ضور گیل دجس ےکہ خود راو الد ہریر وی کی طلی ثکافتئی دیاکرتے 
سے او رتس افیا تباب کول ہ ول دووں تدا ر تہ ہو۔ 
مسلہ تطهير الارض 
للدي الت : نآ مر رال اما را قمالني الننجد . تکاله الاس اخ 

تضریح: حریث باتش دو یں قابل زک ہیں۔ گل E‏ ہے اعرالی جب مسلمان تھا کے بجر مر کے 
پنیا بکردید ا لکاجواب هس که ابت دا زمان ہکا واقعہ سے جر او 7 2 ی ,لول 

آداب مسر ے :اواقف تھے ,پھر حضو ر پل کے وعف سن کافرما ن تھا نا بکانقاضاہوتے ہد شی ر پاک و بات 
نہ کچھ نے ءآ خر بی جب برداشت نکر سکانذدود ہا ےک فرصت دم تی زا یوقت عام عاات کہ مردلوگ سب کے 
ساٹ ا بک ے سے اس لے کر لپا بک دیاادر دو سرک ر ولیت ٹل ے هک و مکار سر ہیں پیا بکیام زاو 
اششکال تییں۔دوسری بات بی ےکم زین خواہ سر ہو یادوس یوق چ اکر ناک ہو جا نو پا کک ےکی صور کیا ے 
زی نکی طہارت کے طسق میں فقہا مک اتلاف, وال باس میس امام الا اود ایک فرماتے یی کہ ار نناک 
اس توا کے لئے دعحو ناضرورکی سب خی رد عو سے کے پاک ہیں گی ۔اتناف کے نزدیک ال صورت مہ ہے پا ے 
0 7> کی پاک ہو جا ےگی۔ 

لال :ام اسر لال یکرت ہیں حدریث بذاک اس میس پالی سے شس لک اگیا۔ اکر دور وت تم دور 
تو پان و یرہ موا ےکی تی فگواران ہکرتے۔ احا تک د بل حضرت ان عم رما کی عر کانت الکلاب تقبل وتدبر 
وتبول الم سجدفلیر یکونو ایر شون شیامن ذالکہواداہرراؤو۔ تو معلوم وال جتفاف سے پاک مکی ورن یعس 
گے دوس ری د عل الو جر ہرک مث چ مصنف ابن ای شیەمیں زکوۃالا رض ییسھا۔ 

یز منرت ما نال ناء ابو قلا ےکی رو رولیت مصنف کپ رارزا شی ہیں ااا رض جفت فقل ذکت: اور ستل یم 
درک اقا ی میں مو قوف کا مور »وتاب 

جوای: ا ن کی حدیث ےد کل کیک ا کاجواب ےس ےک دہ ہمارے خلاف کیل ےک دگل دہ ہم کی بے 
او ایک ط ری کے انقیا رک نے ے بقیہ ط یق ںکی نی بل بو باق اس وقت تل ای رک نک دج ہے سے 
کہ جل دی پاک در ےکاارادہ تھا اد یو زاگ کنا مقصود قاچ ھکل تاب ناو رل تنا وو نے می ںآسا ی 9 کہ پا اہر 
چلا ہایگا۔ لذا ای سے تس لکی سی پر تدر لکرن نیس چائ خو اام اقفر 2 ہی کہ اتد لال 
اشاس تاکن بهنا میت غير صحیح_ 


چیا رس سر د( 0و ...ہہ چا جارال لڑ 
مسئلہ النی ۱ 
ی یت عن ملیمان بن بساي .کل : مالف عانتةني الہ نها ن انیب الوب اغ 
ففہاء کا اخقلاف: کے بارے میس اننتلاف ے امام شاق واج کے ریک می پاک سے اور ا کو جور و یاچاناے وہ 
ضر رکیل نیس بللہ نان کے ے امام ابو حزیذہ ومالیک کے ردي :پا ےاورا کلکاازالہ طبار کیل کیا ہاتاے۔ 
شوت وحزال یال صر ال حدریث مم فو عو مو توف ال سے صرف ان لآبیت سے دورد راز استنبا کرت بو سے 
الا یکرت ہیں بی آیت ترآ ول گرھتا یی تک ہی ںکہ کد مکی خلقت ”تی سے بو گر کی 
کوناپا کفکہاجاۓ زکرم کچ کار نایک سے پی اکر کے احران ناگ درست م وگاوو سرک و ممل من یکو پا یکہاگیا جیما 
ک ہکہاگیا لق من اور پا پاک ہے لمذا من پاک موک تی رکو کل ہے س ےک من انی م السلا کا تھی مادہ سے اور 
ناپ اک سے پیر اکر نان عفرا تک غراف و نت لاف ے پچ شی ر کل رت مان لازنا عدیث ے 7 
1 ینزب مر ل الوص ال یسام ادد ظاہر بات کر فرت سے تام زا ال نیس ہوتے ی زا 
بائیارہجاتے ادا کوٹ ےک رآپ نمازیڈ ھت تے اور ناپا گوس ےکر نمازٹڑ هنال تو معلوم موک پاک ے اور جرک 
ایک بء اک ہوا کے کل اجزاء پاک بو کے ام الو عطیذہ دک رخاف ی د لے ےک تست شاب نہیں متا 
کہ آپ نے زن دک ریش یک دقع بھی من گن ےکی الت مس نمازیڈ ھی سے بل کی نی ط لق سے زا لکیاخواء تل 
سے ہو یاف رک سے یاک سے یاک اود طر یقہ ے۔ اکر اک + ول فو ایک دفو بھی بیان جوا زکیلے اخ رازالہ کے باز ۓ ھت _ 
دوس رکید میلو نوناق ات ههد رولیت میس کت هکم ما کرام پک سی سف ہیں جنابت لان بو 
و۳ آیت :ازل مول نے وی سے کل واجب ہو اناد جز اس کر کناچا نے جیساکہ *لچزسک خر ون سے 
عد ث اضصفرلازم ہوتاہے وه بالا تفا لس تی رگد بل ىہ ےک قر با پا فو حدریث ڈی کہ جن میس من روک 
تم کیا حضو رلو کے سان دييات یت من اش رین گرام یل حدریث ہیں چو کی کل ىہ ہے 
کہ منی بوا مکی کل کے بعد پیداہوثی ے اور سی چیزیں لبم کے بعد پیا مون ہیں سب ناپاک ہیں جی ماک ہیغاب٭ 
نا شون ی بھی نا پک وگ پا نچ ناد کل ہے ےک فک بالق نا اک ہے اور ای نک کے حصہ فلکم نام سے 
2 ان اوی نا پاک+ٰچا ہے۔ب رمال و للہا کے روز رو شکظ ریم و دیا ناگ سح 
جواب: ان مخالف کے دل لکاجو اب یک آیمت او یس بت یآد م کر م بک کیان کو می سکھاگیااو ریچ کی مقیقت 
برل جانے سے دہ پاک ہو جال ے ی ےگد انرک می گ رک مک من جانے پر وو مک پاک ہو چا مخانہ ج لک راکھ 
نے سے پاک مو جاتاسب دو سرک پات یم ےکہ ال آیمت سے اسان جتنلانے بی اس وقت زیادہ پال »وگ جب کی 
کو ناپا ککہاجا ےکی هگ پاک یز سے پید اکر کے ےکم یاناز یاد ہکا یں ہے نای اک پیز ےکم انا اد ہکا لک د جل ے 
مزا ناپاک ہہونے می اسان جتنلانے میں مال وکا لمذاے آیمت مارک و ل ےک کی ناپ رک سے دو ری د ملک 
جاب بے ہ که پل کے سے ا کا اک ہو نالازم نیش ہوتاجیراکہ دوسرے حیوانا تک ملک ہکہاکیا لق کل دیوشن 
کاو الک دوسرے خوانا تک مسب کے نزدیک نا پک ے تو معلوم ہواکہ پان کے سے پاک ہو نالازم نیس وتیل 


E‏ ساق رو ا و جلداول پگ 

رقیت وسیلان کے اتب سے پا ٰکہاگیا تی ریو م کا جواب ہے س ےک دبا ءکامادہ تو خون کی سے مالک نا پک ہے لم زام 

کی نا اک موی نزناپاک سے ات ب رگزیدواشفائ کوپ راک نے لکال یاد سے پاک اور ابی بچیزے اج رانا لاه 
کال نویس ہے اماب اید کل م رگ ہک ہآ پک ۔ 

چو دلیل فر کا ا ارت 7 روس ھت تر ا 
»و لباک تی کے ذدیعہ اسیا ککرنے سے سب !جرا دور نیل ہو ے پکھ باق دہ جا کے ہیں اورا یکول ےکر راز ز ی 

جال ہے عاللگ ہکا کے ادیک پاک نیش ہے نا اک ےگ رر ے محفوعنہ ے اک طررع کی کے وواجزاء نا پک ہیں 

ان قیررے فو عدر ہے اہزااس سے اتال 0.91 

رام اد حفیضہ وامام میک کے در میان طر تر ماخلا ف امام ماک کے دیک مرف و کت ا 

صورت نی او رایام الو یہ کے رر ا طب »و یار یر کا اضر ورت ہے اور ارفا ایس ہونوسی بھی طر ۵ 

رئل رن سے اگ ہو جائۓے کی خواہ یت ور ری ےنا گے f‏ گی اور صورت ے ہو اک ہو جاۓے یت 

ماک تھ تاتا کے یشاب وخونپرکہ دولخ ر کل پاک بل مودای کی بغی متس کو پاک بل گام 

او هنز 002192 بل مج کرت ہیں کچ امو عوانہ میس حضرت ما کے فالتا یعیمس کنت اف رک انی من ثوب 

سول انل صلی انل علیہ وسلم آزاکان یابسا داغسل اذا کان رطبا۔امام مالک 4005 کے ق کا ج اب ہے کر عدیث 

کے مات الکو نتاس تیزم تیاس نے الغار قی ےکی دک پاب وخون ی جر م ٹیٹس ہیں اور کن نی اٹ زی 

م فان رقا 

مسئلہ فسل بول الغلام 
پت ات عن دقن ذس ھس. .. ھا أ پائن. .. کت که لیر یلها 
تعریح: اس یش س بکاانفاقی ے جو ماک ول کی خا یکو ناکما توا نیشاب ناک ے اور یم سل پاک ہیں 

ہوگا یزاس می بھی اتف ےک اکر خار گی غزان مک یکم ےب یا نیشاب ناپاک ہے۔البتہ ر یقہ ترش انختلاف 
ہے بول چام کے دعونے می انفاقی ہے اور بول غلام کے پارے میس امم شاف وا فرماتے ہی کہ ال میں ای ے 
لک ضردرت ول لام حیفہدالک وسفیان ری مھم ایل کے ز یک بول خلام یس بھی سل رور کچ لھا 
کا یس اد و ول یس هرق کہ ول یہ ریش کل میرک ضردرت ہے اوربول لام شلف کان ہے۔ 
لام شاق داحرولیل یکرت ہیں حدیث کور سے ہیں کا لخظ ہے اور تنس کی تسا مر ان امومع 
ات ہلا ل گرب جن میس اا رو 2 یاس یه ارت ام مسلمہء ان رده لاپ ,یناث مرش 
اام الو ی واک ات لال شی کے یں اس ہو میٹ استززہواحن البول ا سے اس می بر مکابول شا ی ہے نز 
حضرت عمار پل کی مش صرت ےکہ اہم ائدسل تقر بک من لول بیہا ں بھی بول عام ے و اہ چا کاب یاظلا مکاد عو ےکا 
کے یز ے جا تلبیر کے یت مات لام مآ گی یزجب ہے ٹس ہے تو دوصرے انا سک طرح سل 
ضرور ی ہوگا_ 


E‏ رس شر سره جدیں لے 
ان حعرانت_سن جوو لا ل لسکا نکجواب ےے هک 0.0 E‏ اد ہے جیی اک تر یش ریف ل لفظ 
یے ارے می ہے ها اال شی سب نزک سل ضرودی ہے اط رع دم تی یں نف للم 
شیف میس ١سیطر‏ تارش کی تسل سک می سآ یا ماک دم تین کے بارے می تر زک غر ی فک روات ے ڈیر 
رشیا وصلی ۔عالاککہ دم تی میں سب کے خزدیک تل سے می مروف نہیں ہے مزاول تلام می بھی افا رش و 
شس کے ن میں ہوں گے باق جس رولیت می لک تی ہے وہں طاتا شس لک فی نیس سے یک سل شریرک ی 
ہے چنا نچ سم خی فک وت وت شتسد اہ کہ ی تی رک طرف چان هدز سل کی دک ئی موی 
اور ٹس کات اي عریث مارک و لت وک پا دونوں میں وج فرق بیا نک گنی( لڑکو کو وگ زیاد گود مس 
لیے سے ہیں اود بار ےکر کچمبرتے ہیں اس لے اس می تلاز یاد ہے اس لے فک اور کول الام نیل 
چا شیر ع(۲) / کیوں میں برودت غااب ےا سی لئے ا نکا ماب بد بودار ادرف ہوتاے | س لے شدیرے ادر 
ڑکوں بیس رارت اب ہے اس لے بد کے نیزر ق بھی سے اس لئے تخفیف ے (۳) کک کی مخ نکی بنا یشاب 
ایک تہ جم جاتاہے اس لے تشندیرے اور لا کےکا تاب یک جک میں بت لد تفرق ہوک رتا سب اسلئے وف سے 
ای وجوبات کی یتاپ دونو کے مشاب د وس میں کی فر یکیاگیا۔ 

توہم نجاست کچٹ نہیں 
دنت یت : وعن یساس هي اللۂ عنها ‏ لها را اي ار یل دلي وشن الان ال 

تشریح: اس یں س بک اتان ہکپڑے میں خجاست لک جاۓ تفیل پاک ہیں موچ لان حریث هزات 
معلوم ہوا کہ ال رگھڑنے سے کک پاک ہو با باب لاب مرف سب کے لئے مکل ی نکن نوا سک نف 
وجها تل گئیں۔ ینس وضع قرار ویار اور ن کہا اک ہے نجاست یاس مول ے۔ کان انا ہو 
س هکم ریات ں اذا مطر ذاکا لف آ اے پھر باب ےکے ہ ویر اس لے نف حرا کے ہی کر خجاست قار سے 
مفوعنہ پر ول ے اور لگ رات ہے که یبال قزر تجاست راد ہیں یل اس سے مین شاد مرادے جوطبا 
گس اور رت زا لکر نام راد ے۔ حضرت شاو صاحب 3401/95 سب سے پپندریدہ تج ہکا سے ده که 
اسل یں ای عورت هش کون جاستہ تج ی صرف ا یکو وسوس تیا ای وسو ےکورو رک نے کے ے 
آپ یاهمان جیداکہ میا کرام وچ کو بازار کے ےگوشت کے بارے میس پیک ہوک معلوم یں ای ہم 
اش کی یا لپ نے ون وسوسہ کے لے فرما اہ کلودوازکر واس اله علیص 


مسئله بول مایوکل لحم 
یت و الا کارب کال: ال شون انول اللہ یو وس :لأس یبول مان کل کہ ۸۱ 
فقهاه کرام کا اخقلاف: یی یل شنک م یش انتلاف ے۔ اام مانک داد وگ سک نزدیک اک ہے وا 
ابو عنام شاف اور لام الولو سف مھم اللہ کے دیک نا پک ہے۔اکی ط رر ان کے پانتفانہ کے باس یل کی اختلاف 


E‏ مس تسد .تبون ید 
ہے۔ا ام ماک کت و موا فقو مکی حت راء وجار رف ے لن ال کی طہار تکا دوم ید ۳ 
تمہ نون س ےک ہآپ نے ا نک شاب یٹ کا عم دت علوم وال پاک ے۔ 
دلافلی:اضاف شا نکر وف اھ اعن البول فان عامشعل اب القبر منم 
یہاں بول عام ےکس کی میس نہیں دوس ری ل تر زک شر یف می حطر ت این رل عربت ہے ھی رسول اللہ 
صلی اللہ علیہ وس آم عن اکل ابللالة والاتھا۔ادرج لال کہا جاناہےاس تیا نکوجو کاس اور نیک سرب سے یی کمن 
مزا علوم بواکہ مای کل مه کے از بال ناپاک ے۔ تس رید 02 »کہ مالایو کل لیم کے از جال نایک ہو ےکی علت 
ہے کہ زا ی الت ے تخر ۶ وکر وور ک عالت اتی ہک میق ے۔ اور بجی علت مایو کل لحم از ہل ٹش یب 
جا ہے لسزامہ ناک ہو نا چان می دج ے هکم این مسعود کی عدیت ملس ےک آپ ےگ بے اسنا ہی لکیاور 
فرایاافاجس۔ ۱ 
جواب: زان الف_4جود بان کے چا اور براء ی علامہ اہ ت زم فرماتے ہی کہ وه عدیث 
ا ال ہے۔ اس میں ایک راو سوار ہن مصحب ے جو موضورع] مر ہیں رولیت فلا بصح الاستدلال به حریت 
رفینج داب ےس کہ( )دہ عد وچ اود ل ریبک ال بہت سے اکم ایے ہیں جا کے ور 
کے دیک بی وی جی ماک اس شخ ہکا کر ہے ادراب سب کے نز دیک وہ ورغ ہے لماش رب الال کے مکو 
ھی ہم ملسو کیل کے دوس راجواب یہ ہ کہ درل جک مات دی ی ۔ ای سے ا لک طہارت ثابت تلو 
تیسراجواب ہے س کہ ل مس ضور یزم نے ا نکو یاب دا صرف دود عم دا اود 
پاب کے سے یں کک م تین ہیں نے اڈ پان ماوت یھ کے مر سورع کے سا پاب یپا 
ش رو کیا جیہ الہ ٹن روایت ٹس صرف اشریو این الباھاکا ذکر ے۔ ابوا لک کر ہیں ے۔ لیکن لمح ر اوی نے مھ لیا 
کہ تی نی می شرب الا نکی تھ شرب ابوال بھی ہے۔ اس لے شس روایات مس اش رپوا من ال بنا کے اقا ی 
یداد صنعت ٹین کے اختبار سے ہے۔ای استدشقو امن ابواطا تھا ذس رولیت یھ ات االات ہیں ال 
سے آیک اہم ستل میں کیے اتد اواج 


مرادرکهالون کی دبافت کا حکم 
نیت .ون کب انون گا کال کیش مشو ل انو صل اللہ همام بقل زو اوق الإا کت که را 
فقهاه کااختلاف: امام اک 304019 کے دیک مرده چاو رکا چجڑہ دبافت سے پاک لبون پور کے نزدیک 
سوائے نختزیر کے سب پاک ہو جاتاہے اور اام شی 9لک بھی اشن ر کے ہیں۔ 
دلائل: ام با کک 30ا ات لال یل ارت ہیں عبر ان ک 1 عیشت ل یب مہ انح کر آن‌لاینتفگرا 
من‌المیتةباهاب ولا عصب واه الترمزی و ابو داؤر۔ 
ھور ائم ہکی دم با بکی سب عد یل ہیں۔ چنایہ حطر ت ان عباس الا سوہ یمود اک سل ہین کب نکی ریس 


2 »و بجداں‎ (MD) Re E 
زک ہیں۔ ایام الک لس جور یلگ ہے ا سکاجو اب بسک اھا بکہاجاتاے غیرد بوخ پچ ہکو۔ لہ اا‎ 
سے مھ اوه عدم طہار مت کسے ات لال ہو سک ے۔‎ 


اٹ اسح کل ایی مول ی کایان) 
نع کالہ ش ریعت قات وسنت رام ے اور ور سلف وخلف میں ےیک بھی ا کی شرو مت مس اختلاف 
نیس ہے۔اگرچ ام کک خق للا ے جم رگوں نے ر دای تک اکآ پ لس کے تال فلت گرم نہیں 
سے بلک امام ماک تالک ور کے مہات ہیں المبتہ مم کے بارے میس اکے دو قول ہیں۔ ایک تول میس چاو ایک 
لش اجب لان جب ےکہ ان کے نزدیک متم میس بھی ملاتا جائڑہے۔ مزال سنت وایجاعت میں ےکس یکا 
تول بھی عدم جوا زک ہیں ہے اور مجن سے غلاف قول ا نہوں نے رجو کر لر تک مرن کچ ہیں صضح عل 
ال نکی عدریث وات ے چنائی مصنف این اي شیب میس کن بعر یکا وس کہ حدٹی سبعون من اصحاب رسول الل 
صل اللہ علیەوسلم ان هکان م سحعلی الجفیں۔ 
اہ من د ہے اک تک شا ریا اور حافظ ان راکسا کاس اوه ہیا نکیا ہن غل عشرہ رہ ہیں۔ اور اہن عیدالہر 
نے بیا کیک مسح على الحفین‌ساثر اهل برو حديبيه وغيرهم من امهاجرین الانص ا وساثر الصحابة والتابعین وفقھاء 
السلمینں۔ای لے امام او رنہ ول زرا 2 ہیں کہ ماقلت بامسححی جاء ن مفل ضوء النھاں اد رآپ نے 20 ی 
نی نکر سنت دامع تک علامت ترار کت فرباتے ہیں نحن نفضل الشیخدین ونحب الحدین ونری سح علی 
الخفین۔ اور لام الک اکال ے بھی بی قول متقول ے۔ بنا یاب من کر فرماتے ہیں:أخاث الکفر علی من انکر 
سح اور یک رال راان میں اام صاحب سے کی ہے تول نف لکیس :نا بر می ال جن یٹس ےکی ےا سے اکر کی 
صرف خوار اور شیع امیہ اک سے انا دک سے ہیدہ کچ ہیں کفران و ا رز تک اسب حدریث سے ال کو 
شور کیے ترار وی جاک ہے ابی ط رج حضرت امن عبا لاور یال در عائکشہ تین فربایلانجوز لسم 
علی الدین۔ و رک رف ےآی تکاجو اب یہ هک کی ٹین کی حدیث متواترے۔ کر لاور تو ظا 
سے رن »یت ول ہے مر تق فک صو رت پر اور نارکا کیان سے ربمت ے 
جاک ان ابا رک فر ہے یں :نل منبردی عنهمر انامه فقدموی عنهم لاه ماقرا شب نہیں ے۔ 
لا کل ن عفن تین اڈ ر کال سر رل ده نلج 
کن علا وی غر ے ہیں کہ تسل فل ے بش رطبلہ سج یف نکی مش رو عی تک عقیدرورے۔ اوران جر 
لن را کی یس اور رر الد بن ھی نے عھ 7 اتا کی می ائمہ ار ہج یمیا را بیا نکی ے۔ 
مسئلہ التوثیت فی اطسج 
ریت این :عن ئن ماني ...... كن امح كل اق ... .وت لیا 
ففہاہ کا اخقلافہ: لام اک 1 کے نزدیک راکو ید وا ایام تسه 


n ر تی چھے‎ Rew E 
ر موز هو لے کے تس کر سکتا ہے لیکن ائمہ شش کے ریک موقت ہے سافر کے لیے تین دن تین رات اور مت‎ 
کیل ایک دن ایک رات امام مان کک د مل خی رن خابت اپ کی صرت اود اود شر یف میں جس مل مہ الفاظ ہیں۔لواستزد‎ 
نادلزاونا۔ دوس رد اي ارک قال ی سول الله امسح علالحدین قال نعم قلت نو اتال یوماقلت ویومیں قال‎ 
یومین حتی بلغسبقاوئیوایةماشٹت( ہواہ ابو راژم)‎ 

ہا کول هد مقر کی تیس ری و مل عقب بن عام ماف وف رات ہی ںکہ میں حطر ت عم پٹ کے پا سآ یاموز وب نکر تیج 
کپا کب موز وپ ہناش ن کہا گر شت ہم کو وآ پ نے فرمایااصبت الست 

امھ ہک دمل ایک تو با بکی حدیت ے جو جضرت می لپ سے مر وی ہے رواو سام جس میں صاف تذقیت نارس 
روس ریو ل ضرت مصفوان پا کی حدیث کان النبی صل الله عليه وم یا مرا اذا کناسفڑا ان‌لاننز ععفافاثلاثة ایام ولیا 
لیھن( روا الترمذی)۔ تم رکید مل الو ران :کی حریث ے :رخصللمسافر ثلاٹة ایام ولیا لین وللمقیم یوما ولیلاش 

ای مر وقی تک ہت هثل ہیں دوس رک بت یہ س ہک کی شرو یت توق ت کے ساتھ ہو کی سے ا رتقیت نہ ہو 
بر روت سح بھی باق لس لماع میت مش رو یت کا خلاف ہے اوقت رمحا وت نکب 
ہے ماک تفلک جولوامتزدناسے و مل ٹین کی ا کا جاب بر ےک کن زیادت نی ےا ار اك 
بھی لی مہ نراد ہے دہ امار ث کے مقابلہ می کے و کل بن سکم ہے دوس ری دلی کج اب ىہ ےک اکٹ محر شین 
ا لضف ار دیاے چنا نچ خودابوداودرے کہا لیس لتوک اور اام با کون قطان ور ماس کہا معلول سے اور ایام 
اھ سے فرمایا کے ر ال ول ہیں اکر جج بھی مان لیس تا یکا مطلب ہ کہ جت چا عکر کے کسی زمانہکیساتھ خا 
یں سے کن #فون کے مطا یکر ناپ ےک اک سف سک عالت یس مر تن ون تن رات کے ب رکولنا اور اتقام تکی 
ات یں ایک دن رات کے بعد تی بی و بل جو حر بت عم رح کا آولاصبت السننہ ہے ا لکاجواب ہے ےکہ رت مر 
لب نفی نکی تسو بک ر ناس عم قی تکی توب مرول اس ل ےک حر ت مرو نیب تھا 
قوقی تکا حجی راہ این سیدالنا ی ےکہانو دہ عدم توقی کی تصوی ب کے کر وا رک ای ںہ 
ر غر تل ہیں اور عد م یتک اماو با ضیف ہیں پا مل ہاو لک یکنیائش سے ام اقب تک ہب راغ وگ 

مسئلہ محل السح فى الخف 

قدت ارت :عن و و و 
تشریح: اش سبکاقال ے کہ آغل الي کنا رخ ہے صرف اکپ اکتناک اکا ے اور صر فآمقل صہ 
تاو ادا نیل ہوگاانتلاف صرف اس شل ے کہ اع کارا لک کنا تب سے یا نیس لاام شا نی ولک 
کے دک اسک اکرنا تب ہے لام ابو عنیفہ دام اد کے نزدیک ص تب نہیں بل پل بے اه ہے ام شنت 
لت مب کر نے ہیں مخیر وین شب لپ کی عدریث کے اس ط ران ے جو ولیدبن کم سے رولیت ہے اور ال 
تحال ا کیک اشک کر ےا ام ابو ضیف ادامھ 1 یل خر ت ل کی صدیث ے :لو کان الدین‌بالرای 
کان اسفل الف ا ولیہ مسح من اعلادولقں ایت النبی صلی اللہ علیه وسل م تمسح عل اهر خفیهہواہ ابوداؤد۔ 


چیا رر من سر ہ8 8و »5 بداں 8 

دوس رید کل ححضرت مخ ر ہیر ولیت جو غر ولید سے مر وک ےہ ایت النبی صلی اللہ علیہ ولم تمسح على الحفین علی ظاھر 
هماو اه التر 7 ANE‏ و۳ ۳ ع2 لب ام شاق ویک نے هرت خر ہک رٹ ے 
جواستد لا لکیااسکاجواب ہے س ےک کف رشین ا کو ضوف ترا وین ام تر کے معلو لاو راداو بھی ضیف 
کلام خاک ےکہالیس یصحیح اور ار جج مان بھی لی تا کا مطلب ہے ےک اصل میں ابر یار الکو 
روک کیلع اتد تیذا یکو سج سے تی رک لاہ رال ضعض معلول یا تل حدیتے ار لا ل کر چ تسه 


مسئلہ المسح على الجوزبين 
دنت ینغ یرون شغي كال كوا اللي صل اله علیووسل. وكسح على ا جالعل ال 
تشریح: جو ر بکہا جاناے جو موزہ کے او پا تا جورب کی پار ہیں ہیں (ا)عولد کے اد اور تن چچڑہ ہو 
٣(‏ )حل کے صرف چڑہ »اور اب وو سر کول یز ہو (۳)هینین امه ادیش سی طرف پوت وی مطبور 
کپڑے د غیرد م کہ اکے ساتم دورکک چلا جا کے اور بخیر ده ہوے اتن یراک ر سے (۴)جورب ر تق جو کل پا 
رک اس سے دو رکک نہ چلا جا گے اور خر اتد ھے ہوے ساقی ی ہر ے تلد وله ات رب اور چاه 
ال تفای جار اور تی ج نان ہیں ایپ رایام شا وا اور ہمارے صا کین کے نزدیک سح جاک اور ہام الو 
نین لا کان کے زین تن پا او کی #ض ملک کا قول ے لیکن ام اب نیز لھڈ نے اتی 
وفات سے تن یودن پیل صا ین کے ذذ ہب کے طرف رجو )کر لاماق ہے ہیا نکیا جانا ےک امام صاحب کاڈ کا ار 
دفات سے دیمان اک رآپ ا 28 اکر ہے یں گر فربایاقعلت ما کنت امنع الداس عنه ال ے ربج کے گیا۔ 
مسح علی الفعلین: بم صرت زایش مسح عل النعلی کا دک ہے مالک کالم کے نزدیک ہے جائ یں ہے تو 
اک تلف جواب دیۓے گے ۔(ا)آپ نے وضو ی الوضو مکی الت میس تمه عکیا(۴)آپ جوتا یت ہو موز 
کیا جو کھولا ہیں (۳)آپ نے قصداموزہ پر کیا اور جو کو روک کج ہے سے یڑا ا یکو سج نس 
تی کید (۳)مطلب ہے س کہ جور ٹین من کیا وا لی کا واو فی رک ہے (۵)اصل میں یہ مرت ضیف ے 
چا عبدالر تن بن مہ دی سفیان ری ان الد بی امام امم ب ان ویر من اسکوضعیف قرارد یا مذااس سے سم 
نین بت نیس ہوگا۔ بای سح لی جور ی نکا مس ال صرت سے ثابت نیس وک بلک دہ سح عیاش نکی زیت سے 
بت + وکا ای ے وجور ین میں مین لیذ نکی رل نین کے تا تام ہو ے۔ 
اب الیش و( ماین) 
دنت یت عن یه قال :کال مول ال اه لی وس کال الاس پلا : وٹ طف رکا اغ 

تیمم کے لغوی وشرعی معنی: م کے لغوی ”ن تصروارارہ .اور شر عاهوالقصد للصعیں الطیب بصفة 
خصوصة عندعدم الماء حقيقة اوحکما لاز الةافرث. * 

چوکلہ اک مف ہوم کے اندر قصروارادہ و الم 3 07 دگرناضروری ے لاف وضو لک اه کن میں قصر 


دسر :تسس DD‏ سے لا ہیں لد 
لت نیت ضر ودک ده مرک پات یرہ کہ پال ف نف مطبرہے نی تک کے مرب ےکا ضرورت نیس اور ی فی 
نف لوت ہے اسل ا کو طبر نے کیل تی تن ےکی ضرورت سے پھر جاننا چا ےکہ ‏ 6 نبوت ق رآئن وحدریث اور اما 
امت سے ے اور مم امت تھ ےکی تصوصیات شی سے ہے رال میس س بکااتقاقی ےک کم جس طررج عرش اص کے ۱ 
و تاس حر ٹ !کر کے کے ی ہو سلتا ے اس میں حضرت عم راور این سور یشان تھا پر نہوں نے 
رو گر لا تزا میش بھی س بکاانفاقی ےکہ کم صرف وج اور ید زنل گر ناور ریس نیل م وگ خا مث 
اص کل و یاعرٹ اہر کے لے ہو۔ 
مسائل تیمم میں فقہاء کا اختلاف: E EES‏ نک می انتلاف ے۔پہلا پہلا تلافک ہے 
ل مھ مکی ضر ہر سے ہو گا دوس رامتلہ یی نک کہا ںیک کراپ ۱ 
ان دونوں متلوں می بہت ے اقوال ہی گر شور روت نہ ہب ہیں ات ا نک بیان کیا ناس پلا ہب امام ات دا گنک 
ہے دوفرماتے ہی کہ تیم ایک ریسکا چ رہ یت اور ںین الی الکفی ںکیلے دی نکی رڈ کک ہے دوس راغ ہب ام 
الو طف وشانقداک مھم هکس دہ فرماتے ہی کے تم دوضرپب سے ہوا یک ریامض بی نال 
رن سک ری نکی خر رظن یگس 
دقاف :لام تر دا 22 ۷ کے بت اہن ام 1 حدریث ار کو لم مم ے ا مایکفیک ان تضر ب‌بیدیک الا رض 
ثم تمسح بھاوجھک و کفیک اور کلف الفاظ یں جن س بکاخلاصہ ہے کر ایک رہہ ے اور یہن ای اض 
امام او فیفہ وشا شق اک ,مهم الہ گی د کل اولاق رآ نکر > آیت ے اس میں غل دو حضویںان ومرفقا نک زک رکیااور 
ظاہر جات کر جس ط رع وضو یش ات اد چ رک ال اک انلیا وت ہے ایک رح کے پا ے دونو کول دعوتے 
.ای طر میم میں بھی دونو ںکیل الک الک دور ال پل ریم خلیضہ سے وضو کا تو وضوکی طر ح تیم میں پر یکو قبن 
3 ا ناک غلیفہ ا م۷ لکاخلاف: ہو۔دہ رید 1 حط رت ہام ویک ص رٹ ے دار یں لہ حور موم 
نے فرای -التیمم ضربتان ضربة للوجه وضربة للیدین الی الدرفقانی۔ ری و مل ححخرت ابام ی میٹ ے 
بان التيمم ضربة للوجه وضربة للیدین الی امرفقین ۔ اک طرر) مر ہزار یس حطر ت عا کش نگل میٹ 
ہے اور ضرت این عم دالو م هنن ی عریث سے تال جس ان س بکا الفاظطا ی ای یک ضربة للوجه وضربة 
لین الیامرفقین نی خود ال حدیث ے باتش جس می و وض رب اور یکا ہک ے۔ ۱ 
جوا ب :لامج واک کی د کل کا جاب یہ ےکہ اعل واقعہ ہے کہ حضرت تسف دک ملع مکی او رتس کی 
طرع مٹی میں رگ نے گے جب ضور هل خد مت ل حاضر ہو ے تفای بور سے بل می لکنا 
ضروربی نہیں لہ وضوکاج یم ہے لک کدی س کہ وج اور ری نکاس رین اور فقصورای مود طروت ہکی 
رف اشا مک ناتا پور یکیفیت بتانا مق ال تھا اگ ایک ضرب وک نکاکہنامتصمد ہو مات مار لس وو ضر اور مق 
وال صریث م وین و لذاواقعہ عمار پا نے ات لا لکرنا گج ال ۱ 


چا سے و 1 سے چا بدال ال 
تی ر اتل یر ےک تھ مکس چزے ہو نا فوامام شاف وا تال کا شور قول ےک میم صرف تراب بت سے 
ہوگا اور ی قول سے تا ابو یو سف نا کا تھا اور وہ رت سے بھی جوا زک قا ہیں۔ امام ابو عیفر اور امام میک 
نت :سک نز ریک جو کل الا ر خی ے ہو نہ جلانے سے نہ جل اور اعلا نے سے نہ سی اس سے یم ماد 

امام شا داد تن دلج کر ے ہیں رت مذ یف پاپ دکی رٹ سے #ل کے الفا ہے ں۔ وجعلت تربتھالنا 
طفو۶ ارو اامسلمر۔ ۱ ۱ 

امام ابو حفیضہ اور الک انز اتد لال جن کر سے ہیں ترآ نک > ل آیت ے قولغتعالی توا ودا ییاد سد . 
مرف ربمت فب تکو فی لک چات تراب بت او جن الا رکو عام ہے۔ جیے صاحب تا موس جو انی ا کک ہیں دہ 

` فرہاتے ہیں ایر ماراب ادوچ لاناک ط رح دوصرے لین ھی کیت ہیں۔ دوسری دم وہ مشہور مر یں جن 
ح لکہاکیا:وجعلت لی الا رض کلھا مسجد ا وطھو ول ط رتچ رک تراب بت شر دا ہیں ای طرع طبو رکیل بھی 
تراب بت رط لکد ٹیل یہ کر تک عم اولا اس رز ین میس نازل ہواجھ ورگ خی ذکی ز رر ہے اس یش 
تراب بت تذل تھا۔ اب اکر تم یلع تراب ی تک ش رط کا جاے جس غر کی را یی مھ مکا جوا زآ هلر 
خررت من امطر وقمت تحت المیزاب ہو جات ےگا کوک ال سر زین مس پا نا آسان ہے تراب فبت لے سے۔ ایا 
تراب مب تک شط کت جم کے خلاف ہے۔ایام شا اور اہ تاه نے جود هل کی الک جواب پر ےک وه 
حدریث مارا فلاف نیس کی وک ہم بھی تراب بت سے باق ہیں البتہ دوصرے لص وک ے تراب بت کے سار 
خاک سکرتے بل جن الار کوشا کے ہیں۔ لمذاحدریتث پذاست ہمارے خلاف اسر لا لک ہاور ست لد 

۱ چم امام شاف وار وقاشی الولو سف مھم ای کے نزدیک کی یر ار ونارو رک ہے۔ ورنہ خاش کے 3 تس ہو 
گا۔ لیکن اام الو نیف وج کے نزدیک فا بوناضروری تب پل زلیس مٹی سےکھڑے پربھی مار رشان وخی رہ 
اتد لال یکرت ہیں آیت قرآمیہ کے اس فط ے قولتعال‌قکیججا ضویدا یبا قامسوا بو جووکم وَآَيِرِيْگُ 
وش کر یبال صن تی کی ے ادزا زک نک حصہ ر ہاور بت هگا لام یز کان تر رل شک ے 
ل لفظ سیر کر ہے عام ے چات نف ہو یا و نیز با کی غ رف کی ددلیت می لآتاس ےک ہآپ نے پچ وتک در خی رکو 
مازلا و معلوم واک غبار ہو ناشرط یں نوناک بد شک ازن جور یل چش کا ی کاجو اب بیس 
کہ من ہکی عیبر عد کی طرف ر اق »وکا تال ہے یکن ابقداوالغا کے لئ چو اذاجاءالاحتم ال بل لاسعدلال- 


اب ال اون( سنو تم لکابیاں) 
تدایع اي غحر قال :قال مول افو صل اللہ يولم و جاء کم ا بمعتلیفتیل | ۸ 
فقہاء کا اخقلاف:ائل وار کے نزدیل جع کے ون تی کر ناواجب ہے۔ مکی امام ماک کال تلق سے ایک ر وات 
ہے ہو رام کے نزو 2 نون ہے۔ اور کی امام الک دنن کا پور ول ۱ 
دلائل: ایل وا اتر لال جن کرت ہیں ان اعادیث ے جن میں ام مکاصیضہ اور واجب و یکا لف ظ آیاے۔ بیس هریت 


دس هرن( > جداں لے 
ان رواک رمث یں ام رکاصیضہ ے اور الو سعید کل صرت بل واج بکا لف ہے۔اور لد« عدیعث میس کن کا لفظ 
ہے اود ہے سب وجوب پر ولال تکرتے ہیں۔ مورک و بل حطرت مرول عدریث ے جس مین مہ لفط ہیں ومن 
اغتسل فالفسل افضل واه ابو داؤد الترمزی۔ ووس رک و ل حشرت ابو بر« عدیمش من توضاً فاحسن 
الوضوءثی اق ال معا ای یس صرف وض وکر هآ کا زک ہے۔ تی ری بل بغار ی شیف میس ےکہ حفظررت مر 
پاپ کے خط کی حالت میس حضرت عفن ول او مراکم | د س ے کیو ںآ ےلو عثان وا نے فرماي کر زرا 
مصروفیت ی ازان نکر مرف وض وکر ےآ کل کر کاو ححضرت خان وا ےل ی ںکیا۔ پر حضرت من 
الک کر ایور ده سرت هک یھ کی کہا وکو یما صحابہ ہ وکیا EA‏ 
جواب: ال ظواہرنے جور کل بل ان نے کہ ام اسخبل ب کیلع ہے اور تن وو اجب کے ہی خابت کے ہیں۔ 
ای وجول و خصو ی وج بات واسبا ب کل ناه - پر دواسباب دوجو بات تم ہونے پر وجب بھی ضور م دگید جیباک 
حضرت ان عباس ا کی روایت سے معلوم ہوا ےکہ یط لوگ محن کزان سے خوداپناکا مکرتے تے اور موٹے موه 
کپڑے منت ےر اوم سیر و ی ag.‏ 0009 
اوور و ھل تپ را بر ات لے اف کر اد 
ہو گے خودکا کاخ کر سے کے اور بای ککپپٹڑے پاش ور کے اور سر بھی وخ جک تا بر دکی علت شنت موی تو 
1 کل مضوغ وکی اکان تس ساب اق رہد 


اب ایض ”شش کایان) 

حیض کی تصریف: خی کے لفری ن یلان کے ہیںء اور شر ھا تی سکہاجازاہے کردم ینقضه حم [م رال سليمة 
من الم رض والصغروالیُس۔ 

ربعت نے ادکام مت کا بہت اجتما مکی ر کت تقل ور بان کیا۔ اک لے مضہ ہکرام نے بھی ا سکااجمام 
کیااور اک ےق من کی تک ےن کے اتد کے بہت ے ایام تاق ہیں۔ مل 
نماز ر وزه طواف» تلاوت ق رآن: وخول سر وی٠‏ طلا عرّتہ خ: اور ارام رگم وگو یادن Aa‏ 
کیساتھ تلق ہیں۔رزا یش کے مکل مک لوگ ج تم ای مت کے ہیں وواسلام سے پاک ال اور مور 
ہیں۔ اب نیٹ میں بہت سے سا لول 

مسئله الاستمتاع من الحانض: پہلا ستل ہے س کر نیٹ وال عورت کے سا تج انتا ام سے یال اس 
تیان تیان س ےکہ فوق السرهوتعت ال رکبه مطلقا “تما جا ہے خواوضوق الا زا ہو یاقعت الاز اراک رر ماہین 
الركبه والسردفوق الازاں استتعاں ہا ے۔ کان ماہیں السرہ وال رکب تحت الازار اس متا می انتلاف ہے۔ ایام اتر 
ونوا اور اوذای مھم ال کے رر یک جائڑے اور لام عفن وشانق مالک مهم الد کے نزد یک ناجائڑے۔ ان 

پادرے کف وی اکر انس تر 0 E7 a‏ ۱ 


کم تسس ده .و بر سڈ 
اام اتھ و رالات کر ے ہیں حضرت اس نا کی حدیث سے : اصتعو اکل شنی الاالنیکاح رانا مسلحر۔ یال حا 
مم ما ہے۔لمذاجماع کے مار مس اس متا کیا از تد یگئی۔ دوس ریو مل ححضرت ماشہ نکی رٹ 
سے الوداڈر ر لف میں ے ک ہآپ نان کر بای ا: ‏ کشفی عن فحزیک ‏ فکشفث فخز یف ر ضع خل دو صر ہ دعل ‌فخزی۔_ 
تو یہاں نالسر ہوا رک تحت ال زار ستتتاع ہوا۔ تو معلوم باکر چائز ہے۔ نیز ق رآ نکر کم یس کل ا زک سے احا زک ےک 
گم ے اور وہر ے۔ امام الو طیفہ شا اک دمل رت عاتن اذ اہن کی رث ے :قالت کانت احدانا اذا 
کانت حَأئضا N N RS‏ وک ای کر ےا 
تال ل صریث ہے وکان یامرن فاتزیفیبا شرن وانا حائض, متفق علیص تہ ری رل حخرت معاز یپ کی عریث 
سے :قلت یا رسول له مایعل لی من ام رات وھ حائض قال فوق الا زارساور »بتک رولیت جن میں فوق ال زار اس تتتا عکی 
اہازت و ی یں اگ تالا زا اتا جا موتا ویر سے پان کی کی فرماتے_ نو معلوم وال تحت الا زار ہا نی نیز 
ش نیعت یش سد ذرائ کا سل جاب ےک جو چچ زی ام کاذ ر یع بن جا ے دہ بھی تام ہو جا ہےء اور ظاہر بات ےک 
ھت الا زارا متا کے سے ماع ٹیس داع ہو ن ےکا قوی اند یش ے :اہ کو سنیرلن کلب وگ مزا راو - 
ران الف نے جورلا نین )کیا نکاای کآسان جو اب یہ ے فا نے لن رم ہیں۔اوران نیدلا لت بای سے 
اریخ للم حرم ل چا ں هکم نظرت ال هل زیت من اصتعو اکل شی اانا ج شن ارس و ناور 
وواک و کی مراد تا جو یز ام موی ے اس کے دواگی ھی مرام ہوتے ہیں۔ دور جن ماش انا 
کاجواب ہے ےک ا سس میس ایک را وی عبرال تین ین یادا فر یت کو ی بین مین اور امام ام تق الک اور ابوزرع 
اور تر رک نے یف قراد و اسب لعز اا ہلال 3 کن ات ترآ چا لا لکیال کل اذی سے ےک م دیا 
جاب ہے س ےک ا کیا تھ ولا تشر هر کال یسب جس سے و اور دوا کی و می سے کھی پر ہی زک کا عم ہے۔ 
حالت حیض میں جماع کا کفاره 
ان ارت :عن ابن عباس قال قال مول اللو صل اللہ علیو وس 5 وقع بل باه وهي حائفن |2 . 
تشریج: عالت میں اگ یذ ماع کل یاقامام ا وات کے ادیک ات اوہہ کے سسا تج سا قح ایک د ینار صد ق رن 
ان اکر ابت اہ تی می سکیاہہواور اگراام بل می کات لصف دیناد اب-۱ لش کے ادیک صرف ویر ضر و رک 
سے صدق و غیرہضرو ری نی لت تھب سے اام ات واک ر کل ٹن کے ہیں حدریث ن کور سے جس میں صرق ہکا گم 
سے ان کے ہی لک نک یاو ی یں شی وت سک وط واجب ہیں ماس میں کی ہے 
کے علاو هگ صدقہ واجب نہ ہو نا این پال صد تہ س گناہ معاف ہوا سے ال اتتا سے یگ کیوں ہ گناو یہ ص رت ہک نا 
جب ہے اکے استد لا لک جاب ہے س ےکہ دصرت ضیف ےکا قال تر زک یقاب ول ے۔ 
حیض میں ایک مسئلہ اسکی مدت کے بارے میں 
مدت حیض میں فقهاء کرام کا اخقلافی :تاس یس اختلاف نے امام مالک الف باتے ہی ںک اک مرت 
تی کول ر ہیں اگرایک ساعت بھی شون له و تیش ہوگاامام شماغ یدنہ کے ا ل هت ات دن ایک 


Cy Rew E‏ جا ہداں وے 
رات ے امام الو ینہ کح اف کان کے ر ویک ال 2 رت دن ین رات سے اس ےا کم ہو نوا ستاضہ بو گا۔ 

دلائی :تین الین کے پا سکول و یل تس صرف تیا کرت ہیں امام کت را ںکہ مش بھی 
دو مرت اعدا کے ان ایک عدث ہے و تھے دو سرے اح اث می اٹل مد تک یکو کی مر مقر رنیں نیش میں بھی یل 
: ہی اور ابام شی کل ماه ںکہ جب تک ایک دن رات مگ ر چا ے معلوم نہیں ہوا گاکہ ہررقم سے یار سرسه 
کی گل سے الام ےکم ایک دن ایک رات ہو اام الو حفیفہ اڈ ربل چ کر نے ہیں بہت کی اعادیت مر فو 
ومو توق ے لس حطر الوامامہ پاپ کی عدریت دار ٹن می ایی سور پل دکی روزیت وار قطن میں حم ری الس وا ری ۱ 
دی کال ع ری شس حضرت ان و رویت دار ن میس الو سعی رک صرت معاز ین له حدیث زی میس 
ان سب کے الفاظ لف ہی گر مون ایک ے الحیض ثلات. اربع, مس.وست .وسبع.وعشر .فائزارفەی مستحاضة. 
یل تل رت تن ون رات اور کشر رت دک دن ارات یا کیاکی ہے حدنٹی کر چ نفرادی طوریر ضیف ے لان 
کرت با تاب ل اتد لال ہیں۔ا نکاجو اب ہہ ے 2 ابل یش تیا کا اکویاعتبار 

اکشرورت میں ۲ بھی اختلاف ے ایام شی ڈشالنہ ے نزدیک پند رهدن رات ے اور مال ک تاداع کے نزدیک سره 
لاور امام الو نز فا لدل کے نر ریک اکر مات د کون ود رات ے۔ لام شا فی تا کی ادل کان ر یل یی کر ے ہیں 
3 رث کے ایک ککرے ے قوا مالیا ی نقصان رین ال رأۃتقعں احاھؿ شطر عمر ھالاتصلیولاتصوم۔ ؟ں ے معلوم 
وک پندررودن رات ی ہو سکتا سے ۔ لام ابو فیلکت کے رال ووہیں جو پیل ککزرے۔ا نک د م لک جاب یسب 
کہ دوحدریٹف بانقاقی ر یں ضعیف ے با پت موضو رک کچ .الا قبل اتد لال لب 
باب افممتکافة( سا ضکابیان) 

مستحاضه کی تعریف: -قاضال عور تک وکہاجاناے ”سک غیر بھی لور کسی مر ویر ہک با خون لکنا ے۔ 

مصستحاض ہک چار عیرس 

(۱)مبتداه کا حکم: :ج با مو کے ہو ۓ استحاضہ میس ماو 7 انگ بے یں اام لکل فا ہیں اک ریہ 

چم امات دن نیف شا هکرس اوریقیہ استخحاضہ یاال اہم خر ر 27 پک جقناون تب آنا ے اتان یش شا هکرس اور بقیہ 
: وا تماض.. ام فقس نز کیک ند دهدن سے سب می ہاور اگرہنددودن سے زا ہو ایک ریک 

رات جیٹس اور بق استخحاضہ ہوگا۔ امام ماک تاکن 2 دیک پندرہ دن رات مش اور لت اتقاضہ۔ لام ابو 

نیز اڈ کان کے زد یک ہر 88072 مش م رگا اور اسخحاضہ ہوگاں ‏ 

(۲٢)معتادہ‏ مذکرہ: و هرت ےک ماوت میٹ مق رر ے اورا کو یا بھی سے فذاس میں س بکاانقاقی ےک لے 

وك عادت ے ہر۴ ید میش اس دن شا دک ےکی ادراق ہکا تقاض وض وکر کے ناژ رہ ےکی اور روز ور لج هگ 

(۳) متحریه: : وو قاض سے جج سکوجواوت ی گر بمو لی فو کا مک وہ تر یکر ے جس طرف فال بگان 

ہوا لا زر رٹ ۱ 
(۴) هقحهره: وتاش ج سکزوادت تھی لین بھو لک اوج یکر کے ی کی رف ان نوا کا عم سب کے 


دنسر وہہ چیا جلراول 2 
نزدیک ہے س کہ بر نماز کے وقت لک ےگی۔ یاد کر ان سیا میں صرا دہ فصو س کول و یل موجور ل» 
مرف اجتباری سل ہیں اورد لان ل بھی اجتھادیی ہیں۔- ۱ 
(۵)ممیره کا حکم: یہاں امام ال د ایک اور ات مھم اللہ کے ریک ایک اور شع ے سکو مز کت ہی ںکے وہ 
خون کے رک ے ایم تی مقر رک بی تی ان کے نز ویک تمییز بالالوا یک تسام ام عذیز نل کے 
نزدیک ریبز بالالوا نک الما یز ہک م نیس ہے لاش تال کے مووق سب الوان یش یس غر 
ہیں خواواسود ہو تیوه ونیم ا کی د مل فاط منت ایی کی عدیث ےک آپ نے فرمایا: ازا کان وم |لحیض 
فانەرم اسوریعرت. و اهداب وراژدو انسالی- ۱ ۱ 
ام ابو نز تالک دحل حضرت عا کش اتکی عریمث ہے۔ موطا ام مالک میس مو صو لاور بخاری میں تیا 
موجود ‏ ےك كانت النساء دض الى عانشة بال جة فيه الکرسف فيه الصفرۃ ون یم الحیض یستانهاعن الصلوةفتقرل 
هن لاتجعلن حٹی ترين القصةالبيضاء- دو رید مل مصنفہاین اي شیب ٹیس اسماءینت ال بت رولیت ے: اعتزلن الصلوة 
مایت ذلک حٹی لاترین الاالبیاض خالضا۔ یرید ل ام عطی کی عدری بفارک شر یف اور ن میں ہے : کنا لا تعد 
الكدہقوالصفرةبعں الطهر شین 
پردلالت لب ۳۶ رت نیٹ میں ان الوان 7 تښغر رن کور ڪال روا بات ند کور وتات واگ ظا لس 
کے سواسب الوان میٹ ہیں۔ دوس رک بات ىہ کہ انختلاف مارح و مکان وز مان وفغزا سک تپ سے الوان خون بل بہت 
اوت ہوگا ۔کسیاکاسیاہوگاءک یکا سکاو سرد مخ کامداررکھنا ہج نیل ہوگا۔ 

ا نکی د کلک جوا ب ےک اکٹ محد تین کے ادیک دو صرت یف ے۔ چا ای فرمات ہیں ھن امضطرب الاسناد 
اور ابو عات کے یں هومنکر ان قطان کے ہیں ہو ر اٹی منقطع۔ ای ط رام نے دو چ بس اک اعلا لک طرف 
شاد هگید اي ال الال ٹنیس سا مان لیس تب بھی ا کاب ےچک آپ نے ایت وی تک با 
اسودکہا یآ پکووگی کے ذر یی معلوم ہ وکیا تاک اک تین اسودہ رگا ام ای ال کے سا تمالس ۱ 

مستخاضہ کیلئے حکم 
"۹۹۹۰۶ 9 

فقہاء کرام کا اخقلاف :لام ال ت24 کے دیک قاض عورت ہر نماز فر کیل وض وکر ےکی بجی الیک 
ك٦9"5۹۸‏ پھو تحرو وف پڑھ کی ہے۔ اور مام اک تق تاد کال کے ردیل وم ا خاضہ 
ا شض وضو لت لمزاوضو ورک ضرورت یں لام ابو یز دا ناین کے نزدیک ایک وضو وقت کے انور 
تع فراش و وافل چاے پاک ہے۔جب وق ت گزر ہا ے ذوضوٹو ےک عم یاس هک 

د انل :امام اک تال مل شی کر ے ہیں فا تیک حدریث کے ایک ط ران ے ج بقار ی شیف میں 
گور سے جس میں وضوکاؤکر یں ہے لان جم ہو رک ہی ںک اکشردوایات س وض وکا زکر ہے ,اس ط ان میں اخقار 


جا درس مشکوة] | جلدایل 23 
ی الال سے امت لالج 0 کی رل دواحاریث ہیں جن می توا ونھکل سا 
زک ہے۔امام الو حطیفہ ام تین و سل می یکرت ہیں خضرت عا کہ اتکی حدریث ے جوم رای نی بش ے: 
الستحاضةتتوضا لوق ت کل صلوتد دوس ری ر کل ی بن قرام میس فاط بت ال کا گیا عدیث کے بی الفاظیں:توضی 
اوقت کل صلو تی رکو مال ابو عبدالشہ ر نے ہے بدت کشک حدریث کال: انه عليه السلانم امرها ان تغتسل لوقت کل 
صلواواور تل وضو انم متام زار ما کے لئ وض وکا عم تم کي 

جواب: ام شا تالک جور بل کی ال سکاجواب ےک اش صریث یں دواخال یں 02 
از وض وکا عم ہے اور ہے بھی ال سب کہ نماز کے پر وق تکیلن وض وکا عم ہے کی دک اه موا شع می مضا کا 
من وف ہو نامطرد ہے جیسے اما جل اد کته الصلوة۔_ إن للصلوۃ او وآخرا۔ 
یبال وقت مخروف سای ط رح عرف میں بھی استعال موتا ے جی ےکہاجاتا کہ انا آتیک لصلوۃ الظه ر ت یہاں مراد 
ےوقت الظھر 9 0900 کم اور ده ےک 2 کو گم کی رف ونیا ماک 
دواوں پر ئ0 
ایام کاو کی ندال نے ا ات 700 7 کر نواٹ وضورو پیب ایک خر وج عدرث تب بشاب» 
ده رم دوس ری خر و وقت کے سج عیاش نک خر دوقت سے ٹوٹ جاتاہے۔ لن گنک فرش 
گن الا ۃ سے طہارت ٹوٹ ہاے۔ لزا یبال گکہاجات ےکک خر وخ وقت ے وضوٹوٹ جات ےک٥‏ فر گن الصاو ے 
کباب ہیں ای مئل م احا کم ہب دا ہے سو اللہ اعلم بالصو ابد 

هن آخر کتاب الطهارة وقد تم ابزء الاؤل مِنَ 'التقریر الفصيح مشكوة امضابی"! 
پیم میس الزابع من همان ال 407 1 
وليه از الا اوله کتاب الصلوة ` 
اتل متا الک انت الشمیع هلیم واجعل سينا ميا مشكر ۶ار اجعل هذ الکتاب نافقا لب لديف 
یوم الڈین وف يوم لین